درد جدائی .....قسط 41.....آخری قسط

(Shafaq kazmi, Karachi)

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے

ﻋﺪﻥ ﻏﺎﺯﺍﻥ ﺳﮯ ﺳﺐ ﮐﮩﮧ ﺗﻮ ﭼﮑﯽ
ﺗﮭﯽ ۔۔۔۔ﻟﯿﮑﻦ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ
ﺑﺠﺎۓ ﻋﺠﯿﺐ ﺑﮯ ﭼﯿﻨﯽ ہورہی تھی ۔۔ﺟﺐ ﮐﭽﮫ ﺳﻤﺠﮫ ﻧﮧ
ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﮔﮭﭩﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﺳﺮ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ
ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﯽ ۔۔۔ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺳﯿﻞ ﻓﻮﻥ
وائ بریٹﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔۔۔۔ﻏﺎﺯﺍﻥ ﮐﯽ
ﮐﺎﻝ ﮨﻮﮔﯽ ۔۔۔ﯾﮧ ﺳﻮﭺ ﮐﺮ ﺟﻠﺪﯼ
ﺳﮯ ﺍﭨﯿﻨڈ ﮐﯿﺎ ۔۔۔ﻏﺎﺯﺍﻥ۔۔۔ﻏﺎﺯﺍﻥ
۔۔۔۔۔۔۔ﺭﻭﺗﮯ ﮨﻮۓ ﻭﮦ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ
ﺑﻮﻟﯽ ﺗﮭﯽ ۔۔۔۔۔ﻣﯿﮟ ﺳﻌﺪ ﺑﻮﻝ ﺭﮨﺎ
ﮨﻮﮞ ﻋﺪﻥ ۔۔۔ﮨﻮ ﺳﮑﮯ ﺗﻮ ﺟﻠﺪﯼ
ﺳﮯ ﮨﻮﺳﭙﭩﻞ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎٶ ۔۔۔۔۔ﺳﺐ
ﺧﯿﺮﯾﺖ ﺗﻮ ڈﺍﮐﭩﺮ ۔۔۔۔۔؟؟ﻏﺎﺯﺍﻥ
ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ﻧﺎﮞ ۔۔۔۔ﮨﻤﻤﻢ ﺧﯿﺮﯾﺖ
ﮨﯽ ﮨﮯ ۔۔۔ﺗﻢ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﮯ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎٶ
۔۔۔ﺳﻌﺪ ﻧﮯ ﻋﺪﻥ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺳﻨﮯ
ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺎﻝ ﮐﺎﭦ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ
ماسی جو دودھ کا گلاس عدن کو دینے آئی تھی ۔۔۔۔عدن کو عجلت میں گاڑی کی چابی اٹھاتے اور جاتا دیکھ کر پوچھنے لگی ۔۔۔۔چھوٹی بی بی کہاں جا رہی ہیں ۔۔۔؟ اس وقت سب خیریت ہے ناں ۔۔۔۔؟سب خیریت ہے ۔۔۔۔بس ایمرجنسی ہے ہاسپٹل جانا ہے ۔۔ماما کو بتا دینا ۔۔۔شاید واپسی میں دیر ہو جاۓ ۔۔۔۔۔عجلت میں جواب دے کر عدن بھاگتے ہوۓ روم سے نکل گٸ ۔۔۔۔
یہ عدن بی بی بھی عجیب سی ہے ۔۔۔ابھی آٸ ہے اب ماں کو بتاۓ بغیر پھر چلی گٸ ۔۔۔۔خیر ہمیں کیا ۔۔۔جو بھی کرے ۔۔۔جب ماں کو اعتراض نہیں تو ہمیں کیا ۔۔۔۔ماسی بڑبڑاتےہوۓ عفاف عاید کو بتانے چل دی ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن جیسے ہی آئی سی یو کے پاس پہنچی ۔۔۔نرس نے اسے اندر جانے سے روک دیا ۔۔۔۔بی بی آپ باہر رکیں اندر نہیں جاسکتی آپ ۔۔۔کیوں نہیں جاسکتی ۔۔راستہ دو مجھے ہٹو ۔۔۔دور ہٹو ۔۔۔۔۔کیا ہوا کیوں کیسا شور ہے ۔۔۔؟سعد شور سن کر باہر نکل آیا۔۔۔عدن کو دیکھتے ہی خاموش ہو گیا ۔۔اور نرس کو جانے کا اشارہ کیا۔۔۔کیوں بلایا آپ نے ۔۔۔؟کک۔۔۔کیا ہوا غازان کو ۔۔۔عدن کا دل سوکھے پتے کی طرح لرز رہا تھا ۔

۔۔آپ نے غازان کو کچھ کہا عدن ۔۔۔؟؟۔۔۔عدن جواب دینے کے بجاۓ ۔۔رونے لگی تھی ۔۔

ہم کوشش کر رہے ہیں انہیں بچانے کی ۔۔۔ان کی طبیعت اچانک بگڑ گٸ تھی ۔۔۔اور وہ مسلسل آپ کا نام لے رہے تھے ۔۔۔طبیعت نہ سنبھلی تو کچھ بھی ہو سکتا ہے ۔۔۔شدید کمزوری اور سر پر لگی گہری چوٹ انہیں قومہ میں بھی لے جاسکتی ہے ۔۔وہ اگر خود چاہیں تو زندگی کی طرف واپس آسکتے ہیں ۔۔لیکن وہ خود زرا بھی کوشش نہیں کر رہے ۔۔۔۔۔۔پلیز آپ اندر چلیں ۔۔۔۔عدن بھاگتے ہوۓ ۔۔۔غازان کے پاس آئی تھی ۔۔۔۔غازان اٹھو ۔۔۔آنکھیں کھولو ۔۔۔دیکھو ۔۔۔تمہاری عدن کہیں نہیں جارہی ۔۔۔تمہارے پاس ہے ۔۔۔۔پلیز ۔۔۔۔غازان ۔۔۔۔۔عدن کو کسی کی پروا نہیں تھی ۔۔۔۔اس کی وجہ سے اس کا غازان دوبارہ موت کے منہ میں جا رہا تھا ۔۔۔سعد نے سب کو روم سے باہر جانے کا کہا ۔۔

۔۔لیکن سر ڈاکٹر اسد کچھ کہنے لگا ۔۔۔۔بس اب ٹھیک ہو جاۓ گا غازان ۔۔۔آپ چلے جاٸیں ۔۔۔۔ڈاکٹر اسد کندھے اچکا کر باہر کی جانب چل دیۓ ۔۔۔۔
سچ کہتے ہیں ۔۔ سانپ کے ڈسے کا علاج بھی ممکن ہے ۔۔۔لیکن عشق کا ڈسا لاعلاج ہوتا ہے ۔۔۔عشق ہی کاٸنات کا وہ واحد مرض ہے ۔۔۔جو جان نکال لیتا ہے ۔۔۔زندگیاں اجاڑ دیتا ہے ۔۔۔
میدان جنگ میں دشمنوں کو مات دینے والے اور جن کی للکار سے دشمن کی روح تک لرز جاتی ہو۔۔۔عشق کے سامنے ان کی حالت ایک ہارے ہوۓ جواری کی سی ہو جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غازان بھی کچھ ایسے ہی حالات سے گزر رہا تھا ۔۔۔پانچ سالوں کی لمبی جدائی ۔۔۔اس نے ایک زنداں میں رہنے والے لاچار قیدی کی طرح گزاری تھی ۔۔۔۔۔اب اس میں مزید ہمت نہیں تھی ۔۔۔وہ عدن سے دور جاسکتا ۔۔۔۔اس نے پانچ سال عدن اور اس کے اہلخانہ کا ہر طرح خیال رکھا تھا ۔۔۔۔وہ چاہتا تو کب کا عدن سے نکاح کر لیتا ۔۔۔لیکن عدن کی زندگی اذیت میں گزرتی ۔۔۔وہ باپ کی لگائی ہوئی آگ میں جھلس کر مر جاتی ۔۔۔لوگوں کے سامنے تو کیا ۔۔۔غازان کے سامنے بھی سر اٹھا کر نہ جی سکتی ۔۔۔غازان کو یہ سب گوارا نہیں تھا ۔۔۔۔عدن کو پانا اس کی زندگی کی سب سے بڑی خواہش تھی ۔۔۔لیکن عدن کی خوشیاں اس کی خواہش پر غالب آ گٸیں تھی ۔۔۔۔لیکن عدن کی بدگمانی نے اس کے وجود کو پارہ پارہ کر دیا تھا
غازان خدا کیلۓ ۔۔۔۔آنکھیں کھولو ۔۔۔تمہیں کچھ ہوا تو تمہاری عدن مر جاۓ گی ۔۔۔آئی ایم سوری غازان ۔۔۔۔آئی ایم سوری ۔۔۔۔شدت سے رونے کی وجہ سے عدن کیلۓ مزید بولنا مشکل ہو رہا تھا ۔۔۔۔
عدن ۔۔۔دیکھو ۔۔۔ہارٹ بیٹ نارمل ہو رہی ہے ۔۔۔پلکیں بھی لرز رہی ہیں ۔۔۔غازان ٹھیک ہو رہا ہے ۔۔۔حوصلہ کرو۔۔۔سعد خوشی سے چلاتے ہوۓ کہنے لگا ۔۔۔۔۔غازان نے اسی لمحے آنکھیں کھولیں تھی ۔۔۔عدن کو اپنے پاس دیکھ کر زیر لب مسکرایا تھا ۔۔۔۔اور طمانیت سے دوبارہ آنکھیں بند کر لی تھیں ۔۔۔۔اپنے ہاتھ کی گرفت عدن کے ہاتھ پر مضبوط کر لی تھیں ۔۔۔اور زیر لب بولا تھا ۔۔۔۔میری عدن ۔۔۔۔۔بہت جلد درد جدائی ۔۔۔ختم ہونے والا ہے ۔۔۔۔۔۔بہت جلد ۔۔۔۔۔۔

عدن نے دھیرے سے مسکراتے ہوۓ ۔۔۔اپنا سر غازان کے شانے پر رکھتے ہوۓ آنکھیں موند لیں تھی ۔۔اور زیر لب بولی تھی ۔۔۔۔ان شا ٕ اللہ ۔۔۔
دور کہیں ۔۔۔۔آسمان پر چمکتا چاند ان کے ملن پر مسکرایا تھا ۔۔۔۔۔اور ان کو ہمیشہ ساتھ رہنے کی دعا دیتے ہوۓ ۔۔۔بادلوں میں چھپ گیا تھا ۔۔۔۔۔

۔................
عدن رات گۓ گھر لوٹی تھی ۔۔۔جیسے ہی اپنے کمرے میں داخل ہوٸ ۔۔۔بیڈ پر ایک خاکی لفافہ موجود تھا ۔۔۔عدن نے عجلت میں لفافہ کھولا ۔۔۔۔اس میں موجود کال لیٹر کو دیکھ کر اس کے آنسو ٹپ ٹپ بہنے لگے تھے ۔۔۔۔اس کال لیٹر کے ساتھ ساتھ ایک اور خط بھی موجود تھا ۔۔۔۔
عدن بیٹا ۔۔۔تمہارے باپ نے جو کچھ کیا ۔۔اس کی وجہ سے تم تو کیا تمہاری آنے والی نسلیں بھ ی آرمی جواٸن نہیں کر سکتی تھیں ۔۔۔لیکن تم نے اپنی جان پر کھیل کر جن ملک دشمنوں کے خلاف ثبوت اکٹھے کیۓ ۔۔۔اور اپنے دیس کے بچوں کی جان بچاٸ ۔۔۔۔ تمہارا یہ جزبہ اور عشق ہمیں اپنا فیصلہ تبدیل کرنے پر مجبور کر چکا ہے ۔۔۔۔میری بیٹی اب تمہیں افواج پاکستان کا حصہ بننے پر دنیا کی کوٸ طاقت نہیں روک سکتی ۔۔۔عدن اس سے آگے لکھا نہ پڑھ سکی ۔۔۔اور سجدے میں گر گٸ ۔۔۔۔اللہ نے اس کی دعاٸیں سن لی تھیں ۔۔۔۔۔اب وہ ہچکیوں سے رو رہی تھی ۔۔۔۔یا اللہ یہ سچ ہے ۔۔۔تو جسے چاہے عزت دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے ۔۔۔ذلت کی گہراٸیوں میں ڈال دیتا ہے ۔۔۔اے اللہ تیرا شکر ہے ۔۔۔تو نے ہمیں ذلت کی گہراٸیوں سے نکال کر عزت عطا کی ۔۔۔بیشک تو ہر چیز پر قادر ہے ۔۔۔میرے مولا ۔۔۔!!عدن کے یہ آنسو خوشی کے آنسو تھے ۔۔۔۔اللہ نے اسے نواز دیا تھا ۔۔۔۔عزت کے ساتھ ساتھ غازان بھی دے دیا تھا ۔۔۔۔اب زیست کے کٹھن سفر میں من پسند ہمسفر کے ساتھ زیست کے باقی دن گزارنے تھے ۔۔۔۔اپنے پاکستان کے کیلۓ کچھ کرنے اور دشمن کو جلا کر راکھ کرنے میں غازان بھی اس کے ساتھ تھا ۔۔۔۔۔اک نیا سفر اس کا منتظر تھا ۔۔۔زندگی یکدم حسین ہو گٸ تھی ۔۔۔طمانیت سے مسکراتے ہوۓ ۔۔۔وہ دوبارہ رب کے حضور سجدہ ریز ہو گٸ تھی ۔۔۔۔

ختم شد💖
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 212 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27834 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: