یہ زندگی وہ زندگی

(Noman Baqi Siddiqi, Karachi)

زندگی گزرتی جا رہی ہے ، موت قریب آرہی ہے ۔ ایک بزرگ کو کہتے سنا کہ جو زندہ ہے وہ تم ہو اور جس کو موت آے گی وہ تم نہیں ہو گے وہ کچھ اور ہی وجود ہو گا لہذا ڈرنے کی ضرورت نہیں ۔
کچھ ایسا کر لیا جاے کہ اٌدھر کام آجاے جہاں جانا ہے اور بہت دن رہنا ہے بلکہ ہمیشہ ہمیشہ۔
کچھ اچھے بول ، کچھ جھکتا تول اور کسی پر کچھ خرچ کر لیا جاے جو اب تک بچا کے رکھا تھا اور کس کے لیے؟
بڑا مشکل کام ہے
لیکن ایک نہ ایک دن تو کرنا ہے کیونکہ ایک دن تو مرنا ہے اور جانے سے پہلے کرنا ہے اور رکھ کر بھی کیا کرنا ہے جب ایک دن مرنا ہے
یہ کیفیت کب تک رہے کچھ کہا نہیں جا سکتا کیونکہ دنیا کے میلے سجنے لگیں گے، ہم ایک دوسرے سے آگے بڑھنے لگیں گے، نئے دانت لگنے لگیں کے پرانے اگر جھڑنے لگیں گے اور میں سوچنے لگوں گا کہ مجھے سانولی سے کتنا پیار ہے اور دولت سے کتنا؟

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 283 Print Article Print
About the Author: Noman Baqi Siddiqi

Read More Articles by Noman Baqi Siddiqi: 206 Articles with 49024 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: