جہیز

(Amna Shafiq, Riyadh)
سامنے بیٹھی عائشہ پر نظریں جمائے وہ کسی اور سوچ میں گم تھیں. ابھی نماز سے فارغ ہوکر وہ پلنگ پر لیٹی تھیں.....
اور ان کی سوچ ... وہ سوچ رہی تھیں کہ جہیز حرام ہے. اگر وہ خود کو یہ برا کام کرنے سے روکے گیں تو ان کی بیٹی کا کیا ہوگا..؟
اور اگر وہ یہ برا کام کریں گی تو بیٹی کو کتنی خوشیاں ملیں گی؟
فیصلہ مشکل ہے.. لیکن خوشیاں سب کو عزیز ہیں.
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Amna Shafiq

Read More Articles by Amna Shafiq: 14 Articles with 14346 views »
I'm a Student. I love to read novels . And i like to write too just so i can share my words with world... View More
26 Oct, 2016 Views: 478

Comments

آپ کی رائے
hamari society mein tow jahez ko aak tarf lanat kaha jata hai aur dosri trf betion kee secuirty ka tor pa da detay
Is society mn har chiz ka double face hain .
By: faiza tahir butt, lalamusa,punjab on Sep, 15 2017
Reply Reply
0 Like