درد جدائی .....قسط 38

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی ۔۔۔۔قسط ۔38۔ ۔۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یعنی کے عدن عریب اپنے باپ کے نقشہ قدم پر چل رہی ہے پیسے کے لئے کچھ بھی کر سکتی ہے ۔۔۔۔ادیان نے ہنستے ہوۓ کہا

جی جی پیسے سے بھلا کس کو پیار نہیں ہوتا ۔۔۔۔عدن نے مسکراتے ہوۓ جواب دیا ۔۔۔

تو ٹھیک ہے عدن صاحبہ ہم آپ کو کام دیں گے۔۔۔۔آپ ہمارے لئے کام کریں گی۔۔۔۔۔؟

جی اگر پیسے ملیں گے تو ضرور کروں گی کام۔۔۔

تو ٹھیک ہے چلیں میرے ساتھ۔۔۔۔۔ادیان گاڑی کی طرف بڑھا ۔۔۔۔

ک۔۔۔۔کہاں لے کر جا رہے ہو مجھے تم۔۔۔۔؟؟؟ عدن گھبراتے ہوۓ بولی۔۔۔۔

ارے گھبراوّ نہیں۔۔۔۔ اب تو تم میری ٹیم میں آگئی ہو تمہیں کام سمجھانا ہے کے کیسے کرنا ہے۔۔۔ اور اپنے ساتھیوں سے بھی ملوانا ہے تمہیں۔۔۔۔۔۔ادیان نے عدن کے کندھے پر ہاتھ رکھا ۔۔۔عدن نے یکدم ہاتھ پیچھے کر لیا۔۔۔۔۔

ہمم ٹھیک ہے چلو ۔۔۔۔عدن گاڑی میں بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔

. . . ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
باس خبر ملی ہے ایک گروپ ہے یہاں جو لڑکیوں کو اغوا کر کے باہر کے ملک بیچ دیتا ہے اور بچوں کو اغوا کر کے ان سے بھیگ منگواتا ہے۔۔۔۔ایک آفیسر نے میجر غازان کو اپ ڈیٹ دی۔۔۔۔۔۔

ٹھیک ہے تم ان لوگوں پر نظر رکھو۔۔۔۔۔۔ان لوگوں کے گروپ میں کون کون شامل ہے۔۔۔سب پر ۔۔۔۔ان لوگوں کو اچھا خاصہ سبق سیکھانا ہے۔۔۔۔۔۔۔ اس بار کوئی بھی بنت حوا ملک سے باہر نہیں جانی چاہئے۔۔۔
راجر سر ۔۔۔سر اس گروپ کا ماسٹر مائنڈ ادیان نامی ایک شخص ہے۔۔۔۔۔

اور آفیسر اس کی ٹیم میں کون کون ہے ؟

سر ابھی اس کے بارے میں کچھ نہیں پتہ میری نظر ہے ان لوگوں پر جیسے ہی کچھ پتہ چلتا ہے میں آپ کو اپ ڈیٹ کروں گا ۔۔۔۔۔

اوکے ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کون سی جگہ ہے ادیان ۔۔۔۔۔ادیان عدن کو کسی عجیب سی پرانی فیکٹری میں لے آیا تھا ۔۔

اندر آؤ میرے ساتھ عدن ۔۔۔عدن خاموشی سے ادیان کے ساتھ چلنے لگی ۔۔۔۔۔عدن کا دل دھک دھک کر رہا تھا پر وہ خاموشی سے چلتی رہی ۔۔۔اندر آکر عدن کو جھٹکا لگا ۔۔ وہاں چوٹھے چوٹھے معصوم بچے بیٹھے ہوۓ تھے ۔۔۔۔ جن پر یہ ظالم لوگ ظلم کر رہے تھے ۔۔بچوں پر ظلم ہوتا دیکھ کر عدن کی آنکھوں میں آنسو آنے لگے پر عدن نے بہت مشکل سے خود کو سمبھالا تھا۔۔۔۔ کیوں کہ وہ مشن پر تھی۔۔۔۔معصوم بچوں کے مستقبل کا سوال تھا معصوم بنت حوا کی عزت کا سوال تھا بہت سی قیمتی جانے خطرے میں تھیں عدن کو ہر قدم پھونک پھونک کر رکھنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اوہ واؤ ۔۔۔۔۔ ادیان تم نے تو کمال کردیا اتنے سارے بچے ۔۔۔۔تم ان سب سے بھیگ منگواتے ہو۔۔۔۔ تم تو کافی کما لیتے ہو گے ۔۔۔۔۔عدن نے اپنے ہاتھ میں پہنی ہوئی انگوٹھی کو پریس کر لیا تھا۔۔۔ جس کی وجہ سے ریکارڈنگ شروع ہوگئی تھی۔۔۔۔ تاکہ ادیان کی ہر بات ریکارڈ کر سکے۔۔۔۔

ہاہاہاہا ہاں بس دیکھ لو ۔۔۔۔ اب تم بھی تھوڑے بچے جمع کرنا ۔۔۔اور بھی بچے ہو جائیں گے ۔۔۔۔۔اور یہ بچے اچھا خاصہ کما کر لاتے ہیں ۔۔۔۔
ادیان کے چہرے پر شیطانی مسکراہٹ طاری ہو گئی ۔۔۔۔

تم ان بچوں کو کیا دیتے ہو ادیان۔۔۔عدن نے پھر سے سوال کیا ۔۔۔۔۔

کچھ بھی نہیں ان کے لئے یہ چار دیواری ہی کافی ہے ۔۔۔جن سے یہ لوگ بھیگ مانگتے ہیں اگر وہ لوگ کھانا دے دیں تو یہ کھا لیتے ہیں لیکن پیسے خرچ کرنے کی اجازت نہیں ہے ان کو ۔۔

اور اگر وہ لوگ کھانا نہ دیں تو ۔۔۔؟

تو کیا ایک بار دن میں رات کو کھانا کھیلاتا ہوں ان کو ۔۔۔۔۔ان کے لئے اتنا ہی کافی ہے ۔۔۔۔

کس قدر ظالم انسان ہے یہ۔۔۔۔۔بچوں پر ظلم کرتا ہے۔۔۔۔۔بچوں سے بھیگ مانگواتا ہے بیچارے سارا دن سڑکوں پر۔ کھڑے ہو کر اس کے لئے کماتے ۔۔۔۔اور یہ کھانا تک نہیں دیتا۔۔۔۔۔ عدن کا دل کر رہا تھا وہ ادیان کی جان لے لے ۔۔۔۔۔۔۔لیکن عدن کو جوش سے نہیں ہوش سے کام لینا تھا۔۔بہت سی معصوم زندگیوں کا سوال تھا ۔۔۔۔۔
ان سے ملو یہ ہیں میرب اور ان کی ٹیم میں یہ دو لڑکیاں ہیں زونیشہ اور اقفی. ان تینوں کا کام ہوتا ہے لڑکیوں کو کڈنیپ کرنا اس سے کام کروانا ان کو فروخت کرنا ۔۔۔خریداروں کے آگے پیش کرنا جس کی جتنی بولی لگے اسے اتنے میں فروخت کر دینا ۔۔۔۔۔۔
اور یہ ہیں احمر ایش ۔۔۔۔ملک اکفاش اور محمّد الهان ان تینوں کا کام ہوتا ہے بچوں کو کڈنیپ کرنا اور ان سے بھیگ منگوانا اور ان پر نظر رکھنا کے کہیں وہ کسی کو کچھ بتا نہ دیں۔۔۔۔۔ادیان سب سے عدن کو ملوا رہا تھا۔.
عدن اب تمہارا کام ہے تم یہاں رہ کر ان سب کا خیال رکھو گی۔۔۔جب یہ بچے یہاں موجود ہوں ۔۔۔اور لڑکیوں پر بھی نظر رکھو گی کوئی بھاگے نہیں ۔۔۔۔۔ٹھیک ہے نہ عدن ۔۔۔۔تمہیں اس کے پیسے ملیں گے ۔۔۔۔۔

ہاں۔ ٹھیک ہے بہت اچھا کام ہے یہ۔۔۔میں ضرور کروں گی میں یہیں رہوں گی۔یہ احمر ایش بھی نیا بندہ ہے۔۔اور تم بھی۔باقی سب پرانے ہیں۔

ہممم ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔
. . . . . . ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب اپنے اپنے کام پر جا رہے ہیں ۔۔۔۔۔عدن تم یہاں رہو گی ان بچوں کے پاس اور لڑکیوں کے پاس۔۔۔۔

آپ لوگ کہاں جا رہے ہیں ۔۔۔۔۔عدن نے بے ساختہ پوچھا

۔آج کڈنیپنگ ڈے ہے ۔۔۔۔۔ہاہاہا ۔۔۔۔۔ادیان کی اس بات پر سب ہنسنے لگے ۔۔۔۔۔۔۔اور یہ احمر بھی نیا بندہ ہے اس کو بھی کام سیکھانا ہے ۔۔۔۔خیر ہم جا رہے ہیں۔۔۔۔

سب کے جانے کے بعد عدن بچوں کے پاس آکر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔بچے عدن سے ڈر رہے تهے سب سہمے ہوۓ تھے ۔۔۔۔

ارے بچوں نہیں ڈرو ۔۔۔۔آپ سب تو بہت اچھے بچے ہو۔۔۔۔عدن نے بہت پیار سے کہا ۔۔۔

لیکن آپ بری آنٹی ہو آپ ان برے انکل کے ساتھ ہو۔۔۔۔آپ ہمیں۔ بھی مارو گی ۔۔۔۔ایک بچے نے معصومیت سے کہا ۔۔۔۔۔

نہیں بیٹا آپ کو نہیں ماروں گی ۔۔۔۔میں۔ آپ لوگوں کو ان برے انکل سے بچانے آئی ہوں ۔۔۔۔۔آپ سب کو آپ لوگوں کے ماما بابا کے پاس چھوڑ کر۔ آؤں۔ گی ۔۔۔۔۔عدن کی آنکھوں میں آنسو آگئے تھے ۔۔۔۔

سچی آنٹی آپ ہمیں۔ ہمارے ماما بابا سے ملوائیں گیں۔۔۔۔۔۔سب بچے بہت خوش ہوگئے تھے ۔۔۔۔۔

پر بچوں یہ ہمارا۔ سیکرٹ رہے گا کسی کو بھی نہیں بتانا ۔۔۔۔

اوکے آنٹی ہم کسی کو بھی نہیں بتائیں گے ۔۔۔۔۔سارے بچے ایک ساتھ بولنے لگے ۔۔۔۔۔پر آنٹی یہاں باہر نہ دو انکل ہیں جن کا ان لوگوں نے آپ۔ کو نہیں بتایا ہے ان۔ لوگوں نے آپ پر نظر رکھی ہے آپ ہم سے تھوڑا دور رہیں ورنہ ان کو شک ہو جاۓ گا ۔۔۔۔ایک بچے نے عدن کے پاس آکر آہستہ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔

کیا سچ میں ۔۔۔۔عدن حیران پریشان ہوگئی ۔۔۔۔۔کہاں ہیں وہ ۔۔۔۔

آنٹی وہ باہر ہوتے ہیں ہر آنے جانے پر نظر رکھتے ہیں۔۔۔ اور یہاں ایک کیمرہ بھی لگا ہے وہ ہر وقت دیکھتے رھتے ہیں۔۔۔۔۔

اوہ اس کا مطلب ان لوگوں نے مجھ پر نظر رکھی ہوئی شکر ہے میں ان لوگوں کو لے کر نہیں گئی ورنہ ان کے آنے سے پہلے ان بچوں کو یہاں۔ سے نکالنے کا سوچا تھا میں نے ۔۔۔یا اللّه تیرا شکر ہے میں بچ گئی ہوں ۔۔۔۔ورنہ وہ لوگ پتہ نہیں کیا کرتے ۔۔۔۔اچھا بچوں میں تھوڑا تم لوگوں سے دور رہتی ہوں پر پریشان نہ ہونا میں تم۔ سب کے ساتھ ہوں ۔۔۔۔۔۔میں مر جاؤں گی تم۔ لوگوں پر آنچ نہیں آنے دوں گی کیوں کہ تم۔ لوگ میرے وطن کا مستقبل ہو پاکستان کا مستقبل ہو تم۔ سب ۔۔۔۔۔۔عدن یہ کہ کر وہاں سے اٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔

عدن وہاں سے۔ اٹھ کر لڑکیوں کے پاس آگئی اور ان سب کو بھی یقین دلایا وہ یہاں ان سب کے لئے ہی آئی ہے وہ بے فکر رہیں ۔۔۔۔۔عدن سب کو ان کے گھر تک چھوڑ کر آئے گی ۔۔۔۔۔۔عدن غصے والی ایکٹنگ کر رہی تھی تاکہ سی سی ٹی وی کیمرہ کی مدد سے جو ان کو دیکھ رہا ان کو لگے عدن ان سب پر غصہ کر رہی ہے۔۔۔۔

باجی ہمیں پلیز یہاں سے نکال دیں۔۔۔۔ہم نے اپنے ماما بابا کے پاس جانا ہے ۔۔۔۔۔

پر لڑکیوں تم لوگ یہاں آئے کیسے ۔۔۔۔باجی یہ لوگ لڑکیوں کو پیار کے جال میں پھنساتے ان سے شادی کرنے کا کہتے پھر موقع ڈھونڈھ کر یہاں لے آتے ۔۔۔۔۔اور کبھی فیس بک پر محبت کے دعوٰے کرتے ہیں پھر ملنے کا بولتے ہیں پھر اغوا کر لیتے ہیں ۔۔۔

دیکھو لڑکیوں یہ فیس بک وغیرہ صرف ٹائم پاس کے لئے استعمال کیا کرو اپنی پرسنل انفارمیشن کسی کو نہیں دیا کرو ۔۔۔۔۔۔۔حالات خراب ہیں کوئی بھی بھروسے کے قابل نہیں ۔۔۔۔اور جو شخص تم لوگوں سے سچی محبت کرتا ہوگا وہ خود کو تمارا محرم بنائے گا ۔۔۔۔اگر وہ نکاح نہیں کر سکتا تو اس کو محبت کے دعوٰے کرنے کا بھی کوئی حق نہیں ۔۔۔۔آج کل کی لڑکیاں ۔۔۔۔۔ہر کسی پر بھروسہ کر لیتی ہیں ہر کسی کو تصویریں بھج دیتی ہیں پھر ان کو بلیک میل کیا جاتا ہے ۔۔۔۔اس لئے پہلے ہی ان سب چیزوں سے بچو کسی کو بھی موقع نہیں دو ۔۔۔۔۔۔عدن سب کو سمجھا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔خیر میں آگئی ہوں نہ بے فکر رہو۔۔۔پر آئندہ خیال رکھنا ۔ہے اوکے ۔۔۔۔۔۔

آنٹی یہ آپ کا موبائل ۔۔۔۔۔باہر پڑھا تھا ۔۔۔۔ایک بچے نے عدن کو اس کا موبائل لا کر دیا ۔۔۔۔بچے کا ہاتھ لگا تو وال پیپر شو ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔

آنٹی یہ ہیرو کون ہے کتنا پیارا ہے ۔۔۔۔۔وہ بچہ وال پیپر دیکھتے ہوۓ بولا ۔۔۔۔۔

میرا غزان ۔۔۔۔۔عدن زیر لب بولی اور مسکرائی ۔۔۔۔

جی کون ہے یہ ۔۔۔۔بچے نے پھر سے پوچھا ۔۔۔۔۔

میجر غزان ۔۔۔۔۔م ۔۔۔۔میرا مطلب کوئی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔

اوہ ہو تو یہ آپ کا ہیرو ہے آنٹی ۔۔۔۔۔۔

باجی ہمیں بھی ہیرو دیکھائیں ۔۔۔سب لڑکیاں بولنے لگی ۔۔۔۔

بیٹا . ۔۔۔عدن یکدم کھڑی ہوئی تو پاس کھڑا بچہ سہم گیا ۔۔۔۔

سوری آنٹی مارنا نہیں ۔۔۔میں کچھ نہیں کہوں گا ۔۔۔۔۔بچے کی آنکھوں میں آنسو آگئے ۔۔۔۔

نہیں بیٹا میں۔ مار نہیں رہی۔۔۔۔بیٹا ڈرو نہیں مجھ سے ۔۔۔۔۔اچھا چلو سب دور دور ہوجاؤ ۔۔۔۔۔وہ لوگ کیمرہ میں دیکھ رہے ہیں ان کو شک نہیں ہونا چاہئے ۔۔۔۔۔

ہاں ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
باس آپ کو پتہ ہے بریگیڈیئر عریب کی بیٹی عدن جو ہے ۔۔۔۔۔۔وہ بھی ان غداروں کے ساتھ ملی ہوئی ہے ۔۔۔۔آفیسر نے اپ ڈیٹ دی ۔۔۔۔۔

واٹ ۔۔۔۔۔۔۔عدن ۔۔۔۔غزان کو جھٹکا لگا زور سے ۔۔۔۔۔

جی باس آپ کو ویڈیو بھجی ہے دیکھیں ۔۔۔۔۔

غزان نے جلدی سے ویڈیو پلے کی عدن ہنس رہی تھی اور ادیان کی تعریف کر رہی تھی ۔۔،۔۔۔۔۔غازان نے غصہ سے مٹھی بند کر لی ۔۔۔۔۔پھر زور سے لیپ ٹاپ اٹھا کر دیوار پر دے مارا ۔۔۔۔۔۔۔اور غصہ سے بڑبڑایا ۔۔۔۔۔آخر ہو تو غدار کی بیٹی۔۔۔۔۔۔۔باپ کے نقشہ قدم پر تو چلو گی ہی۔۔۔۔۔۔

(جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 171 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27807 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: