آسماں ہوگا سحر کے نور سے آٸینہ پوشيدہ - قسط 12

(Sara Rahman, Rahim yar khan)

قسط١٢

پپ۔۔۔۔پانی ۔۔۔۔۔۔پانی بابا ۔۔۔۔پانی ۔۔۔۔۔۔داٶد موباٸل پر مصروف تھا ۔۔۔مریم کافی بنانے گٸ ہوٸ تھی ۔۔۔اچانک زینی غنودگی کے عالم میں بابا کو بلانے لگی تھی ۔۔۔۔داٶد فوراً اٹھا اور زینی کو سہارا دے کر بیٹھایا اور پانی اس کے منہ سے لگایا ۔۔۔۔چند گھونٹ پانی پینے کے بعد زینی کو عجیب سا احساس ہوا تو سر اٹھا کر دیکھا ۔۔۔اور ایکدم پیچھے ہٹی ۔۔۔۔آ۔۔آپ ۔۔ داٶد ۔۔۔۔مریم کہاں ہے ۔۔۔؟مریم کافی بنا رہی ہے ۔۔۔آپ پانی مانگ رہیں تھی ۔۔تو میں نے پلا دیا ۔۔۔زینی شرمندہ سی ہو کر نظریں جھکا گٸ ۔۔۔۔اور کہنے لگی ۔۔۔سوری آپ کو ڈسٹرب کیا ۔۔۔۔۔ لیکن میں تو ڈسٹرب نہیں ہوا زینی ۔۔۔داٶد گھمبیر لہجے میں بولا ۔۔۔داٶد کی مسلسل اپنی طرف دیکھتی آنکھیں زینی کو عجیب کوفت میں مبتلا کررہی تھیں ۔۔۔۔زینی نے اکتا کر بلینکٹ سر تک لے لیا ۔۔۔اب کیسی طبیعت ہے زینی ۔۔۔؟داٶد ابھی تک وہیں کھڑا تھا ۔۔۔طبیعت ٹھیک نہیں ہے ۔۔۔نیند بھی آرہی ہے مجھے ۔۔۔۔۔زینی اکتاۓ ہوۓ لہجے میں بلینکٹ سر پر لیۓ ہوۓ بولی ۔۔۔زینی میں تمہیں بلکل فورس نہیں کروں گا ۔۔۔۔کہ تم ہمیں سب کچھ بتا دو ۔۔۔کہ وہ کون لوگ جو تمہاری نگرانی کر رہے ہیں اور کیوں کر رہے ہیں ۔؟لیکن ایک بات میں تمہیں ضرور یاد دلا دوں ۔۔۔خطرے میں صرف تم نہیں ہو تمہارے ساتھ ساتھ مریم کو بھی خطرہ ہے ۔۔۔میں ہر ممکن کوشش کروں گا کا تمہارا مسٸلہ حل کر سکوں ۔۔۔تم کشمیری ہو ۔۔۔تو پاکستانی ہی سمجھو خور کو تم صرف کشمیر کی ہی نہیں پاکستان کی بھی بیٹی ہو ۔۔۔کیونکہ کشمیر ہماری شہہ رگ ہے ۔۔۔زینی ۔۔۔چند لمحے داٶد وہی کھڑا زینی کے جواب کا انتظار کرتا رہا ۔۔۔اور پھر مایوس ہو کر مریم کے پاس ہی کچن میں چلا گیا ۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ تو تھا جو بہت غلط تھا ۔۔۔مریم تم ریڈی رہنا ۔۔۔ہم کل کی فلاٸٹ سے واپس جا رہے ہیں۔۔۔داٶد نے مریم کے سر پر بم پھوڑا ۔۔۔کیا دماغ ٹھیک ہے تمہارا ۔۔۔؟ زینی کو اکیلا ۔۔۔وہ اکیلی نہیں ہے ۔۔۔جو کہا وہ کرو ۔۔۔کل ٹھیک صبح چار بجے تیار رہنا ۔۔۔داٶد اپنی بات کر کے رکا نہیں تھا ۔۔۔یہ کافی تو پی کر جاٶ داٶد ۔۔۔داٶد کوٸ بھی جواب دیۓ بغیر روم سے جا چکا تھا ۔۔۔۔۔مریم پریشانی سے زینی کے پاس چلی چلی آٸ تھی ۔۔۔زینی ۔۔۔۔تم نے داٶد سے کچھ کہا ۔۔۔۔؟۔مریم پلیز مجھے سونے دو ۔۔۔اگر تمہیں یا تمہارے کزن کو مجھ سے مسٸلہ ہے تو میں کل ہی اپنی کوٸ دوسری رہاٸش ڈھونڈ لوں گی تمہیں میرے لیۓ پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ۔۔۔زینی نے مضبوط لہجے میں کہا تھا اور بیڈ سے ٹیک لگا کر بیٹھ گٸ تھی ۔۔۔۔زینی کی بات سن کر مریم دکھ سے چند لمحے زینی کو دیکھتی رہی تھی ۔۔پھر نم لہجے میں کہنے لگی ۔۔۔زینی تم کوٸ رہاٸش مت دھونڈو ۔۔۔داٶد مجھے کل واپس لے جاۓ گا ۔۔۔شاید مجھ میں ہی کوٸ کمی ہے مجھے لوگ راس نہیں آتے دوست راس نہیں آتے ۔۔۔تم بھی لوگوں جیسی نکلی ۔۔۔اگر بہن سمجھا ہوتا تو آج پل بھر میں غیر نہ کر دیتی ۔۔۔مریم کیلۓ یہی بہترتھا ۔۔۔۔مریم کو اتنا کچھ کہنے کے بعد زینی کا دل کٹ رہا تھا ۔۔۔۔لیکن وہ اپنی جنگ میں مریم کو حصہ دار نہیں بنا سکتی تھی ۔۔۔۔اس کی وجہ سے مریم کسی نقصان سے دوچار ہوتی ۔۔۔یہ زینی کو منظور نہیں تھا ۔۔۔۔۔زینی سے بات کیۓ بنا مریم پیکنگ میں مصروف ہو گٸ تھی ۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پاکستان پہنچ کر گھر خرید لیا گیا تھا ۔۔۔۔گھر ڈیکوریٹ کرنے کے بعد وہ سب گھر شفٹ ہو گۓ تھے ۔۔۔۔حبیبہ بہت خوش تھیں ۔۔کیونکہ وہ اپنے ملک واپس آگٸیں تھیں ۔۔۔علیشہ بھی خود کو ایڈجسٹ کرنے کی پوری کوشش کر رہی تھی ۔۔۔
اففف ماما ۔۔۔میں تو بہت بور ہو گٸ ہوں ۔۔۔یہاں پر ۔۔مانو بھی نہیں ہے ۔۔اور علی کو بھی فرصت نہیں کہ بہن کو بھی ٹاٸم دے لے ۔۔۔۔علشیہ بہت اداسی سے حبیبہ کی گود میں سر رکھ کر کہہ رہی تھی ۔۔حبیبہ نرمی سے اس کے بال سہلاتے ہوۓ کہنے لگیں ۔۔۔۔میری جان ۔۔۔تم اب یہاں فرینڈز بناٶ ۔۔۔ویسے بھی چند دن میں تم نے مصروف ہو جانا ہے ۔۔۔تم مختلف ہوسپٹلز میں اپلاٸ کر دو ۔۔۔۔کچھ مصروف بھی ہو جاٶ گی ۔۔ایک اور بات مانو بھی کل کی فلاٸٹ سے آرہی ہے ۔۔۔۔
کیا ماما ۔۔۔۔۔۔مانو آرہی ہے ۔۔۔۔علیشہ خوشی سے اٹھ کر بیٹھ گٸ اور مانو کا نمبر ڈاٸل کرنے لگی ۔۔۔۔
مانو نے نمبر بزی کر دیا تھا ۔۔۔علیشہ نے منہ بسورتے ہوۓ دوبارہ حبیبہ کی گود میں سر رکھ آنکھیں موند لیں ۔۔
احمد بیٹا کیسے ہو ۔۔۔کیسےیاد کیا بیٹا ۔۔خیریت تو ہے نا ۔۔۔۔ماما آپ سے ضروری بات کرنی ہے ۔۔۔۔آپ کہاں ہے اس وقت ۔۔میں روم میں ہوں بیٹا اور علیشہ پاس ہے میرے ۔۔۔خیریت تو ہے ناں ۔۔۔حبیبہ پریشان ہو گٸیں تھی ۔۔۔۔
جی خیریت ہے ماما ۔۔۔۔تیمور انکل کیسے ہیں ۔۔اور ماہا آنٹی ۔۔ ٹھیک ہیں بیٹا ۔۔۔۔حبیبہ دکھی انداز میں بولیں ۔۔۔ماما کیا انہوں نے مانو کے بارے میں پوچھا بھی نہیں ۔۔۔۔ان کو نہیں پتہ کہ ان کی کوٸ اولاد بھی ہے ۔۔۔احمد دکھی انداز میں حبیبہ سے پوچھنے لگا۔۔۔۔نہیں میرے بچے عریشہ اور فاطمہ کے بعد وہ تو جیسے بھول ہی گیا ہے کہ اس کی کوٸ اور اولاد بھی ہے ۔۔۔اس سب میں مانو کا کیا قصور ۔۔۔۔عریشہ احمد سے بات کرتے کرتے ٹیرس پر آگٸ تھیں ۔۔۔لیکن ماما آپ کو پتہ ہے کل کی فلاٸٹ سے میں مریم کے ساتھ آرہا ہوں واپس ۔۔۔مجھے نہیں پسند مریم وہاں اکیلی ہوسٹل میں رہے ۔۔مجھے وہاں کا ماحول اور حالات نہیں پسند ۔۔۔آپ مریم کو سمجھاٸیں کہ وہ پاکستان میںپڑھ لے ۔۔۔۔باقی باتیں جب میں کل آٶں گا تب کریں گے ۔۔۔اوکے ماما۔۔۔۔احمد بے حد پریشان تھا ۔۔۔۔احمد کی بات سن کر حبیبہ بھی پریشان ہو گٸیں تھی ۔۔۔۔احمد نے کبھی بھی کسی معاملے میں اتنی تفصیل سے کبھی بات نہیں کی تھی ۔۔۔حبیبہ نے بھی ذیادہ کچھ پوچھنا مناسب نہیں سمجھا تھا ۔۔۔
اور احمد کو بہت سے دعاٸیں دے کر فون رکھ دیا تھا ۔۔۔اور کچھ سوچتے ہوۓ ۔۔۔وہی ٹیرس پر بیٹھ گٸیں تھی ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 104 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sara Rahman

Read More Articles by Sara Rahman: 18 Articles with 7059 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: