آسماں ہوگا سحر کے نور سے آٸینہ پوش - قسط 11

(Sara Rahman, Rahim yar khan)

قسط ١١

زینیہ نے ہچکیوں سے روتے ہوۓ مریم کو کشمیر اورماں بابا کے بارے بتا دیا ۔۔۔۔زینی کے دکھ پر مریم بھی رونے لگی تھی ۔۔۔اس کے پاس الفاظ ہی نہیں تھے کہ زینیہ کو تسلی دے سکے ۔۔۔۔۔۔
زینی بس کر دو ۔۔۔اور کتنا رونا ہے ۔۔۔صبر کرو ۔۔۔دعا کرو ان سب کیلۓ کشمیر کیلۓ ۔۔۔مریم روتے ہوۓ زینی کو تسلی دینے لگی ۔۔۔
اللہ ناراض ہے ہم کشمیریوں سے مریم ۔۔۔وہ ہماری پکار ہمارا درد نہیں سنتا ۔۔۔وہ مدد کیلۓ کسی کو نہیں بھیجتا ۔۔۔کبھی کبھی تولگتا ہےاللہ ہمارا نہیں ہے مریم ۔۔۔۔کشمیر میں کرفیو نافذ ہوۓ ٣ ماہ ہو گۓ ۔۔۔بابا لاپتہ ہیں ۔۔۔ماں شہید ہو گٸ ۔۔۔۔میں تھک گٸ ہوں مریم بہت تھک گٸ ہوں ۔۔۔
تھوڑا سا پانی پی لو ۔۔۔اور یہ میڈیسن لے لو ۔۔۔۔مریم نے زینی کو سہارا دے کر بٹھایا ۔۔اور پانی کا گلاس زینی کے لبوں سے لگایا۔۔۔سلیپنگ پلز کھلاٸ۔۔۔کچھ ہی دیر میں زینی گہری نیند سو رہی تھی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلیک کافی کا مگ لیۓ داٶد زینی کی ڈاٸری اٹھاۓ ٹیرس پر چلا آیا تھا ۔۔۔ابتدا کے چند صفحات خالی تھے ۔۔۔۔
کچھ صفحات پر آڑھی ترچھی لاٸنوں کے علاوہ کچھ بھی نہیں تھی ۔۔۔۔
۔۔۔بہت عجیب ہو تم زینی ۔۔۔جس طرح الجھی ہوٸ تم خود لگتی ہو ۔۔۔تمہاری ڈاٸری بھی تم جیسی ہے ۔۔۔داٶد دھیرے سے ہنسا تھا ۔۔۔
چند صفحات پلٹنے کے بعد چند الفاظ نے اس کے ہاتھ روک لیۓ تھے ۔۔۔
اذیت کی انتہا تو اس وقت ہوتی ہے ۔۔۔جب رونا چاہیں تو آنسو بھی ساتھ چھوڑ دیں ۔۔۔۔لفظ ٹوٹنے لگیں ۔۔۔سانسیں رکنے لگیں ۔۔۔آپ مدد کیلۓ پکارو ۔۔تو کوٸ سننے والا نہ ہو ۔۔۔آپ کی تکلیف اور اذیت کا اندازہ کوٸ نہ کر سکے ۔۔۔۔آپ بہت اکیلے ہو جاٶ ۔۔۔۔اتنے اکیلے ۔۔۔۔۔۔کہ دل کی تاریک گلیوں میں درد کی چیخیں ۔۔۔۔اونچی اونچی دیواروں سے ٹکرا کر دم توڑ دیں ۔۔۔اور آپ گھٹن کے احساس سے ۔۔۔۔۔سسکیوں کا گلا گھونٹنے کی خاطر بے دردی سے اپنے لب بھینچ لیں ۔۔ ۔۔۔۔۔۔
لفظ تھے یا اذیت میں ڈوبے تیر تھے ۔۔۔داٶد کو لگا تھا اس کا دل کسی نے مٹھی میں لے لیا تھا ۔۔۔ایسا کیا دکھ ہے زینی کو ۔۔۔داٶد کا ذہن مزید الجھ گیا تھا ۔۔۔ٹیبل پر رکھی کافی ٹھنڈی ہو گٸ تھی ۔۔۔
بے چینی اور اضطراب کی سی کیفیت میں کی چین گھماتا ہوا روم سے باہر نکل گیا تھا ۔۔۔۔زینی کو سلا کر مریم اپنے بستر پر بیٹھی رونے دھونے میں مصروف تھی۔۔۔۔ کہ روم کا دروازہ بجنے لگا تھا ۔۔۔
مریم آنسو صاف کرتے ہوۓ جلدی سے دروازے کی طرف لپکی ۔۔۔داٶد تم ۔۔۔۔اس وقت ۔۔۔؟؟۔۔کیوں کیا نہیں آسکتا میں اس وقت ۔۔۔اپنی کزن پاس آنے کیلۓ اب مجھے وقت دیکھ کر آنا پڑے گا ۔۔۔داٶد مسکراتے ہوۓ مریم کو چھیڑنے لگا۔۔۔مریم ہنسنے کے بجاۓ زور زور سے رونے لگی ۔۔۔۔ہاۓ ۔۔۔۔یہ بن بادل کی برسات میرے اللہ ۔۔۔۔داٶد نے اپنا سر پیٹ لیا ۔۔داٶد مریم کا ہاتھ پکڑ کر گراٶنڈ میں لے آیا تھا ۔۔۔۔داٶد کے پوچھنے سے پہلے ہی مریم بتانے لگی ۔۔۔زینی کا بخار نہیں اتر رہا ۔۔ابھی بھی میڈیسن دی ہے ۔۔۔مشکل سے سلایا ہے ۔۔۔۔وہ بہت رو رہی تھی داٶد ۔۔۔وہ بہت دکھی ہے ۔۔۔ہمممم یہی پوچھنے آیا تھا میں بھی تم سے ۔۔۔۔چلو اب رونا دھونا بند کرو تاکہ سوچا جاسکے کہ ہم اس کی کیا مدد کر سکتے ہیں ۔۔۔۔داٶد اپنی پریشانی پر قابو پا کر مریم کا دھیان بٹانے کی کوشش کرنے لگا ۔۔۔
زینی کشمیری ہے داٶد ۔۔۔اس کے بابا اغوا ہو چکے ہیں ۔۔اور ماما شہید ہو گٸ ہیں ۔۔ وہ اس لیۓ ڈسٹرب ہے ۔۔۔۔داٶد مریم کی بات سن کر چونک گیا تھا ۔۔۔۔
جاری ہے
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 120 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sara Rahman

Read More Articles by Sara Rahman: 18 Articles with 7058 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: