آسماں ہوگا سحر کےنور سے آٸینہ پوش - قسط ١٤

(Sara Rahman, Rahim yar khan)

قسط١٤

مریم پیکنگ میں مصروف تھی ۔۔۔مریم کا سیل فون واٸبریٹ کرنے لگا ۔۔۔
بولو داٶد ۔۔۔۔مریم مصروف اندازمیں بولی ۔۔۔۔طبیعت ٹھیک ہے ناں۔۔۔داٶد تفکر سے پوچھنے لگا ۔۔۔مجھے کیا ہوگا داٶد ۔۔۔مجھ جیسوں کو کچھ نہیں ہوتا ۔۔۔۔کچھ ہو جاۓ تو دھرتی کا بوجھ ہلکا ہو جاۓ ساتھ میں تمہارے پیرنٹس کا بھی ۔۔۔۔مریم عجیب لہجے میں بولی تھی ۔۔۔کیا مطلب ۔۔۔۔مریم ۔۔۔۔ایسے کیوں کہہ رہی ہو ۔۔۔پاگل ہو گٸ ہو کیا ۔۔۔۔کام کی بات کرو داٶد میں بہت مصروف ہوں ۔۔۔پیکنگ کر رہی ہوں ۔۔۔مکمل پیکنگ کر لو مریم ۔۔اپنے ڈاکومنٹس بھی رکھ لینا ۔۔۔۔اور کوٸ حکم رہتا ہو تو وہ بھی دے سکتے ہیں آپ ۔۔۔مریم تلخی سے ہنسی ۔۔۔۔جب دماغ درست ہو جاۓ گا تمہارا تو بات کروں گا تم سے ۔۔۔داٶد نے غصے سے کہتے ہوۓ موباٸل رکھ دیا تھا ۔۔۔۔
موباٸل رکھ کر داٶد نے ساٸیڈ ٹیبل پر رکھی زینی کی ڈاٸری اٹھا لی ۔۔اور اور پڑھنے لگا ۔۔۔
دنیا میں واحد کتابیں ہی ہیں ۔۔۔جن سے آپ لڑ لو ۔۔۔جن کے سامنے دل کے سارے دکھ کہہ لو ۔۔۔رو لو ۔۔۔ہنس لو ۔۔۔پھر بھی وہ آپ کو نہیں کبھی نہیں چھوڑتیں ۔۔۔بلکہ ہمیشہ ساتھ نبھاتی ہیں ۔۔۔آپ کو حوصلہ دیتی ہیں آپ کی امید بنتی ہیں۔۔۔آپ کو کبھی چھوڑ کر نہیں جاتیں ۔۔۔
اووہ۔۔۔۔۔تو میڈم کی کتابوں سے بھی دوستی ہے ۔۔۔داٶد ہنستے ہوۓ خود سے بولا ۔۔۔اور اگلا صفحہ کھول کر پڑھنے لگا ۔۔۔۔
زندگی کی دم توڑتی سانسیں بھی آس کی نازک ڈور سے ہمیشہ بندھی رہتی ہیں ۔۔میرے انتظار کی دم توڑتی سانسیں بھی زندگی کی سانسوں جیسی ہیں ۔۔۔آس کو مٹنے نہیں دیتی آنکھ کو بند نہیں ہونے دیتی ۔۔۔کہ پتہ کب وہ لوٹ آۓ۔۔۔
ڈاٸری پر لکھی یہ چند سطریں ۔۔۔پڑھ کر داٶد کو اپنا دل کٹتا محسوس ہوا تھا ۔۔۔۔ایسا عجیب احساس جاگا تھا ۔۔۔کہ داٶد کو انتہاٸ ٹھنڈ میں بھی پیشانی پر پسینے کے ننھے قطرے نکلتے ہوۓ محسوس ہوۓ تھے ۔۔۔۔
وہ دل ہی دل میں زینی سے مخاطب ہوا تھا ۔۔۔کون ہے وہ زینی ۔۔۔؟؟ تو زینیہ پرویز تمہارے دل میں کوٸ اور بستا ہے ۔۔۔؟کوٸ جواب نہ پا کر داٶد کو سگریٹ کی طلب شدت سے جاگی تھی ۔۔۔۔
سگریٹ سلگاۓ داٶد ٹیرس پر چلا آیا تھا ۔۔۔۔یخ بستہ ہواٶں کے سرد تھپیڑے بھی دل میں لگی ہوٸ آگ بجھانے میں ناکام ہوتے محسوس ہوۓ تھے ۔۔۔کچھ پل بے چینی سے ٹہلنے کے بعد داٶد نے دوبارہ زینی کی ڈاٸری اٹھاٸ تھی اور پڑھنے لگا تھا ۔۔۔۔اس کا بس نہیں چل رہا تھا ۔۔کہ ابھی اڑ کر پہنچ جاتا ۔۔۔زینی کو جھنجھوڑ کر پوچھ لیتا ۔۔۔۔اس کے سارے درد ساری تکلیفیں چن لیتا ۔۔۔۔عجیب احساس تھا ۔۔۔عجیب سا درد عجیب سی جلن تھی ۔۔۔۔اندر مچلتے طوفان سے بچنے کی خاطر وہ ڈاٸری پر لکھی چند سطریں پڑھنے لگا تھا
جو لوگ راس آجاٸیں ۔۔۔۔وہ کبھی نہیں نکلتے نہ دل سے نہ دماغ سے ۔۔۔۔
کبھی کبھی ہم سے بہت بڑی بھول ہو جاتی ہے ۔۔۔۔کسی ایسے شخص کو اپنا سمجھنے کی بھول جو آپ کا کبھی اپنا تھا ہی نہیں ۔۔۔۔۔ویسے بھی اوقات انسان کی نہیں ہوتی احساس و جزبات کی نہیں ہوتی ۔۔۔۔۔۔مادیت پرستی پر کبھی بھی احساسات جیسے غریب جزبے برتری حاصل
نہیں کر سکتے ۔۔۔۔۔
کیسی اذیت ہے خدارا ۔۔۔۔مجھے کیا ہو رہا ہے۔۔۔کرتی ہے کسی کو پسند تو کرے ۔۔۔۔مجھے کیا ہو رہا ہے ۔۔۔۔داٶد خود سے پوچھ رہا تھا ۔۔۔۔محسوس کرنے سے دل میں درد کے سوا اور کوٸ احساس نہیں جاگ رہا تھا ۔۔ بے چینی سے داٶد نے مریم کا نمبر ملایا تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہیلو کون ہے ۔۔۔مریم کی نیند میں ڈوبی آواز سناٸ دی تھی ۔۔۔میں داٶد ہوں مریم ۔۔۔داٶد عجیب لہجے میں کہہ رہا تھا ۔۔۔۔داٶد کی آواز سنتے ہی مریم نیند میں بولی ابھی سونے دو ۔۔میں نے پیکنگ کر لی ہے ۔۔۔کہا تو تھا تمہیں ۔۔۔۔مریم میری بات سنو ۔۔۔۔تم میری دوست ہو نا ۔۔۔داٶد منت بھرے انداز میں بولا تھا ۔۔۔۔
بولو داٶد میں سن رہی ہوں ۔۔۔

مریم نے ہاتھ بڑھا کر ٹیبل لیمپ آن کیا ۔۔۔اور چپل پہن کر کچن میں چلی آٸ تھی ۔۔۔
داٶد نے اپنی کیفیت ایک ہی سانس میں مریم کو سناٸ ۔۔۔۔مریم کا دل ڈوب سا گیا تھا ۔۔۔داٶد تمہیں زینی سے محبت ہو گٸ ہے۔۔ایک آنسو ٹوٹ کر کچن کے فرش میں جزب ہو گیا تھا ۔۔۔بڑی دقتوں سے مریم نے ایک جملہ مکمل کیا تھا۔۔۔داٶد خود اسقدر الجھا ہوا تھا کہ ۔۔۔مریم کا ٹوٹا لہجہ محسوس نہ کر پایا تھا ۔۔۔۔
مریم نے یہ کہہ کر فون بند کیا تھا ۔۔۔اور بھاگتے ہوۓ روم سے نکل گرٶنڈ میں چلی آٸ تھی ۔۔۔۔
مریم کی بات سن کر داٶد ساکت ہوا تھا ۔۔۔۔پوری رات داٶد کے ذہن میں یہی جملہ گونجتا رہا تھا ۔۔۔۔داٶد تمہیں زینی سے محبت ہو گٸ ہے ۔۔۔۔ایک بھاری رات تھی ۔۔۔۔اس کا اختتام تو بہر حال ہو گیا تھا ۔۔۔لیکن دو دلوں پر ایک گہرا اثر چھوڑ گٸ تھی
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 169 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sara Rahman

Read More Articles by Sara Rahman: 18 Articles with 7694 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: