اشتہار

(Muhammad Anwaar, )

نیوز روم میں ایسا سوگ تھا، جیسے میتیں آس پاس ہی پڑی ہوں
تین دوست، تین اکلوتے بیٹے، تین موتیں
کراچی میں ایک بار پھر کرنٹ نے تین زندگیاں نگل لیں
ہر کوئی دکھی دل کے ساتھ بجلی تقسیم کار کمپنی کے لیۓ قلم تیز کر رہا تھا
”کے الیکٹرک کی بے حسی ایک اور جان لے گئی“
"بارشیں کی لاکھوں بوندیں آنسوؤں میں ڈھل گئیں“
ٹی وی اسکرینز بھی غم و غصے سے لال ہونے لگیں...
الفاظ بھی چلا چلا کر شہر میں ماتمیوں کے ساتھ کھڑے ہونے لگے
اتنے میں مارکیٹنگ کی ایک کال نے دکھ کو نفرت میں بدل دیا
ایک سنئیر بولے
"خبر روک دو اشتہار آ گیا ہے“

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 133 Print Article Print
About the Author: muhammad anwaar

Read More Articles by muhammad anwaar: 14 Articles with 1560 views »
H m anwaar, more than 15 years experience of TV journalism. Reporting,scripting, copy editing, idea generation, packaging, assignment, worked with Tel.. View More

Reviews & Comments

Language: