پاکستان میں موجود کٹاس راج کے مندر اور ان سے جڑی روایات

پاکستان کے صوبۂ پنجاب کے ضلع چکوال میں واقع کٹاس راج کا علاقہ ہندو مذہب کے پیروکاروں کے لیے ایک مقدس مقام کی حیثیت رکھتا ہے۔ یہاں نہ صرف صدیوں پرانے مندر ہیں بلکہ ایک ایسا تالاب بھی ہے جس کی تاریخ ہزاروں برس پرانی ہے۔ یہاں مندر کے علاوہ حویلی، بارہ دری بھی موجود ہے۔ کٹاس راج کو دیکھنے کے لیے عموماً اس موسم میں بڑی تعداد میں سیاح آتے ہیں۔
 
پنجاب کے ضلع چکوال کے علاقے چواسیدن شاہ میں کٹاس راج میں کئی مندروں کے آثار اور ایک تالاب بھی ہے۔
 
تاریخ دانوں کے مطابق کٹاس راج کے مندروں کی تاریخ دو ہزار برس سے بھی پرانی ہے۔
 
یہاں ایک تالاب بھی ہے جس کے بارے میں ہندو مت میں یہ روایت عام ہے کہ یہ ہندو دیوتا شیو کے آنسو سے بنا جو اپنی بیوی کے انتقال پر روئے تو ایک آنسو یہاں گرا جس سے تالاب بن گیا۔
 
اس تالاب کے پانی کو ہندو مقدس سمجھتے ہیں۔
 
ہر برس یہاں بھارت سے ہندو یاتری بھی آتے ہیں۔
 
ہندوؤں کی مقدس کتاب مہا بھارت میں بھی ان مندروں کا تذکرہ ہے۔
 
کٹاس راج جانے کے لیے سیاح لاہور اسلام آباد موٹر وے پر کلر کہار سے ہوتے ہوئے یہاں تک پہنچتے ہیں۔
 
روایات کے مطابق سکھ مذہب کے بانی بابا گورو نانک سنگھ بھی اس مقام کے دورے کرتے رہے ہیں۔
 
سن 2005 سے قبل یہ مندر کھنڈرات کا منظر پیش کرتے تھے، تاہم اس وقت کی حکومت نے ان مندروں کی بحالی کا منصوبہ شروع کیا۔
 
اس وقت بھارتی سیاست دان ایل کے ایڈوانی اور اس وقت پاکستان میں حکمراں جماعت کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین نے بحالی منصوبے کا سنگِ بنیاد رکھا تھا۔
 
یہ مقام سطح سمندر سے لگ بھگ دو ہزار فٹ بلند ہے۔
 
بعض تاریخ دانوں کے مطابق اس علاقے میں ایک یونیورسٹی قائم تھی جہاں ارضیات، تاریخ اور نجوم کے علاوہ سنسکرت کی تعلیم بھی دی جاتی تھی۔
 
Partner Content: VOA Urdu
Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
19 Oct, 2021 Views: 2006

Comments

آپ کی رائے