درد جدائی .....قسط40

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی ۔۔۔۔قسط ۔۔40۔ ۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے

۔۔ . . . . . . .
ڈاکٹر سعد ان کو گولی لگی ہے جلدی سے آپریشن کرنا ہوگا ان کا ۔۔۔۔ عدن نے روتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔مجھ سے آپریشن نہیں ہو پائے گا ڈاکٹر سعد مجھ میں ہمت نہیں میں غازان کو اس حالت میں نہیں دیکھ سکتی ۔۔۔۔۔۔

آپ پریشان نہیں ہوں ۔۔۔۔ہم ہیں نہ ۔۔۔۔۔۔آپ بے فکر رہیں ۔۔۔۔۔

ڈاکٹر سعد اپنی ٹیم کے ساتھ آپریشن ٹھیٹر میں چلے گئے ۔۔۔۔آپریشن سٹارٹ ہو چکا تھا ۔۔۔۔

عدن تھک چکی تھی ۔۔۔۔۔بہت بے بس محسوس کر رہی تھی عدن خود کو ۔۔۔۔۔یہ کسی مجبوری تھی ۔۔۔اتنی باتیں اتنا سب کچھ سننے کے بعد بھی کیوں آخر غازان کو کھونے کا ڈر ستا رہا تھا ۔۔۔۔۔عدن اٹھ کر نماز پڑھنے لگی ۔۔۔۔۔
یا اللّه میں نے اپنی زندگی میں ہر بار ہر رشتے کو کھویا ہے ۔۔۔اب مزید ہمت نہیں ہے مجھ میں ۔۔۔ہم تو مٹی کا ایک کھلونا ہیں جو تیرے کن سے تخلیق ہوئے میرے مولا تیری مرضی،تو جوڑ دے تیری مرضی تو توڑ دے تیری مرضی تو خاک کر دے ۔۔۔۔پر یا اللّه میں بھی تیری بندی ہوں تیرے کن سے تخلیق ہوئی ہوں ۔۔۔تیرے کن سے تخلیق کئے ایک مٹی کے کھلونے پر دل ہار بیٹھی ہوں
میرے مولا تو ستر ماؤں سے زیادہ محبت کرتا ہے تو اپنے بندوں کو تڑپتا ہوا نہیں دیکھ سکتا۔۔۔۔۔میرے مولا مجھ پر رحم کر۔۔۔۔۔غازان کو کچھ نہیں ہو پلیز اللّه تعالیٰ وہ ٹھیک ہو جاۓ اس کو ٹھیک کر دیں ۔۔۔

عدن سجدے میں رو رہی تھی دعا کر رہی تھی۔۔۔۔۔جب انسان بہت تھک جاۓ اور اس کے پاس کسی کا کندھا میسر نہ ہو جہاں وہ سر رکھ کر رو سکے ۔۔۔۔۔لکین اگر کندھا میسر ہو بھی تو ویسا سکون نہیں ملتا جو رب کے آگے رونے میں ملتا ہے ۔۔۔۔عدن نماز پڑھنے کے بعد آپریشن ٹھیٹر کی طرف آگئی ۔۔۔۔۔اور دل ہی دل میں قرآن پاک پڑھ رہی تھی۔۔۔۔اتنے میں ڈاکٹر سعد آپریشن ٹھیٹر سے باہر آئے ۔۔۔۔اور عدن کو دیکھنے لگے ۔۔۔۔عدن کا دل دھک دھک کرنے لگ گیا تھا ۔۔۔۔۔

کیا ہوا ہے سعد غازان ٹھیک تو ہے ۔۔۔۔۔عدن نے بے چینی سے پوچھا ۔۔۔۔۔

ہم نے ان کے سینے سے گولی نکال لی ہے اور آپریشن بھی کامیاب رہا بس کچھ دیر میں انھیں ہوش آجاۓ گا ۔۔۔۔آپ پریشان نہیں ہوں ۔۔۔۔
عدن نے خدا کا شکر ادا کیا شکرانے کے نفل پڑھ کر غازان کے پاس آگئی۔۔۔۔۔۔کہا تھا نہ تمہیں کچھ نہیں ہونے دوں گی۔۔تمہیں رب سے مانگ لاؤں گی۔۔۔میں تمہیں رب سے مانگ کر لائی ہوں غازان۔۔۔۔عدن نے روتے ہوۓ غازان کا ہاتھ پکڑ لیا۔۔۔۔
غازان کو دھیرے دھیرے ہوش آنے لگا تھا اس نے تھوڑی سی آنکھیں کھول لیں۔۔۔۔۔عدن ہاتھ چھوڑ کر اٹھنے لگی ۔ غازان نے ہاتھ پکڑ لیا۔۔۔۔۔ہاتھ کیوں چھوڑ رہی ہو پکڑ کر رکھو اچھا لگ رہا ہے ۔۔۔۔غازان ابھی ہوش میں آیا تھا اس کے لئے بولنا محال ہو رہا تھا۔۔۔


دیکھیں غازان صاحب آپ کو ابھی ہوش آیا ہے آپ کے لئے زیادہ بات کرنا ٹھیک نہیں ہے آپ کو آرام کی ضرورت ہے۔۔۔

صرف آرام کی نہیں کسی اور کی بھی ضرورت ہے۔۔۔

کس کی۔۔۔۔عدن نے پریشان ہوتے ہوۓ کہا۔۔۔۔

ڈاکٹر عدن کی۔۔۔مجھے آرام کے ساتھ ساتھ عدن کی بھی ضرورت ہے۔۔۔۔نہیں تو میں مر بھی سکتا ہوں۔۔۔۔غازان نے معصوم سا منہ بناتے ہوۓ کہا


شٹ اپ ۔۔۔بکواس بند کریں ۔۔۔۔آپ کو میں نے آرام کرنے کا کہا ہے بکواس کرنے کا نہیں ۔۔۔۔۔غازان کے مرنے کا سن کر عدن کے دل کو کچھ ہوا ۔۔۔۔۔غازان کو کیا پتہ کے عدن اس کے لئے کتنا روئ تھی ۔۔۔۔آپ آرام کیجیۓ مجھے اور بھی کام ہے میں چلتی ہوں ۔۔۔۔۔۔

سنو ۔۔۔۔۔ آہ۔ہ۔ ۔ہ آ۔ ۔۔ہ ہ ۔۔۔۔۔۔عدن جانے لگی غازان روکنے لگا تو اس کو درد شروع ہوگیا ۔۔۔۔۔

کیا ہوا ۔۔۔۔۔عدن نے پریشان ہوتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

درد ہورہا ہے بہت زیادہ۔۔۔۔ سنو مت جاؤ نہ میرے پاس رہو کچھ دیر ۔۔۔۔۔عدن آئی ایم ریلی سوری میں جانتا ہوں میں نے بہت غلط کیا ہے۔۔۔۔۔مجھے تم سے اس طرح بات نہیں کرنی چاہئے تھی میں بہت زیادہ شرمندہ ہوں ۔۔۔۔۔تم سے ہاتھ جوڑ کر معافی مانگنا چاہتا ہوں پلیز مجھے معاف کر دو ۔۔۔۔۔۔پر پلیز مجھ سے اس طرح خفا نہیں ہو ۔۔۔۔۔میں مر جاؤں گا ۔۔۔۔۔ کوئی بات نہیں ۔۔۔۔تم نے جو۔ کیا وطن کے لئے کیا ۔۔۔۔۔اگر میں بھی تمہاری جگہ ہوتی ۔۔۔۔تو شاید میں بھی ایسا ہی کرتی ۔۔۔۔۔۔۔۔میں تم سے خفا نہیں ہوں ۔۔۔۔۔۔خوش رہو ۔۔۔۔۔
میں تمہارے بغیر خوش نہیں رہ سکتا ۔۔۔۔۔۔تمہارے بغیر جینے کا نہیں سوچ سکتا ۔۔۔۔۔

میں بھی تمہارے بغیر نہیں رہ سکتی ہوں ۔۔۔۔مجھے بھی تم سے محبت ہوگئی ہے بہت زیادہ ۔۔۔عدن نے مسکراہتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

کیا خیال ہے پھر جلدی سے نکاح کرلیں ۔۔۔۔غازان نے ہنستے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔

ہاں جلدی سے کرو اس سے پہلے پھر کچھ ہوجاۓ ۔۔۔۔ہاہاہا ۔۔۔۔

ہاہاہا نہیں کچھ نہیں ہوتا ۔۔۔۔میں ہوں نہ کچھ نہیں ہونے دوں گا .۔۔۔۔۔۔

واہ واہ دونو کی ناراضگی شکر ہے ختم ہوگئی منہ کب میٹھا کروا رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔میجر احد نے عدن کا ہاتھ غازان کے ہاتھ میں دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔
عدن نے شرما کر سر جھکا لیا تھا ۔۔۔اتنے میں سیل فون بجنے لگا ۔۔۔۔ماماکی کال آ رہی ہے ۔۔غزان ۔۔۔اب میں چلتی ہوں ۔۔۔عدن جانے کیلۓ اٹھ کھڑی ہوٸ ۔۔۔
احد تمہیں چھوڑ آۓ گا عدن ۔۔۔اکیلی مت جاٶ ۔۔۔احد بھاٸ مجھے چھوڑ آٸیں گے ۔۔تو احد بھاٸ کو چھوڑنے کون آۓ گا ۔۔۔عدن نے اپنی تھوڑی کے نیچے ہاتھ کر معصومیت سے پوچھا ۔۔۔
غزان اور احد ہنسنے لگے ۔۔۔
کم آن غزان میں بچی نہیں رہی ۔۔چلی جاٶں گی ۔۔۔یہ کوٸ نٸ بات نہیں ہے ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام علیکم ماما جان ۔۔۔عدن گھر آتے ہی ماما کے پاس کچن میں چلی آٸ ۔۔۔اور جھٹ سے ماما کے گلے میں دونوں بازوں ڈال کر ماما کے گال چوم لیۓ ۔۔۔
افف عدن کب بڑی ہو گی ۔۔۔ابھی گر جاتی میں ۔۔۔۔ڈرا کر رکھ دیا ۔۔۔۔اتنی دیر لگا دی آج ۔۔۔چلو چینج کر لو پھر میں کھانا لگواتی ہوں ۔۔۔۔عدن کھلکھلا کر ہنس دی ۔۔۔افف ماما آپ بھی بڑی ہو جاٸیں اب۔۔۔میرے ہوتے ہوۓ بھلا آپ کیسے گر سکتی ہیں ۔۔۔ٹھیک ہے آپ کھانا لگواٸیں ۔۔۔ میں فریش ہو کے آتی ہوں
عفاف کو عدن آج بہت خوش اور پر سکون دکھاٸ دے رہی تھی ۔۔اس عدن سے بہت مختلف ۔۔۔جس کو پڑھنے رونے اور راتوں کو چلتے ہوۓ دیکھا کرتی تھیں ۔۔۔وہ جانتی تھیں ۔۔۔۔ہمت ہی نہ کر پاتیں تھیں ۔۔۔عدن کا درد بانٹ سکتیں ۔۔۔۔اپنی روحوں پر لگا بدنما داغ مٹا سکتیں ۔۔۔عریب کی لگاٸ آگ میں ۔۔۔تو شاید آنے والی نسلیں بھی جلیں گی ۔۔۔ وہ جانتی تھیں ۔۔۔لیکن آج عدن کو اتنا پر سکون دیکھ کر وہ بہت خوش ہوٸیں ۔۔۔۔اور مسکراتے ہوۓ ماسی کو بلانے لگیں
عدن کھانا کھا کر بستر میں لیٹی ہی تھی کی موباٸل کی بپ بجی ۔۔۔۔۔عدن نے موباٸل اٹھایا ۔۔۔اور میسج ریڈ کیا انجان نمبر سے میسج تھا ۔۔۔ تمہیں بہت مس کر رہا ہوں عدن ۔۔۔عدن دکھ سےمسکراتے ہوۓ میسج ٹاٸپ کرنے لگی ۔۔۔ماننے والی بات ہی نہیں ۔۔۔جھوٹے ہو تم ۔۔۔اور سینڈ کر دیا ۔۔۔
جیسے ہی غزان نے میسج ریڈ کیا ۔۔غزان کی کال آنے لگی ۔۔عدن نے کال پک کی ۔۔۔کیا کہہ رہی ہو عدن ۔۔۔۔؟تم مجھے ابھی بھی جھوٹا سمجھتی ہو ۔۔۔؟غزان دکھ سے پوچھ رہا تھا ۔۔۔عدن نے کرب سے آنکھیں موند لیں تھیں ۔۔۔۔اور کہنے لگی ۔۔۔غزان میں تمہیں جھوٹا نہیں سمجھتی ۔۔۔۔پر میں اپنی انا اپنے ضمیر کا کیا کروں۔۔۔جو مجھ سے پچھلے پانچ سالوں کے پل پل کا حساب مانگتا ہے ۔۔۔۔بولو۔۔۔؟ کیا کروں ۔۔۔؟کیا دے سکتے ہو ان پانچ سالوں کا حساب ۔۔۔؟تم تو صرف میری اس ایک اذیت کا اندازہ نہیں لگا سکتے ۔۔۔جو لوگوں کی نظروں کی صورت میں نے برداشت کی ۔۔۔بتاٶ ۔۔کس کس کو وضاحت دیتی ۔۔تم نہیں جانتے ۔۔۔اغوا شدہ لڑکی کا معاشرے میں کیا مقام ہے ۔۔۔؟کیا تمہاری محبت اسقدر خود غرض تھی ۔۔۔۔کہ میرے ردعمل ظاہر کرنے پر ۔۔تم نے مجھ سے ہر طرح کا تعلق ختم کر لیا ۔۔۔۔جب مجھے را نے اغوا کیا تھا ۔۔۔۔تب تمہیں لگا تھا ۔۔۔تب تم نے بھی میرا اعتبار نہ کیا ۔۔۔تمہاری نظروں نے میرے رہے سہے اعتبار کی بھی دھجیاں بکھیر دیں ۔۔۔تم اب بھی کہتے ہو ۔۔۔۔تمہارا اور تمہاری محبت کا اعتبار کروں ۔۔۔بولو۔۔۔۔۔۔؟؟میری جگہ تم ہوتے تو کیا اعتبار کر لیتے ۔۔۔۔معاف کر دیتے ۔۔۔۔
عدن رو رہی تھی ۔۔۔۔غزان بھی رو رہا تھا شاید ۔۔۔تم مجھے جو سزا دو مجھے منظور ہے عدن ۔۔۔غزان روتے ہوۓ کہہ رہا تھا ۔۔۔۔تمہیں لگا تھا ۔۔۔غدار کی بیٹی ہے ۔۔۔۔بے وفاٸ اور دھوکے بازی اس کے خون میں شامل ہے ۔۔۔تعلق ختم کرنا ہی بہتر ہے ۔۔۔یہی سوچا تھا نہ تم نے ۔۔۔۔پل بھر میں تم لوگوں جیسے ہوگۓ تھے ۔۔۔۔
میری انا میرا ضمیر تمہیں کیسے معاف کرے ۔۔۔؟؟
عدن سسکتے ہوۓ کہہ رہی تھی ۔۔۔۔تمہارے شدید نفرت کا تصور کرتے ہوۓ بھی میں تم سے محبت کرتی رہی ۔۔۔شاید کرتی بھی رہوں ۔۔۔۔۔تمہیں لگا تم مجھے اب یاد کر رہے ہو ۔۔۔۔۔کیا گزرے پانچ سالوں میں میں تمہیں یاد نہیں آٸ ۔۔۔
مجھے راتوں کو نیند نہیں آتی تھی ۔۔۔میں پڑھنے کی کوشش کرتی ۔۔تم میرے سامنے آجاتے ۔۔۔تمہاری یادیں تمہاری باتیں ۔۔۔بابا کی لگاٸ ہوٸ آگ ۔۔۔پل پل جھلسی اور تڑپی ہوں میں ۔۔۔غزان ۔۔۔
عدن میں ہر بات کا ازالہ کروں گا ۔۔۔بس مجھے ایک موقع دو صرف ایک موقع ۔۔۔۔تمہیں کیا پتہ یہ درد جداٸ میرے لہو میں زہر بن کر دوڑتا رہا ہے ۔۔۔تم نے اذیت سہی ہے ۔۔۔میں نے بھی سہی ہے ۔۔۔تم کیا جانو ۔۔۔میری ذات میری روح تو کہیں بھی نہیں تھی ۔۔۔تمیارے جانے کے بعد سے اب تک بےجان وجود کے سہارے جیا ہو ں بلکہ اسے جینا بھی کب کہتے ہیں ۔۔۔اب بھی جو کہو تم ۔۔۔جیسے کہو ۔۔۔لیکن اس جداٸ کا درد برداشت کرنے کی ہمت نہیں مجھ میں ۔فیصلہ اب بھی تم کرو ۔۔۔گی ۔۔اگر بچھڑنے کا فیصلہ کرو گی ۔۔ تو دعا کرنا یہ فیصلہ سننے سے پہلے ہی میں مر جاٶں ۔۔۔عدن ۔۔۔۔وہ رو رہا تھا سسک رہا تھا ۔۔۔۔وہ اب عدن کو نہیں چھوڑ سکتا تھا ۔۔۔جداٸیوں کا درد برداشت نہیں کر سکتا تھا ۔۔۔۔تنہاٸیوں کے گھپ اندھیرے اس کے وجود کو ناگ کی طرح ڈسنے لگے تھے ۔۔۔عدن کے بغیر وہ جینے کا تصور بھی نہیں کر سکتا تھا ۔۔۔
غزان کے لفظ ٹوٹ رہے تھے سانسیں اکھڑنے لگیں تھیں ۔۔۔ڈاکٹر سعد جو چیک اپ کیلۓ آۓ تھے غزان کی حالت دیکھ کر ڈر گۓ تھے ۔۔۔۔موباٸل غزان کے ہاتھ سے گر گیا تھا ۔۔۔۔نیم غنودگی میں بھی وہ عدن کو بلا رہا تھا ۔۔۔عدن مت جاٶ یار ۔۔۔ایسے نہ کرو ۔۔۔عدن ۔۔۔عدن ۔۔۔۔ایمرجنسی ۔۔۔۔میجر غزان کی طبیعت دوبارہ بگڑ رہی ہے ۔۔۔ڈیوٹی پر موجود سارے ڈاکٹر ڈاکٹر سعد کی ایک فون کال پر دوڑے چلے آۓ تھے ۔۔۔۔
(جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 262 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27490 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: