ماہرین نفسیات کے 6 زبردست طریقے جو بچوں کو تنہا اور گہری نیند سونے کی عادت ڈالتے ہیں

(Nasir Khan, Karachi)
 
چھوٹے بچوں پر ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق دُنیا کے 30 سے 40 فیصد کم سن بچوں کو نیند میں جانے کے لیے مشکل پیش آتی ہے اور ایسی صُورت میں جہاں بچے بے چین رہتے ہیں وہاں والدین کو اُنہیں سُلانے کے لیے زیادہ محنت کرتی پڑتی ہے اور وہ فرسٹریشن کا شکار ہو جاتے ہیں۔ اس آرٹیکل میں ہم بچوں کی نفسیات کے ماہرین کے دئیے گئے چند ایسے مشوروں کو شامل کر رہے ہیں جن پر عمل کر کے والدین بچوں کی نیند کے مسائل کو حل کر سکتے ہیں، اُن کی نیند کو گہرا بنا سکتے ہیں تاکہ وہ ساری رات آرام سے ماں کے بغیر بھی سوتے رہیں۔
 
نمبر 1 سونے کے اوقات مقرر کریں
بچے کے سونے کے اوقات مقرر کرنے سے بچے کی صحت پر انتہائی اچھے اثرات مرتب ہوتے ہیں اور ان اوقات پر بچے کو سونے پر مجبور کر دینے کے لیے مقررہ وقت سے پہلے بچے کو موسم کے مطابق گرم یا ٹھنڈے پانی سے غُسل کروائیں اس سے اُس کے جسم کی سٹریس ختم ہوگی اور اُسے نیند میں جانے میں آسانی ہوگی۔ ماہرین کا کہنا ہے کے بچے کو سُلاتے وقت اُس کے لیے دھیمی آواز میں لوری گُنگنانا وغیرہ جہاں بچے کی نفسیات پر اچھے اثرات مرتب کرتا ہے وہاں بچے کو جلدی گہری نیند میں لیجانے میں بھی مددگار ثابت ہوتا ہے۔
 
نمبر 2 ماں کا بچے کو اپنے ساتھ لگانا
ماں کا بچے کو اپنے ساتھ لگانا اور جلد سے جلد کا ملانا بھی بچے کی بیتابی کو کم کرنے اور اُس کے دماغ کو تسکین دینے میں انتہائی اہم چیز ہے اس سے بچہ فوری پُرسکون ہوجاتا ہے اور جلدی گہری نیند میں چلا جاتا ہے۔
 
 
نمبر 3 مدھم روشنی
تیز روشنی اور آواز ہمیشہ دماغ کو جاگتے رہنے کا پیغام دیتی ہے اس لیے بچے کے سونے کے اوقات پر روشنی کو مدہم کر دیں اور اُس کے ماحول میں شور وغیرہ نہ ہونے دیں تاکہ اُسے گہری نیند میں جانے میں آسانی ہو۔
 
نمبر 4 تنہا سونے کی عادت
ننھے بچے اگر جھولے اور والدین کی گود میں چڑھ کر سونے کے عادی بن جائیں تو اُنہیں تنہا سونے کی عادت نہیں پڑتی- اس لیے بچے کی نیند کے اوقات مقرر ہونے کے بعد اُنہیں تنہا سونے کی عادت ڈالنے کے لیے اُنہیں نیند کے مقررہ وقت پر دُودھ وغیرہ پلانے کے بعد لیٹا دیں اور وقفے وقفے سے اُنہیں چیک کریں اور اگر وہ نیند میں نہیں جارہے تو اُنہیں ہلکی تھپکی دیں اور میٹھے لہجے میں اُن سے کوئی بات کریں اس سے اُنہیں خود سے اپنے وقت پر سونے کی عادت ہوگی جو بڑے ہونے کیساتھ اُن کے کام آئے گی۔
 
نمبر 5 سونے کے اوقات میں تبدیلی
یہ طریقہ کا ننھے اور چھوٹے بچوں دونوں پر اثر انداز ہوتا ہے اس طریقے میں بچے کے سونے کے اوقات میں آدھا یا پُورا گھنٹے کا اضافہ کر دیا جاتا ہے اور پھر بعد میں آہستہ آہستہ کم کیا جاتا ہے اور اس طریقے سے بچوں میں تنہا سونے کی عادت کو پیدا کیا جاتا ہے۔
 
 
نمبر 6 کہانی ٹائم
چھوٹے بچوں کو سونے سے پہلے کہانی سُنانے کا رواج بہت پُرانا ہے مگر اب ختم ہو رہا ہے جسے دوبارہ زندہ کرنے ضرورت ہے کیونکہ یہ رواج جہاں بچوں کی ذہنی تربیت کرتا ہے وہاں سونے سے پہلے کہانی کے جذباتی اثرات بچے کی ذہنی سٹریس کو ختم کر دیتے ہیں اور اُسے سُلانے میں مدد کرتے ہیں۔
Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
26 Nov, 2020 Views: 13903

Comments

آپ کی رائے