داغ تو اچھے ہوتے ہیں

(Syed Haseen Abbas Madani, Karachi)

سمجھ میں نہیں آتا کہ ہمارے ملک میں یہ بیہودہ باتیں کیوں پھیلائی جا رہی ہیں ہمارا معاشرہ صاف ستھرا مزاج رکھتا تھا جس کو بی بی سی جیسے گھٹیا اداروں نے ہماری روایات کو تباہ کرنا شروع کردیا ہے
اسلام کا بنیادی مقصد امن ہے اور جو کچھ بھی حدودوقیود کا تذکرہ ہے معاشرے کو صاف ستھرا رکھنے کے لئے جس طرح ہم مسلمانوں کو حرام اور حلال کی سمجھ دی گئی ہے یہ کوئی آپشن نہیں ہے نہ کوئی زبردستی ہے ۔کون چاہے گا کہ اس کی اولاد حرام کھا کر کسی مصیبت میں پھنس جائے (حرام در اصل مضر صیحت چیزوں کا نشان ہے )غیر مسلموں کا کیا ہے وہ تو پہلے ہی عقل سے پیدل ہے نہ علم ہے نہ سمجھ ہی انفارمیشن اور علم کے فرق سے ناواقف ہے اور انفارمیشن کے نام پر ہر قسم کا کچرا ہمارے ملک میں بڑی دانشوری کے ساتھ پھینک رہے ہیں دنیا کی جہالت اس قدر بڑھ گئی ہے کہ جنسی تعلیم اور اس کی بے ہودہ پہلوؤں پر لکھنا بڑی دانشمندی سمجھی جانے لگی ہے جس طرح داغ تو اچھے ہوتے ہیں اسی طرح ایچ آئی وی بھی اچھا ہونے لگا کم بختوں نے بیماریوں کو خود پیدا کیا اور ہم جنس پرستی کو آزاد خیالی کا نام دے رہے ہیں جبکہ واضح ہے یا آزاد خیالی نہیں دماغ کی خرابی ہے ؟میں آپ کو بتاتا ہوں کہ یہ عورتوں میں ہم جنس پرستی کیسے پیدا ہوئی یہ ایک بیماری ہے جو عورتوں میں کیمیاوی عدم توازن کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے بلاکیوں ؟ گوروں نے مانع حمل ادویات میں کون سا کمال کیا ہے عورتوں کو مردوں کا ہارمون دے کر جنسی عمل سے پہلے ہی مردوں کا ہارمون کھلا دیتے ہیں یا انجیکٹ کردیتے ہیں تاکہ ہماری نہ ٹھہر سکے جب عورت کو کیمیائی طور پر مرد بنا رہے ہو تو آہستہ آہستہ مردوں کے ہارمون کی مقدار بڑھتے بڑھتے عورت کو کیمیائی طور پر مرد بنا دیتی ہے اگرچہ وہ طبعی طور پر عورتون کے آلات رکھتی ہیں مگر اندرونی اور ذہنی اعتبار سے وہ مرد ہوتی جاتی ہے اور یہ خرابی اس کو ہم جنس پرستی کی طرف لے جاتی ہے تو یہ آزاد خیالی ہے یا دماغ کی خرابی اس طرح جنسی عمل سے پہلے استعمال کرنے پر مردوں کے ہارمون کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ حمل میں اگر لڑکا طے پاتا ہے اور کروموزوم کا ملاپ لڑکے کے لئے ہوتا ہے تو اس ہارمون سے وہ ظائع ہوجاتا ہے اور لڑکی کے کروموزوم ترتیب پاتے ہیں تو یہ حمل کسی صورت میں ضائع نہیں ہوتا یہی وجہ ہے کہ دنیا میں عورتوں کی تعداد بڑھ رہی ہے دوسرا کمال یہ ہے کہ اب یہ بچی اپنی پیدائش ہونے تک کافی حد تک مرد ہو چکی ہے اور اب جب یہ جوان ہوگی تولازمی بانجھ پن کا شکار بھی ہو گی اور اس کا دماغ ہم جنس پرستی کی طرف جائے گا یہی وجہ ہے کہ سنگاپور میں مقامی عورت کے بچے نہیں ہوتے اور جس کو بچوں کی خواہش ہوتی ہے وہ فلپائن کے غیر شہری علاقوں سے شادی کر کے لاتے ہیں شیطان نے پہلے ہی کہہ دیا تھا کہ میں ہر راستے پر بیٹھ کر تیرے بندوں کو بہکاؤں گا تو یہ جنسی بے راہروی کا پری پلان شیطانی منصوبہ ہے اور دانش وراسکو آزاد خیالی بتا رہے ہیں اب امریکہ کی امداد کو لے لیجیے ان کو بڑا دکھ ہے کہ دنیا کی آبادی بڑھ رہی ہے لہذا یہ پوری دنیا کو مانع حمل ادویات کے لیے امداد دیتے ہیں مگر چین نے یہ کیا کہ امداد تو لے لی مگر مانع حمل ادویات اپنی استعمال کیں تو یہ بڑے پریشان ہوئے کیونکہ ایک ہاتھ سےامداد دیتے ہیں اور دوسرے ہاتھ سے اپنے دواوں کے قیمت میں یہ واپس لے جاتے ہیں اور ممالک قرض ہی ادا کرتے رہتے ہیں ہمارے ہی ملک میں دیکھ لیجئے بل گیٹ کو پاستان کی بڑھتی ہوئی آبادی کی بڑی فکر ہے اب میں اپنے ارباب و حل و عقد کی دانش کا کیا کہوں کے ان کو بل گیٹ پر بڑا اعتبار ہے کہ وہ ہمارے ہاں سے ایک تو پولیو ختم کرے گا دوسرے آبادی کم کروائے گا دنیا کہاں پھنچ گئی ہمارے دانش وروں کی عقل ابھی تک 1947سے اگے نہیں بڑھی گوروں کی بے جا پلانگ اور ان پر پر بھروسہ کرنے کی وجہ سے کئی ملک آبادی میں بے حد کمی کا شکار ہوگئے ہیں ان ملکوں کا خاتمہ صرف اس لئے ہو گا کہ ان کے ہاں بچہ ہی ناپید ہے جو بوڑھوں کی جگہ لے سکے دوسری طرف پاکستان بھارت اور بنگلہ دیش سے مزدور مانگا تے ہیں تاکہ کام چل سکے مگر آخر کب تک یکا یک یہ خلا ایسا پیدا ہوگا کہ ملک کی باگ ڈور سنبھالنے کے لئے کوئی بچے گا ہی نہیں

ہالینڈ جس نے ایک زمانے میں تعصب کی حد کردی تھی کہ ساؤتھ افریقہ میں غریبوں کا جینا محال کردیا تھا آخر میں نیلسن منڈیلا کے ہاتھوں سب کچھ کھو دیا اورھالینڈ میں بوڑھے بڑھتے جا رہے ہیں اور بچوں کی تعداد اس قدر کم ہے کہ وہ بھی اپنے بزرگوں کی جگہ پر کرنے کے قابل نہیں نتیجے پر ہالینڈ کی نوآبادیات سےہالینڈ آنے والے سیاہ فام ہی ملک کے اہم عہدوں پر بھی فائز ہو رہے ہیں اور اس طرح تعصب کا بدترین نتیجہ نکلا ہے جاپان بھی آبادی کی بے حدکمی کا شکار ہے اور بچوں کی تعداد اس قدر کم ہے کہ نئی نسل بچے پیدا کرنے میں دلچسپی بھی نہیں لے رہی چونکہ ہم جنس پرستی نے ان کی دماغی صلاحیتوں کو معاف کردیا ہے وہ دن دور نہیں جب جاپان وارث نہ ہونے کی وجہ سے خود بخود ختم ہو جائے گا اور سائنسی حماقت کی وجہ سے اب و بچوں کے بجائے روبورٹ میں اضافہ کر رہے ہیں یا باہر سے آنے والے اس پر قابض ہو جائیں گے شیطان کو بڑی پریشانی یہ ہے کہ کچھ کرلو مسلمانوں کی آبادی کم نہیں ہوتی قطرے پلاو یا کوئی اور بھی دوا دو ًبھائی !یہ بات تمہارے سمجھ میں کیوں نہیں آتی کہ ہم جتنے لوگ بھی نمازیں پڑھتے ہیں ہر دو رکعت میں درود شریف پڑھ کر اپنی آبادی میں برکت کی دعا مانگتے ہیں دنیا میں یہ جو تاثر ہے قدامت پسندی کا اور جدیدیت کا حد درجہ بیوقوفی کا معاملہ ہے وہ سمجھتے ہیں کہ اسلام نے لوگوں کو زبردستی ان کے آزادانہ جینے کے حق سے محروم کر دیا ہے لیکن ایسا نہیں ہے اسلام تو صرف امن چاہتا ہے اور چاہتا ہے کہ اللہ کی مخلوق صحت مند رہے اور دنیا کے فوائد کو انجوائے کریں مگر ان کم بختوں کی وجہ سے دنیا میں بیماری آزاری اور تباہی آماجگاہ بن گئی ہے -

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Syed Haseen Abbas Madani

Read More Articles by Syed Haseen Abbas Madani: 79 Articles with 59882 views »
Since 1964 in the Electronics communication Engineering, all bands including Satellite.
Writing since school completed my Masters in 2005 from Karach
.. View More
16 Jan, 2019 Views: 492

Comments

آپ کی رائے