شریعت, تہمت, گواہی اور انصاف!!!

(Bilal Shoukat, )

میں کیا کہنا اور سمجھانا چاہتا ہوں پہلے درج ذیل احادیث اور آیات بمع ترجمہ پڑھ لیں پھر اگلی بات کرتا ہوں۔

بسم اللہ الرحمن الرحیم۔

Sahih Bukhari Hadees # 2653

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُنِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏سَمِعَ وَهْبَ بْنَ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدَ الْمَلِكِ بْنَ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي بَكْرِ بْنِ أَنَسٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سُئِلَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْكَبَائِرِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ ""الْإِشْرَاكُ بِاللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَعُقُوقُ الْوَالِدَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَتْلُ النَّفْسِ، ‏‏‏‏‏‏وَشَهَادَةُ الزُّورِ"". تَابَعَهُ غُنْدَرٌ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو عَامِرٍ، ‏‏‏‏‏‏وَبَهْزٌ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدُ الصَّمَدِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ شُعْبَةَ.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کبیرہ گناہوں کے متعلق پوچھا گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ”اللہ کے ساتھ کسی کو شریک ٹھہرانا، ماں باپ کی نافرمانی کرنا، کسی کی جان لینا اور جھوٹی گواہی دینا۔“ اس روایت کی متابعت غندر، ابوعامر، بہز اور عبدالصمد نے شعبہ سے کی ہے۔

Sahih Bukhari Hadees # 2654

حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ الْمُفَضَّلِ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا الْجُرَيْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي بَكْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ ""أَلَا أُنَبِّئُكُمْ بِأَكْبَرِ الْكَبَائِرِ ثَلَاثًا؟ قَالُوا:‏‏‏‏ بَلَى يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الْإِشْرَاكُ بِاللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَعُقُوقُ الْوَالِدَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏وَجَلَسَ وَكَانَ مُتَّكِئًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَلَا وَقَوْلُ الزُّورِ""، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَمَا زَالَ يُكَرِّرُهَا حَتَّى قُلْنَا لَيْتَهُ سَكَتَ. وَقَالَ إِسْمَاعِيلُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْجُرَيْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ.

میں تم لوگوں کو سب سے بڑے گناہ نہ بتاؤں؟ تین بار آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسی طرح فرمایا۔ صحابہ نے عرض کیا، ہاں یا رسول! آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا، اللہ کا کسی کو شریک ٹھہرانا، ماں باپ کی نافرمانی کرنا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم اس وقت تک ٹیک لگائے ہوئے تھے لیکن اب آپ صلی اللہ علیہ وسلم سیدھے بیٹھ گئے اور فرمایا، ہاں اور جھوٹی گواہی بھی۔ انہوں نے بیان کیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس جملے کو اتنی مرتبہ دہرایا کہ ہم کہنے لگے کاش! آپ صلی اللہ علیہ وسلم خاموش ہو جاتے۔ اسماعیل بن ابراہیم نے بیان کیا، ان سے جریری نے بیان کیا، اور ان سے عبدالرحمٰن نے بیان کیا۔

Sahih Bukhari Hadees # 5976

حَدَّثَنِي إِسْحَاقُ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا خَالِدٌ الْوَاسِطِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْجُرَيْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي بَكْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ ""أَلَا أُنَبِّئُكُمْ بِأَكْبَرِ الْكَبَائِرِ؟""قُلْنَا:‏‏‏‏ بَلَى يَا رَسُولَ اللَّهِ قَالَ:‏‏‏‏ ""الْإِشْرَاكُ بِاللَّهِ وَعُقُوقُ الْوَالِدَيْنِ""وَكَانَ مُتَّكِئًا فَجَلَسَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ ""أَلَا وَقَوْلُ الزُّورِ وَشَهَادَةُ الزُّورِ، ‏‏‏‏‏‏أَلَا وَقَوْلُ الزُّورِ وَشَهَادَةُ الزُّورِ""فَمَا زَالَ يَقُولُهَا حَتَّى قُلْتُ:‏‏‏‏ لَا يَسْكُتُ.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کیا میں تمہیں سب سے بڑا گناہ نہ بتاؤں؟ ہم نے عرض کیا ضرور بتائیے یا رسول اللہ! آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ کے ساتھ شرک کرنا اور والدین کی نافرمانی کرنا۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اس وقت ٹیک لگائے ہوئے تھے اب آپ سیدھے بیٹھ گئے اور فرمایا آگاہ ہو جاؤ جھوٹی بات بھی اور جھوٹی گواہی بھی ( سب سے بڑے گناہ ہیں ) آگاہ ہو جاؤ جھوٹی بات بھی اور جھوٹی گواہی بھی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اسے مسلسل دہراتے رہے اور میں نے سوچا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم خاموش نہیں ہوں گے۔

Sahih Bukhari Hadees # 5977

حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ الْوَلِيدِ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ أَبِي بَكْرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ ذَكَرَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْكَبَائِرَ أَوْ سُئِلَ عَنِ الْكَبَائِرِ فَقَالَ:‏‏‏‏ ""الشِّرْكُ بِاللَّهِ وَقَتْلُ النَّفْسِ وَعُقُوقُ الْوَالِدَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَلَا أُنَبِّئُكُمْ بِأَكْبَرِ الْكَبَائِرِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ قَوْلُ الزُّورِ أَوْ قَالَ شَهَادَةُ الزُّورِ""قَالَ شُعْبَةُ:‏‏‏‏ وَأَكْثَرُ ظَنِّي أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ شَهَادَةُ الزُّورِ.

مجھ سے عبیداللہ بن ابی بکر نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ میں نے انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے سنا، انہوں نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کبائر کا ذکر کیا یا ( انہوں نے کہا کہ ) نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے کبائر کے متعلق پوچھا گیا تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ کے ساتھ شرک کرنا، کسی کی ( ناحق ) جان لینا، والدین کی نافرمانی کرنا پھر فرمایا کیا میں تمہیں سب سے بڑا گناہ نہ بتا دوں؟ فرمایا کہ جھوٹی بات یا فرمایا کہ جھوٹی شہادت ( سب سے بڑا گناہ ہے ) شعبہ نے بیان کیا کہ میرا غالب گمان یہ ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے جھوٹی گواہی فرمایا تھا۔

Jam e Tirmazi Hadees # 1901

حَدَّثَنَا حُمَيْدُ بنُ مَسْعَدَةَ، حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ الْمُفَضَّلِ، حَدَّثَنَا الْجُرَيْرِيُّ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي بَكْرَةَ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَلَا أُحَدِّثُكُمْ بِأَكْبَرِ الْكَبَائِرِ ؟ قَالُوا:‏‏‏‏ بَلَى يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الْإِشْرَاكُ بِاللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَعُقُوقُ الْوَالِدَيْنِ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَجَلَسَ وَكَانَ مُتَّكِئًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ وَشَهَادَةُ الزُّورِ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ قَوْلُ الزُّورِ ، ‏‏‏‏‏‏فَمَا زَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُهَا حَتَّى قُلْنَا لَيْتَهُ سَكَتَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَفِي الْبَابِ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو بَكْرَةَ اسْمُهُ نُفَيْعُ بْنُ الْحَارِثِ.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کیا میں تم لوگوں کو سب سے بڑے کبیرہ گناہ کے بارے میں نہ بتا دوں؟ صحابہ نے کہا: اللہ کے رسول! کیوں نہیں؟ آپ نے فرمایا: ”اللہ کے ساتھ شرک کرنا اور ماں باپ کی نافرمانی کرنا“، راوی کہتے ہیں: آپ اٹھ بیٹھے حالانکہ آپ ٹیک لگائے ہوئے تھے، پھر فرمایا: ”اور جھوٹی گواہی دینا“، یا جھوٹی بات کہنا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم باربار اسے دہراتے رہے یہاں تک کہ ہم نے کہا: ”کاش آپ خاموش ہو جاتے“۔
امام ترمذی کہتے ہیں: ۱- یہ حدیث حسن صحیح ہے، ۲- اس باب میں ابو سعید خدری رضی الله عنہ سے بھی روایت ہے۔

Sahih Muslim Hadees # 261

وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْوَلِيدِ بْنِ عَبْدِ الْحَمِيدِ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، قَالَ: حَدَّثَنِي عُبَيْدُ اللهِ بْنُ أَبِي بَكْرٍ، قَالَ: سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ، قَالَ: ذَكَرَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْكَبَائِرَ - أَوْ سُئِلَ عَنِ الْكَبَائِرِ - فَقَالَ: «الشِّرْكُ بِاللهِ، وَقَتْلُ النَّفْسِ، وَعُقُوقُ الْوَالِدَيْنِ» وَقَالَ: «أَلَا أُنَبِّئُكُمْ بِأَكْبَرِ الْكَبَائِرِ؟» قَالَ: قَوْلُ الزُّورِ - أَوْ قَالَ: شَهَادَةُ الزُّورِ - ، قَالَ شُعْبَةُ: وَأَكْبَرُ ظَنِّي أَنَّهُ شَهَادَةُ الزُّورِ

محمد بن جعفر نے کہا : ہم سے شعبہ نے حدیث بیان کی ، انہوں نے کہا : مجھ سے عبید اللہ بن ابی بکر نے حدیث بیان کی ، انہوں نے کہا : میں نے حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے سنا ، انہوں نے کہا : رسول اللہ ﷺ نے بڑے گناہوں کا تذکرہ فرمایا ( یاآپ سے بڑے گناہوں کے بارے میں سوال کیا گیا ) تو آپ نے فرمایا : ’’ اللہ کے ساتھ شرک کرنا ، کسی کو ناحق قتل کرنا اور والدین کی نافرمانی کرنا ۔ ‘ ‘ ( پھر ) آپ نے فرمایا : ’’ کیا تمہیں کبیرہ گناہوں میں سب سے بڑا گناہ نہ بتاؤں ؟ ‘ ‘ فرمایا : ’’جھوٹ بولنا ( یا فرمایا : جھوٹی گواہی دینا ) ‘ ‘
شعبہ کاقول ہے : میرا ظن غالب یہ ہے کہ وہ ’’ جھوٹی گواہی ‘ ‘ ہے ۔

Musnad Ahmed Hadees # 10100

۔ (۱۰۱۰۰)۔ وعَنْہُ اَیْضًا، رَفَعَ الْحَدِیْثَ اِلَی النَّبِیِّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم قَالَ: ((مَنْ قَتَلَ نَفْسَہَ بِشَیْئٍ عُذِّبَ بِہٖ،وَمَنْشَھِدَعَلٰی مُسْلِمٍ (اَوْ قَالَ: مُؤْمِنٍ) بِکُفْرٍ فَھُوَ کَقَتْلِہِ، وَمَنْ لَعَنَہُ فَھُوَ کَقَتْلِہِ، وَمَنْ حَلَفَ عَلَی مِلَّۃٍ غَیْرِ الْاِسْلَامِ کَاذِبًا فَھُوَ کَمَا حَلَفَ۔)) (مسند احمد: ۱۶۵۰۵)

سیدنا ثابت بن ضحاک انصاری ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے یہ بھی مروی ہے کہ رسول اللہ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: جس نے جس چیز کے ساتھ خود کشی کی، اس کو اسی چیز کے ساتھ عذاب دیا جائے گا، جس نے کسی مؤمن اور مسلمان پر کفر کی گواہی دی تو یہ اس کو قتل کرنے کی طرح ہو گا، جس نے اس پر لعنت کی تو وہ بھی اس کو قتل کرنے کی طرح ہو گا اور جس نے اسلام کے علاوہ کسی اور دین پر جھوٹی قسم اٹھائی تو وہ اسی طرح ہی ہو جائے گا۔

4 : سورة النساء 135

یٰۤاَیُّہَا الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا کُوۡنُوۡا قَوّٰمِیۡنَ بِالۡقِسۡطِ شُہَدَآءَ لِلّٰہِ وَ لَوۡ عَلٰۤی اَنۡفُسِکُمۡ اَوِ الۡوَالِدَیۡنِ وَ الۡاَقۡرَبِیۡنَ ۚ اِنۡ یَّکُنۡ غَنِیًّا اَوۡ فَقِیۡرًا فَاللّٰہُ اَوۡلٰی بِہِمَا ۟ فَلَا تَتَّبِعُوا الۡہَوٰۤی اَنۡ تَعۡدِلُوۡا ۚ وَ اِنۡ تَلۡوٗۤا اَوۡ تُعۡرِضُوۡا فَاِنَّ اللّٰہَ کَانَ بِمَا تَعۡمَلُوۡنَ خَبِیۡرًا ﴿۱۳۵﴾

اے ایمان والو!اللہ کی خاطرانصاف پر قائم رہتے ہوئے گواہی دیا کرو خواہ وہ گواہی تمہارے اپنے یاتمہارے والدین یاقریبی عزیزوں کے خلاف ہی ہو اگرکوئی فریق امیرہے یا فقیر بہرصورت اللہ ہی ان دونوں کاتم سے زیادہ خیر خواہ ہے لہٰذا اپنی خواہش نفس کے پیچھے عدل کو چھوڑو نہیں اوراگرگول مول بات کرویا سچائی سے کترائو ( توجان لوکہ ) جوتم کرتے ہواللہ اس باخبرہے۔

5 : سورة المائدة 8

یٰۤاَیُّہَا الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا کُوۡنُوۡا قَوّٰمِیۡنَ لِلّٰہِ شُہَدَآءَ بِالۡقِسۡطِ ۫ وَ لَا یَجۡرِمَنَّکُمۡ شَنَاٰنُ قَوۡمٍ عَلٰۤی اَلَّا تَعۡدِلُوۡا ؕ اِعۡدِلُوۡا ۟ ہُوَ اَقۡرَبُ لِلتَّقۡوٰی ۫ وَ اتَّقُوا اللّٰہَ ؕ اِنَّ اللّٰہَ خَبِیۡرٌۢ بِمَا تَعۡمَلُوۡنَ ﴿۸﴾

اے ایمان والو! اللہ تعالیٰ کی خاطرقائم رہنے والے اور انصاف کے ساتھ گواہی دینے والے بنوکسی قوم کی دشمنی تمہیں اس بات پر مشتعل نہ کردے کہ تم عدل کو چھوڑدو ، عدل کیا کرو ، یہی بات تقویٰ کے قریب ترہے اور اللہ تعالیٰ سے ڈرتے رہو جو کچھ تم کرتے ہویقینااللہ اس سے خوب باخبر ہے۔

9 : سورة التوبة 107

وَ الَّذِیۡنَ اتَّخَذُوۡا مَسۡجِدًا ضِرَارًا وَّ کُفۡرًا وَّ تَفۡرِیۡقًۢا بَیۡنَ الۡمُؤۡمِنِیۡنَ وَ اِرۡصَادًا لِّمَنۡ حَارَبَ اللّٰہَ وَ رَسُوۡلَہٗ مِنۡ قَبۡلُ ؕ وَ لَیَحۡلِفُنَّ اِنۡ اَرَدۡنَاۤ اِلَّا الۡحُسۡنٰی ؕ وَ اللّٰہُ یَشۡہَدُ اِنَّہُمۡ لَکٰذِبُوۡنَ ﴿۱۰۷﴾

کچھ وہ ( منافقین ) ہیں جنہوں نے مسجد بنائی اس غرض سے کہ وہ ( دعوت حق کو ) نقصان پہنچائیں کفر پھیلائیں ، مومنوں میں تفرقہ ڈالیں اُس شخص کے قیام کا سامان کریںجو اس سے پہلے سے اللہ اور رسول کامخالف ہے اور ( وہ قسمیں ) کھاتے ہیں کہ ہمارا ارادہ بھلائی کے سواکچھ نہیں اور اللہ گواہی دیتا ہے کہ یہ یقیناجھوٹے ہیں۔

11 : سورة هود 18

وَ مَنۡ اَظۡلَمُ مِمَّنِ افۡتَرٰی عَلَی اللّٰہِ کَذِبًا ؕ اُولٰٓئِکَ یُعۡرَضُوۡنَ عَلٰی رَبِّہِمۡ وَ یَقُوۡلُ الۡاَشۡہَادُ ہٰۤؤُلَآءِ الَّذِیۡنَ کَذَبُوۡا عَلٰی رَبِّہِمۡ ۚ اَلَا لَعۡنَۃُ اللّٰہِ عَلَی الظّٰلِمِیۡنَ ﴿ۙ۱۸﴾

اوراس سے بڑھ کرظالم کون ہےجو اللہ پر جھوٹ باندھے ایسے لوگ اپنے رب کے سامنے پیش کئے جائیں گے اور گواہ گواہی دیں گے یہی لوگ تھےجو اپنے رب پر جھوٹ باندھتے تھے دیکھو!ظالموں پر اللہ کی لعنت ہو۔

24 : سورة النور 24

یَّوۡمَ تَشۡہَدُ عَلَیۡہِمۡ اَلۡسِنَتُہُمۡ وَ اَیۡدِیۡہِمۡ وَ اَرۡجُلُہُمۡ بِمَا کَانُوۡا یَعۡمَلُوۡنَ ﴿۲۴﴾

جس دن ایسے مجرموں کی اپنی زبانیں ، ہاتھ اور پائوں ان کے ( برے ) کر تو توں سے متعلق گواہی دینگے۔

25 : سورة الفرقان 72

وَ الَّذِیۡنَ لَا یَشۡہَدُوۡنَ الزُّوۡرَ ۙ وَ اِذَا مَرُّوۡا بِاللَّغۡوِ مَرُّوۡا کِرَامًا ﴿۷۲﴾

اور جو جھوٹی گواہی نہیں دیتے اور جب کسی ناپسندیدہ چیز سے ان کو سابقہ پڑتا ہے تو شریفوں کی طرح گزر جاتے ہیں۔

41 : سورة حم السجدہ 20

حَتّٰۤی اِذَا مَا جَآءُوۡہَا شَہِدَ عَلَیۡہِمۡ سَمۡعُہُمۡ وَ اَبۡصَارُہُمۡ وَ جُلُوۡدُہُمۡ بِمَا کَانُوۡا یَعۡمَلُوۡنَ ﴿۲۰﴾

یہاں تک کہ جب ( سب ) جہنم کے قریب آپہنچیں گے توان کے کان ، ان کی آنکھیں اور ان کی کھالیں ا ن کے خلاف وہی گواہی دینگےجو عمل وہ کیا کرتے تھے۔

میں اللہ کو حقیقی اور واحد معبود مانتا ہوں اور حضرت محمد صل اللہ علیہ وعلیہ وسلم کو اللہ کا آخری نبی اور امت کے لیئے رحمت مانتا ہوں دل سے اور جو کہوں گا حق سچ کہوں گا جس کا حکم میرے رب نے قرآن اور میرے نبی ص نے احادیث میں دیا ہے بیشک حق بیان کرنا میری جان پر کتنا ہی گراں کیوں نہ گزرے۔

بات صرف آسیہ مسیح کیس کی ہی نہیں ہر ایسے کیس کی کروں گا جس میں کسی کی جان داؤ پر لگی ہو یا لگ سکتی ہو تو ہم اس غلط فہمی کا یا خوش فہمی کا شکار ہیں کہ عدلیہ ہماری منشاء مطابق فیصلہ دیں تو انصاف اور خلاف طبع بر حق فیصلہ ہوا تو ناانصافی, جبکہ اگر ملک میں شرعیت کا نفاذ بھی ہو تو شرعی قاضی ان عام عدلیہ سے زیادہ پابند ہیں انصاف کے سارے تقاضے پورے کرنے میں کہ وہ براہ راست قرآن و حدیث اور علماء کے اجتہاد کے پابند ہوکر اصولوں کے مطابق فیصلہ کریں گے۔

ایک منٹ کو آپ آنکھیں بند کرکے تصور کریں کہ ملک میں ہر طرف شرعی قوانین کا نفاذ ہے اور قاضی القضاء فیصلے کرتا اور انصاف کا ضامن ہے تو کیا ایسے کمزور کیس اور نامکمل گواہیوں والے کیس میں وہ بھی آسیہ کو سزائے موت دے سکتا تھا؟ (اور یاد رہے شرعیت گواہ کے کردار کو بھی ملحوظ رکھتی ہے گواہی لیتے وقت کہ آیا گواہ کا ذاتی کردار اور افکار کا لیول کیا ہے, وہ تقوی اور ایمان کے کس درجے پر فائز ہے۔)

اوپر چند احادیث اور آیات درج کی ہیں جس میں تہمت, جھوٹی گواہی, بہتان اور انصاف کی باتیں بیان ہوئی ہیں اور ساتھ ہی وعیدیں بھی اگر ان کے متضاد عمل ہو یا کیا جائے تو۔

اللہ کے لیئے اکثریت کے پیچھے آنکھیں بند کر کے چلنا اور ہر امامے و داڑھی والے کو عالم دین اور عقل کل سمجھنا ترک کرکے تحقیق اور تلاش کی عادت اپناؤ۔

ورنہ یونہی کافر کافر, مرتد مرتد اور قادیانی قادیانی کھیلتے رہو گے اور آج کسی کے قتل کا فتوا جاری کررہے ہو اندھی تقلید اور جذباتیت میں تو کل کوئی تمہارے لیئے یہی القابات اور فتوے جاری کردیگا تو پھر مسلمان کون بچا اور پھر مسلمانیت کی شرائط کیا رہ جائیں گی؟

وللہ آج کے فیصلے پر یہی موقف دوں گا کہ اگر ججز نے خیانت کی ہے تو وہ اللہ اور رسول ص کے مجرم بن گئے ہیں اور آخرت میں انہیں کوئی نہیں بچا پائے گا بمع آسیہ مسیح کے اور اگر ان نے فیصلہ مبنی برحق اور بر انصاف کیا اللہ کو حاضر ناظر جان کر اور اس کا خوف دل میں رکھ کر تو وہ اجر کمالیں گے پر جن نے آسیہ مسیح اور فاضل ججز پر بہتان باندھا اور قتل کے فتوے جاری کیئے وہ پھر مکافات عمل اور آخرت میں بھیانک سزا کے لیئے تیاری پکڑیں۔

میں بطور مسلمان حسن ظن اور اللہ کی رضا کا قائل ہوں اور میرا رب اور میرے آقا صل اللہ علیہ والیہ وسلم کا مجھے اور آپ کو یہی حکم ہے قرآن و احادیث میں۔

بہرحال اللہ سب کا معاملہ احسن انداز میں نمٹائے اور ہر کسی کو اس کے عمل کے مطابق اجر لوٹائے اچھا یا برا جیسا عمل ہو اس کے مطابق۔

آمین۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Bilal Shoukat

Read More Articles by Bilal Shoukat: 7 Articles with 2577 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
03 Nov, 2018 Views: 342

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ