درد_زندگی - قسط_نمبر_09

(Aiman Shah Bangash, Islamabad)

حیا ہوش میں آیئ تو خود کو ایک اجنبی کمرے میں پا کر حیران و پریشان ہو گئی ۔۔۔۔۔

اٹھ کے دروازہ کھولنے کی بہت کوشش کی لکین کامیاب نہ ہو سکی ۔۔۔۔

کوئی ہے پلز ہیلپ میں ۔۔۔میں یہاں بند ہو گئی ہوں ۔۔۔
پلز دروازہ کھولے ۔۔۔۔

آخر میں تھک کے واپس اکے بیڈ پے بیٹھ گئی ۔۔۔۔

رونے کی وجہ سے اس کی آنکھیں سرخ ہو گئی تھی ۔۔۔۔

ابھی بھی اپنا چہرہ ہاتھوں میں چھپا کے وہ رو رہی تھی ۔۔۔
کے دروازہ کھولنے کی آواز آیی ۔۔۔

حیا نے دروازے کی طرف دیکھا تو سمیر دروازہ لاک کرتے ہوئے اندر داخل ہوا ۔۔۔

تم ۔۔۔!! یہ کیا کر رہے ہو دروازہ کیوں لاک کیا ۔۔۔۔

حیا دروازہ کھولنے کی کوشش کرتے ہوئے سمیر سے بولی ۔۔۔۔

تبھی سمیر نے اس کا ہاتھ پکڑ کے اس کو دوبارہ بیڈ پے دھکا دیا ۔۔۔۔

دیکھو میرے پاس بھی مت آنا ۔۔۔جان سے مار دونگی تمہیں ۔۔۔۔

حیا بیڈ سے اٹھتی ہوئی سمیر سے بولی ۔۔۔۔

مس حیا۔۔۔۔!! ابھی اتنے برے دن بھی نہیں ہیں میرے ۔۔۔۔

معافی مانگو اور جاؤ یہاں سے پھر ۔۔۔۔

سمیر سوفے پے بیٹھ کے ایک ٹانگ دوسری ٹانگ کے اوپر رکھتے ہوئے بولا ۔۔۔۔

معافی میں ۔۔۔جیا نے تو بتایا تھا کے آپ مجھ سے معافی مانگنا چاھتے ہیں اس لئے آپ نے مجھے یہاں انوائٹ کیا ۔۔۔۔

حیا معصوم سی شکل بنا کے کہنے لگی ۔۔۔

ہاہاہاہا ۔۔۔۔۔جس پر سمیر ہنسنے لگا ۔۔۔۔

تم اتنی معصوم ہو یا میرے سامنے ڈرامے کر رہی ہو ۔۔۔۔

سمیر حیا کے پاس اکے اس کے کان میں سرگوشی کرتے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔

میں نہیں مانگنے والی معافی سمجھے تم ۔۔۔۔اب حیا اسے کھا جانے والی نظرو سے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔

ہاہا ۔۔۔۔اس کا مطلب تم یہاں سے جانا نہیں چاہتی ۔۔۔

ٹھیک ہے پھر بیٹھی رہو یہی میرے کمرے میں ۔۔۔

سمیر بیڈ پے اکے لیٹ گیا ۔۔۔۔

میں یہاں نہیں رہونگی پلز جانے دو مجھے ایک بار پھر حیا رونے لگی ۔۔۔۔۔

اس کو روتے ہوئے دیکھ کے سمیر غصے میں اٹھا ۔۔۔۔۔ اور اس کا ہاتھ پکڑ کے اسے اپنے قریب کیا ۔۔۔۔۔

رونا بند کرو ۔۔۔۔کیا کہا میں نے سمجھ نہیں آرہی تمہیں بلکل چپ۔۔۔

جب یہاں سے جانا چاہتی ہو تو سوری بولو اور جاؤ ۔۔۔۔

حیا اب بے بس ہو گئی تھی اس کے پاس اور کوئی آپشن نہیں تھا ۔۔۔۔

یہاں سے باہر جانے کا اب یہی ایک تریکا تھا ۔۔۔۔۔

اس سے ہار ماننی ہی پڑھی ۔۔۔۔اور دل ہی دل میں جیا پے غصہ تھی کے وہ اس کو یہاں کیوں لائی ۔۔۔۔۔

کیا ہوا دل نہیں کر رہا یہاں سے جانے کو ۔۔۔۔۔سمیر اس کے چہرے سے بال ہٹاتے ہوئے بولا ۔۔۔۔

جس سے وہ اپنی خیالو کی دنیا سے باہر آئ ۔۔۔۔۔

سوری ۔۔۔!! دانتوں میں ہونٹ چبا کے بولی ۔۔۔۔۔

کیا میں نے سنا نہیں وہ اپنی انگلیوں کے پوروں سے نرمی سے حیا کے گال کو چھوتا ہوا بولا ۔۔۔۔

آیی سیڈ سوری ۔۔۔۔۔!! حیا اس کا ہاتھ جھٹک کر بولی ۔۔۔۔

ایک بار پھر بولو سمیر حیا اور قریب اتے ہوئے بولا ۔۔۔۔

سوری ۔۔۔آب جانے دے مجھے ۔۔۔۔حیا دروازے کا لاک دوبارہ کھولنے کی کوشش کرتے ہوئے بولی ۔۔۔۔

تبھی سمیر نے اس کے ہاتھ کے اوپر اپنا ہاتھ رکھا ۔۔۔۔۔

یہ کیا کر رہے ہو تم ۔۔۔۔۔حیا اس کو اسے دیکھ رہی تھی جیسے نظرو سے ہی کھا جائے گی اسے۔۔۔۔

لاک کول رہا ہو آب تم پیچھے ہوگی تو کھولے گا نہ ۔۔۔۔۔

سمیر نے دروازہ کھولا تو حیا کمرے سے باہر چلی گئی ۔۔۔۔

سمیر آج بہت خوش تھا کیوں کے اس نے اپنا بدلہ لیا ۔۔۔۔۔

حیا ۔۔۔۔تم کہا تھی یار کب سے تمہیں ڈھونڈ رہی تھی سمیر نے تم سے مافی مانگ لی نہ ۔۔۔۔جیا حیا کو دیکھ کے ایک ساتھ ہی سوال پوچنے لگی ۔۔۔۔

تبھی حیا نے اسے غصے سے دیکھتے ہوئے پوری بات بتائی۔۔۔۔

تو وہ بھی حیران ہو گئی کے سمیر نے انہیں بیوقوف بنایا ۔۔۔۔

حیا ہمیں یہاں سے چلنا چاہییں جیا حیا کا ہاتھ پکڑ کے اسے وہاں سے لے جانے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔۔۔

تبھی حیا اسے اپنا ہاتھ چھڑوا کے کہنے لگی ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے ۔۔۔۔۔

آب اتنا آ ہی گئے ہیں تو اتنی جلدی کیا ہیں جانے کی ۔۔۔۔۔

جیا پریشان نظرو سے اسے دیکھ رہی تھی حیا کیا چل رہا ہیں تیرے ذہن میں ۔۔۔۔؟جیا اسے پوچنے لگی ۔۔۔۔

یار آب بتاؤں تو مزا کیا ایگا ۔۔۔۔تم بس دیکھتی جاؤ ۔۔۔۔

( ناول :- جاری ہے )

امید ہے آپ کو آج کی بھی ایپیسوڈ پسند آیی ہوگی ۔۔۔ناول کی ایپیسوڈ پوسٹ نہیں ہو سکی صبح ۔۔۔۔کل سے مجھے بہت تیز ٹمپریچر ہے اپنی دعا و میں یاد رکھنا خوش رہے سب ۔۔۔۔۔ !!
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 156 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Aiman Shah Bangash

Read More Articles by Aiman Shah Bangash: 14 Articles with 3437 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: