اللہ عزوجل نے سب سے پہلے کس کو بنایا؟

(Ishrat Iqbal Warsi, Mirpurkhas)
تاجدارِ کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے

اول ما خلق اﷲ نوری ومن نوری خلق کل شئ
.
(تفسير روح البيان، 2 : 370)

سب سے پہلے اللہ تعالیٰ نے میرے نور کو پیدا فرمایا۔ پھر میرے نور سے ہر چیز کو بنایا۔

مذکورہ حدیث مقدسہ کا مطلب یہ ہے کہ حضور رحمت عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرما رہے ہیں کہ میری ذات براہ راست اللہ ربّ العزت کے نور سے اکتساب فیض کر رہی ہے جبکہ یہ ساری کائنات، اس کائنات کا ذرہ ذرہ، یہ تمام اجسام فلکی، چرند پرند، ملائکہ، جنات، شجر وحجر، شمس و قمر، غرض کائنات کی ہر شئے میرے نور سے فیض یاب ہو رہی ہے۔

حضرت جابر رضی اللہ عنہ نے آقا حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے دریافت فرمایا

يارسول اﷲ! بابی انت و امی، اخبرنی عن اول شئ خلقه اﷲ تعالی قبل الاشياء، قال : يا جابر ان اﷲ تعالی قد خلق قبل الاشياء نور نبيک من نوره، فجعل ذلک النور يدور بالقدرة حيث شاء اﷲ، ولم يکن فی ذلک الوقت لوح و لاقلم و لا جنة و لا نار و لا ملک و لا سماء و لا ارض و لا شمس و لا قمر و لا جن و لا انس، فلما اراد اﷲ تعالی ان يخلق الخلق قسم ذلک النور اربعة اجزاء، فخلق من الجزء الاول القلم و من الثانی اللوح و من الثالث العرش، ثم قسم الجزء الرابع اربعة، فخلق من الاول حملة العرش ومن الثانی الکرسی والثالث باقی الملائکة، ثم قسم الرابع الاربعة اجزاء، فخلق من الاول السموت و من الثانی الارضين و من الثالث الجنة والنار
. . .
(المواهب اللدنيه، 1 : 9)
(السيرة الحلبيه، 1 : 50)
(زرقاني علي المواهب، 1 : 46)

یارسول اللہ! میرے ماں باپ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر قربان ہوں مجھے بتائیں کہ اللہ تعالیٰ نے سب سے پہلے کیا چیز پیدا فرمائی؟ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اے جابر! بے شک اللہ تعالیٰ نے تمام مخلوقات سے پہلے تیرے نبی کا نور اپنے نور سے پیدا فرمایا۔ پھر وہ نور مشیت ایزدی کے مطابق جہاں چاہتا سیرکرتا رہا۔ اس وقت لوح تھی نہ قلم، جنت تھی نہ دوزخ، فرشتہ تھا نہ آسمان، نہ زمین تھی، سورج تھا نہ چاند، جن تھا نہ انسان۔ جب اللہ تعالیٰ نے ارادہ فرمایا کہ مخلوقات کو پیدا کرے تو اس نور کو چار حصوں میں تقسیم کر دیا۔ پہلے حصے سے قلم بنایا دوسرے سے لوح، تیسرے سے عرش اور چوتھے کو پھر چار حصوں میں تقسم کیا، پہلے حصہ سے عرش اٹھانے والے فرشتے بنائے، دوسرے سے کرسی اور تیسرے سے باقی فرشتے بنائے، پھر چوتھے حصے کو مزید چار حصوں میں تقسیم کر دیا، پہلے سے آسمان بنائے، دوسرے سے زمین اور تیسرے سے جنت و دوزخ۔

کثیر ائمہ کرام جن میں شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمۃ اللہ علیہ اور حضرت مجدد الف ثانی رحمۃ اللہ علیہ جیسی نابغۂ روزگار ہستیاں شامل ہیں، نے بھی اس حدیث کا ذکر کیا ہے۔ اسی بنا پر سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو مبداء کائنات کہا جاتا ہے۔ آپ ہی وجہ تکوین عالم ہیں۔ کائنات کا سارا حسن، حسن محمدی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہی کی ایک جھلک ہے۔ پھولوں میں خوشبو انہی کے نقش قدم کا فیضان ہے، ستاروں میں روشنی انہی کے وجود مسعود کا پرتو ہے۔ اگر حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو پیدا کرنا مقصود نہ ہوتا تو سورج کو خلعت نور عطا ہی نہ ہوتی بلکہ سرے سے اس کا وجود ہی نہ ہوتا۔
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 4185 Print Article Print
About the Author: ishrat iqbal warsi

Read More Articles by ishrat iqbal warsi: 202 Articles with 835820 views »
مجھے لوگوں کی روحانی اُلجھنیں سُلجھا کر قَلبی اِطمینان , رُوحانی خُوشی کیساتھ بے حد سکون محسوس ہوتا ہے۔
http://www.ishratiqbalwarsi.blogspot.com/

.. View More

Reviews & Comments


Assalam O Alaekum
Subhan Allah.

Abdul Nasir-Karachi
By: Abdul Nasir, Karachi on Oct, 22 2019
Reply Reply
0 Like
AS SALAM O ALAIKUM

Me to ek na cheez shaks hoon jo Hadees ka URDU me tarjuma parhoon. Rahi baat ye k me apni Ainak utar loon to chalo me ne utar li lekin ye baat yaad rakhiye k kabhi QURAN or HADEES ka lafz ba lafz Tarjuma na parhen us ki Tafseer bhi zaroor parhen. Hadees Shareef ki mukammal tehqeeq ker k me is ka jawab zaroor likkhoon ga.
By: Mohammad Adeel, Karachi on Jun, 01 2010
Reply Reply
0 Like
I have submitted my comments in reply to Mr. Mohammad Adeel and I cant see these comments here. I dont know wheather it is delebrate or just a routine matter. Mr. Adeel, Please check the book of "Taharat". in "Muslim" You will find atleast 3 hadees confirming my statement on this subject. I would like you to let us have the translation of those ahadees in urdu.
By: Baber Tanweer, Karachi. on May, 31 2010
Reply Reply
0 Like
بھائی محمد عدیل صاحب برائے مھربانی مسلم شریف میں کتاب الطھارت باب “ منی کا حکم“ حدیث نمبر ٦٦٨،٦٦٩،٦٧٠ پڑھ لیں اور ان احادیث کا ترجمہ اردو میں ہم سب کی معلومات کے لئے یہاں لکھ دیجئےِ٠ اور غسل کب واجب ہوتا اس بارے میں اسی کتاب میں حدیث نمبر ٧٨٣،٧٨٤،٧٨٥،٧٨٦ پڑھ لیں ۔ اگر عینک اتارنے کے لئے اور حوالوں کی ضرورت ہو تو وہ بھی آپ کی خدمت میں پیش کر دوں گا٠ و السلام ۔
By: Baber Tanweer, Karachi on May, 29 2010
Reply Reply
0 Like
This hadees is in Muslim and I will give you the reference as soon I reach home. I was expecting your reply and just last night I checked and reconfirmed it. Secondly the ghusul is wajib after the sexual even the discharge does not took place. Its not because of Nutfa. Wassalam
By: Baber Tanweer, Karachi. on May, 29 2010
Reply Reply
0 Like
AS SALAM O ALAIKUM

Baber Sahab aap ne jo likkha he k "Bibi Aisha Rasool ALLAH kay libas par kuch laga hota to usay apnay nakhunon say saf kar dia karti theen aur Hamaray Rasoon Sallahallah o Alaihe Wasallam unhi kapron main namaz parh lia kartay thay" to me ne aesa kahin pe bhi nahi parha aap ne kahan se parh k likkha ye mujhe nahi maloom or rahi baat Noor ki to ye baat bilkul sahi he or Hadees ki mutawatir kutub me aai hain. Insaan ka Nutfa agar NAPAK na hota to GUSUL ker k NAMAZ parhne ki Ijazat denay ki bhi zaroorat nahi thi. Lekin insaan ka nutfa NAJAS hota he jab hi Insaan ko fouri tor pe GUSUL kerne ka hukam diya hai. Aankhon se Ainak utarne ki zaroorat mujhe nahi aap ko he...
By: Mohammad Adeel, Karachi on May, 28 2010
Reply Reply
0 Like
Bhai Mohammad Adeel Sahib, Sab say pehlay to "Hamari Web" ka shukria jinho nay ham sab ki rehnamai kay liey is forum ki bunyad rakhi. Pehli bat yeh keh insani nutfa najas chees nahi hai. Bibi Aisha Rasool ALLAH kay libas par kuch laga hota to usay apnay nakhunon say saf kar dia karti theen aur Hamaray Rasoon Sallahallah o Alaihe Wasallam unhi kapron main namaz parh lia kartay thay. Doosri bat keh yeh Noor wala muamla to bohot ahmiat ka hamil he keh is ka zikr hadees ki har kitab main hona chahye tha. Aur phir is kainat ki takhleeq k baray main kahin bhi koi aisa hawala nahin milta keh yeh ALLAH ka noor say banai gaye. Aur bhai jahan koi hadees aisi dekhain jis main doosray ulema ka ikhtlaf ho to mere khial main hamain apnay masla ki ainak utar kar us ka baray main ghor o fikr kar lena chahye. Wassalam.
By: Baber Tanweer, Karachi. on May, 27 2010
Reply Reply
0 Like
اشرف صاحب آپ نے صحیح فرمایا واقعی میں کم علم انسان ہوں آپکی طرح عالم نہیں ہوں ورنہ فوراً جواب دیتا
By: ISHRAT IQBAL WARSI, germany on May, 26 2010
Reply Reply
0 Like
AS SALAM O ALAIKUM Meray Mohtaram bhai Baber Tanveer Sahab me aap se koi behas nahi kerna chahoon ga. Bus itna kahoon ga kisi bhi HADEES ka BUKHARI or SAHI MUSLIM me na hona ye sabit nahi kerta k ye HADEES zaeef hai. Kai HADEES aesi hain jo BUKHARI or MUSLIM me nahi milen gi lekin HADEES ki dusri mustanad kitabon me mutawatir tareeqe se milen gi. ALLAH ne jin Janwaron ko paida kiya or jis cheez se bhi paida kiya to us me ALLAH ki koi na koi HIKMAT zaroor hogi. Ek NUTFAY se ALLAH ne Insaan ko paida kiya to kiya Insaan bhi NAJAS hua jab k Jamhoor Ulma ka kehna hai k Insaan ka NUTFA napak hota hai. GOUR FARMAIYE GA...
By: Mohammad Adeel, Karachi on May, 26 2010
Reply Reply
0 Like
محترم بابر تنویر صاحب السلامُ علیکم آپ نے بہت اچھے سوال پوچھے ہیں وارثی صاحب کے پاس ان سوالوں کا کوئی جواب نہیں اس لیے انہوں نے بھاگنے کا صحیح راستہ اپنایا الله ہم سب کو ہدایت عطا فرمائے
By: Ashraf, Riyadh on May, 25 2010
Reply Reply
0 Like
Bhai Ishrat Iqbal Warsi Sahib Assalam o Alaikum. Bhai ALLAH janta ha keh main ne kisi munazray waghera ke leay aap say yeh sab sawalat nahi keay thay. Aap ko deen kay baray main ziada malumat hain aur main to ek adna sa talib e ilm hun aur deen ko seekhna chahta hun. Yahan comments main likhnay ka maqsad sirf ye ha keh tamam parhnay walay is say faida utha sakain. Raha column likhnay ka sawal to bhai jaisa ke maine arz kia keh main to ek talibe ilm hun aur aap jaisay logon say rehnumai chahta hun. Aaap nay kaha keh aap ki website hazir ha to bhai aap ki bari karam nawazi ha.
By: Baber Tanweer, Karachi on May, 25 2010
Reply Reply
0 Like
محترم بابر تنویر صاحب السلامُ علیکم نہ ہی میں مناظروں پہ یقین رکھتا ہوں نہ ہی اِسے مسلمانوں کے لئے پسند کرتا ہوں پہلے چار سوالوں کا جواب دوں پھر چار نئے سوال اور نتیجہ آخر میں دلوں کی رنجش کی صورت میں نکلتا ہے اگر آپ واقعی صرف علم کی تلاش میں ہیں تو اس نمبر پر کال کرلیجئے گا انشاءَ اللہ جواب مل جائے گا اگر آپ چاہیں تو اپنے خیالات کے اظہار کے لئے کالمز بھی لکھ سکتے ہیں ہماری ویب کے صفحات آپ کیلئے بھی حاضر ہیں امید ہے آپ میری بات سمجھ گئے ہونگے دارالافتاء کنزالایمان 02134855174
By: ISHRAT IQBAL WARSI, mirpurkhas on May, 24 2010
Reply Reply
0 Like
Janab Isharat Iqbal Warsi Sahib, Bhai is hadees ka baray main kuch doosray ulema ki tehqeeq bhi hai jo isay Zaeef hadees sabit kartay hain. Doosray yeh keh ye ahadees Bukhari Muslim aur dossri un kitabon main kyun nahi hai jo keh ziada mustanad hain . Teesri bat yeh keh jab har jandar ALLAH taala ka noor say paida kia gia to Un janwarun k baray main aap ki kia rai he jo keh najas kehalatay hain. kia woh bhi ALLAH k noor say paida keay gay hain. Chothi yeh keh Sora Ikhlas ki ayat : "Lam ya lid, walam yu lad" ka kia matlab hai. Aakhri bat keh jab har cheez Nabi Paki Sallallaho Alaihe Wasallam ka noor say roshni pa rahi ha to Is Ayyat ka kia matlab hai. " ALLAH o noor us samawat wal ard" Barai mehrabani meri aur sab parhnay walun ki rehnumai farma den. Wassalam ,
By: Baber Tanweer, Karachi. on May, 23 2010
Reply Reply
0 Like
جزاک اللہ بھائی
By: Kashif Akram, kuwait on May, 13 2010
Reply Reply
0 Like
SUBHAN ALLAH
By: Mohammad Adeel, Karachi on Mar, 01 2010
Reply Reply
0 Like
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ