پاسبان ناموس ؐ رسالت

(Haji Latif Khokhar, )

ختم نبوت سے مراد یہ ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم اﷲ تعالیٰ کے آخری نبی ہیں۔ اﷲ تعالیٰ نے آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کو اس جہاں میں بھیج کر بعثت انبیاء کا سلسلہ ختم فرما دیا ہے۔ اب آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کے بعد کوئی نبی مبعوث نہیں ہوگا۔ حضور نبی اکرم صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کی ختم نبوت کا ذکر قرآن حکیم کی سو سے بھی زیادہ آیات میں نہایت ہی جامع انداز میں صراحت کے ساتھ کیا گیا ہے۔ارشادِ خداوندی ہے :’’محمد ( صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم ) تمہارے مَردوں میں سے کسی کے باپ نہیں ہیں لیکن وہ اﷲ کے رسول ہیں اور سب انبیاء کے آخر میں (سلسلہ ِ نبوت ختم کرنے والے) ہیں، اور اﷲ ہر چیز کا خوب علم رکھنے والا ہے‘‘ الاحزاب، 33 : 40۔اس آیتِ کریمہ میں اﷲ تعالیٰ نے حضور نبی اکرم صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کو خاتم النبین کہہ کر یہ اعلان فرما دیا کہ آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم ہی آخری نبی ہیں اور اب قیامت تک کسی کو نہ منصب نبوت پر فائز کیا جائے گا اور نہ ہی منصب رسالت پر۔قرآن حکیم میں سو سے زیادہ آیات ایسی ہیں جو اشارً یا کنایتاً عقیدہ ختم نبوت کی تائید و تصدیق کرتی ہیں۔ خود نبی اکرم صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی متعدد اور متواتر احادیث میں خاتم النبیین کا یہی معنی متعین فرمایا ہے۔ لہٰذا اب قیامت تک کسی قوم، ملک یا زمانہ کے لئے آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کے بعد کسی اور نبی یا رسول کی کوئی ضرورت باقی نہیں اور مشیت الٰہی نے نبوت کا دروازہ ہمیشہ کے لئے بند کر دیا ہے۔آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم سلسلہء ِ نبوت اور رسالت کی آخری کڑی ہیں۔ آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی زبانِ حق ترجمان سے اپنی ختمِ نبوت کا واضح لفظوں میں اعلان فرمایا۔حضرت انس بن مالک رضی اﷲ عنہ سے مرفوعاً روایت ہے کہ حضور صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا :
’’اب نبوت اور رسالت کا انقطاع عمل میں آ چکا ہے لہٰذا میرے بعد نہ کوئی رسول آئے گا اور نہ کوئی نبی۔‘‘اس حدیث پاک سے ثابت ہوگیا کہ آپ صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا۔اگر کوئی شخص نبی اکرم صلی اﷲ علیہ وآلہ وسلم کے بعد نبوت یا رسالت کا دعوی کرے خواہ کسی معنی میں ہووہ کافر، کاذب، مرتد اور خارج از اسلام ہے۔ اسکی سزاصرف اورصرف گردن زنی ہے نیز جو شخص اس کے کفر و ارتداد میں شک کرے یا اسے مومن، مجتہد یا مجدد وغیرہ مانے وہ بھی کافر و مرتد اور جہنمی ہے۔ ختم نبوت کا تحفظ ایک اہم ترین فریضہ ہے اور دعویِ نبوت کرنے والا کافر ہے، اس سے جہاد فرض ہے ۔ حضرت ابوبکر صدیقؓ کے دور میں تحفظ ختم نبوت کی خاطر ہزاروں صحابہ نے اپنی جانوں کو قربان کردیا، بیسویں صدی میں تحفظ ختم نبوت کے لیے نمایاں خدمات انجام دینے والوں میں حضرت مولانا سید عطاء اﷲ شاہ بخاری کا نام سرِفہرست ہے، آپ فرماتے ہیں:
’’جولوگ تحریک ختم نبوت میں جہاں جہاں شہید ہوئے، ان کے خون کا جوابدہ میں ہوں، وہ عشقِ رسالت میں مارے گئے، اﷲ تعالیٰ کو گواہ بناکر کہتا ہوں، ان میں جذبہشہادت میں نے پھونکا تھا۔‘‘ (حضرت عطاء اﷲ شاہ بخاری نوراﷲ مرقدہ کی تحریک کی وجہ سے ختم نبوت کے لیے امت میں بیداری پیدا ہوئی اور امت مسلمہ ہندیہ پورے جوش وجذبہ کے ساتھ میدان کارزار میں کود پڑی، جب کچھ جدید تعلیم یافتہ لوگوں نے دیکھا کہ بہت سے لوگ اس تحریک کی خاطر شہید ہورہے ہیں تو انھوں نے اپنے اپ کو اس تحریک سے علیحدہ کرکے یہ ثابت کرنا چاہا کہ جولوگ مارے گئے یا مارے جارہے ہیں، ہم اس کے ذمہ دار نہیں، تب پھر حضرت نے اپنی تقریر میں کہا) جو لوگ ان کے خون سے دامن بچانا چاہتے ہیں، میں ان سے کہتا ہوں کہ میں حشر کے دن بھی، ان کے خون کا ذمہ دار ہوں گا؛ کیوں کہ ختم نبوت سے بڑھ کر کوئی چیز نہیں۔ حضرت ابوبکر صدیق? نے بھی سات ہزار حفاظ قرا?ن، تحفظ ختم نبوت کی خاطر شہید کروادئیے تھے۔ (اور غیرحافظوں کی تعداد اس سے تقریباً دوگنی ہوگئی)۔ (تحریک ختم نبوت کا آغاز شورش کاشمیری بحوالہ روزنامہ اسلام)

اسلامی دور حکومت میں، جب بھی کسی نے ختم نبوت پر حملہ کیا، یا حرف زنی کی، مسلمان خلفاء وامرائنے ان کو کیفرکردار تک پہنچادیا، جس کی سیکڑوں مثالیں تاریخ کے سینے میں محفوظ ہیں۔شہید ناموسِ نبی صلی اﷲ علیہ وسلم غازی علم الدین نے صدیوں کا سفر اس تیزی اور کامیابی سے طے کیا کہ ارباب ِزہد و تقویٰ اور اصحابِ منبر و محراب بس دیکھتے ہی رہ گئے۔ اس نے ایک قدم انارکلی ہسپتال روڈ پر اٹھایا اور دوسرے قدم پر جنت الفردوس میں پہنچ گیا۔اسی جنت کی تلاش میں زاہدوں اور عابدوں کے نجانے کتنے قافلے سرگرداں رہے،مولانا ظفر علی خاں نے غازی علم الدین شہید کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا تھا:’شہید علم الدین کے خون کی حدت سے غیرت و حمیت کے وہ چراغ روشن ہوئے ہیں، جنھیں مخالف ہوا کے تند و تیز جھونکے بھی بجھا نہیں سکتے، آپ? کی شہادت سے قوم کو ایک نئی زندگی ملی ہے، وہ زندگی جسے اب موت بھی نہیں مار سکتی۔‘‘پشاور کی مقامی عدالت میں توہین رسالت کیس کی سماعت کے دوران ایک نوجوان نے قادیانی گستاخ رسول ؐ شخص کو جج کے سامنے گولی ماردی۔گولی لگنے سے مبینہ طور پر گستاخ کی موقع پر موت ہو گئی، نعش عدالت میں پڑی رہی، پولیس نے فوری طور پر کاروائی کرتے ہوئے ملزم گرفتارکر کے حوالات میں بند کر دیا۔پاکستان میں قادیانیوں کی بڑھتی سرگرمیوں پر مسلمانوں کو شدید تشویش لاحق ہے۔کوئی مسلمان اپنے نبی حضرت محمد ؐ کی توہین کبھی برداشت نہیں کرسکتا۔ قادیانی جب بھی ہمارے آقا ؐ کی توہین کرینگے جہنم واصل ہوتے رہینگے اورجب ملک کی عدالتیں فیصلوں میں دیر کرینگی تو طاہر قادیانی جیسوں کو جہنم واصل کرنے کا سلسلا جاری رہیگا۔ 1860 عیسوی میں جب ہندوستان مکمل طور پر فرنگی سامراج کے زیر تسلط آگیا تو اس اسلامی قانون کو ختم کر کے اس کی جگہ ’’ تعزیرات ہند‘‘ نام کا نیا قانون یہاں نافذ کیا۔مسلمان سب کچھ برداشت کرسکتا ہے مگر آقاکائناتؐ کی شان میں گستاخی ہرگز نہیں برداشت کرسکتا جب جہاں قاضیوں کے قلم فیصلے دینے سے قاصر ہوجائیں تو وہاں پر غازیوں کی تلواریں انصاف کیا کرتی ہیں ۔غلامی رسولؐمیں موت بھی قسمت والوں کو آتی ہے ہر ایک کو یہ سعادت کہاں نصیب ہوتی ہے۔۔۔۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Haji Latif Khokhar

Read More Articles by Haji Latif Khokhar: 61 Articles with 15641 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
20 Aug, 2020 Views: 653

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ