غیرت کے نام پر قتل ایک سنگین جرم

(Raana Kanwal, )

غیرت کے نام پر قتل کو ترقی پذیر اور ترقی یافتہ ممالک میں تقریبا ایک جرم سمجھا جاتا ہے. گزشتہ چند سالوں میں، پاکستان میں جرائم کی روک تھام میں کمی آیی ہےلیکن بعض مہلک جرائم کو حل کرنے میں ناکام رہے ہیں، اور غیرت کے نام قتل ان میں سے ایک ہے. ہر گاؤں اور دیگر علاقوں میں یہ عمل کیا جا رہا ہے. اس مہینے کے آغاز سے تقریبا 5 خواتین اپنے خاندان کے ارکان کی جانب سے غیرت کے نام قتل کا شکار ہوئی ہیں. یہ ایک جرم ہے جو لڑکی کے والد، ماں، بھائی، شوہر اور دوسرے خاندان کے ممبران کی طرف سے کیا جاتا ہے. حالات روزانہ کی بنیاد پر خراب ہو رہے ہیں کیونکہ باپ اپنی بیٹی کو قتل کر رہا ہے، بھائی اپنی بہن کو قتل کر رہا ہے اور شوہر اپنی بیوی کو قتل کر رہے ہیں. یہاں تک کہ ان کے خاندان کے ارکان بھی اپنے پیاروں پر رحم نہیں کر رہے ، اور صرف ایک چھوٹی سی غلطی کے لئے، لڑکیوں کو نام نہاد عزت کے نام سے قتل کیا جاتا ہے.

ان مقدمات کو میڈیا کے ذریعہ روکنے کے لئے نمایاں کیا گیا ہے. لیکن سوشل میڈیا شخصیت قندیل بلوچ کے قتل پرہمارے ملک میں غیرت کے نام پر قتل کے واقعات پر روشنی ڈالی گئی ہے. اندازہ لگایا گیا ہے کہ گزشتہ سال تقریبا 985 غیرت کے نام پر قتل کے مقدمات کی اطلاع دی گئی ہے، ہر روز کم از کم تین خواتین ہلاک ہوئیں. تاہم، کتنے ایسے مقدمات ہیں جو رجسٹر ہی نہیں ہوے. کچھ مقدمات چھوٹے گاؤں رہنے والوں کے ہیں جنکو ڈر کی وجہ سے وہ لوگ درج ہی نہیں کرواتے ، لہذا لوگ ان مقدمات کو رجسٹر کرنے سے ڈرتے ہیں، اور پولیس کبھی بھی ایسے گاؤں میں خود سے نہیں جاتی اور نہ ہی وہاں کے حالات کو معلوم کرنے کی جسارت کرتی ہے. یہاں تک کہ وہ نہیں جانتے کہ یہ گاؤں میں کیا جا رہا ہے.

سوال یہ ہے کہ لوگوں کا غیرت کے نام پر کیوں قتل کرنا ہے؟ جرم کے بعد، زیادہ تر لوگ اسلام کا نام لے لیتے ہیں، لیکن قرآن کریم یا کسی حدیث کی طرف سے ایسی کوئی چیز کی اجازت نہیں ہے. یہاں تک کہ معروف اسلامی علماء نے اس طرح کے قتل کو ایک بڑا جرم قرار دیا ہے. ہمارے ملک میں، ایسی سرگرمیوں میں ملوث ہونا غیر قانونی ہیں مگر اس کے باوجود اس طرح کے واقعات کی شرح میں روز با روز اضافہ ہو رہا ہے. اس کا مطلب یہ ہے کہ خواتین پاکستان میں محفوظ نہیں ہیں، اور ان عناصر نے دنیا بھر میں خواتین کے لئے پاکستان کو ایک خطرناک ملک بنایا ہے. ایک عورت کے لئے سب سے اہم بات یہ ہے کہ عورت کو تعلیم دی جائے اور اسے اس بات کا شعور دیا جائے کے کیا ٹھیک ہے اور کیا غلط اوریہ کہ وہ خود کو کیسے تبدیل کرے. انہیں ثقافت، سماج اور میڈیا کورسز کے ذریعے ان کو معاشرے میں بااختیار بنانے کی ضرورت ہے.

بلاشبہ، میڈیا غیرت کے نام پر قتل کے نقصان دہ اثر کے بارے میں بیداری بڑھانے میں ایک اہم کردار ادا کر رہا ہے. اگر میڈیا اس مسئلے میں اضافہ کررہے ہیں تو، حکومت کی جانب سے ان جرائم کی روک تھام کے لئے کوئی کاطر خواہ اقدام نہ ہونے کی وجہ سے خواتین کو انصاف فراہم نہیں ہو پا رہا خواتین غیرت کے نام پر قتل میں مسلسل مر رہی ہیں، اور ریاست خاموش ہے۔

خواتین کی حفاظت میں حکومت ناکام ہے. یہ معاملات روزانہ کی بنیاد پر ہوتے ہیں، اس کا مطلب یہ ہے کہ ہر سال ایک ہزار خواتین کی زندگی کی حفاظت میں ناکام رہی ہے. پاکستان خواتین کے لئے سب سے خطرناک ملک کی فہرست میں تیسرے درجے پر ہے جہاں خواتین محفوظ محسوس نہیں کرتی ہیں.

غیرت کے نام پر قتل اور خواتین کے خلاف تشدد کے دیگر واقعات میں قتل، بشمول زنا، اغوا، ایسڈ پھینکنے، اور جنسی زیادتی روزانہ کی بنیاد پر اضافہ ہو رہا ہے. خواتین کو زندہ رہنے کے لئے اپنی حفاظت کے لئے یہ واقعی خطرناک ملک بن گیا ہے. پولیس بھی اس جرم کے خاتمے میں ناکام رہی ہے اور مجرمین کو گرفتار کرنے میں ناکام رہے ہیں. اندازہ لگایا گیا ہے کہ 90 فیصد مقدمے کی تحقیقات نہیں کی جا تی ہیں، اس وجہ سے خواتین کو عزت کے نام میں قتل کیا جا رہا ہے.

ان مجرموں سے خواتین کو تحفظ فراہم کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے. ریاست کو ایسے قوانین متعارف کروانے چاہیں جن کے ذریعے ان لوگوں کو سزا دی جا سکے جو اس طرح کے جرائم کرتے ہیں. ایسے شخص کی سزا موت ہونی چاہیں تا کہ آیندہ کوئی ایسا جرم کا سوچے بھی تو اسکو کرنے سے پہلے ڈرے ۔ اس طرح کے اقدامات سے ہے خواتیں اپنے ملک میں آزادی محسوس کر سکتی ہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Raana Kanwal

Read More Articles by Raana Kanwal: 50 Articles with 16066 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
08 May, 2019 Views: 158

Comments

آپ کی رائے