لہسن کے فوائد٬ سونے کے بھاؤ ملے تو بھی ضرور کھائیں

 
قدرت نے انسانوں کو کھانے کے لیے لاتعداد نعمتیں عطا کی ہیں جو بہت سے امراض میں آب حیات کا کام کرتی ہیں۔ ان ہی میں لہسن کا شمار ہے۔ حفظان صحت کے اصولوں کا دشمن انسان‘ مختلف ذرائع سے اپنی بربادی کو خود دعوت دیتا ہے لیکن لہسن ہے کہ تنہا انہیں تندرستی سے لطف اندوز ہونے کے مواقع فراہم کرتا ہے۔
 
لہسن مشرقی کھانوں کا ایک اہم جزو ہے اور اکثر کھانے اس کے بغیر نامکمل سمجھے جاتے ہیں۔ مغربی ممالک میں بھی لہسن کا استعمال تیزی سے بڑھ رہا ہے اور اب کھانے پینے کی ایسی اشیا عام مل جاتی ہیں جن میں لہسن استعمال کیا جاتا ہے۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ لہسن کئی بیماریوں، خصوصاً دل کے امراض سے بچاؤ میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے۔
 
اس کے استعمال سے جہاں بے شمار امراض سے نجات ملتی ہے وہاں یہ جسم میں قدرتی طور پر موجود بیکٹریاز میں عدم توازن پیدا نہیں کرتا بلکہ ان بیکٹریاز کو جو ہمارے لیے مفید ہیں اور ہاضمہ کو درست کھتے ہیں ان کی تعداد میں اضافہ کرتا ہے اور جو مضر اور بیماری پیدا کرسکتے ہیں ان بیکٹریاز کو ختم کرتا ہے۔
 
اس طرح موسمی اثرات سے جسم محفوظ ہوجاتا ہے۔ بیکٹریاز پر تجربات شاہد ہیں کہ لہسن کے رس نے انہیں دس منٹ میں ختم کردیا جبکہ معاون بیکٹریاز کو کوئی نقصان نہ پہنچا۔
 
اس کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ اس میں قدرتی اینٹی بائیوٹک اجزاء موجود ہیں اور انسان دیگر اینٹی بائیوٹک کی گستاخانہ حرکات سے محفوظ رہ سکتا ہے جب تک کہ کوئی مایوس کن علامات ان کو دعوت نہ دیں۔
 
لہسن گزشتہ پانچ ہزار سال سے مختلف امراض میں بطور دوا استعمال ہورہا ہے۔ یہ دو قسم کا ہوتا ہے۔ ایک چھوٹے جوے والا جو اکثر استعمال ہوتا ہے‘ دوسرا پہاڑی لہسن جو پیاز کی شکل کا ہوتا ہے اور جس میں پھانکیں نہیں ہوتیں‘ لیکن اثرات زیادہ تیز ہیں۔ لہسن کو عربی میں فوم‘ فارسی میں سیسر‘ انگریزی میں گارلک روٹ اور پنجابی و سندھی میں تھوم کہتے ہیں۔
 
ایک مصری دستاویز کے حوالے سے 1550 سال قبل مسیح لہسن سے بائیس امراض کی دوائیں تیار ہوئیں۔ روس کے ماہر علم طبیعیات ”پائن دی ایلڈر“ نے اسے 66 قسم کے امراض کا علاج تحریر کیا ہے۔ امریکہ کے ڈاکٹر ”جی لی چانک“ اور ”مارگریٹ جانسن“ مینسیوٹا یونیورسٹی میں ریسرچ کیمسٹوں‘ بھارت کے ٹیگور میڈکل کالج کے ڈاکٹر ” آرون“ کے علاوہ چین اور جاپان میں بیشتر ڈاکٹروں نے لہسن کو بیماریوں کا علاج دہندہ قرار دیا ہے۔ دنیائے طب کے بابا ہیپو قراطیس (بقراط) نے ڈھائی ہزار سال قبل مسیح لہسن کو قبض کشا کہنے کی ساتھ روز مرہ کی دوا قرار دیا تھا۔
 
 
پیغمبر اسلام محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم نے جہاں بہت سے امراض کا علاج بتلایا تھا وہاں بچھو کے کاٹنے پر لہسن کا پانی استعمال کرنے کی ہدایت کی تھی۔
 
لہسن سے جن امراض میں فائدہ اٹھایا جاسکتا ہے ان کی فہرست طویل ہے لیکن جن امراض سے نجات ملنے کے ثبوت فراہم کیے گئے ہیں ان میں صدیوں سے خون صاف کرنے کے علاوہ سردی اور دائمی نزلہ و زکام سے محفوظ رکھنے کے لیے اسے استعمال کیا گیا۔ دمہ‘ کھانسی‘ امراض تنفیس‘آنتوں کی بیماریاں‘ امراض جلد‘ ہائی بلڈ پریشر‘ فالج‘ لقوہ‘ رعشہ‘ نسیان‘ بہرا پن‘ کینسر اور ذیابیطس سے محافظت‘ درد سر‘ گلے کی گلٹھی‘ آواز بیٹھنا‘ مرگی‘ تپ دق‘ کولیسٹرول کی سطح نیچی رکھنا جیسے بے شمار امراض ٹھیک کرنے کی صلاحیت لہسن میں موجود ہے۔
 
انڈیانا یونیورسٹی کے ڈاکٹر ”مائیکل ٹیسنے“ کا کہنا ہے کہ لہسن سے مختلف پھپھوند کی پیدائش کو بھی روکا جاسکتا ہے۔ سب سے بڑی بات یہ ہے کہ لہسن آپ کو معالج اور دوائوں کے کثیر اخراجات سے بھی بچا سکتا ہے۔
 
لہسن کی بدبو دور کرنے کے لیے اجوائن چبائی جاسکتی ہے۔ مختصر یہ کہ لہسن اپنی غذا میں شامل رکھیں اور اس کے کمالات دیکھ کر خدا کے عطیات کے شکر گزار ہوں۔ لیکن لہسن کے ساتھ ہومیوپیتھک دوا نہ استعمال کریں۔اگر کسی مرض کے لیے دوا استعمال کرنا ہو تو دو گھنٹہ کا وقفہ ضروری ہے۔ ویسے بھی لہسن کا ایک جوا روز ناشتہ کے بعد لے لینا کافی ہے۔
 
 
لہسن کے فوائد کو دیکھتے ہوئے اگر یہ سونے کے بھاؤ بھی ملے تو ضرور کھانا چاہئے:
 
کان میں درد ہو تو تھوڑے سے کڑوے تیل میں لہسن جلا کر نیم گرم کان میں ڈالیں تو درد کو آرام آجاتا ہے۔
اگر پھنسی ہوتو وہ بھی پھٹ جاتی ہے۔
لہسن خون کو صاف کرتا اور جراثیم کو ہلاک کرتا ہے۔
جن کو ہاضمہ خراب ہو وہ لہسن کی چٹنی بناکر کھائیں تو معدہ ٹھیک ہو جاتا ہے۔
لہسن کے استعمال سے نسیں پھیل جاتی ہیں۔ اس لئے بلڈ پریشر خود بخود کم ہو جاتا ہے۔
لہسن بیماریوں سے بچاتا ہے۔ خون کے دباؤ کو کم رکھتا ہے۔ صبح نہار منہ ایک دو جوئے کچا لہسن کھاتے رہنے سے دل کو مرض نہیں ہوتا۔
یہ شریانوں کے نقص کو کم کرنے میں مدد دیتا ہے۔
بہت کم کیسٹرآئل پایا جاتا ہے۔
یہ نزلہ زکام کو روکنے میں بھی مدد دیتا ہے۔
ٹی بی . کی ٹریٹمنٹ میں مدد دیتا ہے۔
زخموں کے بڑھنے میں بھی مدد کرتا ہے۔
یہ جسمانی کمزوری کو دور کرتا ہے۔
یہ ہر طرح کے کینسر سے بننے والے سیلز کو روکتا ہے۔
ہضم کرنے کے نظام کو بہتر کرتا ہے۔
انفیکشنس کو روکتا ہے۔
یہ جسم میں پیدا ہونے والے گلٹیوں کو ختم کرتا ہے
گلے کے انفیکشن کو دور کرتا ہے۔
دانتوں کے درد کا خاتمہ ہوتا ہے۔
دانوں کو کم کرتا ہے۔
جلد کی بیماریوں کو دور کرتا ہے۔
اَدْرَک کے ساتھ ملایا جائے تو یہ دمہ کی روک تھم میں مدد کرتا ہے۔
بڑھاپے کے اثرات کو کم کرتا ہے۔
جسمانی قوت میں افزاء کرتا ہے۔

Disclaimer: All material on this website is provided for your information only and may not be construed as medical advice or instruction. No action or inaction should be taken based solely on the contents of this information; instead, readers should consult appropriate health professionals on any matter relating to their health and well-being. The data information and opinions expressed here are believed to be accurate, which is gathered from different sources but might have some errors. Hamariweb.com is not responsible for errors or omissions. Doctors and Hospital officials are not necessarily required to respond or go through this page.

Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
17 Mar, 2022 Views: 54898

Comments

آپ کی رائے
کیا لہسن سے بواسیر بھی ٹھیک ہو جاتی؟ اگر ہاں تو ترکیب استعمال کیا ہوگی
By: سیدعمرقادری , کرناٹک on Oct, 30 2016
Reply Reply
2 Like
اگر لہسن سرکہ میں ڈال کر ہر روز اس سے کچھ دانے لہسن کے کھائیں جائیں تو کیا اس کے فوائد کم ہوتی ہیں
By: Kabir , Loralai on Jul, 24 2016
Reply Reply
2 Like
بہت بہترین آرٹیکل۔
By: Ahmed Nisar Syed, Karachi on May, 12 2016
Reply Reply
0 Like
very good information i have benefited from this artical
By: sakhawat hussain, rawalpindi on May, 17 2015
Reply Reply
0 Like
Nice
By: District Gujrat, City Lalamusa, (Shahzad Gujjar ), Karachi on Feb, 12 2014
Reply Reply
2 Like
mashAllah boht achi effort ki but brother plz Hazrat Mohammad S.A.W ki bajae Hazrat Mohammad S.A.W.W likhe to is article ki shan barh jae gi.
By: Mohammad Hashim, Rawalpindi on Feb, 08 2014
Reply Reply
3 Like
chalen biohat achen humari web team bhale hi del kara ho :) kam se kam ilm tau thik kara zabardast masha allah.
By: Muhammad Talal khan afridi, Hyderabad on Feb, 08 2014
Reply Reply
0 Like
OR TUM APNE PARWARDIGAR KI KON KON C NEMATON KO JHUTLAONGE.... SUBHANALLAH,, NICE ARTICLE.
By: zai,, karachi. on Feb, 08 2014
Reply Reply
3 Like
zakhmon kau barhne main madad deta hai hahahahaha yai tau ghalti hai
By: Muhammad Talal Khan Afridi, Hyderabad on Feb, 07 2014
Reply Reply
0 Like
very informative and useful.share all friends.
By: aabid, multan on Feb, 07 2014
Reply Reply
2 Like
Garlic – A simple ingredient with packed health benefits. It is very strong and bitter but adds an unbelievable flavour to the cuisine. Any description of garlic is incomplete without mentioning its medicinal values. This miracle herb has been used since time immemorial as a medicine to prevent or treat various diseases and conditions.