مشکل راستے قسط نمبر 64

(Farah Ejaz, Karachi)

فاطمہ کو وہ دن اچھی طرح یاد تھا جب انہوں نے اپنی حقیقت اپنے شوہر کو بتائی تھی ۔۔۔۔ وہ حقیقت جو صلاح الدین کے تمام گھر والے جانتے تھے ۔۔۔۔۔ اگر نہیں جانتا تھا تو وہ ہی نہیں جانتا تھا ۔۔۔ بے خبر تھا لاعلم تھا ہر اس چیز سے جس کا تعلق فاطمہ سے جڑا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ وہ دن جب صلاح الدین نے ان سے ان کی حقیقت پوچھی تھی ۔۔۔

دیکھئے فاطمہ جن حالات میں ہماری شادی ہوئی وہ آپ کے سامنے ہے ۔۔۔۔۔ لیکن شائد جو آپ جانتی ہیں ان باتوں کو میں نہیں جانتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں تو آپ کو بھی پوری طرح نہیں جانتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پلیز میری بات کا غلط مطلب مت لے لیجئے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ جمال انکل کی بیٹی ہیں لیکن میں نے ان دس سالوں میں صرف اس رات کے علاوہ آپ کو کبھی نہیں دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور نہ جمال انکل سے کبھی آپ کا ذکر سنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر اب کی موجودہ Situation... اچانک شادی اور پھر سب کا پرسرار رویہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا آپ مجھے بتا سکتی ہیں یہ سب کیا ہے اور پھر آپ کا رویہ بھی میری سمجھ سے بالاتر ہے ۔۔۔۔۔۔۔

فاطمہ کے قدم وہیں جم گئے تھے وہ چپ چاپ اسے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر جہاں کھڑی تھی وہیں گرنے کے انداز میں بیٹھ گئی ۔۔۔۔ اور اپنا چہرا دونوں ہاتھوں میں چھپا کر رونے لگی ۔۔۔۔۔۔ وہ گھبرا کر اس کی طرف بڑھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فاطمہ پلیز میرا مقصد آپ کو رلانا نہیں تھا ۔ پلیز

آپ جاننا چاہتے ہیں نا کے اصل حقیقت کیا ہے ۔۔۔۔۔ میں کون ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ کیوں آپ کے سر منڈ دی گئی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ ایک دم سر اٹھا کر تقریباً چلاتے ہوئے بولی تھی ۔۔۔۔

پلیز ہم پھر کبھی اس موضوع پر بات کرلینگے ۔۔۔۔ آپ آآپ ریلیکس کریں ۔۔۔۔۔

نہیں میں اب مزید اس بوجھ کو نہیں اٹھا سکتی ۔۔۔۔ مم میں تھک گئی ہوں ۔۔۔ گلٹی فیلینگس ہوتی ہیں مجھے آپ کو دیکھ کر ۔۔۔۔

وہ رو رہی تھی ۔۔۔۔ آنسوؤں سے بھری آنکھوں میں ایک عجیب سا کرب ہلکورے لے رہا تھا ۔۔۔۔۔ وہ اس کی آنکھوں میں دیکھتے ہوئے بولی تھی ۔۔۔۔۔۔ پھر اپنا سر جھکا کر اپنی گود میں رکھے ہاتھوں کو گھورنے لگی تھی ۔۔۔۔۔ کچھ دیر تو صلاح الدین اس کے بولنے کا انتظار کرتا رہا پھر کمرے سے باہر جانے کے لئے مڑا تھا کہ ۔۔۔۔

مم میں آ آآپ جیسی نہیں ہوں ۔۔۔ میں تو کسی کے بھی جیسی نہیں ہوں ۔۔۔۔ لیکن اس میں میرا کیا قصور ہے ۔۔۔ ممم میں نے تو ایسی زندگی کی خواہش نہیں کی تھی ۔۔۔۔۔ نہ میں جنات جیسی ہوں اور نہ ہی انسانوں جیسی ہوں ۔۔۔۔۔

کک کیا مطلب ۔۔۔۔ میں سمجھا نہیں ۔۔۔۔

وہ اس کے آخری جملے پر چونک اٹھا تھا ۔۔۔۔ اور پلٹ کر اس سے پوچھا تھا ۔۔۔۔۔

تو اس کے چہرے پر ایک غمگین سی مسکراہٹ پھیلی تھی جو وہ اس کے جھکے سر کی وجہ سے دیکھ نہیں سکا ۔۔۔۔۔۔

مم میرے ابو جی کو تو آپ جانتے ہیں لیکن کیا آپ میری حور مما کو جانتے ہیں ۔۔۔۔

نہیں میری ان سے کبھی ملاقات نہیں ہوئی ۔۔۔۔ اور اگر ہوئی بھی ہوگی تو میں بہت چھوٹا تھا ۔۔۔۔۔ اس لئے کچھ یاد نہیں ۔۔۔۔


میری حور مما آدھی جن اور آدھی انسان تھیں ۔۔۔۔ اس لئے میں بھی انسان ہوکر بھی مکمل انسان نہیں ہوں ۔۔۔ ممم میرا وجود ادھورا ہے ۔۔۔۔

وہ حیرت سے اسے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔

کک کیا مطلب ۔۔۔۔

مطلب یہ ہے کہ میں ایک ادھوری انسان ہوں ۔۔۔۔۔ آپ کی طرح نہیں ہوں میں ۔۔۔۔ میں حور مما کی طرح ادھورا انسانی وجود رکھتی ہوں ۔۔۔۔۔ چاہ کر بھی میں ۔۔۔۔ ہاں چاہ کر بھی میں ایک نارمل انسان کی طرح زندگی نہیں گزار سکتی ۔۔۔۔ سنا آپ نے ۔۔۔۔ تسلی ہوگئی آپ کو ۔۔۔۔ میری کڑوی حقیقت کو جان کر ۔۔۔۔۔

جھکا سر اُٹھا کر غصے سے اسے دیکھتے ہوئے بولی تھی ۔۔۔۔ خوبصورت آنکھیں رونے کی وجہ سے سرخی مائل ہورہی تھیں ۔۔۔۔ کچھ پل یونہی کھڑا وہ اسے دیکھتا رہا ۔۔۔۔ پھر کمرے سے باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔ اسے باہر جاتا دیکھ کر فاطمہ نے اپنا چہرا دونوں ہاتھوں میں چھپا کر دوبارہ رونا شروع کر دیا ۔۔۔

×××××××××××××××××

کمرے سے تیزی سے نکلتے صلاح الدین کو زلیخا نے دیکھا تھا ۔۔۔۔ وہ اُلجھا اُلجھا سا لگا انہیں ۔۔۔۔ ماں تھیں تڑپ اُٹھیں ۔۔۔۔ دالان سے تیزی سے گزرتے ۔۔۔۔ داخلی دروازے کی طرف بڑھتے صلاح الدین کو اس کے نام سے پکار ا تھا ۔۔۔۔

صلاھ الدین ! کیا ہوا کہاں جا رہے ہو بیٹا۔۔۔۔

وہ پلٹا تھا ماں کی پکار پر ۔۔۔ اور پھیکی سی مسکراہٹ کے ساتھ انہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔

کچھ نہیں بس ۔۔۔۔ آپ فکر نہ کریں آجاؤنگا جلد ہی ۔۔۔۔

یہ کہہ کر وہ تیز قدموں سے باہر نکل گیا تھا ۔۔۔۔

×××××××××××


بلا مقصد گاڑی دوڑاتا وہ سڑکوں کی خاک چھان رہا تھا ۔۔۔۔ فاطمہ کی حقیقت جان کر بھی دل یقین کرنے کو تیار نہ تھا ۔۔۔۔ ایسی مافوق الفطرت چیزوں سے اس کا پالا پڑا بھی تو جمال شاہ کی پرسرار حویلی ٹائیپ بنگلے میں ۔۔۔۔ مگر وہ بھی فاطمہ سے ملاقات کے بعد ختم ہوگئے تھے ۔۔۔۔ مگر ایک مافوق الفطرت وجود اس کے گھر میں اس کی بیوی کے روپ میں موجود تھا ۔۔۔ جس کی حقیقت اس کے تمام گھر والے ہی جانتے تھے ۔۔۔۔ سوائے اس کے ۔۔۔۔ اسٹیرنگ پر غصے سے اپنا دایاں ہاتھ مارا تھا اور گاڑٰی روک دی تھی ۔۔۔۔ اسے شکواہ فاطمہ سے نہیں اپنے والدین اور اپنی دادو سے تھا ۔۔۔۔ آخر کیوں اسے ہر بات سے لا علم رکھا گیا ۔۔۔ کیوں اسے اعتماد میں نہیں لیا گیا ۔۔۔۔۔ اگر شاہ بابا اسے فاطمہ کی حقیقت بتا دیتے شادی سے پہلے تو کیا وہ انہیں انکار کرتا ۔۔۔۔۔ ہرگز نہیں وہ تب بھی فاطمہ سے شادی کرتا ۔۔۔۔۔ ان کی بات کا مان رکھتا ۔۔۔۔ اور یہی بات اسے اندر سے کچوکے لگا رہی تھی ۔۔۔۔۔ کہ اس کے شاہ بابا نے اس پر اعتبار نہیں کیا تھا ۔۔۔۔ جہاں اس نے گاڑی روکی تھی وہ سڑک سنسان تھی ۔۔۔ مغرب کا بھی وقت ہو گیا تھا ۔۔۔۔ وہ کچھ دیر یونہی گاڑی میں بیٹھا رہا پھر نماز پڑھنے کی غرض سے گاڑی اسٹارٹ کرنے لگا مگر گاڑی اسٹارٹ نہ ہوئی ۔۔۔۔ کافی دیر کوششیں کرتا رہا مگر گاڑی کو اسٹارٹ نہ کرسکا ۔۔۔ آخر تھک ہار کر وہ گاڑی میں رکھی پانی کی بوتل کو اُٹھا کر وضو کی غرض سے باہر نکلنے ہی لگا تھا کہ گاڑی کے سامنے قدرے فاصلے پر کھڑے اس عجیب الخلقت مخلوق پر اس کی نظر پڑی تو گاڑی کا دروازہ کھولتے کھولتے رک گیا اور اس مخلوق کو دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔ جو جسامت کے لحاز سے گدھے کی طرح تھا مگر شکل کسی کتے کی طرح تھی ۔۔۔ رنگ کالا سیاہ ۔۔۔۔ سب سے خوفناک اس کی آنکھیں تھیں جو دیدوں سے باہر ابلی ہوئی سی لگ رہی تھیں ۔۔۔۔۔ زبان سرخ جو سانپ کی طرح اندر باہر کر رہا تھا ۔۔۔۔۔ وہ جو بھی تھا بہت ہی خوفناک تھا ۔۔۔ اس کی نظریں صلاح الدین پر گڑی ہوئی تھیں ۔۔۔۔ وہ اپنی خوفناک آنکھوں سے اسے بہت بری طرح گھور رہا تھا ۔۔۔۔۔۔

**************************

باقی آئندہ ۔۔۔۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 556 Print Article Print
About the Author: farah ejaz

Read More Articles by farah ejaz: 138 Articles with 118195 views »
My name is Farah Ejaz. I love to read and write novels and articles. Basically, I am from Karachi, but I live in the United States. .. View More

Reviews & Comments

Language: