سچ تو یہ ہے (۱۵واں حصہ)

(Muhammad Siddique Prihar, Layyah)

 منظر۱۲۱
عبدالمجیدکریم بخش کے گھرکے باہرکھڑے ہوکرماحول کاجائزہ لے رہاہے۔افضل کرسی لے آتاہے۔ کرسی رکھ کرکہتاہے چچاجان آپ بیٹھیں میں ابھی پانی لے کرآتاہوں۔عبدالمجیدکرسی پربیٹھ جاتاہے۔عبدالمجیداپنے آپ سے کہتاہے ۔عبدالمجیدتونے اس لڑکے سے کیسے کیسے سوال کیے اوریہ ہے کہ تیرے لیے کرسی لے آیاہے۔اب پانی لینے چلاگیاہے۔افضل جگ میں شربت لے آتاہے۔گلاس میں ڈال کردائیں ہاتھ سے عبدالمجیدکودیتاہے۔عبدالمجیدشربت پی لیتاہے۔افضل ایک اورگلاس بھرکردیتاہے۔افضل کہتاہے چچاجان آپ بیٹھیں میں ابھی آیا۔عبدالمجیدشربت پی کرگلاس زمین پررکھ دیتاہے۔افضل پیالیمیں چائے لے آتاہے۔
عبدالمجید۔۔۔۔اس کی ضرورت نہیں تھی
افضل۔۔۔۔۔یہ آپ کی نہیں ہماری ضرورت ہے
عبدالمجید۔۔۔۔چائے کے دوگھونٹ پی کر۔۔۔۔تیرے ابوتجھے کچھ نہیں کہتے
افضل۔۔۔۔چچاجان میں آپ کی بات سمجھانہیں
عبدالمجید۔۔۔۔تواتنی دیرکھیلتارہا اب اتنی دیرسے میرے پاس ہے تجھے تیراباپ کھیلنے سے منع نہیں کرتا
افضل۔۔۔۔نہیں اس وقت میں روزانہ کھیلتاہوں
عبدالمجیداپنے آپ سے کہتاہے یہ کیساباپ ہے جوبچے کوکھیلنے سے منع نہیں کرتا
عبدالمجید۔۔۔افضل سے۔۔۔۔کہیں ایساتونہیں تیراباپ تجھے کھیلنے نہ دیتاہو اورتواس سے چھپ کرکھیلتاہو
افضل۔۔۔۔۔نہیں چچاجان ایسی بات نہیں ہے میرے گھروالوں کوپتہ ہے کہ میں اس وقت کھیل رہاہوں یہ میرے کھیلنے کاوقت ہے
عبدالمجید۔۔۔۔میں کریم بخش سے ملنے آیاہوں اس کاگھرکون ساہے
افضل۔۔۔۔میں ان کابیٹاہوں ابوگھرمیں ہی ہیں میں ابھی بلاکرلاتاہوں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۲
عبدالمجید۔۔۔۔احمدبخش کوکان سے پکڑ اس کے سرکوحرکت دیتے ہوئے۔۔۔۔یہ ڈرکی وجہ سے چپ نہیں ہے اس کے پاس جواب ہی نہیں
راشدہ۔۔۔۔تونے اسے جواب دینے کی پوزیشن میں چھوڑاکب ہے
عبدالمجید۔۔۔احمدبخش کوسرکی پچھلی طرف تھپڑمارکر۔۔۔۔اتنی دیرسے پوچھ رہاہوں کہاں رہ گیاتھا
راشدہ۔۔۔۔۔میں کہتی ہوں نرمی اورپیارسے پوچھو آپ ہیں کہ مزیدسختی پہ سختی کررہے ہیں پہلے ہی وہ بول نہیں سکتا۔
عبدالمجید۔۔۔۔یہ بول سکتاہے یہ سوچ رہاہے کہ کون ساجھوٹ بولے
راشدہ۔۔۔اس پوزیشن میں توویسے ہی سوچنے سمجھنے کی صلاحیت ختم ہوجاتی ہے آپ کیسے کہہ سکتے ہیں یہ جھوٹ بولے گا
راشدہ عبدالمجیداوراحمدبخش کے قریب آجاتی ہے
عبدالمجیداحمدبخش کوتھپڑمارنے کے لیے ہاتھ اوپراٹھاتاہے راشدہ اس کاہاتھ پکڑکرکہتی ہے بس بہت ہوگیا کیساباپ ہے تو
عبدالمجید۔۔۔راشدہ سے ہاتھ چھڑاکر۔۔۔۔چلاتے ہوئے۔۔۔۔تیرے لاڈپیارنے اسے بگاڑ دیاہے
راشدہ۔۔۔۔اسے تیری بے جاسختی نے بگاڑدیاہے
راشدہ۔۔۔۔احمدبخش کے کندھے میں ہاتھ ڈال کر۔۔۔۔نہ رومیرابیٹا نہ رو
راشدہ احمدبخش کولے کرچل پڑتی ہے۔اسے چارپائی پربٹھاتی ہے۔اپنے دوپٹے سے اس کامنہ صاف کرتی ہے۔آوازدے کرسلطانہ سے کہتی ہے بھائی کے لیے تازہ پانی لے آ۔عبدالمجیداس کی طرف بڑھنے لگتاہے
راشدہ۔۔۔۔اب میں برداشت نہیں کروں گی اب اگرآپ نے میرے بیٹے پرہاتھ اٹھایا یاسخت زبان استعمال کی تومیں
عبدالمجید۔۔۔۔کیامیں کیاکرلے گی تومیرا
راشدہ۔۔۔۔احمدبخش کی پیٹھ پرہاتھ پھیرتے ہوئے۔۔۔۔میں اب تک خاموش رہی اورآپ کوسمجھاتی رہی اس کایہ مطلب نہیں کہ میں کچھ نہیں کرسکتی
عبدالمجید۔۔۔۔اب تیری زبان بھی زیادہ چلنے لگی ہے تیری زبان کولگام ڈالنامیرے بائیں ہاتھ کاکھیل ہے میں بھی دیکھتاہوں تیری زبان کب تک چلتی ہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۳
فیاض ناشتہ کرکے چائے پی رہاہے۔
بشیراحمد۔۔۔چائے کاکپ اٹھاتے ہوئے۔۔۔فیاض چائے پی کرگدھا کھول کرلے آ میں بھی چائے پی کرآتاہوں
اریبہ۔۔۔سمیراسے۔۔۔۔جھاڑن سے ریڑھی صاف کر
فیاض گدھاکھولنے چلاجاتاہے۔سمیراپانی پینے لگتی ہے تواریبہ پانی کاگلاس اس سے لے کررکھ دیتی ہے۔
بشیراحمد۔۔۔۔اس سے گلاس کیوں لے لیاہے پینے دے پانی
اریبہ۔۔۔۔ابھی اس نے ناشتہ کیاہے کھانے کے بعدپانی نہیں پیناچاہیے
سمیرااٹھ کرچلی جاتی ہے
اریبہ۔۔۔۔میں تورات کوبھی آپ سے بات کرناچاہتی تھی
بشیراحمد۔۔۔۔بات کرناچاہتی تھی پھربات کی کیوں نہیں
اریبہ۔۔۔۔اس لیے کہ آپ تھکے ہوئے تھے میں نے مناسب خیال نہیں کیا
بشیراحمد۔۔۔۔کوئی خاص بات ہے یاوقت گزارنے کابہانہ ہے
اریبہ۔۔۔۔اب توآپ شام کے وقت آئیں گے میں چاہتی ہوں کچھ باتیں کرلیں
بشیراحمد۔۔۔۔کھڑے ہوکر۔۔۔۔ابھی دیرہورہی ہے شام کوآؤں گا توجوباتیں کرنی ہیں کرلینا
اریبہ۔۔۔۔اس وقت آپ تھکے ہوئے ہوتے ہیں مجھے بھی رات کاکھانابناناہوتاہے
بشیراحمدچل پڑتاہے اریبہ اس کے ساتھ چل پڑتی ہے سمیراریڑھی صاف کرکے واپس آرہی ہے۔ فیاض گدھاریڑھی کے ساتھ باندھ کرچلاجاتاہے۔بشیراحمدریڑھی سے گدھاکھولتاہے۔
فیاض۔۔۔اریبہ سے۔۔۔۔امی ہم نے ایک فرمائش کی تھی ابھی تک اس کاکوئی جواب نہیں ملا
سمیرا۔۔۔۔امی کب جارہے ہیں مزارپر
اریبہ۔۔۔۔ابھی تک میں نے تمہارے ابوسے نہیں پوچھا آج کام سے واپس آئیں گے تومیں ان سے بات کروں گی
اریبہ۔۔۔فیاض سے۔۔۔۔۔اب توبھی دکان پرجا
اریبہ۔۔۔سمیراسے۔۔۔۔چائے پڑی ہے یاختم ہوگئی ہے
سمیرا۔۔۔۔دوپیالیاں بچی ہوئی ہے
اریبہ۔۔۔۔گرم کرکے ایک پیالی مجھے دے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۴
جاویدبکریوں کے پاس کھڑے ہوکرانہیں د یکھ رہاہے۔ایک بکری کی رسی کھول کراس کے بل نکالتاہے۔پھرباندھ دیتاہے۔دوبکریوں کی پیٹھ پرہاتھ پھیرتاہے۔کپڑے سے منہ صاف کرتاہے۔ رحمتاں ایک کمرے میں جاتی ہے۔کمرے میں نظریں گھماتی ہے۔اس کمرے نکل کردوسرے کمرے میں جاکرنظریں گھماتی ہے۔پھربکریوں کے پاس آتی ہے توجاویدبکریوں کے درمیان خاموشی سے بیٹھاہے۔
رحمتاں۔۔۔۔میں آپ کوگھرمیں ڈھونڈرہی تھی اورآپ یہاں بیٹھے ہیں
جاوید۔۔۔۔خاموش ہے
رحمتاں۔۔۔۔خاموش کیوں ہیں کیابات ہے
جاوید۔۔۔۔اب بھی خاموش ہے
رحمتاں۔۔۔۔تھوڑی دیرخاموش رہنے کے بعد۔۔۔۔آپ خاموش کیوں ہیں ناراض ہیں مجھ سے
جاوید۔۔۔۔رحمتاں کی طرف دیکھ کر۔۔۔۔۔میں ناراض نہیں ہوں
رحمتاں۔۔۔۔ناراض نہیں ہیں توپھر
جاوید۔۔۔۔خاموش اس لیے تھا کہ میں سوچ رہاتھا اچھامجھے توکیوں ڈھونڈ رہی تھی
رحمتاں۔۔۔۔آپ سے بات کرنی تھی
جاوید۔۔۔۔۔ایسی کیابات ہے جس کے لیے اتنی بے چین ہو مجھے پورے گھرمیں تلاش کررہی ہو
رحمتاں۔۔۔۔میرے توگمان میں بھی نہیں تھا کہ بچیاں ایسی باتیں کریں گی
جاوید۔۔۔۔یہ نہ تومیرے گمان میں تھا نہ کسی اورکے
رحمتاں۔۔۔۔رشتہ دارتویہی سمجھیں گے کہ ہم نے بچیوں کوسکھایاہے
جاوید۔۔۔۔حالانکہ ہم نے بچیوں کوایسی کوئی بات نہیں سکھائی
رحمتاں۔۔۔۔ہم نے توانہیں یہ فیصلہ کرنے میں آزادی دی کہ وہ جس سے چاہیں ہم اسے شادی کرادیں گے
جاوید۔۔۔۔ہاں ہم نے یہ بھی نہیں کہا کہ ہم کیاچاہتے ہیں ان کی شادیاں کس کس سے کراناچاہتے ہیں
رحمتاں۔۔۔۔بچیوں نے ایسی باتیں کرکے سب کوحیران کردیاہے
جاوید۔۔۔ہاں ایساہی ہے
رحمتاں۔۔۔۔۔اس بارے خود بچیوں سے بات کرنی چاہیے
جاوید۔۔۔۔ٹھیک ہے کسی اورکونہیں بلائیں گے بچیوں سے تنہائی میں بات کریں گے
رحمتاں۔۔۔۔جمعہ کورات کے کھانے کے وقت بچیوں سے بات کریں گے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۵
سجاد،فیاض اورنعیم اپنی درزیوں کی دکان پرخاموش بیٹھے ہیں۔
سجاد۔۔۔۔نعیم سے۔۔۔۔کاری گروں کی دکان میں جااورجتنے سوٹ سلے ہوئے ہیں اٹھاکرلے آ
فیاض۔۔۔۔آج آپ اسے جلدی نہیں بھیج رہے ابھی توانہوں نے نہ بٹن لگائے ہوں گے نہ کپڑے پریس کیے ہوں گے
سجاد۔۔۔اگرہم کاج بٹن اورپریس کرنے کاکام کرلیں توکاری گرروزانہ ایک ایک سوٹ زیادہ سلائی کرکے دے سکتے ہیں
فیاض۔۔۔اس طرح توہم سارادن کاج کراتے اوربٹن ہی لگاتے رہیں گے اب توپانچ سوٹ روزانہ کے اوربڑھ جائیں گے
نعیم اٹھ کرچلاجاتاہے
سجاد۔۔۔۔ہم اب بھی وہی کام کریں گے جوپہلے سے کررہے ہیں
فیاض۔۔۔استادجی
سجاد۔۔۔۔اس کاانتظام میں نے کردیاہے
فیاض۔۔۔وہ کیسے
سجاد۔۔۔۔کل گھرسے آتے ہوئے مجھے دولڑکے ملے تھے وہ کہہ رہے تھے کہ وہ کپڑوں کوکاج کراآئیں گے بٹن لگادیں گے کپڑے پریس کردیاکریں گے ایک دودرزیوں سے ان کی بات کرادوں جواس کام کاخرچہ بھی دیں
فیاض۔۔۔آپ نے ان سے کیاکہا
سجاد۔۔۔۔میں نے ان لڑکوں سے کہا ہے کہ وہ میری دکان میں آجائیں وہ دونوں لڑکے کل صبح آجائیں گے ان کوہم ایک سوٹ کے تیس روپے دیں گے
سجاد۔۔۔فیاض سے۔۔۔۔آج جوشلواریں سلائی کی ہیں چیک کراؤ
فیاض سلائی کی ہوئی شلواریں سجادکے سامنے رکھ دیتاہے
فیاض۔۔۔استادجی ایک بات کہوں
سجاد۔۔۔۔کہو
فیاض۔۔۔۔ہمیں پرانے کپڑوں کے لیے بھی ہفتے میں دودن یاروزانہ ایک گھنٹہ نکالناچاہیے
سجاد۔۔۔۔تیرے سامنے ہے نئے کپڑے اتنے آجاتے ہیں کہ پرانے کپڑوں کے لیے وقت ہی نہیں ملتا
فیاض۔۔۔۔استاد جی ایک دن آپ کہہ رہے تھے پرانے کپڑے درست کرانے وہی لوگ دے جاتے ہیں جونئے کپڑے نہیں خریدسکتے ۔
سجاد۔۔۔۔۔مجھے یاد ہے میں نے کہاتھا
فیاض۔۔۔۔۔اس کے باووجودہم انہیں دودوماہ انتظارکراتے ہیں
سجاد۔۔۔۔اب ہمیں کیاکرناچاہیے
فیاض۔۔۔۔جس طرح آپ نے کاج بٹنوں کے لیے دولڑکے تلاش کرلیے ہیں اسی طرح پرانے کپڑوں کے لیے بھی کاری گرلے آئیں
سجاد۔۔۔۔۔یہ ٹھیک رہے گاہم تین ایسے کاری گرلے آتے ہیں جوصرف پرانے کپڑوں کی سلائی کریں گے اس کے لیے اسی مارکیٹ میں ایک دکان لے لیتے ہیں جس میں صرف پرانے کپڑوں کی مرمت کریں گے
فیاض۔۔۔۔۔استادجی دکان کاکرایہ اورکاری گروں کی مزدوری
سجاد۔۔۔۔۔پرانے کپڑوں کی مرمت کی دکان کھلنے کے بعداس مارکیٹ اوردوسری مارکیٹوں کے درزی بھی پرانے کپڑے اسی دکان سے مرمت کرائیں گے دکان کاکرایہ اوربجلی کابل آسانی سے پورے ہوتے رہیں گے کاری گروں کوبھی اتنی بچت ضرورہوگی کہ وہ خوش حال زندگی گزارسکیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۶
رحمتاں چارپائی پرپانی پی رہی ہے۔ صابراں تین عورتوں کے ساتھ آکرکہتی ہے امی آپ کی مہمان آئی ہیں۔
رحمتاں۔۔۔صابراں سے۔۔۔۔ان کے لیے تکیے لے آؤ
رحمتاں۔۔۔۔مہمان خواتین سے۔۔۔۔بیٹھ جائیں
مہمان خواتین بیٹھ جاتی ہیں صابراں تکیے لے آتی ہے
رحمتاں۔۔۔۔ان کوپانی بھی پلاؤ
صابراں۔۔۔۔۔جی امی جی
صابراں چلی جاتی ہے
رحمتاں۔۔۔۔مہمان خواتین سے ۔۔۔۔بہن جی کیسے آناہوا
پہلی خاتون۔۔۔۔آپ کے شوہراوربیٹے کیاکرتے ہیں
رحمتاں۔۔۔۔میرے شوہربکریوں کے لیے گھاس کاٹنے گئے ہوئے ہیں
دوسری خاتون۔۔۔۔اورآپ کے بیٹے کیاکرتے ہیں
رحمتاں۔۔۔۔میری صرف بیٹیاں ہیں
تیسری خاتون۔۔۔۔۔اب تک کتنی بیٹیوں کی شادیاں کی ہیں اورکتنی بیٹیوں کی شادیاں ابھی کرنی ہیں
رحمتاں۔۔۔۔ابھی تک ہم ن کسی بیٹی کی شادی نہیں کی
پہلی خاتون۔۔۔۔کہیں بات وغیرہ بھی چل رہی ہے یانہیں
رحمتاں کی دوسری بیٹی چائے اور بسکٹ لے آتی ہے بسکٹ کی پلیٹیں ان عورتوں کے سامنے رکھتی ہے اس کے بعدچائے ان کے سامنے رکھ کرچلی جاتی ہے
رحمتاں۔۔۔۔ابھی تک توکسی کی بات نہیں چل رہی ہے
دوسری خاتون۔۔۔۔آپ بچیوں کی شادیاں نہیں کرناچاہتیں؟
رحمتاں۔۔۔۔ہم اپنی تین بیٹیوں کی شادیاں کرناچاہتے ہیں
تیسری خاتون۔۔۔۔یہ کیسی بات ہے شادیاں تین بیٹیوں کی کرناچاہتی ہیں اوربات ایک کی بھی نہیں چل رہی ہے
رحمتاں۔۔۔۔بات توچل رہی ہے مگراور
پہلی خاتون۔۔۔۔مگرکون سی بات چل رہی ہے
رحمتاں۔۔۔۔وہ بات میں نہیں بتاناچاہتی
تیسری خاتون۔۔۔۔مستحق لوگوں کی مددکے لیے ایک فنڈ زقائم کیاگیاہے جس میں شادیوں کے لیے امدادبھی شامل ہے
پہلی خاتون۔۔۔۔ہم آپ سے یہ معلوم کرنے آئی ہیں آپ چاہیں توبچیوں کی شادیاں اجتماعی شادیوں میں کرسکتی ہیں اخراجات ہم کریں گی
دوسری خاتون ۔۔۔۔اورچاہو توآپ کوتینوں بیٹیوں کی شادیوں کاسامان بھی خریدکردے جائیں گی
رحمتاں۔۔۔۔ہم اپنی بچیوں کی شادیاں اپنے خرچے پرکریں گے ۔ ہم کسی سے کوئی امدادنہیں لے سکتے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۷
مولوی صاحب۔۔۔۔سعیداحمداورکریم بخش سے۔۔۔۔۔معذرت اتنی دیرہوگئی
کریم بخش۔۔۔۔مولوی صاحب آپ ہم سے معافی نہ مانگیں معافی توہمیں مانگنی چاہیے
سعیداحمد۔۔۔۔آپ کی نہ جانے کتنی مصروفیات ہوں گی اورآپ نے ہمیں وقت دے رکھاہے
کریم بخش۔۔۔۔مولوی صاحب بھائی جان کی ایک الجھن ہے گھرمیں خاندان میں کسی کے پاس اس کاحل نہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔ایسی کون سی الجھن ہے جس کاحل کسی کے پاس نہیں
سعیداحمد۔۔۔۔۔میں اپنے بیٹے کی شادی کرناچاہتاہوں
مولوی صاحب۔۔۔۔توکیاآپ کابیٹا شادی نہیں کرناچاہتا
کریم بخش۔۔۔۔وہ توچاہتاہے کل ہی اس کی شادی ہوجائے
مولوی صاحب۔۔۔۔وہ کسی اورلڑکی سے شادی کرناچاہتاہے اورتم اس کی شادی کسی اورلڑی کے کراناچاہتے ہو
سعیداحمد۔۔۔اس بارے ابھی کوئی بات نہیں ہوئی
مولوی صاحب۔۔۔عام طورپرگھروں میں ایسی ہی الجھنیں ہوتی ہیں آپ کی یہ الجھن نہیں توکیسی الجھن ہے
اسی دوران وہ لڑکاآجاتاہے جس کومولوی صاحب نے دودھ پتی لانے کوکہاتھا اس نے ایک جگ میں دودھ اورچائے کی پتی کاساشہ ہاتھ میں لیاہوا ہے۔
مولوی صاحب۔۔۔۔یہ کیالائے ہو
لڑکا۔۔۔۔استادجی۔۔۔آپ نے کہا تھا دودھ پتی لے آؤ یہ دودھ ہے اوریہ پتی
مولوی صاحب۔۔۔۔میں نے یہ والی دودھ پتی نہیں کہی تھی
اسی دوران ایک اورلڑکاآجاتا ہے اوریہ باتیں سن لیتاہے۔وہ لڑکامولوی صاحب کوسلام کرتاہے۔ استادجی میں اسے سمجھاتاہوں یہ کہہ کروہ اس لڑکے کولے کرچلاجاتاہے
کریم بخش۔۔۔۔میری بھابھی نے ،رشتہ داروں نے اورمیں نے اس سے کہا کہ آپ سے بات کرے مگریہ آپ سے بات نہیں کرناچاہتا تھا اب بھی میں اسے لے کرآیاہوں
مولوی صاحب۔۔۔۔یہ تواس کااختیارہے اپنامسئلہ کسی کوبتائے نہ بتائے
سعیداحمد۔۔۔۔میں نہیں چاہتا کہ گھرکی باتیں آپ کویاکسی اورکوبتاؤں
مولوی صاحب۔۔۔آپ کی سوچ بہت اچھی ہے میں اس کی قدرکرتاہوں
کریم بخش۔۔۔۔جب مسائل گھرمیں خاندان میں حل نہ ہورہے ہوں تو گھرسے باہران کاحل ڈھونڈناپڑتاہے
مولوی صاحب۔۔۔۔ہمارے بہت سے ایسے گھریلومعاملات ہیں جوگھروں میں نہیں گھروں سے باہرحل ہوتے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۸
کریم بخش گھرسے باہرآتاہے۔ عبدالمجیدکرسی پربیٹھ کرچائے پی رہاہے۔کریم بخش کودیکھ کرچائے رکھ دیتاہے اورکھڑاہوجاتاہے۔کریم بخش اس کی طرف آتے ہوئے رک جاتاہے۔
عبدالمجید۔۔۔۔مجھے دیکھ کرآپ رک کیوں گئے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔تم نے چائے کیوں رکھ دی
عبدالمجید۔۔۔۔پہلے آپ سے مل لوں پھرچائے پی لوں گا
کریم بخش۔۔۔۔پہلے تم کرسی پربیٹھ کرچائے پیو میں ابھی آتاہوں
یہ کہہ کرکریم بخش گھرمیں چلاجاتاہے عبدالمجیدکرسی پربیٹھ کرچائے پینے لگ جاتاہے۔کریم بخش واپس آجاتاہے عبدالمجیدچائے پی چکاہے۔دونوں گرم جوشی سے گلے ملتے ہیں پھرمصافحہ کرتے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔بڑی خوشی ہوئی آپ میرے گھرتشریف لائے
عبدالمجید۔۔۔۔مجھے بھی آپ سے مل کرخوشی ہوئی
اسی دوران افضل ایک اورکرسی لے آتاہے دونوں کرسیوں پربیٹھ جاتے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔افضل سے۔۔۔بیٹا میزبھی لے آؤ
افضل۔۔۔۔ابو میزمجھ سے نہیں اٹھائی جائے گی۔
کریم بخش۔۔۔۔ماں سے کہو دروازے کے ساتھ رکھ دے میں خوداٹھالیتاہوں
عبدالمجید۔۔۔۔آپ کیسے باپ ہیں بچے نے کہا وہ میزنہیں اٹھاسکتا آپ نے اس کی بات مان لی
کریم بخش۔۔۔۔اورمجھے کیاکرناچاہیے تھا
افضل چلاجاتاہے
عبدالمجید۔۔۔۔اسے کہتے جس طرح بھی ہومیزلے آئے اس کی ایسی کوئی بات نہ سنتے
کریم بخش۔۔۔۔جوکام اس سے نہیں ہوسکتا کیسے میں اس کوکہوں کہ وہ کام کردے
عبدالمجید۔۔۔۔آپ کے بیٹے نے کہا کہ وہ یہ کام نہیں کرسکتا کیایہ آپ کی نافرمانی نہیں
کریم بخش ۔۔۔۔۔یہ میری نافرمانی نہیں دیکھو عبدالمجیدجوکام اس سے ہوسکتا تھا وہ اس نے کردیا یہ نہیں کہاکہ وہ یہ نہیں کرسکتا۔ وہ کرسی لے آیا میرے کہنے سے پہلے آپ کے لیے پانی اورچائے لے آیا آپ کوعزت سے کرسی پربٹھایا اب بھی یہ نافرمان ہے تومیں کچھ نہیں کہہ سکتا یادرکھو عبدالمجید بچوں کوایساکام کرنے پرمجبورنہیں کرناچاہیے جووہ نہ کرسکیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر ۱۲۸
سلطانہ گلاس میں پانی لے آتی ہے۔احمدبخش پانی پیتاہے
عبدالمجید۔۔۔۔پوچھواس سے پوچھو یہ اتنی دیرسے کہاں تھا اورکیاکررہاتھا
راشدہ۔۔۔۔اس کی سانسیں توبحال ہوجائیں پوچھتی ہوں اورابھی پوچھتی ہوں
عبدالمجید۔۔۔۔جلدی پوچھو میرے پاس اتناٹائم نہیں ہے
احمدبخش پانی پی لیتا ہے توگہرے سانس لینے لگتاہے۔
راشدہ۔۔۔۔اب میں اس سے پوچھ رہی ہوں جب تک ہم ماں بیٹے کی بات پوری نہ ہوجائے کوئی نہیں بولے گا
راشدہ۔۔۔۔عبدالمجیدکی طرف اشارہ کرکے۔۔۔۔آپ بھی نہیں بولیں گے
عبدالمجیدایسے خاموش کھڑاہے جیسے اس نے کچھ سناہی نہیں
راشدہ۔۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔بیٹا ڈرونہیں بتاؤ اتنی دیرکیوں ہوگئی اورسامان بھی نہیں لایا
احمدبخش۔۔۔۔امی جی میں جب دکان پرگیاتودکاندارنے مجھے غورسے دیکھ کرکہااب کیاکرنے آئے ہو میں نے کہاابونے بھیجاہے ۔دکاندارنے کہاکیوں میں نے کہا سامان لیناہے۔اس نے یہ نہیں پوچھا کون ساسامان لیناہے اس نے کہاپیسے لائے ہومیں نے کہا ابوکہہ رہے ہیں دس سے پندرہ دنوں میں دے دوں گا اس نے کہاپہلے بھی تیرے باپ نے اتنے پیسے دینے ہیں پہلے بھی کہاتھا آئندہ ادھارنہیں ملے گاجب بھی سامان لینے آناپیسے لے کرآنا
عبدالمجید۔۔۔۔دیکھوکتنی صفائی سے یہ جھوٹ پہ جھوٹ بولے جارہاہے
راشدہ۔۔۔آپ کوتومیرے بیٹے کی ہربات جھوٹی لگتی ہے ہماری بات ابھی مکمل نہیں ہوئی جب تک ہم بات نہ کرلیں آپ خاموش رہیں
عبدالمجید۔۔۔۔توکیامیں اس کے جھوٹ کوسنتارہوں
راشدہ۔۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔پھرکیاہوا
احمدبخش۔۔۔دکاندارنے کہا آج توپھرپیسے نہیں لایامیں نے کہاابوکے پاس اس وقت پیسے نہیں تھے اس نے کہاتیرے باپ کے پاس توکبھی پیسے ہوتے ہی نہیں آپ ادھارنہیں دیناچاہتے تومیں چلاجاتاہوں یہ کہہ کرمیں گھرکی طرف چل پڑا چندقدم ہی چلاتھا کہ ایک لڑکابھاگتاہوآیااورکہا کہ تجھے دکانداربلارہاہے میں نے سوچا کہ اس نے سامان دینے کافیصلہ کرلیاہے جیسے میں دکان پرواپس گیا تواس نے دکان کے اندرایک کرسی رکھ کرکہا تم یہاں بیٹھو
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۲۹
بشیراحمد،فیاض اورسمیرارات کاکھاناکھانے کے بعدصحن میں چہل قدمی کررہے ہیں۔بشیراحمدتھوڑا فاصلے پرسب سے آگے ہے
سمیرا۔۔۔۔فیاض سے۔۔۔۔ابوسے پوچھومزارپرکب جارہے ہیں
فیاض۔۔۔ابوسارادن ریڑھی پرمزدوری کرتے ہیں تھکے ہوئے ہوں گے
سمیرا۔۔۔۔اب کافی وقت ہوچکاہے ابوکی تھکاوٹ ختم ہوچکی ہوگی
فیاض۔۔۔۔تھکاوٹ تورات گئے ہی ختم ہوتی ہے
میں توسونے جارہی ہوں یہ کہہ کرسمیراچلی جاتی ہے ،فیاض بھی اس کے بعدچلاجاتاہے بشیراحمدچہل قدمی کررہاہے ۔اریبہ خاموشی سے اس کے ساتھ ساتھ چل رہی ہے۔
اریبہ۔۔۔۔بشیراحمد۔۔۔اب میں وہ بات کرسکتی ہوں؟جوصبح کے وقت کرناچاہتی تھی
بشیراحمد۔۔۔۔کیاوہ بات کرناضروری ہے
اریبہ۔۔۔۔۔پانچ پہرمیں انتظارکرتی رہی کہ کب وہ وقت آئے گا میں آپ سے بات کروں گی
بشیراحمد۔۔۔۔پھرکبھی بات کرلینا
اریبہ۔۔۔۔صبح آپ نے کہاتھا شام کوبات کریں گے اب رات ہوچکی ہے
بشیراحمداوراریبہ چارپائیوں پربیٹھ جاتے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔کون سی بات کرنی تھی جس کے لیے اتنی بے چینی سے انتظارہورہاتھا
اریبہ۔۔۔۔فیاض اورسمیرامجھ سے کئی بارپوچھ چکے ہیں کہ مزارپرکب جائیں گے میں ان سے کہاتھا تمہارے ابوسے بات کرکے بتاؤں گی اب آپ کیاکہتے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔میں آپ سب کے ساتھ ہوں جب کہوچلے جائیں گے
اریبہ۔۔۔۔بچوں سے پوچھ لیتے ہیں وہ کب جاناچاہتے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔نمازجمعہ پڑھ کرآؤں گا تواس معاملے پربات کریں گے فیاض بھی گھرمیں ہوگا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۳۰
جاویدبکریاں لے کرگھرآتاہے۔ بکریاں اپنی جگہ پرکھڑی ہوجاتی ہیں۔جاویدبکریوں کے گلے میں لپٹی ہوئی رسیاں کھول رہاہے۔چاربکریوں کے گلے سے رسیاں کھول چکاہے۔صابراں اوراس کی دوبہنیں آجاتی ہیں
صابراں۔۔۔۔جاویدسے۔۔۔۔۔ابو آپ آرام کریں بکریوں کوہم باندھ دیتی ہیں
جاوید۔۔۔۔میں باندھ لوں گا تم جاؤ گھرکے کام کرو
جاویدکی دوسری بیٹی۔۔۔۔ابوگھرکے کام توہوتے رہیں گے
جاویدکی تیسری بیٹی۔۔۔۔ابو یہ بھی توگھرکاکام ہے
جاویدکھڑاہوجاتاہے بکریوں پرنظریں گھماتاہے پھرچلاجاتاہے۔صابراں اوراس کی دونوں بہنیں بکریوں کے گلے میں لپٹی ہوئی رسیاں کھولتی ہیں ۔بکریوں کوکھونٹوں سے باندھ دیتی ہیں ۔
صابراں کی دوسری بہن۔۔۔۔یہ کام توہوچکا اب چلیں کوئی اورکام کریں
صابراں۔۔۔۔ابھی کام مکمل نہیں ہوا
صابراں کی پہلی بہن۔۔۔۔بکریاں توباندھ دی ہیں اب اورکون ساکام باقی ہے
صابراں۔۔۔۔اب جوکرناہے وہ میں کروں گی تم ادھرکھڑی رہو
اس کے بعدصابراں تمام بکریوں کے کھونٹے اوررسیاں چیک کرتی ہیں۔ایک بکری کی رسی کھونٹے سے اس طرح باندھی ہوئی تھی کہ بکری دوچکرلگائے تو رسی کھونٹے لپٹ جائے۔اس کے ساتھ ہی ایک کھونٹے سے بکری کی رسی لپٹی ہوئی تھی اوربکری اپنی گردن سیدھی نہیں کرسکتی تھی
صابراں ۔۔۔۔اپنی بہنوں سے۔۔۔۔میرے پاس آؤ
اس کی دونوں بہنیں اس کے پاس آجاتی ہیں
صابراں۔۔۔۔۔میں یہ نہیں پوچھوں گی کہ ان دوبکریوں کوکس نے باندھاہے ۔یہ سمجھاناچاہتی ہوں بکریوں کواس طرح نہیں باندھتے۔
صابراں کی دوسری بہن۔۔۔۔کس طرح باندھتے ہیں
صابراں۔۔۔۔کوئی بھی جانورہواسے اس طرح باندھوکہ وہ آسانی گھوم سکیں چل پھرسکیں ان کی رسیاں کھونٹوں سے لپٹ نہ جائیں جانورسیدھے کھڑے ہوسکیں اب ساری بکریوں کوچیک کرو اوران کی رسیاں درست کرو
٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 199 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Siddique Prihar

Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 307 Articles with 123040 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: