آسمان سے برسنے لگے کرونا کی شکل کے اولے، کوئی آسمانی نشانی یا پھر اتفاق؟


کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی سنگینی کے سبب عالمی ادارہ صحت نے اس بیماری کو ایک وبائی بیماری قرار دے دیا ہے جب کہ دنیا کے بہت سارے لوگوں کا یہ ماننا ہے کہ یہ بیماری درحقیقت ایک عذاب کی صورت میں یا ان لوگوں پر بھیجی گئی ہے جو کہ نافرمان ہیں- جبکہ کچھ لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ بیماری درحقیقت نیک لوگوں کے لیے ایک آزمائش ہے ۔

لاک ڈاؤن اور سوشل ڈسٹنسنگ کے سبب ماہرین نفسیات کے مطابق انسان ہر ہر واقعہ کو کرونا سے جوڑنے کی بیماری میں مبتلا ہوتا جا رہا ہے-

ایسی ہی صورتحال کا سامنا میکسیکو کے لوگوں کو اس وقت کرنا پڑا جب گزشتہ دنوں وہاں موسلا دھار بارش کے ساتھ آسمان سے ژالہ باری بھی ہوئی اور جب لوگوں نے آسمان سے برستے اولوں کو دیکھا تو ان کا یہ ماننا تھا کہ آسمان سے برستے اولے کرونا وائرس کی شکل کے تھے-
 


یہ واقعہ شمانی میکسیکو کے علاقے مونٹی مورلوس میں پیش آیا جہاں کے میونسپلٹی کے حکام نے ان اولوں کی تصویریں سموشل میڈیا پر شئير کیں جن کے نوکدار کونے دیکھ کر ان اولوں کی شکل مکمل طور پر کرونا سے مشابہ ہی نظر آتی ہے-

سوشل میڈیا پر اس تصویر کے شئير کرنے کے بعد ایک فرد کا یہ کہنا تھا کہ موسم درحقیقت خدا کی قدرت کی نشانی ہوتی ہیں جب کہ ایک اور فرد کا یہ کہنا تھا کہ کرونا کی شکل کے اولوں سے درحقیقت خدا انسانوں کو پیغام دینا چاہ رہے ہیں-

جبکہ اس حوالے سے ورلڈ میٹرولوجسٹ آرگنائزئشن کے جوس میگوال ویناس کا یہ کہنا ہے کہ اولوں کی اس شکل میں کچھ بھی عجیب نہیں ہے اور یہ اولوں کی ایک نارمل شکل ہے-
 


اولوں کی اس شکل کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ شدید ترین طوفان کی صورت میں برف کے گولے ایک دوسرے کے ساتھ اس طرح جڑ جاتے ہیں کہ وہ کناروں سے ایک دوسرے سے پیوست ہو جاتے ہیں اس لیے ایسی شکل اختیار کر لیتے ہیں اور جب زمین کی طرف بڑھتے ہیں تو تیز ہوا ان کو ایک ڈسک اور کناروں کی شکل دے کر ستارہ نما بنا دیتی ہے-

جبکہ اس حوالے سے لوگوں کا یہ کہنا ہے کہ خدا نے ان اولوں کے ذریعے یہ پیغام دیا ہے کہ گھروں تک محدود رہیں-

Most Viewed (Last 30 Days | All Time)

Comments

آپ کی رائے
Language: