ٹریفک کا نظام ، کچھ احتیاط کچھ تدابیر

(Maryam Arif, Karachi)
تحریر: شمائلہ زاہد، کراچی
ٹریفک کسی بھی ملک کی ایک اہم سرگرمی ہے،کسی بھی شخص کو اپنے دفتر کام یا عزیز رشتے داروں سے ملنے جانے کے لیے کسی نہ کسی طرح بس ،گاڑی، موٹر سائیکل یا رکشہ کی ضرورت پڑتی ہے ۔ سڑکوں پر دوڑتی ان گاڑیوں کے نظام کو ہی ٹریفک کہا جاتا ہے۔کراچی جیسے گنجان آباد شہر جس کی آبادی لگ بھگ دو کڑوڑ تو ہو ہی گئی ہوگی۔کیوں کے اس اس ملک میں آخری مردم شماری کب ہوئی تھی ماضی قریب میں نظر دوڑانے سے یاد نہیں آتی۔کراچی میں آئے دن حادثات ہوتے رہتے ہیں۔

گزشتہ ماہ ٹریفک پولیس نے اپنے نظام کو بہتر کرنے کے لیے چند اصول متعارف کروائے ہیں۔ ڈی آئی جی ٹریفک پولیس ڈاکٹرعامرشیخ نے پریس سے بات چیت کرتے ہوئے اعلان کیا کہ اصلاحات مرحلہ وار ہوں گی۔ پہلے مرحلے میں ون وے کی خلاف ورزی کرنے والوں، سگنل توڑنے والی پبلک ٹرانسپورٹ بس اور ویگنیں شامل ہوں گی۔ کوئی بھی بس یا ویگن والا ضرورت سے زیادہ مسافر بسوں یا ویگنوں میں یا ان کی چھتوں پر نہیں بیٹھا سکیں گے۔ اب یہ قسمت غریب کی جو پبلک ٹرنسپورٹ کی کمی کے باعث گھنٹوں انتظار کے بعد بسوں کی چھتوں پر سفر کرنے پر مجبور ہیں۔ اب وہ بیچارے کہاں جائیں۔ ویسے تو اس پر عمل کب ہوگا یہ دیکھنے کی بات ہے۔ون وے کی پاسداری کون کرتا ہے اکثر یہ بات دیکھنے میں آتی ہے کہ نوجوان یو ٹرن نہ ہونے کے باعث موٹرسائیکل اٹھا کر فٹ پاتھ کراس کر کے دوسری طرف لے جاتے ہیں۔

قابل غور بات یہ ہے اگر کسی نے اوپر بیان کردہ قانون کسی نے توڑا تو اسے دو سال کی جیل ہوگء۔اب اگر قانون توڑنے والا شخص ہمارے معتبر ٹریفک پو لیس والے صاحب کو سائڈ پر لے جاکر چائے پانی کے نام پر 100روپے اور کبھی کبھی 50روپے دیتا ہے تو اس پولیس والے کی فرض شناسی کہیں پسے پشت چلی جاتی ہے، بس انہیں تو اپنے پیسے سے مطلب ہے۔جب اس طرح کے لوگ ہوں گے تو پھر جتنے مرضی قانون بنا لیں وہ توڑے ہی جائیں گے پھر مسئلہ ہے ہیلمٹ استعمال نہ کرنا ہے۔ اس ہیلمٹ کی بھی بڑی دردناک کہانی ہے۔ روزانہ کی بنیاد پر نا جانے کتنے ایسے واقعات ہوتے ہیں کہ جن میں خواتین سمیت بچے اور مرد سب ہی حادثات کے باعث جان کی بازی ہار جاتے ہیں۔ کچھ افراد جو موقع پر چل بستے ہیں میں متعدد وہ ہیں جن کو سر پر چھوٹ لگتی ہے۔ اس لیے ہیلمٹ اس لحاظ سے بہت ضروری ہے۔ پھر خواتین پر ہیلمٹ بھی ضروری ہے۔ حادثات کا شکار ہونے والوں میں خواتین بھی شامل ہیں۔ اگروہ خواتین ہیلمٹ پہن لیں تو ان کی جان بچ سکتی ہے۔

ہیلمٹ ضروری تو ہے تاہم مہنگا بھی ہے۔ یہ الفاظ ایک غریب سیدھے سادھے آدمی کے ہوسکتے ہیں۔ ایک غریب آدمی کے لیے ہیلمٹ خریدنا بھی اچھا خاصا مشکل کام ہے۔ موٹرسائیکل کو غریب کی سواری کہا جاتا ہے۔ غریب جس کی دہیاڑی 400یا 500ہے وہ کس طرح پندہ سو یا دو ہزار کا ہیلمٹ کہاں سے لائے گا۔ کچھ روز پہلے حکومت کی جانب سے ہیلمٹ تقسیم کیے جارہے تھے۔ غریب تو غریب امیر بھی ہیلمٹ سے بھر گاڑی پر ٹوٹ پڑے۔ پھر ٹریفک پولیس والے ہیلمٹ سے بھری گاڑی لیکر فرار ہی ہوگئے۔ حادثات سے بچنے کے لیے آپ جتنے مرضی قانون بنالیں حادثات تب تک کم نہیں ہوں گے جب تک مجرم کو سزا نہ دی جائے اور چائے پانی کے نام پر دی جانے والی رشوت کو جڑ سے اکھاڑ کر پھنک نہ دیا جائے۔ اس کے ساتھ ساتھ ہر فرد واحد کو اپنے طور پر خود اپنی اپنے بچوں کی زندگی کی خاطرسوچ سمجھ کر ٹریفک قوانین کی پاسداری کرتے ہوئے ڈرائیونگ کرنی چاہے۔ حکومت سے بھی عاجزانہ التجا ہے کہ وہ قوم کے ان رکھوالوں کی تنخواہوں اور دیگر مرعات بڑھا دیں تاکہ وہ چائے پانی کے نام پر 100یا200میں اپنے فرائض منصبی سے دھوکا اور اپنے ایمان کے ساتھ کھلواڑ نہ کریں۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Maryam Arif

Read More Articles by Maryam Arif: 1226 Articles with 497529 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
13 Nov, 2016 Views: 240

Comments

آپ کی رائے