انتہائے عشق

انتہائے عشق
واقعہ کربلا کے ان گنت گوشے ہیں جس کو ہزار ہا افکار اور نظریات کے ساتھ دیکھا اور سوچا جا سکتا ہے۔ ہر نیا شروع ہونے والا سال میرے خیالات میں نئے سوالات لیئے ابھرتا ہے ابھی جو اک بات مجھے سوچنے پہ مجبور کررہی ہے اور میری افکار کے آگے سوالیہ نشان کگا رہی وہ یہ ہے کہ
بندگی کی۔۔۔عبدیت کی۔۔۔فرائض کی ادائیگی کی۔۔۔ذمہ داریوں کی۔۔۔محبت کی اور عشق کی انتہا کیا ہے؟
اور ان سب کے درمیاں ہم سب کی"میں" کہاں ہے؟

اور زندگی کے ان تمام عناصر سے گزرتے ہوئے اس حدیثِ مبارکہ کی عملی مثال کیا ہو سکتی ہے جس میں حضورِ اکرمﷺ برائی کو روکنے کے درجات بتائے تھے۔ اور پھر ان درجات کی انتہا کیا ہو سکتی ہے؟
یہ ساری ابتدائیں اور انتہائیں محرم الحرام کے پہلے دس دنوں بپا ہونے والے واقعہ کربلا میں پنہاہیں۔
محرم الحرام کے ان دس دنوں میں جو کچھ ہوا اسے بنا کسی تعصب اور بغض کے اپنے دماغ اور دل کھول کر پڑھیئے۔ پڑھ چکے ہیں تو مزید اک اور بار پڑھئے اور سمجھیئےکہ ہر شے ابتداء سے انتہا تک کا سفر کیا ہے؟ مجھ ناقص علم کو ان سارے معاملات کی ابتداء و انتہا کے بارے میں کیا معلوم پڑا وہ اپ کے کسی کام نہیں آئے گا لیکن اک بات جو میری سمجھ آئی ہے اور میں سوفیصد کامل یقین کے ساتھ کہہ سکتی ہوں وہ یہ کہ باطل اور ھق کے درمیاں کوئی درمیانہ راستہ نہیں ہے۔ غیر جانبداریت کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ Lesser Evil کا کوئی تصور نہیں ہے۔ آج ڈھیروں نظریات اور باتوں کی دلفریبیوں میں اس نسل نے اپنے پیمانے اخذ کر رکھے ہیں کم از کم یہ ۔۔ اور زیادہ سے زیادہ یہ ۔۔۔ سوچئے تو پیمانہ تو اللہ تبارک و تعالٰی نے بنا دیئے اور ان پیمانوں پہ پورا اترنا بھی دکھا دیا۔ تو ہم کون ہیں ان پیمانوں میں گنجائش بناتے ہوئے کسی درمیانے کو حق سمجھتے ہوئے اسے قبول کرنے والے؟ ہمیں یہ اختیار کب ملا کہ ہم اپنے پیمانے ایجاد کر سکیں۔۔ اپنی ضرورت اور منشا کے مطابق۔۔۔ اور پھر ان پیمانوں کو وقت کی ضرورت قرار دے دیا جائے؟ جان لیجئے کہ حق اور باطل کا کوئی درمیانہ راستہ نہیں ہے جس میں آپ نیم حق یا نیم باطل کا اک عجیب و غریب نظریہ تیار کرنے کو بیٹھے ہوں۔حق وہ ہے جس کے معلوم پڑنے پہ یزیدیت کی رنگ ڈھل جائے۔ حق وہ ہے کہ باطل کے متعلق معلوم پڑے تو ابتداء سے چلتے ہوئے انتہا تک پہنچنے کو تیار ہوں آپ ۔۔۔
راستے کے درمیاں آپ کو لگنے لگے کہ یہاں تک ٹھیک ہے اب تو کافی حد تک موزوں ہے بات۔۔۔ تو آپ حق نہیں باطل چن رہے ہیں جو لوگ آپ کو Lesser evil اور "ان جیسا تو نہیں" والا چورن بیچنے کی کوشش کریں تو وہ بھی نا خریدیں اک تو یہ واقعہ کربلا کا بنیادی سبق ہے اور دوسرے آپ کے لئے مضرِ صحت۔۔۔
برے کو برا کہنا ۔۔ اپنا مطلب نکالے بناء، اور اس پہ ڈٹ جانا حسینیت ہے۔
برے کو برا کہہ کر راستے میں ڈھے جانے والے حسینی کیسے کہلا سکتے ہیں؟
عبادات، ایصالِ ثواب ضرور کیجئے مگر حق اور باطل کے تسور کو دحندلا نہ ہونے دیجئے گا۔ اپنے لیئے۔۔
اور اس تصور کو خالصیت کے ساتھ اگلی نسلوں تک پہنچانے کا بھی اک ہی طریقہ ہے۔ انہیں بتائیں۔۔ سمجھائیں۔۔ بار بار دوہرائیں اور یاد کروائیں کہ بچو ! حق اور باطل میں درمیانہ راستہ نہیں ہے۔ اور اپنے سر کو رب کی رضا پہ وار دینا نواسہِ رسولﷺ کی سنت ہے اور رب کی رضا کو پا لینا انتہائے عشق۔۔۔۔
 

Iqra Yousaf Jami
About the Author: Iqra Yousaf Jami Read More Articles by Iqra Yousaf Jami: 22 Articles with 15965 views former central president of a well known Students movement, Student Leader, Educationist Public & rational speaker, Reader and writer. student
curr
.. View More