درد جدائی .....قسط 39

(Shafaq kazmi, Karachi)

ناول درد جدائی قسط 39 مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے
۔................
ہیلو عدن کیسی ہو ہم آگئے ہیں ۔۔۔۔۔۔ادیان نے مسکراتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔

ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔چلیں اب میں گھر جاتی ہوں دیر ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔عدن وہاں سے چلنے لگی ۔۔۔۔۔۔

روکو عدن میں چھوڑ دیتا ہوں گھر تمہیں ابھی اس وقت اکیلے جانا ٹھیک نہیں تم دوست ہو میری ۔۔۔۔۔۔

کتنا عجیب انسان ہے یہ ۔۔۔۔۔دوسروں کی ماں بیٹی کو فروخت کرتا بچوں سے بھیگ منگواتا ۔۔۔۔۔نہ جانے وہ درندے ہماری بہنو کے ساتھ کیا کرتے ہوں گے ۔۔۔۔۔۔۔ دوسری طرف اپنے دوستوں اور گھر والوں کا کتنا خیال رکھتا کہیں انھیں کچھ نہ ہوجاۓ ۔۔۔۔۔نفرت ہے مجھے ایسے منافق لوگوں سے ۔۔۔۔۔شدید نفرت ہے مجھے ۔۔۔۔عدن نے دل ہی دل میں کہا ۔۔۔۔۔۔

عدن کل ہماری ٹیم کے سب لوگ ہوں گے اور کل ان لڑکیوں کے خریدار بھی آجائیں گے ۔۔۔۔کل میں ان سب کو فروخت کر دوں گا بہت پیسہ آئے گا تم بھی آجانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادیان بہت خوش تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔

ہممم ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عدن کے موبائل میں بیلنس ختم ہو گیا تھا اس کو ارجنٹ کال کرنی تھی ۔۔۔۔عدن نے موبائل شاپ کے آگے گاڑی روک دی ۔۔۔۔۔جب بیلنس ڈلوا کر واپس آرہی تھی تو اس کی ٹکر غازان کے ساتھ لگ گئی ۔۔۔۔۔۔

اوہ سوری ۔۔۔۔۔۔عدن نے جلدی میں کہا کیوں کہ اسے دیر ہو رہی تھی ۔۔۔۔

سوری تو تمہیں لازمی کرنا چاہئے عدن ۔۔۔۔۔۔۔۔ غزان نے نفرت بھری نگاہ سے عدن کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔

غازان تم ۔۔۔۔۔۔۔عدن غازان کو دیکھ کر روکی ۔۔۔۔۔۔

ہاں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ میں تمہیں بہت سمجھدار سمجھتا تھا ۔۔۔ . لیکن تم بھی اپنے باپ کے نقشہ قدم پر چلنے لگی ہو ۔۔۔۔۔۔۔

کیا مطلب ہے تمہارا ۔۔۔۔۔عدن کو کچھ سمجھ نہیں آرہی تھی ۔۔۔۔۔
بہت معصوم بن رہی ہیں آپ محترمہ جیسے آپ نے کچھ نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک بات یاد رکھنا جیسے تمہارے غدار باپ کو سزا ہوئی تھی نہ اب تمہیں بھی سزا دلوا کر رہوں گا میں ۔۔۔۔۔

غازان تمہیں کوئی حق نہیں یوں سب کے سامنے میری ذات کی تذلیل کرنے کا ۔۔۔۔۔سب دیکھ رہے ہیں عدن نے سب کی جانب دیکھا سب ان دونو کو ہی دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔

تو دیکھنے دو نہ سب کو ۔۔۔۔۔سب کو بھی پتہ چلے کے یہ لڑکی پیسوں کے لئے کچھ بھی کر سکتی ہے ۔۔۔۔۔اپنا ضمیر بیچ سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔اوہ ہاں ۔۔۔۔آخر ہو جو عریب کی بیٹی ۔۔۔۔۔۔۔غازان نے زور سے عدن کا بازو پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں پتہ ہے عدن میں تم سے شدید نفرت کرتا ہوں ۔۔۔۔شدید سے بھی زیادہ شدید نفرت ۔۔۔۔۔مجھے تمہارے نام۔ اور شکل دونو سے شدید نفرت ہے ۔۔۔۔۔۔۔
دفع ہو جاؤ یہاں سے تم ۔۔۔۔۔نہیں تو میں تمہیں جان سے مار دوں گا ۔۔۔۔۔۔غازان نے عدن کو زور سے دھکہ دیا ۔۔۔۔۔عدن وہاں سے چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کوئی حق نہیں تھا غازان یوں سب کے سامنے میری ذات کی تذلیل کرنے کا ۔۔۔۔۔۔عدن نے موبائل سے ساری غازان کی تصویریں ڈیلیٹ کر دی ۔۔۔۔جب انسان اپنی زندگی میں ہر بار ہی سب سے قیمتی چیز کو کھو دے تو اس کا دل مزید حسرتیں نہیں کرتا ۔۔۔۔۔۔پھر اس کی زندگی سے کوئی بھی چلا جاۓ اس کو فرق نہیں پڑھتا ۔۔۔۔۔خاص سے عام کرنے میں ایک لمحہ لگتا ۔۔۔۔۔لیکن وہ ایک لمحہ بھی اذیت دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر ادیان اور اس کے گروہ کو پکڑ لیا گیا ہے ۔۔۔۔۔۔اور لڑکیوں کو ان کے ماں باپ سے ملوا دیا گیا ہے ۔۔۔۔۔کچھ بچوں کو بھی گھر والوں سے ملوا دیا ہے ۔۔۔۔۔پر کچھ بچوں کو اپنے گھر کا اڈریس نہیں آتا ماں باپ کا بھی نہیں پتہ ۔۔۔۔۔۔

گڈ جاب ! ۔۔۔۔ان بچوں کے رہنے اور پڑھائی کا بندوبست کرو ۔۔۔۔۔۔

راجر سر !!!! سر آپ کو پتہ اس گروہ کو پکڑوانے میں مدد کس نے کی ۔۔۔۔۔

کس نے ؟

سر عدن نے ۔۔۔۔۔بریگیڈیئر عریب کی بیٹی نے اور ۔۔۔۔کیا جاسوسی کی ہے لڑکی نے ۔۔۔۔۔۔اس گروہ کی خبر بھی اس نے ہی دی تھی ۔۔۔۔۔اور پکڑوایا بھی اس نے ہی ۔۔۔۔۔اس کے باپ نے وطن سے غداری کی پر بیٹی نے وطن کے لئے بہت کچھ کیا ۔۔۔۔۔۔کتنی ماؤں کو ان کہ بچوں سے ملوایا کتنی بیٹیوں کو فروخت ہونے سے روکا ۔۔۔۔۔۔ورنہ یہ درندے پتہ نہیں ہماری کتنی بہنو کی عزتوں ساتھ کھیلتے ۔۔۔۔۔۔۔سلوٹ کرتا ہوں میں عدن میم کو ۔۔۔۔۔، کیا ۔۔۔۔۔عدن ۔۔۔۔۔یہ سب عدن نے ۔۔۔۔۔۔۔۔غازان چیئر پر بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔موبائل شاپ میں جو کیا اس نے عدن کے ساتھ وہ غازان کے ذہن میں گردش کرنے لگا ۔۔۔۔۔اوہ میرے خدایا میں نے یہ کیا کردیا ہے ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔
غازان میں نے تمہیں کہا بھی تھا کے آنکھوں دیکھا سچ نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔۔مگر تم نے یقین ہی نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔احد نے غازان کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔
یار میں نے سب کے سامنے عدن کی بہت بے عزتی کی ہے ۔۔۔۔۔۔میں نے۔ سب کے سامنے اس کو غدار اور بھی پتہ نہیں کیا کیا کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔غازان اپنی اس حرکت پر بہت شرمندہ تھا ۔۔۔۔۔۔
اب جاؤ عدن سے معافی مانگ لو ۔۔۔۔۔۔احد غازان کو سمجھانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔

یار وہ مجھے معاف نہیں کرے گی ۔۔۔۔۔۔میری اس حرکت کے بعد تو وہ میری شکل دیکھنا بھی ضروری نہیں سمجھے گی ۔۔۔۔۔۔

کر دے گی معاف ۔۔۔۔لیکن تم نے اس کو ہرٹ بھی تو بہت کیا ہے نہ ۔۔۔۔۔اب سزا تو ملنی چاہئے تمہیں ۔۔۔کہا بھی تھا کے پہلے بات کی تہہ تک جاؤ لیکن نہیں جناب نے سنی تھوڑی ہے کسی کی احد نے منہ بناتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔ .
اچھا چلو اب جاؤ اور معافی مانگو ۔۔۔۔۔۔۔

ہممم تجھے لگتا ہے وہ مجھے معاف کرے گی ۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟

امید تو ہے اور امیدوں پر ہی دنیا قائم ہے ۔۔۔۔۔اور ہم سب امید سے ہیں ۔۔۔۔ہاہاہا ۔۔۔۔۔

جا دفع ہو تجھے مذاق کی پڑی یہاں بھائی تیرے کی جان پہ بنی ۔۔۔۔۔اچھا چل میں چلتا ہوں عدن کے پاس ۔۔۔

ہاہاہا بیسٹ آف لک ۔۔۔۔۔۔۔بھابھی کو منانے میں اللّه تجھے کامیاب کرے ۔۔۔۔۔۔احد نے ہنستے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

آمین ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماسی بیل بج رہی ہے دیکھیں باہر کون ہے ۔۔۔۔۔۔

جی عفاف بی بی جی میں دیکھتی ہوں ۔۔۔۔۔

السلام عليكم! عدن گھر پر ہیں ؟

عدن بی بی تو نہیں ہیں پر عفاف بی بی جی ہیں

کون آیا ہے ماسی ۔۔۔عفاف نے پوچھا ۔۔۔۔

بی بی جی غازان سر آئے ہیں ۔۔۔۔۔

غازان۔۔۔۔۔۔عفاف باہر آگئی ۔۔۔۔۔آوّ بیٹا اندر آجاؤ ۔۔۔۔۔

نہیں آنٹی دراصل عدن سے کام تھا ضروری ۔۔۔۔

بیٹا عدن تو ہسپتال ہوگی ۔۔۔۔۔تم آجاؤ بیٹھو میں تمہارے لئے کچھ بنا کر آتی ہوں ۔۔۔۔۔

نہیں آنٹی ۔۔۔۔تکلف کی ضرورت نہیں میں پھر آؤں گا میں عدن کے ہسپتال چلا جاتا ہوں کام ہے ۔۔۔۔۔۔۔

بیٹا خریت تو ہے نہ ۔۔۔۔۔؟

جی جی آنٹی آپ پریشان نہ ہوں خیریت ہی خیریت ہے چلیں میں چلتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
واہ واہ عدن میڈم ڈاکٹر بن گئیں بہت مریض ہیں محترمہ کے پاس ۔۔۔۔۔۔غازان عدن کے آفس آگیا تھا ۔۔۔۔۔۔

تم ۔۔۔۔تم یہاں کیا کر رہے ہو ۔۔۔۔۔عدن چیئر سے اٹھی ۔۔۔۔۔۔

میں بھی مریض بن گیا ہوں میرا علاج کر دو ۔۔۔۔۔

عدن خاموشی سے اٹھ کر باہر جانے لگی غازان نے عدن کا ہاتھ پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔اور اپنے قریب کر لیا ۔۔۔۔۔۔

میری ذات کی تذلیل کر کے سکون نہیں آیا کہ یہاں بھی آگئے ہو مجھے ذلیل کرنے ۔۔۔۔۔۔

آئی ایم سوری ۔۔۔۔۔میں بہت شرمندہ ہوں ۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں میں نے غلط کیا ۔۔۔۔۔پر مجھے کیا پتہ تھا محترمہ بھی جاسوس ہیں ۔۔۔۔۔

بس جاؤ مجھے تم سے بات نہیں کرنی آئی ہیٹ یو ۔۔۔۔۔

بٹ آئی لو یو..

جب چاہا محبت کے دعوٰے کر لیے جب چاہا چھوڑ دیا جب چاہا اپنا بنا لیا کھلونا ہوں کیا میں ۔۔۔۔۔۔

آئی ایم سوری نہ ۔۔۔۔۔اچھا کان پکڑ کر سوری ۔۔۔۔اب تو مان جاؤ نہ ۔۔۔۔۔۔۔

میں گھر جا رہی ہوں میرے پاس ٹائم نہیں ہے ۔۔۔۔۔عدن تیزی سے وہاں سے نکل کر ہسپتال کے باہر آگئی ۔۔۔۔۔۔۔

عدن سنو میری بات تو سنو ۔۔۔۔۔پلیز ایسے چھوڑ کر نہیں جاؤ ۔۔۔۔میں مانتا ہوں میں نے غلط کیا ہے ۔۔۔۔۔۔پر معافی مانگ تو رہا ہوں پلیز نہیں جاؤ نہ ۔۔۔۔۔۔ غازان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی عدن کچھ کہنے والی تھی اتنے میں دو نقاب پوشوں نے آکر غازان کو گولی مار دی ۔۔۔۔۔۔اور تیزی سے وہاں سے چلے گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔

غزان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عدن بھاگتے ہوۓ غازان کے پاس آئی ۔۔۔۔۔

آئی ایم سوری اینڈ آئی ریلی لو یو ۔۔۔۔۔میرے بعد اپنا پلیز خیال رکھنا ۔۔۔۔۔۔

بکواس نہیں کرو ۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہونے دوں گی میں تمہیں سنا کچھ بھی نہیں ۔۔۔۔۔عدن کے آنسو غازان کے چہرے پر گرنے لگے ۔۔۔۔۔
)جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 397 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 81 Articles with 31168 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: