اجڑے خواب قسط نمبر ٧

(Nadia khan, rawalpindi)
عورت اتنی بے بس کیوں ہے

سر پر دوپٹہ اوڑھے ہلکے رنگ کے کپڑوں میں ملبوس ماہ رخ کی آنکھیں گہری اداسی کی دھند میں لپٹی ہوئی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اداسی اس کے پورے وجود سے جھانک رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ صورتحال ایسی تھی کہ وہ اس شادی سے انکار بھی نہ کرسکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ؟ مولوی صاحب کی آواز اس کی کانوں سے ٹکرا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟ اس نے خاموشی سے نکاح نامے پہ سائن کرڈاے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟ مرد مولوی صاحب کے ساتھ اُ ٹھ کر باہر جاچکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ اب صرف یہاں عورتیں اور تایا ابو ہی تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟ باچا خان کی بہن نے اس کے چہرے سے چادر سرکائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ سب عورتیں باری باری مبارک باددے رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ تایا ابو نے ماہ رخ کی سر پر ہاتھ رکھا بس اتنا ہی کہا ۔۔۔۔۔۔؟ میری دعائیں ہمیشہ تمہارے ساتھ رہے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ میں نے تمہارے اچھے نصیب کی اپنے رب سے بہت التجائیں کی ہیں اپنے گھر میں آباد اور سکھی رہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟ سرخ آنکھوں والی ماہ رخ ہونٹ دبائے ہوئے بمشکل اپنے آنسو پینے کی کوشش کررہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟ اسے دعا دے کر تایا ابو اپنے کمرے میں چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟ بارات جانے کیلئے تیار تھا ماہ رخ نے اپنے آپ کو حالات کے دھارے پر چھوڑ دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اسے غم تھا تو اس بات کا کہ وہ عاشر احمد کا اصل چہرہ سب کودکھا نہیں پائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اور دکھ اس بات کا تھا کہ اس نے ساحل پر اتنا اعتبار کیوں کیا جس اعتبار کی وہ قابل ہی نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ماہ رخ باچا خان کی گھر پہنچ گئی تھی لیکن باچا خان کا کہی پتا نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ نہ وہ بارات کے ساتھ آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اور نہ اب تک سامنے آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟ ؟؟ ماہ رخ کے دل میں ایک عجیب سا خوف تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟ یہ تو اس کو پتا تھا کہ وہ عمر میں اسے بڑھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ لیکن کبھی باچا خان کو دیکھا تک نہیں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ماہ رخ پوری جان سے تھرا کررہ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔؟ سینڈل کی تلاش میں سر گرداں لہنگے میں الجھ کر وہ منہ کے بل گرنے کو تھی ۔۔۔۔۔۔۔؟ جب دو ہاتھوں نے شانوں سے تھام کر سہارا دیا۔۔نگاہ اٹھاتے ہی اس نے سامنے باچا خان کو پایا ۔۔۔۔۔۔۔تو دل نے بے اختیار دھڑک اٹھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ کون سا خزانہ ڈھونڈا جارہا ہے بیڈ کے نیچے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ سجے سنورے چہرے پر ایک تفصیلی نگاہ ڈالتے ہوئے وہ بڑے سکون سے پوچھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ماہ رخ کسمسا کر تھوڑا پیچھے ہٹی اور بیڈ کے کنارے ٹک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اس کی وہم وگمان میں بھی نہ تھا کہ یوں اچانک باچا خان کی آمد ہو سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔؟باچا خان اس کی بالکل ساتھ بیٹھ گیا تو ماہ رخ کا رہا سہا اعتماد بھی جاتا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟وہ یونہی نروس سی نظریں جھکائے داہنے ہاتھ سے بائیں ہاتھ کی انگلی میں موجود انگوٹھی کو گھماتی رہی ۔۔۔۔۔۔؟ ماہ رخ کی ہاتھ پاوں ٹھنڈے ہورہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اسے تو یقین ہی نہیں تھا کہ باچا خان اس طرح کا ہوگا ۔۔۔۔۔؟؟؟ کالا رنگ لمبا چوڑا قد پھولا ہوا پیٹ ایسا لگ رہا تھا جیسے سامنے گوشت کا پہاڑ کھڑا تھا ماہ رخ اپنی جگہ ساکت ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔؟ باچا خان نے اس کا ہاتھ پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ماہ رخ کے ہاتھ کانپنے لگے مجھے تمہارے بارے میں سب کچھ پتہ ہیں تمہارے تایا ابو نے بتادیا ہے مجھے ۔۔۔۔اورتمہیں بھی پتا ہونی چاہئے کی میں نے تم سے شادی کیوں کی ۔۔۔۔۔۔ کیونکہ میری بچے نہیں ہیں اور میری پہلے بیوی بیمار ہے مجھے بچوں کی سخت ضرورت ہیں مجھے تم سے بچے چاہئے ۔۔۔۔؟؟باچا خان کی موٹے ہاتھوں میں دبا اس کا نرم ہاتھ پسینے سے بھیگ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ماہ رخ نے اپنا ہاتھ اس کی گرفت سے نکالنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن ناکام رہی وہ رو دینے کو تھی مجھے جانے دو مجھے نہیں رہنا آپ کے ساتھ میرے ساتھ زبردستی ہوئی ہے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔؟ کیوں جانے دوں برا لگ رہا ہے اس کے الفاظ سر گوشی بن گئے اس نے ماہ رخ کو زبردستی اپنی طرف موڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ جاری ہے قسط نمبر ٧

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Nadia khan

Read More Articles by Nadia khan: 10 Articles with 5423 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
22 Feb, 2017 Views: 810

Comments

آپ کی رائے
Interesting,,,,,,
By: Mini, mandi bhauddin on Feb, 23 2017
Reply Reply
0 Like