زيادہ چائے پینے والوں کے لیے وارننگ، ان کے ساتھ ایسا بھی ہو سکتا ہے!


پاکستان کا شمار دنیا بھر میں زيادہ چائے استعمال کرنے والے ممالک میں ساتویں نمبر پر ہوتا ہے۔ پاکستان میں چائے پینے کے لیے کسی موسم اور کسی وقت کی قید نہیں ہے یہ وہ مشروب ہے جو کبھی بھی کہیں بھی پیا جاتا ہے- عام طور پر چائے کے عادی افراد دن بھر میں دو کپ سے لے کر بیس کپ تک چائے روزانہ پیتے ہیں اور ہر بار چائے پی کر چاک و چوبند ہو جاتے ہیں- مگر اتنی زیادہ مقدار میں چائے کا استعمال ان کے بہت ساری خطرناک بیماریوں میں مبتلا ہونے کا سبب بھی بن سکتا ہے جن کے بارے میں ہم آپ کو آج بتائيں گے-

1: دانتوں پر دھبے پڑ جانا
چائے ایک رنگ دار مشروب ہے اور اس کو پینے والے ہر دفعہ اس کو پینے کے بعد دانت صاف نہیں کرتے ہیں- اس وجہ سے اس کا پیلا رنگ دانتوں کا حصہ بن جاتا ہے اور ایک وقت ایسا بھی آتا ہے جب کہ یہ پیلا رنگ دانتوں کا مستقل مکین بن جاتا ہے جو کہ زیادہ چائے پینے والوں کی نشانی بن جاتا ہے-

2: آئرن کی کمی
آئرن ہمارے جسم کا ایک لازمی جز ہے اور یہ خون کے سرخ ذرات کی تیاری کے لیے بہت ضروری ہوتا ہے جس کی ضرورت آئرن سے بھرپور غذا کے استعمال سے پوری کی جا سکتی ہے- مگر اس غذا کے ساتھ اگر چائے کا استعمال کیا جائے تو چائے آئرن کو جسم کا حصہ نہیں بننے دیتی اور اس کے جسم میں ائرن کی کمی واقع ہو سکتی ہے-
 


3: بھوک کا ختم ہو جانا
چائے ویسے تو اپنے اندر کسی حد تک غذائیت بھی رکھتی ہے مگر وہ جسم کی تمام ضروریات کی تکمیل نہیں کر سکتی ہے- مگر زیادہ چائے کا استعمال معدے پر ایسے اثرات مرتب کرتا ہے جس کے سبب بھوک لگنا بند ہو جاتی ہے اور انسان کا معدہ ٹھیک سے کام نہیں کر سکتا ہے-

4: پروسٹیٹ کینسر کا خطرہ
بہت زیادہ چائے پینے والے مرد حضرات کو کم چائے پینے والے افراد کے مقابلے میں پروسٹیٹ کینسر کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے اور یہ بھی چائے کے بدترین اثرات میں سے ایک ہے-

5: دل کے دورے کے خطرات
چائے کا ایک جز کیفین بھی ہوتا ہے جو کہ بلند فشار خون کا باعث بنتا ہے اور اس کا براہ راست اثر انسان کے دل اور اس سے جڑی شریانوں پر پڑتا ہے جس کے سبب دل کے دورے کے خطرے میں اضافہ ہو سکتا ہے-

6: بے خوابی کا باعث بنتی ہے
چائے کے عادی افراد کے خون میں کیفین کی مقدار بڑھنے کے سبب جسم کے ہارمونل نظام پر اثر پڑتا ہے- جو کہ اس کو بے چینی ، اور کم خوابی میں مبتلا کر سکتے ہیں ایسے افراد کی نیند نارمل افراد کے مقابلے میں کافی کم ہو جاتی ہے-
 


7: ابارشن کے خطرات بڑھ جاتے ہیں
حاملہ مائیں اگر بہت زیادہ چائے کا استعمال کریں تو خون میں کیفین کی مقدار میں زیادتی کے سبب کوکھ میں موجود بچے کی نمو متاثر ہوتی ہے اور حمل کے اسقاط کے خطرات میں اضافہ ہو جاتا ہے-

8: قبض کا باعث ہوتی ہے
چائے کے اندر ایک جز تھیوپائلین موجود ہوتا ہے جو کہ نظام انہضام میں موجود پانی کو جذب کر لیتا ہے- جس کے سبب قبض کی شکایت پیدا ہو جاتی ہے اور رفع حاجت میں سخت تکلیف ہوتی ہے جس کی وجہ سے بواسیر کا خدشہ بھی ہو سکتا ہے-

9: خون میں شکر کی مقدار بڑھ جاتی ہے
بہت زیادہ چائے پینے والے افراد چائے میں چینی شامل کرتے ہیں جس کے سبب ہر ایک کپ کے ساتھ خون میں چینی کی مقدار بھی بڑھ جاتی ہے جو کہ جسم کے لیے مسائل کا سبب بنتی ہے اور ذیابطیس جیسی خطرنا ک بیماری کا با‏عث بن سکتی ہے-

10 : اخراجات میں اضافے کا سبب
چائے گھر کے بجٹ میں ایک ایسا خرچہ ہے جس کا کوئی فائدہ نہیں ہوتا اس کے باوجود پتی ۔ چینی اور دودھ کی مد میں ایک بڑے خرچے کا باعث بنتی ہے -

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 58271 Print Article Print
 Previous
NEXT 

YOU MAY ALSO LIKE:

Most Viewed (Last 30 Days | All Time)

Comments

آپ کی رائے
السلام علیکم
میرے محترم آپ کی یہ معلومات بلکل غلط ہے اس میں کوئی صداقت نہیں ہے۔
ڈاکٹر چارلس ایک دن میں چالیس کپ چاۓ پیا کرتے تھے اور صحت مند زندگی گزاری۔
By: Ch Fazal Rehman, Karachi on Dec, 26 2019
Reply Reply
1 Like
Language: