اختر مینگل اور شاہ زین بگٹی کا رکن اسمبلی بننا پاکستان کے مفاد میں ہے

(Shahzad Imran Rana Advocate, )
بلوچستان میں جشن آزادی کے حوالے سے تقریبات اور امن کا سہراسرفراز بگٹی کے سر مگر وہ الیکشن جیت نہ سکے

 بلوچستان رقبے کے لحاظ سے پاکستان کا سب بڑا اور قدرتی وسائل سے مالامال صوبہ ہے جہاں عالمی سازشوں کی وجہ سے تقریباً پندرہ سال کے مشکل دور کے بعداب امن قائم ہوا ہے ۔امن وامان کے قیام میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے علاوہ سابق صوبائی وزیر داخلہ اور بلوچستان عوامی پارٹی کے رہنماسرفراز بگٹی کا بھی اہم کردار ہے جو ہر فورم پر بلوچستان اور ملک کے دیگر حصے میں بھارتی خفیہ ایجنسی ’’را‘‘کے ناپاک عزائم کو بے نقاب کرتے نظر آتے ہیں مگر الیکشن 2018میں سرفراز بگٹی کامیابی تو حاصل نہ کرسکے لیکن اُن کی جماعت آئندہ چند روز میں بلوچستان میں حکومت بنانے جارہی ہے تو ہوسکتا ہے کہ سرفراز بگٹی کو مشیر یا سینیٹربنایاجائے۔ گذشتہ سالوں کی طرح اِس بار بھی بلوچستان میں جشن آزادی دھوم دھام سے منائی گئی ۔پرویز مشرف دور میں جب 2006میں نواب اکبر بگٹی کو قتل کیا گیا تو بلوچستان میں حالات قابو سے باہر ہوگئے تھے جس کا فا ئدہ عالمی قوتوں نے بھی خوب اٹھایا جس کے بعد 2008اور 2013کے انتخابات میں بلوچ قوم پرست رہنماؤں نے زیادہ دلچسپی نہیں لی مگراِس باریعنی الیکشن2018میں نواب عطااﷲ مینگل کے صاحبزادے اختر مینگل جو 1997میں وزیراعلیٰ بلوچستان بھی رہ چکے ہیں قومی اورصوبائی دونوں نشستوں پر کامیاب ہوئے مگر اِس بار وہ قومی اسمبلی کے رکن ہونگے جبکہ نواب اکبر بگٹی(مرحوم) کے پوتے شاہ زین بگٹی پہلی بار رکن قومی اسمبلی منتخب ہوئے ہیں لہٰذا بلوچ قوم پرست رہنماؤں کی کامیابی پاکستان کے مفاد میں ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shahzad Imran Rana Advocate

Read More Articles by Shahzad Imran Rana Advocate: 64 Articles with 22405 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
16 Aug, 2018 Views: 267

Comments

آپ کی رائے