خواہشات کا کشکول

(Zahereen Hasan, Karachi)

بادشاہ نے ایک درویش سے کہا : "مانگو کیا مانگتے ہو؟" درویش نے اپنا کشکول آگے کردیا اور عاجزی سے بولا: حضور صرف میرا کشکول بھر دیں...بادشاہ سخاوت کے موڈ میں آیا ہوا تھا، اس نے فوراً اپنے گلے کے ہار اتارے انگوٹھیاں اتاریں جیب سے سونے چاندی کی اشرفیاں نکالیں اور درویش کے کشکول میں ڈال دیں لیکن کشکول بڑا تھا اور مال و متاع کم، لہٰذا اس نے فوراً خزانے کے انچارج کو بلایا، انچارج ہیرے جواہرات کی تهيلى لے کر حاضر ہوا بادشاہ نے پوری تهيلى الٹ دی لیکن جوں جوں جواہرات کشکول میں گرتے گئے کشکول بڑا ہوتا گیا، یہاں تک کہ تمام جواہرات غائب ہوگئے....بادشاہ کو بے عزتی کااحساس ہوا اس نےخزانے کے منہ کھول دیئے لیکن کشکول بھرنے کا نام نہیں لے رہا تھا۔ خزانے کے بعد وزراءکی باری آئی۔ اس کے بعد درباریوں اور تجوریوں کی باری آئی.... لیکن کشکول خالی کا خالی رہا۔ ایک ایک کر کے سارا شہر خالی ہوگیا لیکن کشکول خالی رہا... آخر بادشاہ ہار گیا درویش جیت گیا، درویش نے کشکول بادشاہ کے سامنے الٹایا، مسکرایا، سلام کیا اور واپس مڑ گیا. بادشاہ درویش کے پیچھے بھاگا اور ہاتھ باندھ کرعرض کیا حضور مجھے صرف اتنا بتا دیں یہ کشکول کس چیز کا بنا ہوا ہے؟ درویش مسکرایا اور کہا: یہ خواہشات سے بنا ہوا کشکول ہے، جسے صرف قبر کی مٹی ہی بھر سکتی ہے۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 194 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zahereen Hasan

Read More Articles by Zahereen Hasan: 9 Articles with 1717 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: