پینتھرا فوبیا یا ساس کے خوف سے کیا مراد ہے اور اس سے کیسے نجات حاصل کی جا سکتی ہے؟


لفظ ساس کا لفظ صرف مشرقی لوگوں کے لیے ہی خوف کی علامت نہیں ہوتا ہے بلکہ مغربی ممالک میں بھی ساس کا خوف اس حد تک ہوتا ہے کہ ماہرین نفسیات نے اس خوف کو ایک بیماری پینتھرا فوبیا کا نام دے ڈالا ہے ۔ اس بیماری کا شکار فرد اپنی ساس سے اس حد تک خوفزدہ ہوتا ہے کہ اس خوف کے سبب وہ اس کا سامنا کرنے سے کترانے لگتا ہے-

پینتھرا فوبیا کیا ہے؟
یہ ایک نفسیاتی بیماری ہے جس کا شکار شخص اپنی ساس سے خوفزدہ ہوتا ہے اس کا سبب ساس کے حوالے سے بننے والے لطیفے اور عام تاثر بھی اس خوف کا سبب بنتا ہے ایسا مریض ساس کے سامنے آتا ہی خوف زدہ ہو جاتا ہے-
 


پنتھرا فوبیا کی علامات
ایسے مریض کو ساس کو دیکھتے ہی گھبراہٹ شروع ہو جاتی ہے وہ کانپنے لگتا ہے اور اس کے پسینے چھوٹ جاتے ہیں اور سانس لینے میں بھی دقت ہوتی ہے- اس کے علاوہ حلق کا خشک ہو جانا ، ہاتھوں پیروں میں زیادہ پسینہ آنا متلی ہونا اور اچانک اشتعال میں آجانا بھی اس کی علامات میں شامل ہے-

پنتھرا فوبیا کا علاج
اگر کسی مریض میں یہ تشخیص ہو جاتا ہے کہ وہ پینتھرا فوبیا یا ساس کے ڈر میں مبتلا ہے تو اس صورت میں اس مریض کو نفسیاتی ٹریٹمنٹ کی ضرورت ہوتی ہے- اس کے ساتھ ساتھ ان وجوہات کا جاننا بھی ضروری ہے جو اس خوف کا باعث ہو سکتی ہیں- اس کے ساتھ ساتھ مریض کے اندر ساس کے حوالے سے مثبت خیالات پیدا کرنا ضروری ہیں تاکہ اس کے اندر سے اس خوف کا خاتمہ ہو سکے-
 


یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اس مرض کا علاج کسی قسم کی ادویات سے نہیں ہو سکتا ہے- لہٰذا سکون آور ادویات یا اعصاب کو پر سکون کرنے والی ادویات کا استعمال اس مرض میں کمی کے بجائے اس میں اضافے کا سبب بن سکتا ہے- اس لیے ماہرین نفسیات کے مشوروں کے ساتھ تھراپی سیشن ہی اس مرض کو ختم کرنے میں مددگار ثابت ہو سکتے ہیں-

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 448 Print Article Print
 Previous
NEXT 

YOU MAY ALSO LIKE:

Most Viewed (Last 30 Days | All Time)

Comments

آپ کی رائے
Language: