ملک کی سلامتی کے لئے دعاؤں کا بھی اہتمام ضروری

(Najeeb Qasmi, Riyadh)

ہندوستان کی موجودہ صورت حال میں جہاں ایک طرف سیکولر ذہن رکھنے والی طاقتیں خاص کر طلبہ وطالبات ملک کے دستور کی حفاظت کے لئے سڑکوں پر احتجاج کررہے ہیں، وہیں بھارتیہ جنتا پارٹی کی مرکزی حکومت اور بعض ریاستی حکومتیں حکومت کی پالیسیوں کے خلاف پورے ملک میں چل رہی تحریک کو ختم کرنے کی ہرممکن کوشش کررہی ہیں۔ CAA، NPR اور NRC کی مخالفت میں جامعہ ملیہ اسلامیہ (نئی دہلی) سے اٹھنے والی اس تحریک میں نہ صرف مسلمان بلکہ ہر مذہب کو ماننے والے شریک ہیں۔ اب یہ آواز صرف ہندوستان سے ہی نہیں بلکہ دنیا کے مختلف حصوں سے اٹھ رہی ہے۔ ہندومسلم اتحاد کے ساتھ CAA، NPR اور NRC کی مخالفت کرنا وقت کی عین ضرورت کے ساتھ ہم سب کی مشرکہ ذمہ داری بھی ہے ورنہ مستقبل میں جہاں قوم وملت کی پریشانیاں اور دشواریاں بہت زیادہ بڑھ جائیں گی وہیں ملک کی سلامتی بھی خطرہ میں پڑ جائے گی۔ کچھ سیاسی پارٹیاں اور ریاستی حکومتیں ان قوانین کے خلاف کھل کر میدان میں آگئی ہیں حتی کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے بعض ممبران نے بھی ان کے خلاف آواز بلند کرنا شروع کردیاہے۔

ان نئے قوانین سے تمام ہی مذاہب کے ماننے والے اور ہر ریاست کے رہنے والے متاثر ہوں گے لیکن سب سے زیادہ دشواریوں کا سامنا مسلمانوں کو ہی کرنا پڑے گا کیونکہ موجودہ مرکزی حکومت ہندو مسلم کے درمیان نفرت پیدا کرکے جہاں اپنی حکومت کی ناکامیوں پر پردہ ڈالنا چاہتی ہے وہیں وہ ملک کو ہندو مسلم میں تقسیم کرکے ہندو ووٹ حاصل کرنا چاہتی ہے۔ ہمیں حکمت وبصیرت سے حکومت کی اس غلط پالیسی کا مقابلہ کرنے کے ساتھ اﷲ تعالیٰ سے اپنا تعلق بھی مضبوط کرنا ہے کیونکہ ہمارا یہ ایمان وعقیدہ ہے کہ اس پوری کائنات کو پیدا کرنے والی ذات صرف اور صرف اﷲ تعالیٰ کی ہے، اور وہی اس پوری دنیا کے نظام کو تن تنہا چلا رہا ہے اور وہی مشکل کشا، حاجت روا اور دشواریوں وپریشانیوں کو آسانیوں میں تبدیل کرنے والا ہے۔ اس لئے ہم توبہ واستغفار کے ساتھ اﷲ تعالیٰ سے دعاؤں کا خاص اہتمام رکھیں۔ اسلام کی پہلی جنگ عظیم (غزوۂ بدر) کے موقع پر بھی ساری انسانیت کے نبی حضرت محمد صلی اﷲ علیہ وسلم نے راتوں کو گڑگڑاکر اﷲ تعالی سے دعائیں کی تھیں۔ یعنی ہم دوا کے ساتھ دعاؤں کا بھی اہتمام کریں کیونکہ قرآن وحدیث کی روشنی میں پوری امت مسلمہ کا اتفاق ہے کہ دعاؤں سے بھی بڑے بڑے مسائل حل ہوتے ہیں۔ آئیے قرآن وحدیث کی روشنی میں دعا کی اہمیت کو سمجھیں۔

دعا کی حقیقت:دُعا کے لغوی معنی ہیں پکارنا اور بلانا، شریعت کی اصطلاح میں اﷲ تعالیٰ کے حضور التجا اور درخواست کرنے کو دعا کہتے ہیں۔ انسان کی فطرت میں ہے کہ وہ مشکلات اور پریشانیوں میں اﷲ تعالیٰ کو پکارتا ہے جیسا کہ اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے: جب انسان کوتکلیف پہنچتی ہے تواپنے رب کوپکارتا ہے اور دل سے اس کی طرف رجوع کرتا ہے۔ (سورۃ الزمر: ۸) حضور اکرم ﷺنے ارشاد فرمایا: دُعا عبادت کی روح اور اس کا مغز ہے۔ (ترمذی) نیز حضور اکرم ﷺنے ارشاد فرمایا: دُعا عین عبادت ہے۔ (ترمذی) اﷲ تعالیٰ نے انبیاء کرام وصالحین کی دعاؤں کا ذکر اپنے پاک کلام (قرآن کریم) میں متعدد مرتبہ فرمایا ہے۔
دُعا کی اہمیت:دعا کی اہمیت کے لئے صرف یہی کافی ہے کہ اﷲ تعالیٰ نے سورۂ فاتحہ میں اپنے بندوں کو نہ صرف دُعا مانگنے کی تعلیم دی ہے بلکہ دعا مانگنے کا طریقہ بھی بتایا ہے۔ نیز ارشاد باری ہے: (اے پیغمبر) جب آپ سے میرے بندے میرے متعلق دریافت کریں تو (فرمادیجئے کہ) میں قریب ہی ہوں، جب کوئی مجھے پکارتا ہے تو میں پکارنے والے کی پکار سنتا ہوں۔ (سورۃ البقرۃ: ۱۸۶) غرضیکہ دعا قبول کرنے والا خود ضمانت دے رہا ہے کہ دعا قبول کی جاتی ہے، اس سے بڑھ کر دعا کی اہمیت کیا ہوسکتی ہے۔ نیز اﷲ تعالیٰ نے بندوں کوحکم دیتے ہوئے فرمایا: تمہارے پروردگار نے کہا کہ تم مجھ سے دعا کرو، میں تمہاری دعا قبول کروں گا۔ (سورۃ المؤمن: ۶۰) حضور اکرم ﷺنے بھی نہ صرف اﷲ تعالیٰ سے دعا کرنے کی ترغیب دی ہے، بلکہ اس کے فضائل اور آداب بھی بیان فرمائے ہیں، چنانچہ رسول اﷲ ﷺنے ارشاد فرمایا: اﷲ کے یہاں دعا سے زیادہ کوئی عمل عزیز نہیں ہے۔ (ابن ماجہ) یعنی انسانوں کے اعمال میں دُعا ہی کو اﷲ تعالیٰ کی رحمت وعنایت کوکھینچنے کی سب سے زیادہ طاقت ہے۔ حضور اکرم ﷺنے ارشاد فرمایا: تم میں سے جس کے لئے دُعا کا دروازہ کھل گیا اس کے لئے رحمت کے دروازے کھل گئے اور اﷲ کو سب سے زیادہ محبوب یہ ہے کہ بندہ اس سے عافیت کی دُعا کرے۔ (ترمذی)

دعا کے چند اہم آداب وارکان وشرائط اور واجبات:دعا چونکہ ایک اہم عبادت ہے، اس لئے اس کے آداب بھی قابل لحاظ ہیں۔ حضور اکرم ﷺنے دُعا کے بارے میں کچھ ہدایات دی ہیں، دعا کرنے والے کے لئے ضروری ہے کہ ان کا خیال رکھے۔احادیث میں دعا کے لئے مندرجہ ذیل آداب کی تعلیم فرمائی گئی ہے، جن کو ملحوظ رکھ کر دُعا کرنا بلاشبہ قبولیت کی علامت ہے، لیکن اگرکوئی شخص کسی وقت بعض آداب کو جمع نہ کرسکے توایسا نہ کرے کہ دُعا ہی کوچھوڑ دے، دعا ان شاء اﷲ ہرحال میں مفید ہے۔ ۱) اﷲ تعالیٰ سے اخلاص کے ساتھ دُعا کرنا، یعنی یہ یقین ہو کہ اﷲ تعالیٰ ہی ہماری ضرورتوں کوپوری کرنے والا ہے، ارشاد باری ہے: تم لوگ اﷲ کو خالص اعتقاد کرکے پکارو۔ (سورۃ المؤمن:۱۴) ۲) دعا کے قبول ہونے کی پوری اُمید رکھنا اور یہ یقین رکھنا کہ اﷲ تعالیٰ نے قبول کرنے کا وعدہ کیا ہے وہ بلاشبہ قبول کرے گا، حضور اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا: اﷲ سے اس طرح دُعا کرو کہ تمہیں قبولیت کا یقین ہو ۔ (ترمذی) ۳) دعا کے وقت دل کو اﷲ تعالیٰ کی طرف حاضر اور متوجہ رکھنا کیونکہ حضور اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا:بے شک اﷲ تعالیٰ اس بندہ کی دُعا قبول نہیں کرتا جو صرف اوپری دل سے اور توجہ کے بغیر دُعا کرتا ہے۔ (ترمذی) غرضیکہ دُعا کے وقت جس قدر ممکن ہو حضور قلب کی کوشش کرے اور خشوع وخضوع اور سکون قلب ورقت کے ساتھ اﷲ تعالیٰ کی طرف متوجہ ہو۔ ۴) دعا کرنے والے کی غذا اور لباس حلال کمائی سے ہونا۔ حضور اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا: جوشخص دور دراز کا سفر کرے اور نہایت پریشانی وپراگندگی کے ساتھ ہاتھ اُٹھا کر یارب یارب کہتے ہوئے دُعا کرے جب کہ اس کی غذا اور لباس سب حرام سے ہو اور حرام کمائی ہی استعمال کرتا ہو تواس کی دُعا کیسے قبول ہوسکتی ہے؟ (صحیح مسلم) ۵)دُعا کے شروع میں اﷲ تعالیٰ کی حمدوثنا کرنا اور رسول اﷲ ﷺ پر درود بھیجنا۔ حضوراکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ تم میں سے جب کوئی دُعا مانگے توپہلے اﷲ تعالیٰ کی بزرگی وثنا سے دُعا کا آغاز کرے پھر مجھ پردرود بھیجے، پھر جو چاہے مانگے۔ (ترمذی) حضرت عمر فاروق رضی اﷲ عنہ نے فرمایا کہ دعا آسمان وزمین کے درمیان معلق رہتی ہے یعنی درجۂ قبولیت کو نہیں پہنچتی جب تک کہ رسول اﷲ ﷺپر درود نہ بھیجے۔ (ترمذی) ۶) دعا کے وقت گناہ کا اقرار کرنا، یعنی پہلے گناہ سے باہر نکلنا، اس پر ندامت کرنا اور آئندہ نہ کرنے کا عزم کرنا۔ ۷)دعا آہستہ اور پست آواز سے کرنا یعنی دعا میں آواز بلند نہ کرنا۔ اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے: تم لوگ اپنے پروردگار سے دُعا کیا کرو گڑ گڑا کر اور آہستہ۔ (سورۃ الاعراف: ۵۵) البتہ اجتماعی دعا تھوڑی آواز کے ساتھ کریں۔

دعا کے چند اہم مستحبات: وہ امور جن کا دعا کے وقت اہتمام کرنا اولیٰ وبہتر ہے: ۱)دعا سے پہلے کوئی نیک کام مثلاً نماز، روزہ اور صدقہ وغیرہ کا اہتمام کرنا۔ ۲)قبلہ کی طرف رُخ کرکے دوزانو ہوکر بیٹھنا اوردونوں ہاتھوں کا مونڈھوں تک اس طرح اُٹھانا کہ ہاتھ ملے رہیں اور انگلیاں بھی ملی ہوں اور قبلہ کی طرف متوجہ ہوں۔ ۳) اﷲ تعالیٰ کے اسمائے حسنیٰ اور صفات عالیہ ذکر کرکے دعا کرنا۔ ۴) اس بات کی کوشش کرنا کہ دُعا دل سے نکلے۔ ۵) دعا میں اپنے خالق ومالک کے سامنے گڑ گڑانا، یعنی رو رو کر دعائیں مانگنا یا کم از کم رونے کی صورت بنانا۔ ۶) دعا کو تین تین مرتبہ مانگنا۔ ۷)دُعا کے وہ الفاظ اختیار کرنا جوقرآن کریم میں آئے ہیں یاجو حضور اکرم ﷺ سے منقول ہیں کیونکہ جودُعائیں قرآن کریم میں آئی ہیں ان کے الفاظ خود قبولیت کی دلیل ہیں اور احادیث میں بھی ان کی فضیلت مذکور ہے اور جودُعائیں حضور اکرم ﷺ کی زبان مبارک سے نکلی ہیں وہ ضرور اﷲ تعالیٰ کوپیاری ہونگی۔ ۸)تمام چھوٹی اور بڑی حاجتیں سب اﷲ تعالیٰ ہی سے مانگنا۔ ۹) نماز کے بعد اور بالخصوص فرض نماز کے بعد دُعا مانگنا۔ ۱۰)دعا کرانے والا اور ساتھ میں دعا کرنے والے کا دعا کے بعد آمین کہنا ،اور اخیر میں دونوں ہاتھ اپنے چہرہ پرپھیرلینا ۔

قبولیت دعا کے بعض اوقات وحالات:یوں تودعا ہروقت قبول ہوسکتی ہے ، مگر کچھ اوقات وحالات ایسے ہیں جن میں دعا کے قبول ہونے کی توقع زیادہ ہے، اس لئے ان اوقات وحالات کو ضائع نہیں کرنا چاہئے: شب قدر یعنی رمضان المبارک کے اخیر عشرہ کی راتیں۔ ماہ رمضان المبارک کے تمام دن ورات ، اور عید الفطر کی رات۔ جمعہ کی رات اور دن۔ آدھی رات کے بعد سے صبح صادق تک۔ ساعت جمعہ۔ احادیث میں ہے کہ جمعہ کے دن ایک گھڑی ایسی آتی ہے جس میں جودعا کی جائے قبول ہوتی ہے۔ مگراس گھڑی کی تعیےن میں روایات اور علماء کے اقوال مختلف ہیں۔ روایات اور اقوال صحابہؓ وتابعین سے دو وقتوں کی ترجیح ثابت ہے، اوّل امام کے خطبہ کے لئے ممبرپر جانے سے لے کر نماز جمعہ سے فارغ ہونے تک ، خاص کر دونوں خطبوں کے درمیان کا وقت۔ خطبہ کے درمیان زبان سے دعا نہ کریں، البتہ دل میں دعا مانگیں، اسی طرح خطیب خطبہ میں جودعائیں کرتا ہے ان پر بھی دل ہی دل میں آمین کہہ لیں۔ قبولیت دعا کا دوسرا وقت جمعہ کے دن نماز عصر کے بعد سے غروب آفتاب تک ہے۔ اذان واقامت کے درمیان۔ فرض نماز کے بعد۔ سجدہ کی حالت میں۔ تلاوت قرآن کے بعد۔ آب زم زم پینے کے بعد۔ جہاد میں عین لڑائی کے وقت۔ مسلمانوں کے اجتماع کے وقت۔ بارش کے وقت۔ بیت اﷲ پر پہلی نگاہ پڑتے وقت۔

دُعا قبول ہونے کی علامت:دعا قبول ہونے کی علامت یہ ہے کہ دعا مانگتے وقت اپنے گناہوں کویاد کرنا، اﷲ کا خوف طاری ہونا، بے اختیار رونا آجانا، بدن کے روئیں کھڑے ہوجانا، اس کے بعد اطمینان قلب اور ایک قسم کی فرحت محسوس ہونا، بدن ہلکا معلوم ہونے لگنا، گویا کندھوں پر سے کسی نے بوجھ اُتار لیا ہو۔ جب ایسی حالت پیدا ہو تو اﷲ کی طرف خشوع قلب کے ساتھ متوجہ ہوکر اس کی خوب حمد وثنا اور درودکے بعد اپنے لئے، اپنے والدین، رشتہ داروں، اساتذہ اور مسلمانوں کے لئے گڑگڑا کر دُعا کریں۔ ان شاء اﷲ اس کیفیت کے ساتھ کی جانے والی دعا ضرور قبول ہوگی۔ دعا کی قبولیت میں جلدی نہیں کرنی چاہئے کیونکہ دعا کی قبولیت کا وقت معین ہے اور نااُمید بھی نہیں ہونا چاہئے اور یوں نہیں کہنا چاہئے کہ میں نے دعا کی تھی مگر قبول نہ ہوئی، اﷲ تعالیٰ کے فضل سے ناامید ہونا مسلمان کا شیوہ نہیں۔ دعا کی قبولیت میں اﷲ تعالیٰ کبھی کبھی مطلوب سے بہتر کوئی دوسری شیء انسان کو عطا فرماتا ہے، یا کوئی آنے والی مصیبت دور کردیتا ہے۔

خلاصۂ کلام یہ ہے کہ دعا مظہر عبدیت اور ایک اہم عبادت ہے۔ دعا مضطرب قلوب کے لئے سامان سکون، گمراہوں کے لئے ذریعۂ ہدایت، متقیوں کے لئے قرب الٰہی کا وسیلہ اور گناہگاروں کے لئے اﷲ کی بخشش ومغفرت کی بادِ بہار ہے۔ اس لئے ہمیں دُعا میں ہرگز کاہلی وسستی نہیں کرنی چاہئے، یہ بڑی محرومی کی بات ہے کہ ہم مصیبتوں کے دور ہونے کے لئے بہت سی تدبیریں اختیار کرتے ہیں مگر وہ نہیں کرتے جوہرتدبیر سے آسان اور ہرتدبیر سے بڑھ کر مفید ہے (یعنی دعا)، اس لئے ہمیں چاہئے کہ اپنے خالق ومالک کے سامنے وقتاً فوقتاً خوب دعائیں کریں۔ اﷲ تعالیٰ ہمیں صحیح معنی میں اپنے سے مانگنے کی توفیق عطا فرمائے، آمین۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 256 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Najeeb Qasmi

Read More Articles by Najeeb Qasmi: 105 Articles with 41993 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ