سچ تویہ ہے (۵۲واں حصہ)

منظر۳۶۴
صابراں نمازاداکرکے دعامانگ رہی ہے۔ اس سے چھوٹی دوبہنیں فجرکی نمازاداکررہی ہیں۔ رحمتاں نمازاداکرکے بیٹھی ہے۔ اس کی دوچھوٹی بیٹیاں وضوکرکے آچکی ہیں۔ صابراں دعامانگنے کے بعد چھوٹی بہنوں سے کہتی ہے ادھرآجاؤ نمازاداکرلو صابراں اٹھ جاتی ہے
رحمتاں۔۔۔۔صابراں سے۔۔۔۔آج تمہارے مقابلے ہیں
صابراں۔۔۔۔جی امی آج بھی اورکل بھی
رحمتاں۔۔۔۔آج کیاکیاپکاناہے
صابراں۔۔۔۔۔آج گوشت اورگوشت پلاؤ بناناہے
رحمتاں۔۔۔۔ابھی سے تیاری شروع کردو ویسے گوشت کے کتنے پکوان بناؤ گی
صابراں۔۔۔۔۔میں چاہتی ہوں کہ چارمختلف ذائقوں میں گوشت بناؤں
رحمتاں۔۔۔۔ٹھیک ہے بہنوں کوبھی ساتھ کرلو
صابراں۔۔۔۔آج میں اپنااوروہ اپناپناپکوان بنائیں گی میں ان کی آج اورکل کوئی مددنہیں کروں گی
رحمتاں۔۔۔۔ابوسے کہو گوشت لے آئیں
اسی دوران دروازے پردستک ہوتی ہے
صابراں۔۔۔۔لگتاہے گوشت آگیاہے
احمدبخش دروازے پرجاتاہے توسامنے ایک لوڈنگ رکشہ کھڑاہے
رکشہ والا۔۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔۔رکشہ میں سے چارشاپراٹھالو
احمدبخش چاروں شاپردروازے کے اندررکھ کردروازہ بندکردیتاہے اسی دوران جاویدبھی دروازے پرآجاتاہے چچابھتیجا دودوشاپرلے کرگھرآتے ہیں۔
رحمتاں۔۔۔۔اپنی بیٹی سے۔۔۔۔اس میں ایک شاپرسمیراکا ہے جاکراسے دے کرآ
منظر۳۶۵
راشدہ عبدالرحیم اورسلطانہ کوسکول روانہ کرتی ہے۔ دونوں بچے گھرسے چلے جاتے ہیں۔ عبدالمجیدکے سامنے ناشتہ رکھاہواہے۔ وہ ایک لقمہ توڑتاہے۔ دہی میں اسے ڈبوتاہے پھرآہستہ آہستہ منہ کی طرف لے جاتاہے اس کے بعدرک جاتاہے۔ چند لمحوں کے بعدوہ ایک اورلقمہ توڑتاہے اوراسے بھی اسی طرح کھاتاہے ۔
راشدہ۔۔۔۔۔عبدالمجیدکودیکھ کر۔۔۔۔۔سلطانہ کے ابو رات کوبھی آپ نے ایک روٹی بھی نہیں کھائی اوراب بھی کھانے سے پوچھ پوچھ کرکھارہے ہیں ابھی تک پریشان ہیں
عبدالمجید۔۔۔۔۔مجھے توسمجھ میں نہیں آرہا کہ وہ کون تھے میرے کھیتوں میں کیوں آئے تھے
راشدہ۔۔۔۔۔۔اتنے دن ہوگئے ہیں اب بھول بھی جائیں
عبدالمجید۔۔۔۔کیسے بھول جاؤں میں جب بھی کھیتوں میں جاتاہوں کبھی کوئی آجاتاہے توکبھی کوئی
راشدہ۔۔۔۔۔اس دن کے بعد کوئی اوربھی آیاتھا ؟
عبدالمجید۔۔۔۔کل کھیتوں میں گیا تو ہمارے کھیتوں کے الگ الگ کناروں پردوشخص چکرلگارہے تھے دونوں نے ایک ہی رنگ کی چادرسے اپنے سراورمنہ ڈھانپ رکھے تھے
راشدہ۔۔۔۔۔۔آپ اپنے بھائیوں کوبتائیں
عبدالمجید۔۔۔۔۔یہ میرے بھائی ہی کرارہے ہیں
راشدہ۔۔۔۔۔وہ ایساکیوں کریں گے
عبدالمجید۔۔۔۔۔وہ چاہتے ہیں کہ میں کھیتوں میں جاناچھوڑدوں
راشدہ۔۔۔۔۔وہ ایساکچھ نہیں چاہتے
عبدالمجید۔۔۔۔۔تم یہ کیسے کہہ سکتی ہو
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۳۶۶
مقابلے کرانے والی خواتین کی تمام کمیٹیوں کی ممبرزخواتین ایک گھرکے وسیع صحن میں کھانے کے مقابلے کرانے کی تیاریاں کرارہی ہیں۔ کچھ خواتین صحن کی صفائی کررہی ہیں۔ کچھ خواتین چھڑکاؤ کررہی ہیں۔ دروازے پردستک ہوتی ہے۔ دولڑکیاں دروازے پرجاتی ہیں توباہردولوڈنگ رکشے کھڑے ہیں۔ ان میں قالینیں رکھی ہوئی ہیں۔
لڑکیاں۔۔۔۔ان کودروازے پرہی اتاردو
رکشے والے۔۔۔۔ہمیں کہاگیاہے یہ بچھاکرآنی ہیں
لڑکیاں۔۔۔۔ابھی صفائی ہورہی ہے کچھ دیرانتظارکرلیں
لڑکیاں۔۔۔۔۔پنڈال میں آکر۔۔۔۔۔ایک خاتون سے۔۔۔۔۔دورکشوں پرقالینیں آئی ہیں
وہ خاتون۔۔۔۔ابھی اورسامان بھی آئے گا باہرجاکررکشے والوں سے کہو جوبھی ریڑھی یارکشہ سامان لے کرآئے اسے باہرہی روکے رکھیں ہم سب کوایک ساتھ گھرمیں بلائیں گی
دونوں لڑکیاں دروازے کی طرف چلی جاتی ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۳۶۷
بشیراحمدکے گھر میں
صابراں کی بہن۔۔۔۔۔فیاض سے ۔۔۔۔۔سمیراکہاں ہے
فیاض۔۔۔۔۔وہ اپنے کمرے میں بیٹھی ہے
جاویدکے گھر میں
رحمتاں۔۔۔۔صابراں سے۔۔۔۔۔تونے چارذائقوں میں گوشت بناناتھا میں توسوچ رہی تھی اتناگوشت کہاں سے آئے گا ضرورت کاگوشت مل گیاہے
صابراں کی دوسری بہن۔۔۔۔۔اورسامان تونہیں آیا
رحمتاں۔۔۔۔۔انہوں نے گوشت بھیج دیا یہ بھی بہت ہے
بشیراحمدکے گھرمیں
صابراں کی بہن سمیراکے پاس اس کے کمرے میں جاتی ہے تواس کے پاس بھی گوشت کے چارشاپررکھے ہوئے ہیں
صابراں کی بہن۔۔۔۔سمیراسے۔۔۔۔۔رکشے والاہمارے گھرگوشت کے چارشاپردے گیاہے امی نے کہاکہ میں ایک شاپرتمہیں دے آؤں آپ کے پاس بھی گوشت کے چارشاپررکھے ہوئے ہیں
سمیرا۔۔۔۔۔مجھے یہ سمجھ نہیں آرہی کہ مجھے ایک شاپردیناچاہیے تھا چارکیوں دے کرگئے ہیں
دروازے پردستک ہوتی ہے فیاض دروازے کی طرف جاتاہے
اریبہ صابراں کی بہن اورسمیراکے پاس کمرے میں آتی ہے
سمیرا۔۔۔۔۔یہ تین بہنیں ہیں ان کوبھی گوشت کے چارشاپردیے گئے ہیں اورمیں ایک ہوں مجھے بھی چارشاپردیے ہیں
اریبہ۔۔۔۔گوشت چیک کرنے کے بعد۔۔۔۔۔جوگوشت صابراں کی بہن لائی ہے وہ بکری کاگوشت ہے اورجوگوشت تجھے دے کرگئے ہیں وہ مرغی کاہے
فیاض گتے کاایک ڈبہ اٹھاکرلے آتاہے اورکہتاہے تین ڈبے اوربھی ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۳۶۸
کریم بخش کھیتوں میں کھال کاکچھ حصہ صاف کرچکاہے۔ وہ کھال کوصاف کرناچھوڑدیتاہے۔ کَسی کاندھے پررکھ کرکھال کے شروع میں پہنچ
جاتاہے ۔اس جگہ کھال کے دونوں کنارے معمولی سے ٹوٹے ہوئے ہیں۔ کریم بخش ایک طرف کے کنارے کومرمت کرنے کے لیے کھال کے درمیان سے ریت اٹھانے لگتاہے توسعیداحمدآجاتاہے
سعیداحمد۔۔۔۔۔اس ریت سے کھال کے کنارے درست کروگے
کریم بخش ۔۔۔۔۔میں تواسی طرح کھال کے کنارے مرمت کرتاہوں
سعیداحمد۔۔۔۔اسی لیے تویہ باربارٹوٹ جاتے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔اورکیاکروں
سعیداحمد۔۔۔۔۔مٹی سے مرمت کرو
کریم بخش۔۔۔۔۔بھائی آپ نے تومیری مشکل آسان کردی آپ کیسے آئے
سعیداحمد۔۔۔۔۔کھیتوں میں چکرلگانے آیاتھا جوباتیں رکشہ میں ہوئی تھیں ان پرعمل بھی کررہے ہو؟
کریم بخش۔۔۔۔۔میں نے تواس سے پہلی ملاقات میں ہی فیصلہ کرلیاتھا کہ اس سے دوستی کروں گا
سعیداحمد۔۔۔۔پھرکب جارہے ہو
کریم بخش۔۔۔۔۔ہم نے توعارف سے کہہ رکھاہے وہ عبدالمجیدکوگھرآنے کی دعوت دے آئے
سعیداحمد۔۔۔۔آپ چلے جائیں تب بھی ٹھیک ہے
کریم بخش۔۔۔۔مردوں کی ملاقاتیں ہوچکی ہیں خواتین کی نہیں ہوئیں
سعیداحمد۔۔۔۔آپ کہناچاہتے ہیں ہمیں خواتین کوان کے گھربھیجناچاہیے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۳۶۹
مقابلے کرانے والی خواتین گھرکے صحن کی صفائی اورچھڑکاؤکرچکی ہیں۔ تمام خواتین کمروں میں چلی جاتی ہیں۔ دولڑکیاں دروازہ کھول کرکہتی ہیں آپ اپناکام کرلیں وہ چلی جاتی ہیں
ایک رکشے والا۔۔۔۔۔دوسرے رکشے والوں سے۔۔۔۔۔۔آؤ یہ سامان سیٹ کرلیں
دوسرارکشے والا۔۔۔۔۔دوگھنٹے تولگ جائیں گے اس کام میں اضافی مزدوری بھی ملے گی یانہیں
پہلارکشے والا۔۔۔۔۔جن لوگوں کایہ کام ہے وہ کسی کاحق نہیں رکھتے اوروہ توطے شدہ مزدوری سے بھی زیادہ دیتے ہیں
تیسرارکشے والا۔۔۔۔۔پہلے ہی ٹائم کافی ہوچکاہے چلیں کام بھی کرلیں
پہلارکشے والا۔۔۔۔۔ٹھیک ہے پہلے قالینیں اٹھاکرلے آؤ
چوتھا رکشے والا۔۔۔۔۔۔پہلے ٹینٹ لگالیتے ہیں
پہلارکشے والا۔۔۔۔۔یہ بھی ٹھیک ہے پہلے ٹینٹ لگالیتے ہیں اس کے بعدقالینیں بچھائیں گے اورکام بھی کریں گے ٹینٹ رکشوں سے اتارکرلے آؤ
اس کے ساتھ ہی رکشے والے ایک رکشے سے ٹنیٹ اتارنے لگ جاتے ہیں کچھ رکشے والے بانس اوررسیاں اٹھالیتے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۳۷۰
بشیراحمد، فیاض اوررحمتاں کی بیٹی گتے کاایک ایک ڈبہ اٹھاکرجاویدکے گھرآتے ہیں۔
رحمتاں۔۔۔۔۔اپنی بیٹی سے۔۔۔۔۔توتوایک شاپردینے گئی تھی
فیاض۔۔۔۔۔یہ گوشت کاایک شاپردینے گئی تھی ہم تین ڈبے اورگوشت کے تین شاپردینے آئے ہیں ایک رکشے والاہمارے گھرگوشت کے چارشاپرایک اوررکشے والاچارڈبے دے گیاہے
بشیراحمد۔۔۔۔ایک ڈبہ اورایک شاپرسمیرانے رکھ لیاہے باقی آپ کودینے آئے ہیں
بشیراحمداورفیاض ڈبے اورشاپررحمتاں کے حوالے کرکے چلے جاتے ہیں
رحمتاں۔۔۔۔۔اپنی بیٹیوں سے۔۔۔۔۔دیکھوان ڈبوں میں کیاہے
اس کی تینوں بیٹیاں ایک ایک ڈبہ کھولتی ہیں
صابراں۔۔۔۔اس میں گھی کے ایک ایک کلوکے پانچ پیکٹ ہیں
رحمتاں کی دوسری بیٹی۔۔۔۔۔اس میں مرچ ،نمک اورمصالحوں کے پیکٹ بھی ہیں
رحمتاں کی تیسری بیٹی۔۔۔۔۔اس میں چاولوں کے دوپیکٹ بھی ہیں
صابراں ۔۔۔۔اس میں ایک بندلفافہ بھی ہے
صابراں کی دونوں بہنیں۔۔۔۔۔۔لفافے توہمارے ڈبوں میں بھی ہیں
رحمتاں۔۔۔۔۔کھول کردیکھو کیاہے اس لفافے میں
صابراں کی ایک بہن۔۔۔۔۔۔اس لفافے میں دس ہزارروپے ہیں
رحمتاں۔۔۔۔۔تم پریشان ہورہی تھی یہ سامان بھی آگیاہے اورتمہیں دس دس ہزارروپے بھی مل گئے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 

Muhammad Siddique Prihar
About the Author: Muhammad Siddique Prihar Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 375 Articles with 223128 views Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here.