پچاس سال تک ایک دوسرے کے ہمسفر رہنے والے میاں بیوی، صرف ایک دن کرونا وائرس کے حوالے سے بےاحتیاطی کر بیٹھے اور اس کے بعد نتیجہ کیا ہوا؟ جانیں

 
دنیا بھر کو اس وقت کرونا وائرس کی ہلاکت خیزیوں نے لپیٹ میں لے کر رکھا ہے اگرچہ کئی ممالک کی جانب سے اس کی ویکسین کی تیاری کے دعویٰ کیے جا رہے ہیں- مگر یہ سب کچھ ابھی تک ٹیسٹ کے مرحلے سے آگے نہیں بڑھ سکے ہیں اور یہ بدترین اور مہلک وائرس لاکھوں لوگوں کی ہلاکت کا سبب بن چکا ہے- ایسے ہی متاثرہ افراد میں لیسلی اور پیٹریسیا میک واٹرز شامل ہیں جنہوں نے ایک ساتھ پچاس سال تک میاں بیوی کے طور پر گزارے-
 
پیٹریسیا جس کی عمر 78 سال تھی اور جو گزشتہ 35 سالوں سے ایک پیشہ ور نرس کے طور پر مشی گن میں اپنے فرائض انجام دے رہی تھیں جب کہ ان کے شوہر لیسلی جن کی عمر 75 سال تھی اور پیشے کے اعتبار سے ایک ٹرک ڈرائیور تھے- یہ جوڑا بہت خوش مزاج اور زندہ دلی سے بھرپور جوڑا تھا جن کی دو بیٹیاں اور تین نواسیاں بھی موجود تھیں -
 
ان کی بڑی بیٹی جوانا سسک کے مطابق ان کی والدہ ایک بہت مہربان خاتون تھیں اور ہر وقت دوسروں کی مدد کے لیے تیار رہتی تھیں اور ان کی یہی خوبی ان کو سب کی پسندیدہ بناتی تھی- گزشتہ کئي مہینوں سے مشی گن میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے لاک ڈاؤن نافذ تھا جس کے سبب یہ جوڑا بھی اپنے گھر تک محدود رہنے پر مجبور تھا اور کرونا وائرس کے حوالے سے تمام احتیاطیں کر رہے تھے جس کے سبب محفوظ تھے-
 
مگر نومبر کے مہینے میں یہ جوڑا لاک ڈاؤن کے سبب ہونے والی پابندیوں سے اکتا گئے اور انہوں نے یہ فیصلہ کیا کہ کسی ایک دن اگر یہ تمام احتیاطیں پس پشت رکھ کر اپنی مرضی کی زندگی گزاریں تو اس سے وہ اپنی زندگی کی بوریت سے باہر آسکیں گے-
 
 
یہ دونوں مشی گن کے ایک ریسٹورنٹ میں ڈنر کے لیے گئے جہاں پر لوگوں نے ماسک نہیں پہنے ہوئے تھے اور آزادی سے زندگی گزار رہے تھے کرونا وائرس کے حوالے سےبھی سوشل ڈسٹنسنگ کا خیال نہیں رکھا گیا جس کی وجہ سے بدقسمتی سے یہ جوڑا کرونا میں مبتلا ہو گیا-
 
وائرس کا شکار ہونے کے بعد ان دونوں کی زندگی بہت مشکل ہو گئی ہسپتال میں آئی سی یو میں زیر علاج رہتے ہوئے لیسلی نے اپنی بیٹی کو بلا کر بتایا کہ ان کے حوالے سے دنیا کے باقی لوگوں کو بھی یہ بتا دیا جائٰ کہ کرونا وائرس کتنا تکلیف دہ ہوتا ہے اور اس کو معمولی نہ سمجھا جاۓ اور ذرا سی بے احتیاطی ساری عمر کی تکلیف کا باعث ہو سکتی ہے-
 
ایک ساتھ اس مہلک وائرس میں مبتلا ہونے کے بعد 24 نومبر 2020 کو مشی گن کے ایک ہی ہسپتال میں پچاس سال تک ایک ساتھ رہنے والے جوڑے نے کرونا وائرس سے ہار مان لی اور ان کی ایک ہی دن میں موت واقع ہو گئی- ان کی موت ان سب لوگوں کے لیے ایک سبق ہے جو کہ کرونا وائرس کو ایک مذاق سمجھتے ہیں اور اس کو صرف ایک معمولی فلو قرار دیتے ہیں-
Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
01 Dec, 2020 Views: 468

Comments

آپ کی رائے