ناول وطن یا کفن قسط نمبر 6

(Shafaq kazmi, Karachi)

السلام عليكم ماما جان ۔۔۔۔امرحہ نے گھر میں داخل ہوتے ہی ہرلین کو سلام کیا ۔۔۔۔۔۔

وعلیکم السلام آگئی ہو کالج سے ۔۔۔۔

جی ماما آگئی ہوں۔۔۔۔بس تھک گئی ہوں بہت ۔۔۔۔۔ماسی سے کہیں ایک کپ چائے بنا دے۔۔۔۔۔امرحہ نے ڈسپنسر سے گلاس میں پانی ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے میں ماسی سے چائے کا کہتی ہوں تم آکر کھانا کھا لو ۔۔۔۔بابا بھی آگئے ہیں ۔۔۔۔۔تم فریش ہو کر جلدی سے آجاؤ۔۔میں نے آج اچار گوشت بنایا ہے تمہیں بہت پسند ہے نہ ۔۔۔۔۔


واؤ ماما اچار گوشت بنایا ہے آپ نے ۔۔۔۔۔
امرحہ تیزی سے ڈائنگ ٹیبل کی طرف بھاگی۔۔۔۔السلام عليكم بابا جانی ۔۔۔۔امرحہ بابا کے ساتھ والی کرسی پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔

وعلیکم السلام ۔۔ بابا نے امرحہ کے سر پر پیار سے ہاتھ پھیرتے ہوئے اس کے سلام کا جواب دیا۔۔۔۔۔

ارے امرحہ پہلے یونیفارم تو چینج کر لو۔۔۔۔۔پھر سکون سے کھانا کھا لینا۔۔۔۔۔۔

نہیں ماما پہلے کھانا کھاوّں گی ۔۔۔۔پہلے بھوک نہیں لگ رہی تھی ۔۔۔آپ نے اچار گوشت کا نام لیا تو بہت بھوک لگنے لگ گئی اب ایک منٹ بھی صبر نہیں ہوگا مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔

امرحہ کی بات سنتے ہی عاید ابان مسکرانے لگے ۔۔۔۔۔ ہرلین اس کو پہلے کھانا کھانے دو

اچھا ٹھیک ہے کھا لو ۔۔۔۔۔ہرلین بھی امرحہ کے پاس بیٹھ گئی۔ ۔۔۔

اور بیٹا کیسی جا رہی ہے پڑھائی ۔۔۔۔۔عاید ابان نے گلاس میں پانی ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔

بابا پڑھائی تو زبردست جا رہی ہے ۔۔۔۔۔آج تو خیر پہلا دن تھا کالج میں اچھا رہا ۔۔۔۔بس دعا کریں میں آرمی میں چلی جاؤں ۔۔۔۔۔۔
امرحہ بیٹا ۔۔۔۔۔آرمی کے خواب دیکھنا چھوڑ دو پلیز۔۔۔۔۔۔تم ہماری اکلوتی بیٹی ہو ۔۔۔ہرلین نے امرحہ کو سمجھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔


تو کیا ہوگیا ماما۔۔۔۔آپ لوگ مجھے کھونے سے ڈرتے ہیں کہیں مجھے کچھ ہو نہ جائے۔۔۔۔۔۔ماما موت تو برحق ہے ایک نہ ایک دن آئے گی ہی ۔۔۔۔۔۔
ماما اللّه تعالیٰ نے بھی تو قرآن پاک میں فرمایا ہے *كُلُّ نَفْسٍ ذَآئِقَةُ الْمَوْت* ہر نفس نے موت کا ذائقہ چھکنا ہے ۔۔۔۔ماما جب ہم نے ایک دن مر جانا ہے تو ہم موت سے کیوں ڈریں ؟ میں جانتی ہوں ماما۔ جانی آپ دونو مجھ سے بے حد پیار کرتے ہیں ۔۔۔۔۔پر ایک نہ ایک دن تو ہم سب نے مر جانا ہے
اس سے اچھا ہے ہم کوئی اچھا کام کر کے مر جائیں۔۔۔۔تاکہ مر کر بھی زندہ رہیں۔۔۔
امرحہ کی بات سن کر عاید ابان خاموش ہو گئے۔۔۔۔۔امرحہ اٹھ کر روم کی جانب چلنے لگی۔۔۔
بیٹا کھانا تو کھا لو ۔۔۔۔۔۔

نہیں بابا بس بھوک نہیں ہے مجھے۔۔۔۔امرحہ مایوسی سے سر جھکائے روم میں چلی گئی۔۔۔۔۔

عاید صاحب آپ سمجھائیں امرحہ کو وہ بیٹی ہے ۔۔۔۔لڑکی ہے اس کے لئے یہ سب مناسب نہیں ہے ہم نے اس کی شادی بھی کرنی ہے ۔۔۔۔۔معاشرے والے کیا کہیں گے۔۔۔

ہرلین میں امرحہ بیٹی کے جذبہ کے آگے ہار جاتا ہوں۔۔۔۔اس کا جذبہ ہی اتنا ہے کہ میں خاموش ہو جاتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔
عاید ابان امرحہ کے روم میں آگئے۔۔۔امرحہ سر جھکائے صوفے پر بیٹھی رو رہی تھی.۔۔۔۔۔۔

بیٹا امرحہ۔۔۔۔عاید ابان امرحہ۔ کے پاس آکر بیٹھ گئے۔۔۔۔بیٹی کی آنکھوں میں آنسو دیکھ کر ہر باپ مجبور ہو جاتا ہے۔۔۔عاید ابان بھی بہت بے بس ہو گئے تھے امرحہ کے جذبہ کے آگے وہ ہمت ہار جاتے تھے ۔۔۔۔۔اچھا ٹھیک ہے میں تمہیں اجازت دیتا ہوں تمہیں جو کرنا ہے تم کرو۔۔۔۔۔۔بس ایک بات یاد رکھنا کبھی کوئی ایسا کام نہیں کرنا جس کی وجہ سے تمہارا بوڑھا باپ گلی محلے اور مسجد میں سر جھکا کر چلے۔۔۔۔۔مجھے اپنی بیٹی پر آنکھیں بند کر کے بھروسہ ہے ۔۔۔۔باقی لوگوں کی باتوں سے گھبرانا نہیں ہے لوگوں کا کام۔ ہے باتیں کرنا آپ کوئی کام کرو گے وہ تب بھی باتیں کریں گے آپ نہیں کرو گے تب بھی وہ باتیں کریں گے۔۔۔۔۔۔بیٹا زندگی میں کچھ منزلیں پانے کے لئے بہت کچھ کھونا بھی پڑھتا ہے ۔۔۔۔ہمّت والوں کے لیے کچھ بھی نا ممکن نہیں ہوتا۔ وہ آگ اور خون کے دریا پارکر سکتے ہیں پہاڑوں کی برفانی چوٹیوں کو عبور کرسکتے ہیں۔ طلاتم خیز موجوں کے سامنے سینہ تان کر کھڑے ہوجاتے ہیں۔ بڑے بڑے صدمات اور مصائب سہ کر بھی اْن کے پائے استقلال میں لغزش تک نہیں آتی۔۔۔۔ باقی ماما کی فکر نہیں کرو وہ ماں ہیں بس ڈرتی ہیں۔۔۔۔تمہیں پتہ تم بہت منتو مرادوں سے ہوئی ہو تمہاری ماما ساری ساری رات دعا کرتی تھیں۔۔۔۔۔پھر جا کر رب نے فریاد سنی اور تم جیسی پیاری سی گڑیا دی ہمیں۔۔۔۔۔عاید ابان نے امرحہ کو سینے سے لگاتے ہوئے کہا۔۔۔۔تمہیں ذرا سی خراش بھی آتی تھی نہ بیٹا ہم تڑپ کر رہ جاتے تھے۔۔۔۔ عاید ابان نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔چلو اٹھو شاباش اب کھانا کھا لو ایسا نہیں کرتے اچھے بچے۔۔۔۔دیکھو تمہاری ماما نے اتنے پیار سے تمہارے لئے اچار گوشت بنایا ہے تم ایسے اٹھ کر آئی ہو انہوں نے بھی کچھ نہیں کھایا۔۔۔۔
تھنک یو سو مچ بابا جان میں کبھی بھی آپ کو مایوس نہیں کروں گی دیکھنا آپ کا سر فخر سے بلند ہو گا ایک دن ۔۔۔۔۔آپ فخر سے بتائیں گے سب کو کے آپ امرحہ کے والد ہیں۔۔۔

ہاہاہا اچھا چلو اٹھو اب کچھ کھا لو۔۔۔۔۔
************
السلام عليكم! امرحہ بیٹا۔۔میں میجر عبدالمغیث ہوں یہ میرا نمبر ہے سیو کر لو۔۔۔امرحہ نے میجر عبدالمغیث کا میسج پڑھتے ہی فوراً رپلائے کیا وعلیکم السلام انکل جی ٹھیک ہے ۔۔۔ میں نے آپ کا نمبر سیو کر لیا ہے ۔۔۔۔ویسے میجر انکل کیا بات کرنی تھی آپ نے مجھ سے۔۔۔

بات تو میں بعد میں بتاؤں گا۔۔۔۔لیکن اگر پیزا کھانا ہے تو آجاؤ پیزا ہٹ۔۔۔۔۔

پیزا ہٹ۔۔۔۔۔ایک کام کرتی ہوں میں ہاں کر دیتی ہوں۔۔۔۔وہاں جا کر بات پوچھ لوں گی ۔۔۔۔ایسے تو یہ بتائیں گے ہی نہیں امرحہ نے منہ بناتے ہوۓ میسج ٹائپ کیا ۔۔۔۔۔اوکے انکل میں آرہی ہوں۔۔۔میرا ویٹ کیجیے ۔۔۔۔


اوکے میں ویٹ کر رہا ہوں جلدی آنا ۔۔۔۔۔

جی بس دس منٹ میں آئی میں۔۔۔۔۔میسج ٹائپ کرتے ہی امرحہ تیزی سے
روم سے باہر آئی ۔۔۔۔ماسی میں جا رہی ہوں کام۔ سے ماما کو بتا دیجیۓ گا۔۔۔۔میں بس ایک گھنٹے تک آجاؤں گی ۔۔۔امرحہ نے بھاگتے ہوئے کہا ۔۔۔۔ماسی امرحہ کے پیچھے باہر آئی تب تک امرحہ کار میں بیٹھ گئی تھی۔۔۔۔۔پر امرحہ بیٹی ۔۔۔۔۔
ماسی پلیز دیر ہو رہی ہے۔۔۔۔امرحہ نے ماسی کی بات ان سنی کرتے ہوئے کار سٹارٹ کردی
عجیب لڑکی ہے ۔۔۔۔۔ماسی بڑبڑاتے ہوئے اندر آگئی۔۔۔۔۔
. . . . ***********
امرحہ کار سے اتری ۔۔۔۔اس نے دیکھا میجر صاحب اسی کا انتظار کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔

ارے امرحہ تم کار بھی ڈرائیو کر لیتی ہو۔۔۔میجر عبدالمغیث نے حیرت سے امرحہ کی جانب دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

جی ہاں میں کار بھی ڈرائیو کر لیتی ہوں۔۔۔

بیٹا جی ڈرائیونگ لائسنس ہے آپ کا ؟ میجر عبدالمغیث نے ہاتھ باندھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔

نہیں تو میں تو ابھی اٹھارہ سال کی بھی نہیں ہوئی ۔۔۔۔۔امرحہ سمجھ گئی اب اس کی خیر نہیں۔۔۔۔

تو بیٹا میں پھر اندر کروا دوں آپ کو ۔۔۔۔۔میجر عبدالمغیث نے تنگ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
اچھا انکل نیکسٹ ٹائم سے نہیں ڈرائیو کروں گی جب ڈرائیونگ لائسنس بن جاۓ گا تب سے کروں گی ۔۔۔۔اوکے ؟ اب چلیں اندر ۔۔۔۔۔ امرحہ نے منہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔

اندر مطلب جیل ۔۔۔۔؟ اندر کرواؤں ۔۔۔۔۔میجر نے ہنستے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔

انکل آپ بھی نہ ۔۔۔۔چلیں ٹھیک ہے پھر میں گھر جا رہی ہوں ۔۔۔۔۔

ہاہاہا نہیں نہیں آجاؤ اندر چلیں ہاہاہا ۔۔۔۔۔میجر کی بات پر امرحہ کو بھی ہنسی آگئی ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔
آجاؤ بیٹھو۔۔۔ان سے ملو یہ ہیں فیصل ۔۔۔۔۔پاکستان ایئر فورس میں ہیں ۔۔۔۔فلائنگ لفٹینینٹ۔ ۔۔ہیں ۔۔۔۔۔۔

السلام عليكم فیصل صاحب۔۔۔۔امرحہ نے فیصل کی جانب دیکھا ۔۔۔۔وہ بہت ہی خوبصورت تھا۔۔۔امرحہ نے بہت مشکلوں سے اس سے نظریں ہٹائیں۔۔۔۔

وعلیکم السلام۔۔۔بہت سنا ہے آپ۔ کے بارے میں میں نے بچپن۔ میں روڈ پہ بیٹھ کر مٹی کھاتیں تھیں آپ ۔۔۔۔۔فیصل نے مسکراہتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔

ہیں۔۔ میں مٹی نہیں کھاتی تھی ۔۔۔۔۔امرحہ نے چڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔

ہاہاہا آپ لوگ بیٹھیں میں ذرا ایک کال سن کر آیا ۔۔۔۔۔
فیصل کے جاتے ہی امرحہ میجر عبدالمغیث سے مخاطب ہوئی ۔۔۔۔انکل یہ کون ہے ۔۔۔۔اور انکل یہ کتنا پیارا ہے نہ۔۔۔۔۔

بیٹا یہ تمہارے حسن انکل کا بیٹا ہے۔۔۔۔۔حسن کا بس یہی ایک بیٹا ہے۔۔۔۔۔تمہیں پسند آگیا دوستی کرواؤں۔ تمہاری اس سے ۔۔۔۔
نہیں انکل ۔۔۔۔ویسے انکل ۔۔۔حسن انکل کو کس نے شہید کیا تھا ۔۔۔۔۔اور کیوں کیا تھا ۔۔۔۔

بیٹا ان کے پاس ایک فائل تھی ۔۔

فائل کسی فائل ۔۔۔۔۔؟

بیٹا اس فائل میں ملٹری کے سیکریٹس تھے۔۔دشمن اس فائل کو حاصل کرنا چاہتے تھے۔۔۔مگر حسن نے اپنی جان کی بھی پرواہ نہیں کی۔۔اور دشمن جب ہار گئے تو بے دردی سے شہید کردیا ان کو ۔۔۔۔۔۔

جی انکل میری آنکھوں کے سامنے ہی حسن انکل کو شہید کیا گیا تھا میں کچھ نہیں کر سکی ۔۔۔۔۔امرحہ رونے لگی ۔۔۔۔

رونے کا کوئی فائدہ نہیں امرحہ ۔۔۔۔۔ہم نے دشمنو کو کسی صورت نہیں چھوڑنا ہم نے اپنے وطن سے دہشت گردی جیسی لعنت کو ختم۔ کرنا ہے ۔۔۔۔۔فیصل نے امرحہ کی باتیں سن۔ لی۔ تھی امرحہ کے پاس آکر بیٹھ کر امرحہ کو سمجھانے لگا ۔۔۔۔۔
بہت پیار کرتی تھی نہ تم میرے بابا سے ۔۔۔۔میرے بابا بھی تم سے بہت پیار کرتے تھے ۔۔۔۔امرحہ۔۔۔۔بابا تو نہیں ہیں پر میں تمہارے ساتھ ہوں ہمیشہ۔۔۔۔تمہیں جب بھی میری ضرورت ہو تم بس مجھے آواز دے کر دیکھنا۔۔۔۔میں اپنی آخری سانس تک۔۔۔۔تمہارے ساتھ ہوں۔۔۔۔۔۔

)جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 220 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27889 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: