سچ تو یہ ہے ( ۱۸ واں حصہ )

(Muhammad Siddique Prihar, Layyah)

 منظر۱۴۴
سعیداحمد۔۔۔۔مولوی صاحب مجھے توایساکوئی کام نظرنہیں آتا جس پراعتراض نہ کیاجائے جس کے بارے میں یہ نہ کہاجائے کہ یہ بھی کوئی کام ہے
مولوی صاحب۔۔۔آپ عارف کارشتہ لے کرکسی کے گھرجاتے ہیں آپ انہیں بتاتے ہیں کہ آپ کابیٹا رکشہ چلاتاہے وہ کہتے ہیں اس سے کیاہوتاہے اس طرح وہ رشتہ دینے سے انکارکردیتے ہیں عارف رکشہ چھوڑ کرکریانہ کی دکان بنالیتاہے آپ اپنے بیٹے کارشتہ کسی اورگھرمیں لے جاتے ہیں اس گھروالے بھی وہی اعتراض لگاکررشتہ دینے سے انکارکردیتے ہیں توکیاآپ لوگوں کے اعتراضات سن سن کر کام بدلتے رہیں گے
سعیداحمد۔۔۔ایسا دو،تین بارتوہوسکتاہے باربارنہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔عارف کوسمجھانے کی ضرورت ہے یاآپ کو
کریم بخش۔۔۔۔اس طرح توہمیں سمجھنے کی ضرورت ہے
مولوی صاحب۔۔۔۔اب عارف کی بات درست ثابت ہورہی ہے یامیں آپ کومزیدسمجھاؤں؟
کریم بخش۔۔۔۔چندباتیں اوربتادیں توہماری الجھن مزیدآسان ہوجائے گی
مولوی صاحب۔۔۔۔۔ہم یہ تومانتے ہیں کہ رزق اﷲ تعالیٰ دیتاہے
سعیداحمد۔۔۔۔۔جی مولوی صاحب۔۔۔۔ہمارایہ ایمان ہے
مولوی صاحب۔۔۔۔۔ہمارایہ ایمان صرف زبانی طورپرہے
کریم بخش۔۔۔۔زبانی طورپر
مولوی صاحب۔۔۔۔۔ہم روزگارکے لیے اﷲ پرنہیں ظاہری اسباب پرزیادہ یقین رکھتے ہیں
سعیداحمد۔۔۔سب کاایمان ہے رزق اﷲ دیتاہے چاہے وہ کسی بھی سبب سے دے
مولوی صاحب۔۔۔۔واقعی ہمارایہ ایمان اوریقین ہوتا توکوئی یہ نہ کہتا یہ بھی کوئی کام ہے اس سے کیاہوتاہے اس لیے عارف ٹھیک کہتاہے مسئلہ روزگارکانہیں یقین کاہے کریم بخش۔۔۔۔مولوی صاحب آپ کابہت بہت شکریہ آپ نے ہماری الجھن حل کردی
مولوی صاحب۔۔۔۔۔کیاآپ نے اپنے بیٹے سے کبھی پوچھاہے وہ ایساکیوں کہتاہے
سعیداحمد۔۔۔۔ہم بچوں کی باتوں پرتوجہ نہیں دیتے وہ توکچھ بھی کہہ دیتے ہیں والدین کاتجربہ زیادہ ہوتاہے
مولوی صاحب۔۔۔۔۔میں آپ سے اتفاق کرتاہوں لیکن بچوں کی ہربات کو نظراندازنہیں کرناچاہیے
کریم بخش۔۔۔۔کیاہمیں بچوں کے سامنے
مولوی صاحب۔۔۔۔۔یہ والدین اوراولادکے درمیان مقابلہ نہیں کہ کسی کوشکست ہو
سعیداحمد۔۔۔۔بچے اتنے عقل مندنہیں ہوتے جتنے عقل مندبڑے ہوتے ہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔بچوں کوبھی عقل اﷲ ہی دیتاہے آپ عارف سے ایک بارپوچھ لیتے کہ وہ ایساکیوں کہتاہے تونہ رشتہ داربلانے پڑتے اورنہ ہی میرے پاس آناپڑتا اب میں آپ کوایک مشورہ دیناچاہتاہوں
کریم بخش۔۔۔۔۔کون سامشورہ
مولوی صاحب۔۔۔۔تمام رشتہ داروں کی دعوت کریں اورانہیں بتائیں کہ عارف کی بات کاکیامطلب ہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۴۵
کریم بخش مویشیوں کوچارہ ڈال رہاہے۔نورالعین چارہ اٹھاکرلاتی ہے کریم بخش لکڑی کی بندرمیں چارہ اوربھوسہ مکس کرتاہے ۔ ایک گائے چارہ کھانے لگتی ہے توافضل ہاتھ کے اشارے سے روک دیتاہے۔ بندرکی دوسری طرف والی گائے بھی چارہ کھانے لگتی ہے توافضل اس کوبھی روک دیتاہے نورالعین دوسری بندرمیں چارہ ڈالتی ہے
کریم بخش۔۔۔۔کل گھاس کوپانی لگاناہے
نورالعین۔۔۔۔آج دودن کاچارہ کاٹ لیں گے
کریم بخش۔۔۔۔چارے کوچھاؤں میں رکھنا دھوپ میں سوکھ جائے گا
افضل۔۔۔۔ابو یہ جوچاچوآئے تھے یہ آپ کے کب سے دوست ہیں
کریم بخش۔۔۔۔یہ توکیوں پوچھ رہاہے
افضل۔۔۔آپ کادوست عجیب ہے
کریم بخش۔۔۔اس کے کان، آنکھیں،ناک،ہاتھ پاؤں سب سلامت ہیں پھروہ عجیب کیسے ہے
افضل۔۔۔۔وہ عجیب عجیب باتیں کرتے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔کیسی عجیب باتیں
افضل۔۔۔۔۔میں باہرکھیل رہاتھا انہوں نے مجھ سے پوچھا توکام کوئی نہیں کرتا تیراباپ تجھے کھیلنے سے منع نہیں کرتا
کریم بخش۔۔۔۔مجھے بھی یہ عجیب مزاج کاآدمی لگتاہے
افضل۔۔۔۔آپ کے دوست نے آپ سے بھی عجیب باتیں کی ہیں؟
کریم بخش۔۔۔۔وہ مجھے بھی کہہ رہاتھا تواسے کھیلنے سے منع نہیں کرتا
افضل۔۔۔ابو آپ کے دوست کے بیٹے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔اس کے دوبیٹے اورایک بیٹی ہیں
افضل۔۔۔۔اس نے اپنے بیٹوں کے نام بتائے
کریم بخش۔۔۔۔وہ اپنے ایک بیٹے کانام احمدبخش بتارہے تھے
افضل۔۔۔۔ایک احمدبخش میرے سکول میں بھی پڑھتاہے ہروقت سہماہوارہتاہے تفریح کے وقت سب لڑکے کھیلتے ہیں دوڑتے ہیں کچھ نہ کچھ کھاتے بھی ہیں وہ اپنی کلاس میں بیٹھارہتاہے کبھی کلاس سے باہرآجائے توکوئی چیزنہیں کھاتا کسی سے بات نہیں کرتا
کریم بخش۔۔۔۔مجھے لگتاہے یہ احمدبخش میرے دوست کاہی بیٹاہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۴۶
اشرف ۔۔۔عبدالمجیدسے۔۔۔۔چچاجان ہم اپنی طرف سے نہیں کہہ رہے
عبدالمجید۔۔۔۔میں سب جانتاہوں تمہیں احمدبخش نے ہی کہاہے مجھ سے ایسے بات کرو تاکہ اسے دودن میرے ساتھ کام نہ کرناپڑے
عرفان۔۔۔۔چچاجان اس کوتویہ بھی معلوم نہیں کہ ہمیں استادصاحب نے کب اورآپ کے لیے کیاپیغام دیا
راشدہ۔۔۔آپ کوہرمعاملے میں احمدبخش کی چالاکی ہی کیوں نظرآتی ہے
عبدالمجید۔۔۔۔میں اس کاباپ ہوں اس کواوراس کی عادتوں کواچھی طرح جانتاہوں
اشرف۔۔۔۔چچاجان ہماری بات نہ مانیں استادصاحب کاحکم تومان لیں
عبدالمجید۔۔۔۔استادصاحب نے نہیں کہا تم اپنی طرف سے کہہ رہے ہو
عرفان۔۔۔۔ہماری بات پریقین نہیں ہے تو کل سکول میں استادصاحب سے خود پوچھ لیں
عبدالمجید۔۔۔۔میرے پاس اتناوقت نہیں ہوتا میں سکول میں جاکراستادصاحب سے پوچھوں
اشرف۔۔۔احمدبخش سکول کے لڑکوں کے ساتھ سیرکرنے چلاجاتا تو اچھاتھا
عبدالمجید۔۔۔۔یہ سیرکرنے گیاتو آوارہ ہاجائے گا آوارہ
عرفان۔۔۔۔چچاجان چچاجان سکول کے اورلڑکے بھی توسیرکرنے جارہے ہیں کیاوہ بھی آوارہوجائیں گے
عبدالمجید۔۔۔۔مجھے وہ لڑکے آوارہ لگتے ہیں کسی نے ماں باپ سے نہیں پوچھاہوگا
اشرف۔۔۔سب لڑکے گھرسے اجازت لے چکے ہیں
عبدالمجید۔۔۔۔یہ کیسے ماں باپ ہیں جوبچوں کوسیرکرنے بھیج رہے ہیں
عبدالرحیم کپڑے کے چارٹکڑے لے آتاہے احمدبخش کپڑے کاایک ایک ٹکڑا عبدالمجیدکے ہاتھوں پرلپیٹ دیتاہے
عبدالمجید۔۔۔۔میرے ہاتھ توٹھیک ہیں یہ کپڑاکیوں لپیٹ رہاہے
احمدبخش۔۔۔اس طرح کھادہاتھوں کونہیں لگے گی
عرفان۔۔۔۔چچاجان ہمارادوست آپ کااتناخیال رکھتاہے آپ کہتے ہیں یہ آپ کا نافرمان ہے آپ اس کوسیرکرنے جانے نہیں دے رہے
عبدالمجیدغصہ میں آکرتھپڑمارنے لگتاہے توراشدہ ہاتھ پکڑتے ہوئے کہتی ہے اب دوسروں کے بچوں پربھی ہاتھ اٹھاؤگے عرفان اوراشرفخاموشی سے چلے جاتے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۴۷
بشیراحمد،فیاض اوراریبہ ناشتے کے لیے تیاربیٹھے ہیں
اریبہ۔۔۔سمیراسے۔۔۔۔کتنی دیرہے ابھی
سمیرا۔۔۔۔امی صرف دس منٹ
فیاض۔۔۔۔بھوک اتنی لگی ہے کہ ایک ایک منٹ
بشیراحمد۔۔۔۔تیری بہن ناشتہ ہی توتیارکررہی ہے
فیاض ۔۔۔۔جلدی کرے نا بھوک لگی ہے
بشیراحمد۔۔۔فیاض سے۔۔۔۔تیری ماں بتارہی تھی احمدبخش کاکیامعاملہ ہے وہ دکان پرکیاکرتارہا بات کیاہے
فیاض۔۔۔۔کیاہوا اسے تومیں اپنے ساتھ لے آیاتھا
اریبہ۔۔۔۔تیرے چچانے اس کے ساتھ جوسلوک کیاہے وہ تودیکھ لیتاتو یوں
فیاض۔۔۔۔کیاکیاہے چچانے اس کے ساتھ
اریبہ۔۔۔۔وہ جیسے ہی گھرآیا سوال پہ سوال شروع ہوگئے ڈرکے وجہ سے تیرے چچازادبھائی کی آوازنہیں نکل رہی تھی تیری چچی نے اسے دلاسہ دیا اسے پانی پلایا اس نے ماں کووہ سب کچھ بتادیا جودکان پرہوا یہ بھی بتایا کہ اسے فیاض لے کرآیاہے تیراچچاکہتارہا یہ جھوٹ بول رہاہے یہ دکان پرگیاہی نہیں احمدبخش نے کہا فیاض سے پوچھ لو اب تم بتاؤ
فیاض۔۔۔۔چچانے دکاندارکے پیسے دینے ہیں وہ سامان لینے کے لیے اپنے بیٹے کوبھیج دیتے ہیں وہ بھی ادھارپر اب روزروزادھارکون دیتاہے احمدبخش کودکاندارنے اس لیے بٹھارکھا تھا کہ اس کاباپ آئے گا تواس سے ادھاروصول کرے گا میں جب دکان پرگیاتوگاہک دکاندارسے کہہ رہے تھے اس بچے کاکیاقصورہے اسے توجانے دے پھراس نے آپ کے بھتیجے کوگھرآنے دیا
بشیراحمد۔۔۔۔اس کامطلب ہے احمدبخش سچ کہہ رہاتھا
اریبہ۔۔۔۔آپ اپنے بھائی سے بات کیوں نہیں کرتے
بشیراحمد۔۔۔۔کیابات کروں
اریبہ۔۔۔۔اسے سمجھائیں بچوں پراتنی سختی اچھی نہیں ہوتی
سمیراناشتہ لے آتی ہے
بشیراحمد۔۔۔اس کی اولادہے
اریبہ۔۔۔آپ کابھی بھتیجاہے
سمیرا۔۔۔۔میرے پاس ایک ترکیب ہے
اریبہ ۔۔۔۔وہ کیا
سمیرا۔۔۔۔ہم کسی دن اچھاساپکوان بناتے ہیں تھال بھرکرچچاکے گھردینے پہنچ جاتے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔بات کیسے کریں گے
سمیرا۔۔۔۔وہ میں آپ کوبتادوں گی
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۴۸
جاویدکی تیسری بیٹی۔۔۔۔۔اب گوشت چاول بھی کھالیے ہیں اب توباتیں کی جاسکتی ہیں
رحمتاں۔۔۔۔ہاں
جاویدکی دوسری بیٹی۔۔۔۔۔کیاواقعی روٹی چھوڑ ہڑتال ہماری وجہ سے ہے
جاوید۔۔۔۔ہڑتال تونہیں ہے یہ بات ضرورہے
رحمتاں۔۔۔۔یہ بات ضرورہے تم نے ہمیں پریشان کردیاہے
صابراں۔۔۔۔۔ہم نے ایساکیاکردیاہے
جاوید۔۔۔۔ہم نے کبھی سوچابھی نہ تھا تم ہمارے سوال کااس طرح جواب دوگی
رحمتاں کی دوسری بیٹی۔۔۔۔کون ساسوال کون ساجواب
رحمتاں۔۔۔۔ہم نے سوال کیاتھا پوچھا تھا تم کس کس سے شادی کرناچاہتی ہو
جاویدکی تیسری بیٹی۔۔۔اس کاجواب توہم دے چکی ہیں
جاوید۔۔۔۔تم نے نام توکسی کانہیں لیا تمہارے اس جواب سے ہم پریشان ہوگئے ہیں
صابراں۔۔۔۔اس میں پریشانی والی کون سی بات ہے
رحمتاں۔۔۔۔۔ہم ایسے دامادکہاں سے تلاش کریں جوسگریٹ نہ پیتے ہوں بات بات پرغصہ نہ کرتے ہوں
جاوید۔۔۔۔۔ہم ایسے دامادکہاں سے لائیں جوبدمزاج نہ ہوں خوش مزاج ہوں
رحمتاں۔۔۔ویسے جب لڑکے والے لڑکی والوں کے پاس رشتہ لے کرجاتے ہیں لڑکی والے جوسوالات کرتے ہیں وہ وہ سوال نہیں کرسکتے
جاوید۔۔۔۔ہاں تم ٹھیک کہہ رہی ہو لوگ آمدنی خاندان رہن سہن کے بارے میں پوچھتے ہیں
رحمتاں۔۔۔۔ہماری بیٹیوں کے لیے توان چیزوں کی اہمیت ہی نہیں ہے
رحمتاں کی دوسری بیٹی۔۔۔۔برتن سمیٹتے ہوئے۔۔۔۔۔ہم نے توسوچاتھا ہمارے جواب سے آپ خوش ہوجائیں گے
صابراں۔۔۔۔ہمارے جواب نے توآپ کوپریشان کردیاہے
رحمتاں کی تیسری بیٹی۔۔۔۔۔ہمیں معلوم ہوتا کہ ہمارے جواب سے آپ پریشان ہوجائیں گے توہم کسی نہ کسی کانام لے لیتیں
صابراں۔۔۔۔اس سے بہترتھا ہم یہ فیصلہ آپ پرہی چھوڑدیتیں
جاویدکی دوسری بیٹی۔۔۔۔اگرآپ چاہتی ہیں ہم کسی کانام لیں توہم ایک بارپھرمشورہ کرلیتی ہیں
جاوید۔۔۔اس کی ابھی ضرورت نہیں میں تمہارے چچوں سے مشورہ کروں گا ہوسکتاہے
رحمتاں۔۔۔۔ہوسکتاہے وہ کوئی حل بتادیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭


 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 140 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Siddique Prihar

Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 307 Articles with 122801 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: