معمولی روزگار سے غربت کا خاتمہ

(Hira Qamar, )

غریب کی کوٸی قوم نہیں ہوتی
بھوک کا کوٸی مزہب نہیں ہوتا
پاکستان میں بگڑتے ہوۓ حالات کا اگر جاٸزہ لیا جاۓ تو باآسانی ایک پہلو واضح ہوتا ہے کہ جیسے ہی مہنگاٸی میں اضافہ ہوتا ہے عام انسان کے لیے زندگی گزارنا مشکل ہو جاتا ہے۔بھوک کا دُکھ برداشت نہ ہونے کی وجہ سے لوگ کٸ معاشرتی براٸیوں میں ملوث ہوجاتے ہیں۔پاکستان میں دو مشہور طبقے پاۓ جاتے ہیں ایک امیر اور دوسرا غریب۔دولت کی غیر منصفانہ تقسیم کی وجہ سے امیر،امیر تر ہوتا جا رہا ہے اور غریب،غریب تر ہوتا جارہا ہے۔امیر کو ہر وقت اپنے عیش وعشرت،آرام و سکون اور آساٸش کی فکر کھا ۓ جاتی ہے مزید سے مزید تر کی تلاش نے ان کو اندھا کیا ہوا ہے۔جا ٸز و نا جاٸز طریقے سے کوشش صرف پیسے کے حصول کے لیےہوتی ہے۔غریب طبقے کی بات کی جاۓ تو اس میں بھی تین گروہ ہیں ایک وہ جوچھوٹی موٹی دوکان لگا کر،کوٸی ٹھیلہ وغیرہ لگا کراپنا گزارہ کر رہا ہے دوسرا سفید پوش لوگ ہیں جن کے لیے یہ کہنہ غلط نہ ہوگا کہ مل گٸ تو روزی نہ ملی تو روزہ۔ تیسری قسم وہ ہے جو کہ مانگ کر کھانے کو تر جیح دیتے ہیں۔ ان میں سے اکثریت صحت مند افراد کی ہے جو کہ محنت کی بجاۓ گدا گری کے پیشے کو اختیارکیے ہوۓ ہیں-

ان میں سے کچھ تو مجبوری کے ستاۓہوۓہیں اور اکثر وہ ہیں جو محنت کی بجاۓ مانگ کے کھانے کو ترجیح دیتے ہیں ایسے لوگ ہمیں بس سٹاپ،گلی محلے،ٹریفک سگنل اور بازاروں وغیرہ میں عام ملتے ہیں۔پھر یہی لوگ جیب کترے،چوری ،ڈاکہ زنی اور دوسری معاشرتی براٸیوں میں ملوث نظر آتے ہیں۔مگر ہم شاید اتنے بے حس ہو چکے ہیں کہ براٸی کو معاشرے میں پھیلتا بھی دیکھتے ہیں مگر کچھ کرتے بھی نہیں۔زیادہ سے زیادہ دوستوں یا عزیزو اقارب کی محفل میں جب کسی ایسا عنوان پر بحث شروع ہوجاۓ تو حکومت پر ساری ذمہ داری ڈال کر اپنا فرض پورا کر لیتے ہیں مگر جس ملک میں لوگ ڑرامے کی آخری قسط کے لیے دو کروڑ لگا دیں اس ملک میں غربت کی ساری ذمہ دار حکومت نہیں ہوتی۔

بحیثیت مسلمان ہمیں چاہیے کہ کسی کی مدد کرتے مزہب بھی نہ دیکھیں۔کیا ہی اچھا ہو اگر ہم ان کی روپے پیسے سے مدد کرنے کی بجاۓ ان کو ضروریاتِ زندگی کی کچھ اشیاء لے دیں کیونکہ جب تک ان کو مانگنے پر پیسے ملتے رہیں گے یہ کبھی بھی محنت کو مانگنے پر ترجیح نہیں دیں گے اور یہ پیشہ ایسے ہی نسل در نسل منتقل ہوتا رہے گا۔

ہم میں سے جو لوگ صاحبِ استطاعت ہیں وہ مدد کرتے اتنا کہہ دیں کہ یہ اک قسم کا قرضہ ہے جوآپ نے کو ٸی چھوٹا سا کاروبار کر کے واپس کرنا ہے تو کافی حد تک غربت اور گداگری کے پیشے پر قابو پایا جا سکتا ہے۔اس کی اک مثال ہمیں حضرت محمد صلى الله عليه واله وسلم کی زندگی سے ملتی ہے کہ جب ایک آدمی آپ صلى الله عليه واله وسلم کے پاس حاضر ہوا اور کہا”اے اللہ کے رسول صلى الله عليه واله وسلم میری کچھ مدد کریں“آپ صلى الله عليه واله وسلم نے فرمایا ”تم کیا کرتے ہو“ بولا ”کچھ نہیں“ آپ صلى الله عليه واله وسلم نے فرمایا”اگر تمھارے پاس کچھ ہے تو لے آٶ“وہ شخص گھر کی کچھ چیزیں لے آیا۔آپ صلى الله عليه واله وسلم نے وہ بکوا دیں اور فرمایا” ان پیسوں سے ایک کلہاڑی اور رسی لے آٶ“ جب وہ شخص بازار سے کلہاڑی اور رسی لے آیا تو آپ صلى الله عليه واله وسلم نے اپنے ہاتھ سے کلہاڑی میں دستہ ڈالا اور فر مایا”اب جنگل سے لکڑیاں کاٹ کر بیچو اس طرح اپنے بیوی بچوں کا پیٹ بھرو“اس شخص نے ایسا ہی کیا اور کچھ دن کے بعد دوبارہ واپس آیا اور کہا ای اللہ کے رسول صلى الله عليه واله وسلم ”اب تو بڑے مزے میں ہوں“آپ صلى الله عليه واله وسلم یہ سُن کر بہت خوش ہوۓ۔۔

حکومت کو بھی چاہیے کہ وہ ایسے فنی و تر بیتی ادارے کھولے جس میں مجبور اور خاص طور پر معزور ا فراد کو ہنر مند بنایا جاۓاور تعلیم کے یکساں مواقع فراہم کیے جاٸیں تاکہ وہ بھی معاشرے میں ایک باعزت شہری کے زندگی گزار سکیں

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hira Qamar

Read More Articles by Hira Qamar: 2 Articles with 671 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
17 Mar, 2020 Views: 333

Comments

آپ کی رائے