درد_زندگی - قسط_نمبر_11

(Aiman Shah Bangash, Islamabad)

حیا کی آج یو نی کی چھٹی چ تھی ۔۔۔۔حیا کی آنکھ کھلی ۔۔۔۔تو اس نے اپنے موبائل میں جیا کی مس کال دیکھی ۔۔۔۔۔۔

اس نے جیا کا نمبر ڈائل کیا ۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔۔!! السلام عليكم ۔۔۔!!
وعلیکم السلام ۔۔۔میری جان !!

کیا حال ہے ؟ جیا نے بہت پیار سے پوچھا ۔۔۔۔

الحمداللہ ۔۔۔۔!!

تم سناؤ کال کی تھی خیریت آب حیا نے ڈائریکٹ کام کی بات پوچھی ۔۔۔؟

ہاں میں نے بس اتنا کہنا تھا۔۔۔۔کے تم نے کل سمیر کے ساتھ بلکل اچھا نہیں کیا ۔۔۔۔۔

تم جانتی نہیں ہو اسے ۔۔۔وہ بدلہ نہیں چھوڑتا ۔۔۔۔

خوب جانتی ہوں اسے امیر زادو کو ۔۔۔۔حیا جیا کی بات کاٹتے ہوئےتیزی سے بولی ۔۔۔۔

یونیورسٹی بھی صرف باپ کا پیسہ خراب کرنے اتے ہیں۔۔۔۔

یار جو بھی کہو تم ۔۔۔وہ ایک زہین لڑکا ہے ۔۔۔۔اور زیادہ تر لوگ اسے ڈرتے بھی ہے ۔۔۔۔۔

جیا حیا کو سمجھانے کی خوب کوشش کر رہی تھی ۔۔۔۔

افففف OMG سمیر سمیر ۔۔۔۔تمہیں تو سمیر پے کتاب لکھنی چاہیے تم تو ریسرچر ہو پوری ۔۔۔۔

آب حیا نے چھیڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔

یار میں تو بس اتنا کہ رہی تھی کے سمیر ۔۔۔۔

پلز بس آب مجھے اس کے بارے میں کوئی بات نہیں کرنی نہ ہی کچھ جاننا ہے جتنا جان گئی اسے کافی ہے وہ ۔۔۔۔

آب میں ناشتہ کرتی ہوں
ٹک کیئر ۔۔۔۔۔۔۔

اوکے میری جان ٹک کیئر ٹو ۔۔۔۔

گڈ مارننگ بابا ۔۔۔گڈ مارننگ ماما ۔۔۔۔۔حیا آب ناشتہ کرنے لگی ۔۔۔۔

ناشتے کے ٹیبل پے بلکل سناٹا تھا ۔۔۔

حیا آج تمہاری خالہ اور شہری آرہے ہیں اچھے سے تیار ہونا ۔۔۔۔تبھی فلک الیان نے بات کر کے خاموشی تھوڑی ۔۔۔۔۔

ماما لیکن کیوں ۔۔۔؟؟حیا ماما ، بابا کو حیران نظرو سے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔

بیٹا وہ رشتے کے لئے آرہے ہیں۔۔۔۔تمہیں دیکھنے ۔۔۔۔۔

واٹ ۔۔۔بابا آپ سن رہے ہیں نہ ماما کیا کہ رہی ہے ۔۔۔۔

ہاں گڑیا آپ کی ماما بلکل سہی فرما رہی ہے ۔۔۔۔الیان ايد نے پیار سے بیٹی کو جواب دیا ۔۔۔۔

نہیں بابا میں آپ لوگوں کو چھوڑ کے کبھی نہیں جاؤنگی ۔۔۔۔آب تو میرے علاوہ کوئی نہیں ہے جو آپ لوگوں کا خیال رکھے ۔۔۔۔۔حیا آنسوؤں صاف کرتے ہوئے بولی ۔۔۔۔

میری جان جانا تو سب نے ہے ایک نہ ایک دن اپنے گھر ۔۔۔۔

تو تم بھی جاؤگی نہ ۔۔۔۔

ہماری فکر نہ کرو بس جلدی سے پپیرس ہو جائے پھر شادی کی ڈیٹ بھی فکسڈ کر لیتے ہیں ۔۔۔

لیکن بابا ۔۔۔۔۔

بیٹا آب ناشتہ کرو ۔۔۔بس ۔۔۔الیان ايد حیا کی بات کاٹ تھے ہوئے بولے ۔۔۔۔۔۔

**ناشتے کے بعد شہری کی فیملی آیی اور انہوں نے ایک مہینے کے بعد حیا اور شہری کی شادی کرنے کی فرمائش کی ۔۔۔۔۔

جس پر الیان اید اور فلک الیان مان گئے ۔۔۔۔۔

حیا ایک بہت اچھی فارمابردر بیٹی تھی ۔۔۔۔۔

پڑی ،علی اور فاطمہ کے جانے کے بعد حیا کے ماما ، بابا بہت اداس رہتے تھے ۔۔۔۔

اور حیا ان کو مزید کوئی دکھ نہیں دینا چاہتی تھی ۔۔۔۔
اسلئے مان گئی ۔۔۔۔

الیان اید اور فلک الیان دونوں آج بہت خوش تھے ۔۔۔۔۔

**
مناہل کیا ابھی تک حیا یونی نہیں آیی ۔۔۔۔

اویس نے مناہل کے پاس اتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔

اویس سمیر کا دوست تھا ۔۔۔ 25 سال کا ایک خوبصورت خوبرو نوجوان تھا ۔۔۔۔

جس نے بال کو جیل کی مدد سے سیٹ کر رکھا تھا ۔۔۔اس کی خومار الوداع آنکھیں جو اس کی خوبصورتی میں اور اضافہ کر رہی تھی ۔۔۔۔۔

مناہل بھی حیا کی یونی کی دوست تھی ۔۔۔لکین وہ حیا ،جیا ،نینا تینو سے مختلف تھی ۔۔۔۔

ہر کیسی پے بھروسہ کرتی تھی ۔۔۔۔اور اویس سے بے_حد محبّت کرتی تھی ۔۔۔۔

حیا کے بہت سمجھانے کے باوجود بھی وہ اویس سے دور نہیں ہوئی ۔۔۔۔

نہیں ابھی تک نہیں آیی ۔۔۔مناہل اس کے پاس اتے ہوئے بولی ۔۔۔۔

یہ کیا میری کوئی فکر نہیں تمہیں اتے ہی حیا کا پوچھا خیریت تو ہے نہ ۔۔۔۔

مناہل اویس کے قریب پہنچ چکی تھی ۔۔۔۔۔

کیا میں یہ سمجوں کے تم مجھ سے پیچھا چھڑوا رہے ہو ۔۔۔۔

اور مجھے بلکل بھی امید نہیں تھی کے تم اتنی جلدی سمجھ جاؤگی ۔۔۔۔

اویس مسکراتے ہوئے بولا ۔۔۔

میں تمہاری گرل فرینڈ ہوں تو تم کیا مجھے دھوکہ دوگے ۔۔۔
مناہل غصے سے پوچنے لگی ۔۔۔

کیا میں نے ایک دفع بھی تمہیں گرل فرینڈ مانا تھا یا کہا تھا کے تم سے شادی کرونگا ۔۔۔۔۔

اویس کو شاید اس گفتگو میں کوئی دلچسپی نہیں تھی ۔۔۔اسلئے اسکی نظریں بار بار ادر ادر بھٹک رہی تھی ۔۔۔۔

مانا نہ بھی ہو ہمارا تعلق تو ویسا ہی تھا نہ ۔۔۔۔

مناہل آنکھوں سے آنسوں صاف کرتے ہوئے بولی ۔۔۔۔

تو تم کیا مجھ سے محبّت نہیں کرتے ۔۔۔؟وہ اویس کا ہاتھ پکڑ تے ہوئے پوچنے لگی ۔۔۔۔

او کم ان یار ۔۔۔!! میں کوئی محبّت نہیں کرتا تم سے اویس مناہل سے اپنا ہاتھ چھڑواتے ہوئے بولا ۔۔۔۔

تم میرے ساتھ ایسا نہیں کر سکتے ۔۔۔۔مناہل کالر پکڑتے ہوئے آب رونے لگی ۔۔۔۔

ہاہا اویس سب کچھ کر سکتا ہے ۔۔۔وہ اسے اپنا کالر چھڑا کے کلاس سے باہر چلا گیا ۔۔۔۔۔

مناہل کے تو تن بدن میں جیسے اگ لگ گئی تھی ۔۔۔۔

وہ آب بھی رو رہی تھی ۔۔ہاو ڈیر یو اویس ۔۔۔

میں تمہیں معاف نہیں کرونگی ۔۔۔۔
***

کیا ہوا تم ٹھیک ہو حیا کلاس میں آیی تو مناہل کو اسے روتے ہوئے دیکھ کے پریشان ہو گئی ۔۔۔۔

ا ا ا ۔۔۔اویس نے مجھے چھوڑ دیا وہ مجھ سے پیار نہیں کرتا .....

وہ حیا کے گلے لگتے ہوئے رونے لگی ۔۔۔۔

میری جان رونا بند کرو ۔۔۔۔
حیا اس کے آنسوؤں صاف کرتے ہوئے بولی ۔۔۔۔

بہت آسان ہے تعلقات ختم ہونے پر کسی کو بلاک کرنا کسی کی تصویریں مٹا دینا، پتہ ہے مشکل کیاہے؟

کسی کی یادوں سے خود کو آزاد کرنا، اس حصار سے نکالنا بہت مشکل ہوتا ہے جو حصار کسی کے چھوڑ جانے سے خود بخود بن گیاہو۔ اور سب سے مشکل پتہ کیا ہوتا ہے؟

روٹھنا ماننا الگ بات ہے اذیت یہ ہوتی ہے کہ آپ سے جدا
ہوا۔۔۔۔۔۔

نہیں میری جان ادر دیکھو میری بات غور سے سنو حیا اس کا چہرہ اپنے طرف کرتے ہوئے اسے پیار سے سمجھانے لگی ۔۔۔۔

آپکا رونا، آپکا اداس ہونا، آپ کی محبت، جذبے اتنی غیر اہم نہیں کہ ایک انسان کے پیچھے ضائع کریں۔۔

مانا کہ یہ تکلیف برداشت کرنا مشکل ہوتی ہے مگر وقت گزرنے کے ساتھ کم ہوتے ہوتے ختم ہو ہی جاتی ہے صاحبہ!

شرط یہ ہے کہ سوچوں پر قابو ہو۔۔۔
آپکی شخصیت کوئی گِری پڑی شے نہیں ہے کہ کوئی آپ کو چھوڑے، بھول جائے آپ سے کھیلے پھر بھی آپ اس کے پیچھے پیچھے لپکیں۔

آپ اپنے جذبوں کو پہلے اہمیت دیں گے،

تبھی کوئی دوسرا دے گا۔۔۔۔!!!!!
لیکن ایسے کمزور بنیں گے تو روتے رہیں گے،

پیچھے رہ جائیں گے، بے قدرے ہوجائیں گے۔۔۔!!!!

اس لئے اٹھیں مسکرائیے، اور خود کو بدلنے کی کوشش
کریں تا کہ کچھ لوگوں کو 'پچھتاوے' کے مستقل مرض
میں مبتلا کر سکیں ۔۔۔!!!!!!

( ناول :- جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 162 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Aiman Shah Bangash

Read More Articles by Aiman Shah Bangash: 14 Articles with 3438 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: