کرب وبلا کی جنگ

(Dr B.A Khurram, Karachi)

کرب وبلا کا یہ واقعہ تاریخ اسلام کا بڑا افسوسناک حادثہ تھا۔ اس واقعہ کی خبر اﷲ نے حضور صلی اﷲ علیہ و آلہ وسلم کو کر دی تھی حضرت محمد صلی اﷲ علیہ و آلہ وسلم نے اپنی زوجہ ام سلمہ رضی اﷲ عنہا کو کچھ مٹی دی تھی اور فرمایا تھا کہ اے ام سلمیٰ جب یہ مٹی سرخ ہو جائے یعنی خون میں بدل جائے تو سمجھ لینا کہ میرا بیٹا حسین شہید کر دیا گیا۔ ایک دن ان کی بیٹی ان سے ملنے گئیں تو آپ زارو قطار رو رہی تھیں۔ پوچھا گیا تو ام سلمہ رضی اﷲ عنہا نے بتایا کہ ابھی رسولِ خدا صلی اﷲ علیہ و آلہ وسلم خواب میں تشریف لائے تھے ان کی آنکھوں سے آنسو بہہ رہے تھے اور آپ کے سرِ انور اور ڈاڑھی مبارک پر مٹی تھی۔ میں نے پوچھا آقا یہ گرد کیسی تو فرمایا کہ اے ام سلمہ ابھی اپنے حسین کے قتل کا منظر دیکھ کر میدانِ کرب وبلا سے آ رہا ہوں جاگنے کے بعد میں نے وہ مٹی دیکھی جو انہوں نے مجھے دی تھی تو وہ خون ہو چکی تھی نواسہ رسول صلی اﷲ علیہ وسلم امام عالی مقام سید الشہدا ء حضرت امام حسین رضی اﷲ عنہ کی شہادت باسعادت کا واقعہ کرب وبلا 61ہجری میں دس محرم الحرام میں ظہور ہوا اسے یوم عشور بھی کہا جاتا ہے مُحرم الحرام اسلامی سال کا پہلا مہینہ ہے محرم کے معنی تعظیم کیا گیا اور حرام کے معنی عظمت والاہے اس روز حق اور باطل کی جنگ تھی جس میں باطل ہمیشہ کے لئے مٹ گیاجبکہ حق کا آج بھی بول بالا ہے یزیدی ٹولہ منہ چھپائے پھر رہا ،قربان جائیں امام عالی مقام سید الشہدا ء حضرت امام حسین رضی اﷲ عنہ کی شہادت کی شان اور غم ابھی تک تازہ ہے روئے زمین پہ اٹھنے والی آزادی کی آواز درحقیقت حسین آواز کی بازگشت ہی تصور کی جائے گی ظلم آخر ظلم ہے جب بڑھتا ہے تو مٹ جاتا ہے مظلوم کی آہ عرش بریں پہ جب جاتی ہے تو پھر ظلم نیست و نابود ہوجاتا ہے کرب وبلا کی جنگ میں اموی خلیفہ یزید اول کی بھیجی گئی فوج نے محمد صلی اﷲ علیہ وسلم کے نواسے حسین ابن علی اور ان کے اہل خانہ کو شہید کیا۔ حسین ابن علی کے ساتھ 72 ساتھی، کچھ غلام، 22 اہل بیت کے جوان اور خاندان نبوی کی کچھ خواتین و بچے شامل تھے حسین ابن علی (امام حسین) محمد صلی اﷲ علیہ و آلہ وسلم کے چھوٹے نواسے اور علی بن ابی طالب و فاطمہ زہرا کے چھوٹے بیٹے تھے ’’حسین‘‘ نام اور ابو عبد اﷲ کنیت ہے۔ ان کے بارے میں محمد صلی اﷲ علیہ و آلہ وسلم کا ارشاد ہے کہ حسین منی و انا من الحسین یعنی’’حسین مجھ سے ہے اور میں حسین سے ہوں‘‘اسلامی سال کا آغاز نو محرم الحرام کے بابرکت مہینہ سے ہوتا ہے اس ماہ میں بہت سی حقیقتیں پنہاں ہیں یوم عاشور میں آسمان اور زمین بنی،حضرت آدم علیہ السلام کی ولادت باسعادت اسی روزہوئی ان سے جو غلطی ہوئی معافی کا روز بھی یہی تھا حضر ت ا برھیم علیہ ا لسلا م کو خلیل ا ﷲ کا لقب کا انعام یوم عاشور کو ملاان کے لئے آگ بھی اسی روز گل وگلزار ہوئی،ہولناک طوفان اور سیلاب سے نجات حضر ت نو ح علیہ ا لسلا م کواسی دن ملی،حضر ت یو سف علیہ ا لسلا م کو اپنے والد حضرت یعقوب علیہ السلام سے ملاقات ، قید سے رہائی اور مصر کی حکومت کا ملنا بھی اسی روز ہوا،حضرت موسی علیہ السلام کو فرعون کے ظلم سے نجات بھی یوم عاشور کو ہی ملی،تورات کا نزول بھی اسی روز ممکن ہوا، حضر ت ا یو ب علیہ ا لسلا م کو شفایابی اور حضر ت سلیما ن علیہ السلا م کو با د شا ہت کی واپسی کا دن بھی دس محرم الحرام تھاحضرت عیسی علیہ السلام کی پیدائش و دنیا سے اٹھایا جانا بھی اسی روز ہوا ،حضر ت یو نس علیہ ا لسلا م کی قو م کی تو بہ اور مچھلی کے پیٹ سے نجات کا واقعہ اسی روز سرانجام پایا،ہمارے پیارے نبی آقاجی محمد صلی اﷲ وعلیہ وسلم کا پہلا نکاح مبارک حضرت خدیجہ سے اسی روز ہوا،امام عالی مقام سیدنا امام حسین رضی اﷲ عنہ کی شہادت بھی دس محرم کو ہوئی دنیا میں پہلی باران رحمت کا ظہور بھی اسی روز ہوا۔ابو قتادہ ؓ کی حدیث کا مفہوم ہے رسولؐ اﷲ دس محرم یعنی عاشورہ کا روزہ رکھتے تھے اس سے انسان کے گذشتہ سال کے گناہ اﷲ معاف فرما دیتا ہے ایک دوسری حدیث میں حضرت ابن عباس ؓ سے روایت ہے رسول ؐ اﷲ جب مدینہ تشریف لائے تو پتہ چلا یہود عاشورہ کا روزہ رکھتے تھے آنحضور اور خلفائے راشدین نے جو اسلامی حکومت قائم کی اس کی بنیاد انسانی حاکمیت کی بجائے اﷲ تعالٰی کی حاکمیت کے اصول پر رکھی گئی۔ اس نظام کی روح شورائیت میں پنہاں تھی اسلامی تعلیمات کا بنیادی مقصد بنی نوع انسان کو شخصی غلامی سے نکال کر خداپرستی، حریت فکر، انسان دوستی، مساوات اور اخوت و محبت کا درس دینا تھا۔ خلفائے راشدین کے دور تک اسلامی حکومت کی یہ حیثیت برقرار رہی یزید ی حکومت کے رفقاء نے نواسہ رسول کو میدانِ کربلا میں بھوکا پیاسا رکھ کر جس بے دردی سے شہید کرکے ان کے جسم اور سر کی بے حرمتی کی گئی۔ یہ اخلاقی لحاظ سے بھی تاریخ اسلام میں اولین اور بدترین مثال تھی حضرت امام حسن بن علی سے امیر معاویہ نے کسی کو خلیفہ نامزد نہ کرنے کامعاہدہ کیا تھا مگر حضرت امیر معاویہ نے یزید کو اپنا جانشین نامزد کرکے شخصی حکومت کا جواز پیدا کرتے ہوئے دین کی خلاف ورزی کی تھی ابھی تک سرزمین حجاز میں ایسے کبار صحابہ اور اکابرین موجود تھے جنہوں نے براہ راست نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم کا دور دیکھا تھا۔ لہذا ان کے لیے امیر معاویہ کی غلط روایت قبول کرنا ممکن نہ تھا۔یزید نے تخت نشین ہونے کے بعد حاکم مدینہ ولید بن عقبہ کی وساطت سے امام حسین رضی اﷲ عنہ سے بیعت طلب کی ولید نے سختی سے کام نہ لیا لیکن مروان بن الحکم بزور بیعت لینے کے لیے مجبور کر رہا تھا امام حسین رضی اﷲ عنہ نے ان ہی اصولوں کی خاطر یزید کی بیعت قبول کرنے سے انکار کر دیا ان حالات میں حضرت امام حسین رضی اﷲ عنہ نے سفر مکہ اختیار کیا ا ور وہاں سے اہل کوفہ کی دعوت پر کوفہ کے لیے روانہ ہوئے سینکڑوں خطوط لکھ کر امام عالی مقام کو کوفہ بلایا گیا لیکن غدار اہل کوفہ نے ان سے غداری کرتے ہوئے ساتھ دینے سے انکاری ہو گئے یزید کی بھیجی ہوئی افواج نے کربلا میں نواسہ رسول امام حسین رضی اﷲ عنہ کو ان کے اہل خانہ اور اصحاب کو شہید کر دیا امام عالی مقام حضرت امام حسین اور ان کے پیروکارہمیشہ کے لئے امر ہوگئے شاہ است حسین بادشاہ است حسین، واقعہ کرب و بلا عالم اسلام کے لئے سبق آموز ہونے کے ساتھ ساتھ مشعل راہ ہے امام حسین نے جس پامردی اور صبر سے کربلا کے میدان میں مصائب و مشکلات کو برداشت کیا وہ حریت، جرات اور صبر و استقلال کی لازوال داستان ہے باطل کی قوتوں کے سامنے سرنگوں نہ ہو کر آپ نے حق و انصاف کے اصولوں کی بالادستی، حریت فکر اور خدا کی حاکمیت کا پرچم بلند کرکے اسلامی روایات کی لاج رکھ لی یوم عاشور کو حق و باظل کے درمیان جو جنگ ہوئی اس میں یزیدی قوتوں کے بت پاش پاس ہوگئے ۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 78 Print Article Print
About the Author: Dr B.A Khurram

Read More Articles by Dr B.A Khurram: 465 Articles with 139908 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ