عشق درد دوا( دوسری قسط)

(Zainab Arshad, Mandi bahaulddin)

"مجھے آج اس مقام پر لانے کے لئے جیہنوں نے مجھےمحنت کرنی سکھائی ،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ جنہوں نے میرا ساتھ کبھی نہیں چھوڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جن کی وجہ سے آج میں کامیابی کے آسمان کو چھو رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔وہ ذات صرف میری ماں کی ہے"۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ کہہ رہا تھا اورہال میں لوگوں کا ایک بڑا ہجوم اس کے یہ فخریہ الفاظ سن رہا تھا وہ کہہ کر رکا نہیں

"میرے نزدیک دنیا کی سب سے بڑی پروفیسر ماں ہی ہے، اور آج میں اپنی کامیابی اپنی ماں ،، اپنی پروفیسر کے نام کرتا ہوں"۔
ہال میں موجود لوگوں کے تالیوں کے شور میں اس نے اپنے قدم آہستہ سے ہال میں پہلی نشست پر بیٹھی ہوئی اپنی ماں کی طرف بڑھائے، جہاں اس کی ماں اپنی چمکتی آنکھوں سے اسے دیکھ رہی تھی۔ وہ اپنی ماں کے ہاتھوں کو اپنے ہاتھوں سے تھام کرانہیں اپنے ساتھ اسٹیج پرلے کر آیااور اپنے گولڈ میڈل کو اپنی گردن سے اتار کر اپنی ماں کی گردن میں ڈال دیا۔
پوراہال ایک بار پھر تالیوں کی آواز سے گونج اٹھا،۔
اور اس منظر کو وہاں موجود کئ حسیناؤں نے اپنے موبائل میں تصویر کی صورت میں قید کیا، جوناصرف شاہ عالم کی پرسنلٹی سے متاثر تھی بلکہ اس پر دل و جان سے فدا تھی
"ہر ماں کی طرح اس بات کی مجھے بے حد خوشی ہے کہ میرا بیٹا آج کامیاب ہوا ہے لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ صرف میرا بیٹا نہیں ہے بلکہ ہمارے معاشرے کا ایک فرد بھی ہے اور میرے لئے سب سے بڑی بات یہ ہے کہ صرف میں نے ایک بیٹے کی نہیں بلکہ اپنے معاشرے کےاک فرد کی بہتری کی بھی بھلائی کی کوشش کی ہے جس میں اللہ نے مجھے سرخرو کیا"۔
اس کی ماں شدت جذبات سے خوشی میں اپنی ڈبڈباتی آنکھوں سےاور لزرتی ہوئی آواز سے بول رہی تھیں ۔
" میں تمام ماؤں سے یہی کہنا چاہتی ہو کہ ایک ماں ہی ہے جو غربت سے لڑ سکتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ غموں سے ، تکلیفوں سے لڑ سکتی ہے اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس طرح اپنی اولاد کو معاشرے کا اک قابل فخر انسان ہے بنا سکتی ہے۔"
تالیوں کے شور میں حسیناؤں کا اک جھرمٹ دوباروہ لگ چکا تھا کیوں کہ وہ جانتی تھیں شاہ عالم خاص موقع پر مسکرایا کرتا تھا، جس کی مسکراہٹ اس کی مغرور پیشانی کو اور بھی کشادہ کر دیتی تھی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اپنے پیچھے آتے ہوئے سائے کو محسوس کرتے ہوئے ہوش میں آئی۔ اور گھبراتے اور اپنے ہونٹوں پرہاتھ رکھتے ہوۓ مڑ کر دیکھا۔
سرخ انگاروں جیسی آنکھوں والے اس نے انسان کی اسے شکل واضح طور پر نظر نہیں آئی، اور گھبراتے ہوئےوہ اپنے قدم پیچھے کی جانب اٹھانے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ نہ ڈر نہ بچے، کون ہے تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
سرخ آنکھیں اندھیرے میں ہنوزادہکتی ہوئ اسے نظر آ رہی تھیں جن کے ساتھ اب اس سیا لبادے والی شکل میں اسےہونٹ بھی ہلتے ہوۓ محسوس ہو ۓ جو شاید اندھیرے جیسے ہی سیاہ تھے۔اسی وقت اسے اپنے بدن میں ڈر کی اک لہر محسوس ہوئ جو شاید مقابل بھی اس کے منہ سے نکلتی ہوئ سسکیوں کے ساتھ محسوس کر چکا تھا۔

دیکھ بچےڈرو نہیں ، تیری منزل جو بھی ہے اورجہاں بھی تو نے جانا ہے، جہاں سے بھی تو آئی ہے لیکن یاد رکھ تجھے یہاں کوئی خطرہ نہیں کیونکہ جن کی منزل نہیں ہوتی وہ ہی یہاں آتے ہیں۔
اسے اس کی باتوں کی سمجھ تو نہیں آرہی تھی لیکن اس کی آنکھوں اور آواز اسے خوف محسوس ہورہا تھا۔اور اسی خوف کے زیر اثر وہ اگلے لمحے زمین پر گر چکی تھی اور اس کے کانوں کو مقابل ہی کی ہی صدا سنائ دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
" اللہ اکبر وہ جو رب ہے وہی سب ہے"
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zainab Arshad

Read More Articles by Zainab Arshad: 4 Articles with 1165 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
04 Jun, 2020 Views: 307

Comments

آپ کی رائے