نیوزی لینڈ میں آتش فشاں پہاڑ پھٹ پڑا، پہاڑ کے قریب درجنوں افراد موجود

نیوزی لینڈ کا وائٹ آئی لینڈ نامی آتش فشاں پہاڑ اتوار اور پیر کی درمیانی شب اچانک پھٹ گیا۔ واقعے کے وقت کم از کم 50 سیاح اطراف میں موجود تھے۔ وائٹ آئی لینڈ میں آتش فشاں پھٹنے کا یہ دوسرا واقعہ ہے۔ اس سے قبل 2016 میں آتش فشاں پھٹا تھا۔ حکام کے مطابق آتش فشاں پھٹنے کے نتیجے میں کم از کم ایک شخص ہلاک ہو گیا اور 20 لاپتا ہیں۔ زخمی ہونے والے سیاحوں کو قریبی اسپتالوں میں منتقل کر دیا گیا ہے۔
 

وائٹ آئی لینڈ نیوزی لینڈ کا سب سے متحرک آتش فشاں پہاڑ ہے جس کا 70 فی صد حصہ زیرِ سمندر واقع ہے۔ ہر سال تقریباً 10 ہزار سیاح اسے دیکھنے آتے ہیں۔
 
پولیس حکام کے مطابق واقعہ مقامی وقت کے مطابق رات دو بج کر 11 منٹ پر پیش آیا جس کے فوری بعد علاقے کو سیاحوں سے خالی کرالیا گیا۔ بیشتر کو کشتی کے ذریعے پہاڑ سے دور منتقل کیا گیا ہے۔
 
ایک محتاط اندازے کے مطابق واقعے کے وقت پہاڑ کے قریب 50 افراد موجود تھے۔ شہر کے میئر جوڈی ٹرنر کا کہنا ہے کہ ایمرجنسی سروسز ہر ممکن طور پر لوگوں کو آئی لینڈ سے باہر نکالنے اور اُنہیں علاج کی غرض سے اسپتالوں میں منتقل کرنے کا کام انجام دے رہی ہیں۔
 
نیشنل ایمرجنسی مینجمنٹ ایجنسی کا کہنا ہے کہ سفید راکھ کی ایک موٹی تہہ کئی میل دور سے ہی دیکھی جاسکتی ہے۔
 
نیوزی لینڈ کا سب سے متحرک آتش فشاں 'وائٹ آئی لینڈ' کو دیکھنے ہر سال تقریباً 10 ہزار سیاح آتے ہیں۔
 
سینٹ جان ایمبولینس کے اہلکاروں کا کہنا ہے کہ واقعے میں کم از کم 20 افراد زخمی ہوئے ہیں تاہم طبی عملے کی جانب سے اس دعوے کی تصدیق نہیں ہوسکی۔
 
وائٹ آئی لینڈ میں آتش فشاں پھٹنے کا یہ دوسرا واقعہ ہے۔ اس سے قبل 2016 میں آتش فشاں پھٹا تھا۔
 
زخمی اور متاثرہ افراد کو اسپتالوں اور محفوظ مقامات پر منتقلی کی غرض سے ہیلی کاپٹرز، کشتیوں اور طیاروں سے مدد لی جارہی ہے۔
 

Partner Content: VOA
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 1275 Print Article Print
 Previous
NEXT 

YOU MAY ALSO LIKE:

Most Viewed (Last 30 Days | All Time)

Comments

آپ کی رائے
Language: