آسماں ہوگا سحر کے نور سے آٸینہ پوش - قسط ١٠

(Sara Rahman, Rahim yar khan)

قسط ١٠

اپنی بہن کے یوں گم ہوجانے سے مانو گم صم ہو کر رہ گٸ
تھی ۔۔۔۔۔تیمور درانی نے عریشہ اور مانو دونوں کو اپنے بھاٸ کے پاس باہر بھیج دیا تھا ۔۔۔تاکہ ان کا دل بہل جاۓ ۔۔۔۔عریشہ رات کو سوتے میں اٹھ جاتیں اور چیخ چیخ کر رونے لگتیں ۔ان کی ذہنی حالت بہت خراب ہو چکی تھی ۔۔۔۔۔تیمور کے بڑے بھاٸ عثمان درانی اور ان کی بیگم حبیبہ درانی عریشہ کا بے حد خیال رکھ رہے تھے ۔۔۔ان کی ذہنی حالت کو دیکھتے ہوۓ ۔۔۔ان دونوں نے ایک ساٸکاٹرسٹ کو ہاٸیر کر لیا تھا ۔۔۔۔۔ان حالات میں مانو بھی عدم توجہی کا شکار ہو گٸ تھی ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تیمور درانی نے خود کو بزنس میں مصروف کر لیا تھا ۔۔۔ لیکن وہ جان لیوا حادثہ ان کے ذہن سے محو ہونا تو دور کی بات ان کی زندگی کو دینک کی طرح چاٹ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔وقت پر لگا کر اڑ رہا تھا ۔۔۔۔

عثمان درانی اور حبیبہ درانی کے تین بچے تھے ۔۔۔احمد سب سے بڑا تھا اس کے بعد علیشہ تھی اور سب سے چھوٹا علی تھا ۔۔۔۔
علیشہ اور احمد مانو کو کا بھی بھرپور خیال رکھ رہے تھے ۔۔۔تاکہ مانو اس فیز سے باہر آسکے ۔۔۔۔علیشہ اور احمد کی وجہ سے مانو کسی حد تک مریم کو بھول بھی چکی تھی ۔۔۔کہتے پیں ناں وقت سب سے بڑا مرہم ہوتا ہے ۔۔۔سب بچوں کو یہی بتایا گیا تھا کہ کار ایکسیڈنٹ میں فاطمہ کی ڈیتھ ہو گٸ تھی۔۔۔۔
مانو احمد اور علیشہ ان کی دوستی دیکھتے ہی دیکھتے مشہور ہو گٸ تھی ۔۔۔مانو کا ایڈمشن بھی احمد اور علیشہ کے سکول میں کروا دیا گیا تھا ۔۔۔۔
ساٸکاٹرسٹ بھی عریشہ کی ذہنی حالت میں بہتری نہ لا سکی تھی ۔۔۔۔ایک دن جب عریشہ رات کو سوٸ تو پھر صبح اٹھ ہی نہ پاٸیں ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عریشہ کا جسد خاکی پاکستان لایا جاچکا تھا ۔۔۔۔۔تدفین اور آخری رسومات کے بعد زبردستی تیمور درانی کی شادی کر وا دی گٸ تھی ۔۔۔۔
عثمان اور حبیبہ مانو کو اپنے ساتھ لے گۓ تھے ۔۔۔۔۔۔
ماما دیکھیں اس جن نے میری گڑیا کی گردن ہی توڑ دی ہے ۔۔۔مانو نے روتے ہوۓ حبیبہ کو بتایا ۔۔۔ احمد تم بچے نہیں رہے اور مانو کو تنگ کرنا چھوڑ دو ۔۔۔۔حبیبہ نے احمد کو ڈانٹا ۔۔۔ ماما اس نے میری بکس پر کلر مارکر سے جن لکھ دیا ہے ۔۔۔اور میرے سب فرینڈز میرا مذاق اڑا رہے تھے ۔۔۔۔احمد نے بھی منہ بسورتے ہوۓ حبیبہ کو بتایا ۔۔۔۔تو حبیبہ اپنی ہنسی چھپاتے ہوۓ ۔۔۔مانو کو اپنے ساتھ لگاتے ہوۓ کہنے لگیں ۔۔۔میں اپنی بیٹی کو نٸ گڑیا لے دوں گی ۔۔۔مانو خوش ہو گٸ ان کے گلے میں دونو بازو ڈال کے کہنے لگی لو یو ماما ۔۔۔یو آر ماٸ بیسٹ ماما ۔۔۔حبیبہ بھی اس سے لاڈ کرنے لگیں ۔۔۔
وقت پر لگا کر اڑتا رہا ۔۔۔۔۔بچپن کی کھیل کود کھلکھلاہٹیں وقت کے ساتھ ساتھ مانند پڑ گٸیں تھیں ۔۔۔لیکن مانو اور احمد اب بھی چھوٹی بڑی بات پر ایک دوسرے سے بدلا لینا نہیں بھولتے تھے ۔۔۔۔
علیشہ ایم بی بی ایس کر چکی تھی اور ہاٶس جاب کر رہی تھی مانو علیشہ سے ایک سال چھوٹی تھی وہ ماسٹرز کر چکی تھی ۔۔۔ ۔۔۔احمد کو بزنس میں انٹرسٹ نہیں تھا ۔۔۔اور وہ بھی پاکستان شفٹ ہونا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناشتے کی ٹیبل پر سب موجود تھے ۔۔احمد اب واپس آجانا چاہیۓ میرے خیال سے تمہیں ۔۔۔؟ عثمان درانی احمد سے کہنے لگے ۔۔۔۔۔۔بابا آپ جانتے ہیں میرا بزنس میں انٹرسٹ نہیں ہے ۔۔۔۔میں پاکستان چھوڑنا نہیں چاہتا ۔۔۔میری ضرورت ہے پاکستان کو بابا ۔۔۔ ۔۔۔۔۔
احمد بریڈ پر مارجرین لگاتے ہوۓ بابا سے کہنے لگا ۔۔۔۔جیسے تمہاری مرضی ۔۔۔بیٹا ۔۔علیشہ کی ہاٶس جاب بھی مکمل ہونے والی ہے ۔۔۔ہم بھی تھک چکے ہیں ۔۔۔دیار غیر میں رہ کر اب میرا دل کرتا ہے ۔۔۔زندگی کے آخری دن اپنے وطن میں ہی گزاروں ۔۔۔۔حبیبہ نے بھی اپنے دل کی بات کہی۔۔۔۔عثمان درانی خاموش ہو گۓ تھے ۔۔۔۔ٹیبل پر گہری خاموشی چھا گٸ تھی ۔۔۔۔
ویسے بابا ٹھیک ہی کہتے ہیں ۔۔کیا رکھا ہے آخر پاکستان میں ۔۔۔وہاں کچھ بھی ایسا نہیں ہے جو قابل اعتبار ہو ۔۔۔پاکستان نے عریشہ آنٹی چھین لی ہم سے ۔۔۔میری دوست اس کا آج تک پتہ نہیں چلا کہاں گٸ وہ ۔۔۔زمین کھا گیا یا پھر آسمان نگل گیا ۔۔۔بھاٸ کون سا پاکستان کس پاکستان کو آپ کی ضرورت ہے ۔۔۔علیشہ تلخی سے ہنس دی تھی ۔۔۔اور ٹیبل سے اٹھ کر چلی گٸ ۔۔۔۔
کوٸ کچھ بھی کہے ۔۔میرا فیصلہ اٹل ہے بابا ۔۔۔۔۔اب کیا میں کبھی بھی پاکستان نہیں چھوڑ سکتا ۔۔۔عثمان درانی نے اثبات میں سر ہلایا تھا ۔۔۔۔ماحول کی تلخی کم کرنے کی غرض سے ہلکے پھلکے انداز میں کہنے لگے ۔۔۔تمہاری ماما کے کسی فیصلے سے کبھی انکار کیا ہے میں نے جو اب کروں گا ۔۔جیسا تم لوگ کہو ۔۔ماما کو لے جانا اس دفعہ اپنے ساتھ ۔۔۔وہاں پہ کوٸ اچھا سا گھر ڈھونڈ لو ۔۔۔۔۔میں بھی بزنس شفٹ کرلیتا ہوں ۔۔لیکن یہ سب کرنے میں مجھے بھی کچھ وقت لگے گا ۔۔۔۔عثمان درانی کا فیصلہ سن کر حبیبہ کی آنکھوں میں آنسو آگۓ تھے ۔۔زندگی کے باقی سال اپنی دھرتی کے ساتھ گزارنے کی خوشی ہی اتنی تھی ۔۔۔کہ وہ کچھ بول ہی نہیں سکی تھی ۔۔۔آنسو چھپانے کی غرض سے وہ سر جھکا گٸیں ۔۔۔۔۔۔داٶد جب ہاسٹل سے واپس آیا تو اس کے ہاتھ میں زینی کی پرسنل ڈاٸری تھی ۔۔۔اس کا ذہن بہت الجھا ہوا تھا ۔۔۔کچھ تھا جو ٹھیک نہیں تھا ۔۔یا پھر کچھ تھا جو سمجھ سے باہر تھا ۔۔۔زینی جو نظر آتی تھی ۔۔وہ نہیں تھی ۔۔۔داٶد کو کچھ نہ ملا تو زینی کی پرسنل ڈاٸری اٹھا کر واپس اپنے ہوٹل چلا آیا۔۔۔
زینی اب کیسی طبیعت ہے تمہاری ۔۔کہو تو تمہارے بابا یا ماما سے بات کر وادوں تمہاری ۔۔شاید تم ان کیلۓ اداس ہو ۔۔۔۔مریم تشویش اور پریشان لہجے میں زینی سے پوچھ رہی تھی ۔۔زینی کا بخار نہیں اتر رہا تھا ۔۔۔۔میڈیسن بگی اثر نہیں کر رہی تھی ۔۔۔مریم کے پوچھنے کی دیر تھی ۔۔۔کہ زینی کے رکے آنسو بہنے لگے تھے ۔۔۔۔زینی ہچکیوں سے رو رہی تھی ۔۔۔۔مریم زینی کے گلے لگ گٸ ۔۔۔اپنی دوست کو اسطرح روتا دیکھ مریم بھی روتے ہوۓ پوچھنے لگی ۔۔۔کیا ہوا زینی ۔۔میری جان ۔۔!!! کچھ تو بتاٶ ۔۔۔مریم زینی کے آنسو صاف کرتے ہوۓ پوچھنے لگی ۔۔۔
پپ۔۔۔پانی دو ۔۔۔۔زینی نے مریم سے پانی مانگا ۔۔۔پانی پی کر زینی کی حالت کچھ سنبھلی تو اذیت سے مسکراتے ہوۓ کہنے لگی ۔۔۔مریم کچھ بھی نہیں بچا ۔۔۔ماما ۔۔۔بابا ۔۔سب چلے گۓ ۔۔۔۔میں بچ گٸ ۔۔۔میں کیوں بچ گٸ۔۔۔۔؟ اور کتنی اذیت برداشت کروں ۔۔۔نہیں ہوتا اب برداشت ۔۔۔زینی شدت سے رو دی تھی ۔۔۔مریم کانپتے ہاتھوں سے اسے تسلی دیتے ہوۓ کہنے لگی ۔۔۔ریلکس ہو جاٶ زینی ۔۔۔پھر مجھے بتاٶ ۔۔۔کیا ہوا ہے ؟۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sara Rahman

Read More Articles by Sara Rahman: 19 Articles with 11361 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
15 Jan, 2020 Views: 404

Comments

آپ کی رائے