وطن یا کفن۔ قسط 8

(Shafaq kazmi, Karachi)

ناول وطن یا کفن قسط 8 مصنفہ شفق کاظمی

امرحہ کیا ہوا تم نے بریک کیوں لگائی؟ فیصل نے امرحہ کی جانب دیکھا جو بے حد پریشان لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
فیصل وہ۔۔۔۔یہ گلوکمپارٹمنٹ میں واپس رکھ دیں پلیز۔۔۔۔۔۔۔امرحہ نے گھبراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
کیوں یہ میرے بابا کی پرچی ہے اس وجہ سے۔۔۔۔؟؟ فیصل نے پرچی کو سینے سے لگاتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔۔۔فیصل کی آنکھوں میں نمی اور چہرے پہ مسکراہٹ تھی۔۔۔۔۔۔جانتی ہو امرحہ میں ایک شہید کا بیٹا ہوں۔۔۔۔۔فخر ہے مجھے میرے بابا پہ۔۔۔۔۔امرحہ بابا چاھتے تو ان کو وہ فائل دے سکتے تھے۔۔۔۔۔بابا نے نہیں دی۔۔۔۔جانتی ہو کیوں۔۔۔۔۔کیوں کے اس فائل میں اہم راز تھے۔۔۔۔۔امرحہ۔۔۔۔۔جب بھی کوئی فوجی پکڑا جاتا ہے نہ اس کے پاس دو آپشن ہوتے ہیں۔۔۔۔۔شہادت یا پھر غداری۔۔۔۔اگر وہ اہم راز بتا بھی دے نہ تو دشمن پھر بھی نہیں چھوڑتے وہ اتنے شاطر ہوتے ہیں کے راز جاننے کے بعد ختم کر دیتے ہیں۔۔۔۔۔جس طرح شہید ہمیشہ زندہ رہتا ہے اس طرح غدار کی غداری بھی ہمیشہ زندہ رہتی ہے۔۔۔۔۔ اور ان کی آنے والی نسلوں کو بتایا جاتا ہے تمہارے آباواجداد میں سے ایک غدار تھا۔۔۔۔۔اور مجھے فخر ہے اللّه نے میرے بابا کو شہادت جیسے رتبہ سے نوازا امرحہ کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے۔۔۔۔امرحہ تم رو کیوں رہی ہو پاگل لڑکی۔۔۔۔۔فیصل نے امرحہ کے آنسو صاف کرتے ہوۓ کہا۔۔۔۔تم نے اب تک یہ کاغذ سمبھال کہ رکھا ہوا۔۔۔۔بابا سے بہت پیار کرتی تھی نہ تم۔۔۔۔۔
یہ لو یہ گھڑی لے لو بابا کی ہے اور تمہاری کلائی پہ بہت اچھی لگے گی۔۔۔۔۔فیصل نے کوٹ کی جیب سے کلائی والی گھڑی نکالتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔۔۔امرحہ یہ گھڑی بابا کو بہت پسند تھی وہ ہمیشہ اپنی کلائی میں یہی گھڑی پہنتے تھے۔۔۔۔
ان کے جانے کے بعد میں نے اس کو بہت سمبھال کے رکھا۔۔۔۔۔فیصل نے امرحہ کی کلائی میں گھڑی پہناتے ہوۓ کہا۔۔

لیکن آپ یہ مجھے کیوں پہنا رہیں ہیں۔۔۔۔۔۔آپ نے اتنا سمبھال کہ رکھی اب آپ یہ مجھے دے رہیں ہیں ایسا کیوں۔۔۔۔۔امرحہ نے حیرت بھرے انداز میں کہا۔۔۔۔۔

میرے پاس بابا کی اور بھی بہت سی چیزیں ہیں۔۔۔۔۔یہ تم رکھ لو۔۔۔فیصل نے مسکراہتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔
بہت بہت شکریہ آپ کا۔۔۔

محترمہ اب آپ نے گاڑی سٹارٹ کرنی بھی ہے کہ نہیں۔۔ گھر نہیں جانا آپ نے کیا ۔۔۔۔۔یا پھر آپ کو میرے ساتھ وقت گزارنے میں مزہ آرہا ہے۔۔۔۔۔۔

ہاہاہا مہربانی جناب آپ کی۔۔۔۔۔امرحہ نے گاڑی سٹارٹ کرتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔۔آپ کو پتہ ہے جب میں چھوٹی سی ہوتی تھی حسن انکل راستے میں مجھے کہیں بھی دیکھتے تھے تو مجھے گھر تک چھوڑ کر آتے تھے۔۔۔

وہ اس وجہ سے کیوں کہ تم۔ مٹی جو اتنی کھاتی تھی

جی نہیں میں مٹی نہیں کھاتی تھی ۔۔۔۔۔۔امرحہ نے منہ بناتے ہوۓ کہا۔۔۔۔

ہاہاہا اچھا منہ نہیں بناؤ۔۔ویسے ۔امرحہ یہ راستہ تو میرے گھر کا ہے۔۔۔۔۔تمہارا گھر بھی یہاں ہے کیا۔۔۔۔فیصل نے حیرت سے امرحہ کی جانب دیکھتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔

جی نہیں یہ آپ کے گھر کا ہی راستہ ہے میں آپ کو آپ کے گھر تک چھوڑ کر آؤں گی۔۔۔۔۔امرحہ نے ہنستے ہوۓ جواب دیا ۔۔۔۔

لیکن آرڈر مجھے ملا تھا تمہیں تمہارے گھر تک چھوڑ کہ آنے کو نہ کہ تمہیں۔۔۔۔۔اور تمہیں میرے گھر کا کیسے پتہ۔۔۔۔

میرا گھر بھی تمہارے گھر کے پاس ہے بس پانچ منٹ کے فاصلے پہ ہے۔۔۔۔۔جب حسن انکل شہید ہوۓ تھے تو میں آئی تھی۔۔۔۔۔پھر ان کی شہدت کے بعد اکثر میں یہاں سے گزری۔۔۔۔۔کیوں کہ مجھے محسوس ہوتا تھا جیسے وہ یہیں کہیں ہیں۔۔۔۔۔
خیر ۔۔۔۔آپ کا گھر آچکا ہے فیصل صاحب۔۔۔۔

لیکن امرحہ تم اکیلے کیسے جاؤ گی۔۔۔۔۔۔۔

ارے آپ جائیں۔۔۔۔۔میں چلی جاؤں گی بے فکر رہیں۔۔

آوّ اندر ماما سے مل کر جانا۔۔۔۔۔۔

نہیں پھر کبھی ابھی مجھے گھر جانا ہے دیر ہو رہی ہے ماما پریشان ہو رہی ہوں گی۔۔۔۔۔

اچھا مجھے گھر پہنچ کر میسج کرنا میرا نمبر نوٹ کر لو۔۔۔۔۔۔

جی ٹھیک ہے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
السلام علیکم ماما جان۔۔۔۔۔ہرلین قرآن پاک پڑھ رہیں تھیں۔۔۔۔امرحہ اپنے سر پہ ڈوپٹہ اوڑھ کر ہرلین کے پاس بیٹھ گئی اور تلاوت سننے لگی۔۔۔۔

وعلیکم السلام آگئی ہو تم کہاں گئی تھی۔۔۔۔۔؟ ہرلین نے ناراض ہوتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔

اوہ ہو ماما جان ایک تو آپ بھی اتنا پریشان ہو جاتی ہیں میں یہاں پیزا ہٹ تک گئی تھی۔۔۔۔دوستوں ساتھ۔۔

ناراض نہیں ہو رہی بس تمہاری فکر ہوتی مجھے۔۔۔۔حالات اتنے خراب ہے بیٹا یوں اکیلے جانا مناسب نہیں ہے ۔۔۔۔

ماما کچھ نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔آپ بھی نہ بہت زیادہ ہی ڈرتی ہیں۔۔۔۔۔خیر میں روم میں جا رہی ہوں اسائمنٹ کرنا ہے کالج کا صبح کالج بھی جانا ہے۔۔۔۔امرحہ روم کی طرف چلنے لگی۔۔۔

اففف اللّه ایک تو یہ لڑکی بھی نہ کسی کی نہیں سنتی۔۔۔ہرلین نے بڑبڑاتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔
السلام علیکم میجر انکل میں گھر آگئی ہوں آپ اس لڑکی سے میری بات کروا دیں جس کو بلیک میل کیا جا رہا ہے۔۔۔۔۔۔امرحہ نے موبائل چارجنگ پہ لگاتے ہوۓ میسج ٹائپ کیا۔۔۔

وعلیکم السلام۔۔۔۔میں میسنجر پہ گروپ بنا لیتا ہوں آپ ان سے بات کرلیں میں مصروف ہوں۔۔۔۔

اوکے ٹھیک ہے انکل۔۔۔۔۔

میجر عبدالمغیث نے میسنجر گروپ بنایا جیس میں فیصل اور امرحہ کو ایڈ کیا۔۔۔۔۔ہنزا بیٹا آپ امرحہ سے بات کرلیں۔۔۔۔میں مصروف ہوں فری ہو کر دیکھتا ہوں۔۔۔۔۔
السلام علیکم ہنزا مجھے انکل نے سب کچھ بتا دیا ہے تم آئی ڈی لنک دے دو میں کرتی ہوں کچھ۔۔۔۔۔۔۔۔

پلیز آپی جلدی سے کچھ کریں۔۔۔۔وہ میری تصویریں اپلوڈ کر رہا ہے۔۔۔۔۔ہنزا نے لنک سینڈ کرتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔

مجھے آئی ڈی کا ای میل اور پاسورڈ دیں۔۔۔۔۔۔

لیکن اس نے پاسورڈ چینج کر لیا ہے۔۔۔۔

میرے پاس ایک لنک ہے وہاں جا کر اس کی رپورٹ کرتی ہوں اس کی مدد سے 2 منٹ کے اندر آئی ڈی فلحال کے لئے بند ہو جاۓ گی لیکن وہ واپس آسکتا ہے ۔۔۔۔تب تک میں اس کا نمبر نکلوا لوں گی۔۔۔۔۔۔پھر ان شاء اللّه اس تک پہنچ جائیں گے انکل
بہت بہت شکریہ آپ کا۔۔۔۔۔۔

شکریہ کی کوئی بات نہیں میں بھی ایک لڑکی ہوں سمجھ سکتی ہوں تمہارا مسئلہ اللّه ایسے درندوں کو سیدھی راہ پر چلنے کی توفیق عطا فرماۓ۔۔۔میں بس دو منٹ میں آتی ہوں . . . . . *******
مبارک ہو ہنزا اس درندے کی آئی ڈی فلحال کے لئے بند ہو گئی ہے ۔۔۔۔

لیکن امرحہ اس کی اور بھی آئی ڈیز ہیں وہ اس میں بھی اپلوڈ کر سکتا ہے۔۔۔۔۔

پریشان نہیں ہو میں نے فیس بک کو رپورٹ کی اب تمہاری تصویریں بلیک لسٹ میں چلی گئی ہیں۔۔۔۔۔جہاں بھی اپلوڈ ہوں گی ڈیلیٹ کر دی جاۓ گی۔۔۔۔کوئی بھی اپلوڈ نہیں کر سکتا اب۔۔۔۔۔۔۔
شکر ہے امرحہ ۔۔۔۔اب میں سکون سے سو سکوں گی۔۔۔۔۔

فیصل نے آن لائن آتے ہی گروپ لفٹ کردیا۔۔۔۔۔

امرحہ یہ فلائٹ لیفٹیننٹ صاحب کو کیا ہوا ہے۔۔۔۔۔۔

پتانہیں میں پوچھتی ہوں صبر۔۔۔۔۔

کیا ہوا لفٹ کیوں کیا آپ نے گروپ ۔۔۔۔۔امرحہ نے فیصل کو ان باکس میں میسج کیا۔۔۔۔

جناب آپ سے میں ناراض ہوں مجھ سے بات نہیں کریں۔۔۔۔میں نے کہا تھا۔۔۔۔گھر پہنچ کر میسج کرنا۔۔۔۔۔مگر آپ نے مجھے میسج نہیں کیا۔۔۔۔۔بات نہیں کرنا اب مجھ سے۔۔۔۔۔فیصل نے منہ بناتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔

سوری بھول گئی تھی۔۔۔۔

ہممم اوکے گڈ نائٹ۔۔۔۔۔۔

لیفٹیننٹ صاحب ناراض ہیں آپ؟؟

نہیں ایئر بیس جا رہا ہوں۔۔۔کل سے دوبارہ سے مصروف ہو جاؤں گا۔۔۔۔۔

ہمم اچھا خیال رکھنا اپنا آپ فلائٹ لیفٹیننٹ فیصل صاحب۔۔۔

اور آپ بھی ہیکر عدن ہاہاہا۔۔۔

ہاہاہا۔۔۔۔۔اوکے اللّه حافظ ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔****۔۔۔۔۔*****۔
اٹھ بھی جاؤ فیصل کب سے اٹھا رہا ہوں۔۔۔۔۔گدھے گھوڑے بیچ کے سوئے ہو کیا۔۔۔۔۔۔فیصل بی او کیو میں اپنے روم میں بہت ہی سکون سے سو رہا تھا۔۔۔۔۔فیصل کے کولیگ نے اسے جھنجھوڑتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔دیکھو لیفٹیننٹ صاحب بہت دیر ہو رہی ہے سی او کا پتہ ہے نہ۔۔۔۔۔۔فضول میں رگڑا لگے گا۔۔۔۔۔

یار ایک تو تم بھی نہ سکون سے سونے نہیں دیتے مجھے۔۔۔۔۔فیصل نے منہ بناتے ہوۓ کہا۔۔۔۔فیصل آنکھیں موندتے ہوۓ اٹھا۔۔۔۔۔جسے ہی نظر گھڑی پہ پڑی۔۔۔۔۔۔ایک دم اس کو جھٹکا لگا۔۔۔۔۔
اففف میرے خدا اتنی دیر ہوگئی ۔۔۔۔۔آج تو سی او نے پکا مار ہی ڈالنا۔۔۔۔۔

نہیں نہیں سو جاؤ سکون سے تم۔۔۔۔۔۔میں تو جا رہا ہوں۔۔۔۔آکر سمبھال لینا سی او کو۔۔۔۔۔شہروز ہنستے ہوۓ باہر کی جانب بڑھا۔۔۔۔۔۔

کہاں جا رہے ہو شہروز مجھے پھنسا کر اٹھا نہیں سکتے تھے تم مجھے۔۔۔۔۔روک جاؤ میرے ساتھ جانا۔۔۔۔۔۔فیصل نے غصہ ہوتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔

جناب میں آپ کو کب سے اٹھا رہا تھا۔۔۔اور آپ ہیں کہ اٹھنے کا نام ہی نہیں لے رہے تھے۔۔۔۔اور مجھے بولتے ہیں میں سونے نہیں دیتا۔۔۔۔اب۔ میں جا رہا ہوں آپ کے لئے بھی بہتر ہے فضول میں اپنا قیمتی وقت ضائع نہیں کریں۔۔۔۔۔ورنہ سی او کا پتہ ہے نہ۔۔۔۔۔۔

تجھے تو میں بعد میں دیکھ لوں گا شہروز کے بچے۔۔۔۔فیصل بڑبڑاتے ہوۓ واش روم کی طرف بھاگا۔۔۔۔۔فریش ہونے کے بعد جلدی جلدی ہاتھ منہ دھوئے۔۔۔۔۔
جلدی جلدی بھاگتے گرتے سمبھلتے ہوۓ کورآل پہن کے روم سے اسکواڈرن کی طرف بھاگا
فیصل چیک پوسٹ پر بھاگتے ہوۓ جا رہا تھا ۔۔۔۔۔کے ایک کڑک دار آواز نے اس کے قدم روک لئے۔۔۔

کیا ہوا ہے۔۔۔۔۔فیصل نے گاڑد کی جانب دیکھتے ہوۓ کہا۔۔۔۔

سر کارڈ دیکھائیں۔۔۔۔۔۔گاڑد نے غصہ میں گھورتے ہوۓ کہا۔۔۔۔

کاڑد اوہ شٹ وہ تو روم۔ میں ہی رہ گیا ہے۔۔۔۔۔۔فیصل نے سر پیٹتے ہوۓ کہا۔۔۔۔اور واپس دوڑ لگا دی۔ ۔۔۔۔گاڑد حیرت سے فیصل کو واپس بھاگتا ہوا دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر بعد فیصل واپس دوڑتا ہوا آیا ۔۔۔۔۔یہ لیں دیکھیں کاڑد جلدی۔۔۔۔۔۔زیادہ بھاگنے کی وجہ سے سانس پھول رہا تھا۔۔۔۔دل ہی دل میں فیصل شہروز کو گالیاں دے رہا تھا ۔۔۔۔جب کہ اس بیچارے کا کوئی قصور تھا ہی نہیں اس نے تو اٹھایا تھا ۔۔۔۔۔دیکھ لیا کاڑد اب جاؤں دیر ہو رہی ہے مجھے۔۔۔۔۔

جی جائیں اور آئندہ خیال رکھنا۔۔۔۔۔تاکہ قیمتی وقت بچ سکے۔۔۔

اففف اب اس کا لیکچر سٹارٹ ہوگیا فیصل نے ان سنی کر کے پھر سے دوڑ لگا دی۔۔۔۔بھاگتے بھاگتے اسکواڈرن پہنچا بریفنگ روم کا دروازہ کھول کے چپکے سے سیٹ کی طرف جا رہا تھا۔۔۔۔۔کے مشن لیڈر ونگ کمانڈر عبداللّه کی آواز آئی۔۔۔۔۔جی جناب فلائٹ لیفٹیننٹ صاحب آئیں آئیں جناب آپ کا ہی انتظار تھا بہت مشکلوں سے دیدار کرواتے ہیں آپ۔۔۔۔۔

سر سر سر و۔۔۔وہ۔۔۔۔۔۔

کیا سر سر ۔۔۔۔ٹائم دیکھا ہے آپ نے یہ پاکستان ایئر فورس ہے آپ کا گھر نہیں کہ جب دل کرے تب سو جاؤ جب دل کرے تب اٹھ جاؤ۔۔۔۔۔آج اسکواڈرن کا کھانا تمہاری طرف سے ہے اور نائٹ شفٹ فلائٹ لائن پر گاڑد ڈیوٹی بھی تمہاری ہے۔۔۔۔۔
Now sit down and be attentive...

(جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 403 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27506 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: