عالمی یوم ِ مزدوراور شاعر مزدور ’احسان دانش

(Prof. Dr Rais Ahmed Samdani, Karachi)

عالمی یوم ِ مزدوراور شاعر مزدور ’احسان دانش
ڈاکٹر رئیس صمدانی
یہ تحریر دو حصوں پر مشتمل ہے ایک ’عالمی یوم مزدور‘ کے حوالے سے مختصر معلومات ، اسلام میں محنت کشوں اور محنت مزدوری کرنے والوں کے بارے اللہ کا فرمان اور ہمارے پیارے نبی حضرت محمد ﷺ کی چند احادیث شامل ہیں ۔ جب کہ دوسرا حصہ اردو کے معروف شاعر جو’ شاعر مزدور ‘ کے نام سے اپنی ایک مخصوص پہنچان رکھتے ہیں جنابِ احسان دانش ۔
.................
عالمی یوم مزدور
یکم مئی مزدوروں ، محنت کشوں کا عالمی دن کے طور پر منایا جاتا ہے ۔ بنادی دور پر اس دن کی نسبت 1884ء میں ہونے والے اس واقع سے ہے جس میں محنت کشوں ، مزدوروں کو سرمایہ داروں اور صنعت کاروں کے مقابلے میں خون میں نہلا دیا گیا تھا ۔ امریکہ کے شہر شکاگو میں مزدوروں نے اپنے حقوق کے لیے جدوجہد کا آغاز کیا جس پر وہاں کی پولیس نے انہیں بے دردی سے ہلاک کردیا ۔ ان محنت کشوں اور مزدوروں کی قربانیاں ایک تحریک کی شکل اختیار کرگئی اور اب دنیا اس دن کو مزدوروں کے عالمی دن کے طور پر مناتی ہے ۔ شکاگو کی مزدور تحریک مزدوروں کے اس عظم پر کھڑی ہے اور پروان چڑھ رہی ہے جس میں مزدوروں اور محنت کشوں کی جانب سے یہ کہا گیا تھا کہ ’’تم ہ میں جسمانی طور پر ختم کرسکتے ہو لیکن ہماری آواز نہیں دبا سکتے‘‘ ۔ یہ بات درست ثابت ہوئی، وہ مزدور تو ہلاک ہوگئے لیکن ان کی آواز ، ان کا عظم ختم نہیں ہوا وہ آج بھی یکم مئی کی صورت میں جاری و ساری ہے ۔
عالمی یوم مزدور بالکل اسے ہی ہے جیسے دیگر کئی موضوعات، مسائل ، پیشوں کے لیے دن مقرر کیے گئے ہیں جیسے کتاب کا عالم دن، کینسر کا عالمی دن، ضعیفوں کا عالمی دن، ٹی بی کا عالمی دن، سیگریٹ نوشی نہ کرنے کا عالمی دن، شاعری کا عالمی دن، وغیرہ وغیرہ ، ان کا بنیادی مقصد متعلقہ موضوع کی اہمیت کو اجاگر کرنا ہوتا ہے ۔ اس کے لیے مختلف پروگرام ترتیب دئے جاتے ہیں ، سیمینار، کانفرنسیز، ریلیا نکالی جاتی ہیں ۔ اس سال یکم مئی 2020ء ایسے موقع پر آیا ہے کہ جب پوری دنیا ’کورونا وائرس ‘ کی لپیٹ میں ہے، کورونا کے باعث لاک ڈاوَن ، کرفیو اور سوشل ڈسٹینسنگ پر عمل ہورہا ہے، کوئی دن ایسا نہیں جاتا کہ کسی بھی ملک میں کئی کئی ہلاکتیں نہ ہوتی ہوں ۔ وہ ملک ترقی تافتہ ہے تب بھی ، ترقی پزیر ہے تب بھی، کورونا رنگ ، نسل، مذہب، کولے گورے ،امیر غریب کی تفریق کیے بغیر کسی بھی کو بھی اپنا شکار بنارہا ہے ۔ امریکہ جیسا ترقی یافتہ، طاقت ور، اپنے آپ کو سپر پاور کہنے اور سمجھنے والا کورونا کے سمنے گھٹنے ٹیکے ہوئے ہے ۔ اس وقت دنیا میں کورونا سے سب سے زیادہ ہلاکتیں امریکہ میں ہوئیں ہیں ، وہاں مرنے والوں کی تعداد 61ہزار سے تجاوز کرچکی ہے ۔ امریکہ ہی نہیں بلکہ دیگر ترقی یافتہ ممالک برطانیہ، اسپین، اٹلی، فرانس، چین، ایران اور پاکستان میں اس مہلک عالمی وبا ء نے پریشان کر کے رکھ دیا ہے ۔ اس وجہ سے اس بار عالمی یوم مزدور کی تقریبات کسی بھی ملک میں اس انداز سے نہیں منائی گئیں جیسے سابقہ سالوں میں ان کا اہتمام کیا جاتا رہا ہے ۔
اسلام نے محنت کشوں اور مزدوروں سے حد درجہ ہمدردی، شفقت، احساس اور ان کے خیال کا درس دیتا ہے ۔ اس حوالے سے ایک حدیث مبارکہ بہت مشہور ہے جس کا مفہوم کچھ اس طرح ہے کہ ’’مزدور کو اس کا پسینہ خشک ہونے سے پہلے اس کی مزدوری ادا کردو‘‘ ۔ اس جملے میں محنت کش اور مزدور کی اہمیت اور اس کی محبت مزدوری کو بے انتہا اہمیت دی گئی ہے ۔ اسی طرح بخاری و مسلم کی حدیث ہے فرمایا ہمارے نبی حضرت محمد ﷺ نے ’’یہ تمہارے بھائی ہیں جن کو اللہ نے تمہارے ماتحت بنادیا ہے ان کو وہی کھلاوَ جو خود کھاوَم وہی پہناوَ جو خود پہنو اور ان سے ایسے کام نہ و کہ جس سے وہ بالکل نڈھال ہونائیں اگر ان سے زیادہ کام لو تو ان کی اعانت کرو‘‘ ۔ ایک اور حدیث میں فرمایا گیا ’’اپنے ماتحت سے بدخلقی کرنے والا جنت میں داخل نہیں ہوسکتا‘‘ ۔ یہ بھی کہا گیا کہ ’’اس سے بہتر کوئی کھانا نہیں ہے جو آدمی اپنے ہاتھو سے کما کر کھاتا ہے‘‘ ۔ اسلام کے ابتدائی زمانے میں بکریاں چرانا مزدوری کے اعتبار سے ایک معتبر پیشہ تصور کیا جاتا تھا ۔ ہمارے نبی ﷺ نے یہ بھی فرمایا کہ ’اللہ نے جتنے انبیا ء بھیجے ان سب نے بکریاں چرائیں ہیں ۔ اسلام نے محبت کش کو اللہ کا دوست قرار دیا ہے ۔ اسی حوالے سے ایک اور حدیث جو بخاری شریف میں بیان ہوئی فرمایا ہمارے نبی حضرت محمد ﷺ نے ’’قیامت کے دن جن تین آدمیوں کے خلاف میں مدعی ہوں گا ان میں سے ایک شخص وہ ہوگا جو کسی کو مزدور رکھے اور اس سے پورا پورا کام لے مگر مزدوری پوری نہ دے‘‘ ۔ حیرت اور افسوس کا مقام ہے کہ ہمارے ملک میں کتنے ہی لوگ ایسے ہیں جو غریب معصوم ، بچوں ، خواتین ور مردوں کو اغوا کر کے ان سے سخت محنت مشقت کراتے ہیں ، لیکن انہیں تین کھانا بھی دیتے بلکہ انہیں کمروں میں بند اور ان کے پیروں میں زنجیریں باند کر رکھتے ہیں ، بعض ظالم تو معصوم بچوں اور عورتوں کو معذور کر کے ان سے بھیک منگواتے ہیں ، ان پر تشدد کرتے ہیں ، نہ کپڑوں کو خیال، نہ کھانے کو پیٹ بھر کھانا، اللہ ایسے ظالموں پر اپنا عذاب نازل فرمائے ۔ پاکستان میں اب تک جو حکومت بھی قائم ہوئی سب کو اس قسم کے واقعات کا علم بخوبی ہوتا ہے، قوانین بھی موجود ہیں لیکن پھر بھی ظلم کرنے والے ، مظلوموں کو اپنے ظلم کا نشانہ بنائے چلے جارہے ہیں ۔ حکومتوں کو اپنی بادشاہی کو برقرار رکھنے سے مہلت ملے تو وہ اس اہم مسئلہ کی جانب خیال کرے ۔ اللہ ہمارے حکمرانوں کو اور سب سے بڑھ کر قانوں پر عمل درآمد کرانے والوں کو، اور گھناوَنے غلم کرنے والوں کو نیک ہدایت دے ۔

شاعر مزدور احسان دانش
احسان دانش کو شاعر مزدور کہا جاتا ہے ۔ اس کی وجہ احسان دانش کا عملی طور پر محنت مزدوری کرنا تھا ۔ انہوں نے ایک محنت کش گھرانے میں آنکھ کھولی، ان کے والد بھی پڑھے لکھے نہیں تھے بلکہ محنت مزدوری کرکے اپنا اور اپنے خاندان کا پیٹ پالا کرتے تھے ۔ اپنے والد اور نانا کے معاشی حالت کا ذکر احسان دانش نے اپنی آپ سر گزست میں اس طرح کیا ہے کہ’’میرے والد قا ضی دانش علی قصبہ باغپت ضلع میرٹھ کے رہنے والے تھے اور میرے نانا ابو علی کاندھلہ میں ایک غریب سپاہی کی زندگی بسر کرتے تھے ۔ ان کے انتقال کے بعد میرے والد کاندھلہ چلے آئے ۔ باغپت میں وہ کسی بلند منصب پر فائز نہ تھے اور ان کی کم علمی نے انہیں سپاہیانہ حدود سے آگے نہ بڑھنے دیا ۔ ترک وطن کے بعد بھی عرصہ تک وہ سپاہی رہے لیکن جب میں نے ہوش سنبھالا تو وہ نہروں کی کھدائی کرانے والے ٹھیکیداروں میں میٹ کا فریضہ انجام
دیتے تھے اور جب یہ جمعداری نہ ملتی تو خود مزدوری کرتے‘‘ ۔ احسان;207; دانش ہندوستان کے معروف ضلع مظفر نگر کے شہر کاندھلہ میں ۱۴۹۱ء کو پیدا ہوئے اور ۱۲ مارچ ۲۸۹۱ء کو اس دنیا سے رخصت ہوئے ۔ احسان دانش نے اپنی سرگزشت میں لکھا ہے کہ ’’ میں قصبہ کاندھلہ مظفر نگر (یو پی) میں ایک مزدور کے گھر پیدا ہوا ۔ کاندھلہ کی سرزمین علم نوازی‘ اور ادب پروری کے لحاظ سے تاریخی اورمشہور جگہ ہے ۔ چناں چہ کم لوگوں کو علم ہوگا کہ مولانا روم کے ساتویں دفتر کا شاعر اسی خاک پاک سے اٹھا تھا ۔ اور آج تک برابر یہاں سے علمی چشمے پھوٹتے رہے ہیں ‘‘ ۔

اپنے والد کے علمی ذوق کے بارے میں احسان دانش نے لکھا ہے کہ ’’میرے والد بہت پڑھے لکھے نہ تھے مگر ذہین اور خوش مذاق انسان ضرور تھے اُنہیں فارسی کی سینکڑوں غزلیں اور آزار کی بعض مشہور صخیم کتابیں اَزبر تھیں ‘‘ ۔ خود تو پڑھ لکھ نہ سکے لیکن اپنے بیٹے کو تعلیم کے ذیور سے آراستہ کرنے کی خواہش ان کے دل میں ضرور موجود تھی ۔ لیکن وہ اپنی اس خواہش کی تکمیل تنگ دستی کے باعث نہ کر سکے اور یہ خواہش دل میں لیے ہی ا;203; کو پیارے ہوئے ۔ غربت نے گویا احسان دانش کے گھر ڈیرا ڈال رکھا تھا، ابھی پوری طرح ہوش بھی نہ سنبھالا تھا کہ پیٹ بھر نے کے لیے عملی جدوجہد شروع کرنا پڑی ۔ وہ ابھی چو تھی جماعت ہی میں تھے کہ روزگار کے لیے نکل کھڑے ہوئے ۔ اس دوران چند اردو اور فارسی کی کتابیں اپنے استاد سے ضرور پڑھ لی تھیں ۔ پڑھنے کاشوق انہیں اپنے والد سے ورثے میں ملا تھا ۔ لیکن غربت کے ہاتھوں مجبور ہو کر تعلیم جاری نہ رکھ سکے ۔ شروع میں اپنے آبائی شہر کاندھلہ میں روزگار کی تلاش میں سرگرداں رہے ، خاطر خواہ کامیابی نہ ملی، مجبورناً میونسپلٹی میں نائب قاصد ہوگئے ، اس دوران اپنے استاد قاضی محمد ذکی کاندھلوی سے فیض حاصل کرتے رہے اور مطالعہ جاری رکھا ۔ لکھتے ہیں کہ ’’میرا مطالعہ اور جذبہ مجھے قصبہ کاندھلہ میں بلند نہ کرسکا ۔ یہاں تک کہ میں کھیتوں کھلیانوں ، سڑکوں اور دفتروں کے راستے ناپتا ناپتا تھک گیا‘‘ ۔ بہتر روزگار کی تلاش میں دہلی کا رخ کیا ۔ وہاں ایک پرنٹنگ پریس میں سیاہی مین کی حیثیت سے کچھ عرصہ کام کیا لیکن غیر مطمئن رہے اور واپس قصبہ کاندھلہ آگئے لیکن معاشی حالت تھے کہ بہتر ہونے کا نام ہی نہ لیتے تھے ۔ مجبورہوکر لاہور کا رخ کیا اور چند روز اپنے ہمراہیوں کی خدمت باورچی کی حیثیت سے کرتے رہے ۔

یہ کہنا غلط نہ ہوگا کہ لاہور نے احسان دانش کو وہ مقام و مرتبہ عطا کیا جس کے وہ بجا طو ر پر مستحق تھے لیکن لاہور کے ابتدائی ایام ان کے لیے سخت محنت و مشقت لیے ہوئے تھے یہ محنت اس قدر دل برداشتہ کردینے والی تھی کہ احسان دانش دن بھر محنت مزدوری کرکے رات کو جب بستر پر لیٹتے تو انہیں یہ احساس جاں گزیں ہوتا کہ ان کے جسم میں اتنی سی زندگی باقی ہے کہ صبح تک چل سکے لیکن والدین کا خیال ان کا شانا پکڑ کر اگلے روز پھر محنت مزدوری پر لے جاتا ۔ احسان دانش لکھتے ہیں کہ ’’جب لاہور کی فضا سے مانوس اور راستوں سے ذرا واقِف ہوگیا تو اپنی محبوب جگہ لائبریری کا رخ کرتا دوپہر کو مزدور آرام کرتے تو میں لائبریری کو بھاگتا اور جب کام بند ہوجاتا تو ساری ساری رات کتابیں پڑھتا‘‘ ۔ مزدور سے معمار ہوئے اور جب معماری نے ناتہ توڑلیا تو جوکیدارہوگئے جہاں انہیں کتب بینی کا زیادہ وقت ملنے لگا انہوں نے خوب خوب کتابوں کا مطالعہ کیا ۔ چوکیدار سے باغبانی پھر قالین بافی کے ہنر سے بھی بہر مند ہوئے ۔ بقول مولوی سعید ’’احسان دانش رات میں
مشاعروں کی محفلوں میں دیکھے جاتے جب کہ صبح کے وقت وہ کسی بھی نئی تعمیر شدہ عمارت میں ایک ہاتھ میں برش اور دوسرے ہاتھ میں رنگ کی
بالٹی کے لیے ساتھ مصروف عمل دکھائی دیتے اور کبھی باغبانی کرتے نظر آتے‘‘ ۔

جدید شعرائے اردو کے موَلف عبدالحمید نے سچ لکھا ہے کہ ’’لاہور میں ’’مکتبہ دانش ‘‘ کے قیام سے پہلے احسان کو غم روزگار نے جن جن دشوار منزلوں سے گزارا ہے اُن کی تفصیل میں جاتے ہوئے سچ مچ قلم تھرایا اور کلیجہ منہ کو آتا ہے ۔ احسان نے اپنی ادبی زندگی سے پہلے شہر لاہور میں مزدوری ، معماری، باغبانی، چوکیداری، قلعی گری اور نہ جانے کیا کچھ نہیں کیا، لیکن شاباش ہے اس پختہ عزم انسان کی جدوجہد پرجس نے اپنے حوصلوں کو بلند رکھا، محنت مزدوری کو اپنی کمزوری نہ بننے دیا، کتابوں کا مطالعہ کرتے رہے جس سے ان کا علمی ذوق پروان چڑھتا رہا اور وہ ایک علمی شخصیت کے طور پر جانے جانے لگے، ان کی نثر اور نظم لوگوں کو اپنی جانب متوجہ کرنے لگے ۔ ریلوے میں نائب قاصد بھی رہے اور پھر ایک مطبع کے کتب خانے میں ملازمت کرلی اور بیس روپے ماہانہ کی اجرت پر کئی برس مصروف عمل رہے ۔ یہی رہتے ہوئے ان کی پہلی کتاب ’’حدیثِ ادب ‘‘ شاءع ہوئی اور پھر احسان دانش نے اپنا مکتبہ بنا لیا اور کتابیں لکھنے اور شاءع ہونے کا ایک سلسلہ شروع ہوگیا ۔
احسان دانش کے لیے محنت و مشقت کرکے روزی کمانہ فخر کی بات تھی ۔ حالات نے ا نہیں مشقت کا عادی بنا دیا لیکن اس زندہ دل اور حوصلہ مند انسان نے نہ سخت سے سخت حالات کا مقابلہ بلند حوصلہ سے اور جواں مردگی سے اس طرح کیا کہ مایوسی ، حوصلہ شکنی، کم ہمتی کو شکست ہوئی اور عزم و استقلال کو فتح نصیب ہوئی اور احسان دانش کو دنیائے ادب میں وہ مقام حاصل ہوا جو کم لوگوں کو ملتا ہے ۔ انہیں اس دنیا سے رخصت ہوئے ۱۳ برس ہوچکے ہیں لیکن وہ آج بھی ہمارے دلوں میں زندہ ہیں ۔ ان کی زندگی سبق آموز ہے اور نئی نسل کو اس بات کا سبق دیتی ہے کہ محنت و مشقت میں کوئی بارئی نہیں ، مشکل سے مشکل حالات مقابلہ حوصلے اور بلند ہمتی سے خلوص اور ا;203; پر مکمل بھروسے کے ساتھ کیا جائے تو کامیابی انسان کے قدم چومتی ہے ۔
احسان دانش نے اسکول میں صرف چار جماعتیں پڑھی تھیں ، بعض اساتذہ نے انہیں کتاب پڑھنے کی جانب مائل ضرور کیا تھا لیکن شاعری ان کا باقاعدہ استاد کوئی نہیں تھا، کتاب زندگی بھر احسان دانش کی ساتھی رہی، ہم نوا رہی، رہنما و رہبر رہی ۔ کتاب کی رفاقت سے وہ کبھی بیزار نہیں ہوئے بلکہ دن میں محنت مزدوری اور رات رات بھر کتاب کا مطالعہ ان کا معمول رہا، کتاب نے انہیں کبھی زچ نہیں کیا بلکہ یہ کتاب ہی تھی کہ جس نے احسان کی علمی دولت میں اضافہ کیا ، ذخیرہ الفاظ میں بڑھاوا دیا، قوت گفتار میں کمال پیدا کیا، ذہنی صلاحیت کو وسعت بخشی، احسان نے جو سیکھا ، جو حاصل کیا وہ مطالعہ سے اور کتاب سے سیکھا ۔ البتہ شعرو شاعری کا ذوق قاضی محمد ذکی کی صحبت میں ہوا ۔ احسان حصول علم کے لیے حکماء و فضلا کے قدموں میں زانوئے ادب نہیں ہوئے بلکہ کتاب ہی نے احسان کو وہ سب کچھ دیا جو انہیں حکماء و فضلا اور اساتذ ہ کے قدموں میں زانوئے ادب ہونے سے مل سکتا تھا ۔ کتاب اور مطالعہ نے ہی انہیں علم و حکمت کے ذیور سے آرستہ کیا ۔ احسان دانش نے
عملی طور پر یہ سچ کر دکھا یا کہ جو کتاب سے رغبت رکھتا ہے، محبت کرتا ہے اور ان کا قرب حاصل کرتا ہے وہ تمام دینوی و دنیاوی رحمتوں اور نعمتوں سے فیضیاب ہوتا ہے ۔
احسان دانش کی شاعری میں محنت کش کی آواز ہے ۔ ابتدا میں ان کی شاعری روایتی قسم کی ہی تھی، یعنی نظم و غزل ، اور اس میں حسن و عشق کاغالب تھا اس میں رومانیت تھی ۔ لیکن بہت جلد ان کی شاعری میں ان کی عملی زندگی کے رنگ و روپ ابھر نے لگے، سماجی نا انصافیوں اور زیادتیوں کا اظہار ان کے اشعار میں ہونے لگا ۔ ایک تو احسان کی عملی زندگی محنت مشقت سے عبارت تھی دوسرے ،یہ وہ دور تھا جب پہلی جنگ عظیم کے بعد حالات بدل رہے تھے، ترقی پسند رجحانات عام ہونا شروع ہو گئے تھے ۔ احسان دانش نے بھی مزدور اور محنت کشی کو اپنی شاعری کا محور و منبع بنا یا اور وہ ادبی محفلوں اور مشاعروں کی کلیدی شخصیت کے طور پر نمایاں نظر آنے لگے تھے ۔ ان کی شاعری میں درد تھا، کرب تھا اور مزدور کی پکار تھی ۔ ان کے اسی اظہار کے باعث انہیں عوام نے ’’شاعر مزدور ذ‘‘ کے لقب سے نوازا ۔ ان کی مشہور نظ میں ’’باغی کا خواب ‘‘ اور’’ سادھو کی چتا‘‘ بے انتہا مقبول ہوئیں ۔ احسان دانش کی آواز میں بھی سوز تھا، درد تھا، ابتدا میں وہ نعت گوئی بھی کیا کرتے تھے ۔
احسان دانش علمِ عروض میں کمال رکھتے تھے ۔ ان کے ہرہر مصرعہ کی بندش لاجواب اور ہر شعر لازوال ہے ۔ انہوں نے غزل کو ایک نیا شعور دیا ہے ۔ ان کے ہاں الفاظ کا وسیع ذخیرہ پایا جاتا ہے ، زبان فصیح ، شستہ اور پاکیزہ ہے ۔ واقعہ نگاری اور واردات کے بیان کو خوبصورتی سے نظم کرنے میں کمال رکھتے ہیں ۔ پروفیسر محمد واصل عثمانی جو احسان دانش کے بڑے مدح ہیں نے انہیں غزل کا امام کہا ہے ۔ ادریس صدیقی نے اپنے مضمون ’اردو شاعری کا تنقیدی جائزہ‘ میں احسان دانش کو جوش کاہم پلہ قرار دیتے ہوئے واضع کیا کہ احسان دانش کی شاعری عام آدمی
کو اپنی جانب متوجہ کرتی ہے‘ ۔ ان کے کلام میں معرفت و آگہی کی جھلک صاف نظر آتی ہے ۔

احسان دانش جتنے خوبصورت شاعر تھے اتنی ہی جاذبت ان کی نثر میں بھی تھے ۔ ان کی آپ بیتی ’’جہاں ِ دانش‘‘ مثالی آپ بیتی شمارہوتی ہے ۔ احسان دانش نے اپنا مکتبہ ’’مکتبہ دانش ‘‘ قائم کر لیا تھا اور کتب کی ا شاعت اسی ادارے تحت کیا کرتے تھے ان کی تصانیف کی تعداد ۰۸ سے زیادہ ہے، مضامین کی تعدا د سینکڑوں میں ہے ۔ ان کی تصانیف میں حدیث ادب، حدیثِ دانش، جہاں ِ دگر، چراغا، نوائے کارگر، ابلاغِ دانش، آتش خاموش، تشریحِ غالب، جادَنو، ذخم و مرحم، شیرازہ، مقامات ، گورستان، آواز سے الفاظ تک، فصل ِ سلاسل، زنجیرِ بہاراں ، میراث مومن، اردو مترادفات،دردِ زندگی، لغت الا اصلاح اوردیگر شامل ہیں ۔ احسان دانش کی ادبی خدمات کے حوالے سے حکومت پاکستان نے ۸۷۹۱ء میں انہیں تمغہ امتیاز سے نوازا ۔ معروف شاعر و ادیب پروفیسر محمد واصل عثمانی نے احسان دانش کو منظوم نذرانہ عقیدت پیش یا ان کی اس نظم کے چند اشعار
دلّی کی ہے زباں تو فانی;کا رنگ ہےاسلوب تیرا دیکھ کے دشمن بھی دنگ ہے

فکر ِ رسا پہ تیری زمانہ نثار ہےاس عہد میں تو گہر یکتا شمار ہے
اقلیمِ نظم و شعر کا تو تاجدار ہےتیری غزل سے لہجہ ترا آشکار ہے

احسان دانش کے کلام سے منتخب اشعار
بیٹیاں سب کے مقدر میں کہا ہوتی ہیں
گھر خدا کو جو پسند آئے وہاں ہوتی ہیں

تجھے بولنے کو ایک پل چاہیے
وہ پل کہ جسے موت کہتے ہیں لوگ

چوکھٹیں قبر کی خالی ہیں ، انہیں مت بھول
جانے کب کون سی تصویر سجادی جائے

اگر چے خُلدِ بریں کا جواب ہے
دنیامگر خدا کی قسم ایک خواب ہے دنیا

آج پھر یاد بہت آئے وہ آج پھر اُس کو دُعا دی ہم نے
کوئی تو بات اُس میں بھی ہے احسان ;ہر خوشی جس پہ لٹا دی ہم نے

نظر فریب ِ قضا کھا گئی تو کیا ہوگاحیات موت سے ٹکراگئی تو کیا ہوگا
نہ رہنماؤں کی مجلس میں لے چلو مجھے میں بے آداب ہوں ہنسی آگئی تو کیا ہوگا

کبھی مجھ کو ساتھ لے کر، کبھی میرے ساتھ چل کروہ بدل گیا اچانک میری زندگی بدل کرلوگ یوں دیکھ کر ہنس دیتے ہیں تو مجھے بھول گیا ہو جیسے
یکم مئی 2020ء

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Prof. Dr Rais Ahmed Samdani

Read More Articles by Prof. Dr Rais Ahmed Samdani: 752 Articles with 639508 views »
Ph D from Hamdard University on Hakim Muhammad Said . First PhD on Hakim Muhammad Said. topic of thesis was “Role of Hakim Mohammad Said Shaheed in t.. View More
01 May, 2020 Views: 381

Comments

آپ کی رائے