مقالات و جامعات اور ان کے نگران مقالہ ’’جاوید احسن شخصیت و فن‘‘

(Farid Sajid Laghari, Dera Ghazi Khan)

گزشتہ چندسالوں سے مقتدرجامعات طلبہ وطالبات سے قدآورعلمی وادبی شخصیات پر ایم فل کے تنقیدی تحقیقی مقالہ جات رقم کرارہی ہیں۔جو کہ یہ اُن کا ناصرف احسن اقدام ہے بل کہ اپنے فرائضِ منصبی کواحسن طریقے سے پایۂ تکمیل تک پہنچا رہی ہیں۔جن کے اس اقدام کوسراہناہماراادبی فریضہ ہے۔
علاوہ ازیں ان شخصی جامع مقالات کی تکمیل کے بعد ان کی طباعت جامعات کے دائرہ کارمیں شامل ہے۔یادرہے یہ مقالہ جات ایک خاص ترتیب،ترکیب اورابواب بندی سے مقالہ نگاروں کے سپرد کیے جاتے ہیں اورطالب علم کے لیے ایک نگران(جو نگرانِ مقالہ ہوتاہے) مقررکیاجاتاہے جو ایک ہشت پہلو اورکثیرالمطالعہ شخصیت ہوتا ہے۔تاکہ وہ مقالہ کی ترتیب ،ترکیب،ابواب بندی،طالب علم کے بشری تسامحات اورسرقہ کا بنظرِ غائرمطالعہ کرے۔بایں ہمہ مقالہ کی ابواب بندی اورحوالہ جات کی صحت پر کڑی نظررکھے۔یہ بھی دیکھے کہ مقالے کامواد طبع زادہے اورفراہم کردہ معلومات درست وصحیح ہے ۔کیوں کہ طلبہ وطالبات میں تنقیدوتحقیق کی صلاحیت پیداکرنا نگران اساتذہ کے فرائضِ منصبی میں شامل ہے۔ اس کارہائے سخت جانی کے بعداُستاد طالب علم کا زبانی امتحان لے کر اس کارِ مفروضہ کے عوض اُسے سندِ صلاحیت جاری کرے۔
حال ہی میں ایک شخصی مقالہ بعنوان ’’جاویداحسن شخصیت وفن ‘‘اپنی تحقیق کے تمام مراحل طے کرتا ہوا بہاؤالدّین زکریایونیورسٹی شعبہ اردو کے مقالات میں اضافے کا سبب بنا۔مقالہ نگاروں عبدالوحیدرولنمبر ۱۶ ،اور مقالہ کے نگران شعبہ اُردو کے فاضل پروفیسر ڈاکٹرمحمدساجدخان ہیں۔مقالہ سالِ تحقیق ۲۰۱۳ء تا۲۰۱۵ ہے اورمقالہ مذکورنے ۲۰۱۶ء میں بہ حسن وخوبی تکمیل کے مراحل طے کیے۔مقالہ کی ضخامت ۱۸۳ صفحات اور سائزA4پورٹریٹ ہے۔مقالہ کی اوّلیں فہرست صفحہ نمبر۲ پر یہ حلف نامہ تحریر ہے۔
’’میں حلفیہ بیان کرتاہوں کہ مقالہ بعنوان ’’ جاویداحسنؔ شخصیت وفن‘‘ میری ذاتی محنت اور کاوش کانتیجہ ہے۔اس عنوان کے تحت یہ مقالہ کسی بھی یونیورسٹی میں کسی ڈگری کے حصول کے لیے پیش نہیں کیاگیا۔‘‘
یہ مقالہ مذکورہ حلف نامہ مع دستخطی طالب علم اورفون نمبر جامعہ بہاؤالدّین زکریا،ملتان میں جمع ہوچکا ہے اورراقم الحروف کے پاس ایک کاپی بطورریکارڈ محفوظ ہے۔جس کاجائزہ کچھ یوں بنتا ہے ۔ملاحظہ ہو!
صفحہ نمبر۷:’’سلیمان ادبی اکیڈمی ۱۹۸۲ء میں جاویداحسنؔ خان نے بانی کے طورپررکھی ۔اس تنظیم کے تحت دودرجن سے زائداُردو،سرائیکی کتب شائع ہوئی ہیں‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت:کوئی حوالہ موجود نہیں ۔آیا اُردواورسرائیکی کی کون سی کُتب اس ادبی ادارے کے تحت مراحلِ اشاعت سے گزریں،اُن کاسنِ طباعت کیااورمصنف کون ہیں۔اصولِ مقالہ جات اور قواعدکی رُو سے اُن کتب کی ترتیب تفصیل وارواضح ونمایاں کرنی چاہیے۔ (ساجد)
٭مذکورہ بالا صفحہ پر لکھتے ہیں کہ:
’’پریس کلب کے لیے زمین لیز پر لی گئی ۔جس کے لیے عبدالرحمٰن غوری نے اہم کردار اکیا ۔
گرفت:تحقیق نادرست ہے ۔متعلقہ کتاب ’’دیرہ غازیخان کے تہذیبی خدّو خال‘‘میں عبدالرحیم غوری کا اندراج ہے۔نہ کہ عبدالرحمٰن خاں غوری کا۔
صفحہ نمبر۹: ؂وہ بھی نیل گگن سے اُترے جھیل کے گہرے پانی میں
ہم بھی گھنٹوں گھنٹوں ڈوبے ،اشکوں کی طغیانی میں
گرفت:یہ ’’گھنٹوں گھنٹوں‘‘کیا بلاہیں۔مقالہ نگار کی کارستانی اورنگرانِ مقالہ کی مداہنت سے شعر معنوی سطح پر مجروح ہوا ہے۔یہیں پر مجھے جاویداحسنؔ کا ایک شعر یادآرہا ہے۔جس میں انھوں نے کیا خوب کہا:
؂دستارِ علم اور ابوجہلوں کے زیب سر
جاوید ہم یہ ظلم گوارہ نہ کر سکے ؂۱
بہر کیف مذکورہ بالا شعر درست صورت میں ملاحظہ فرمائیے:
؂وہ بھی نیل گگن سے اُترے جھیل کے گہرے پانی میں
ہم بھی گھٹنوں گھٹنوں ڈوبے ، اشکوں کی طغیانی میں ؂۲
صفحہ نمبر۱۰: ؂ جاویدؔ ہروجود کا اپنا ہے مرتبہ
ہر چیز ہے اپنے جمال میں
گرفت:شعرکا مصرع ثانی نامکمل ہے۔درست شعرملاحظہ ہو:
؂ جاویدؔ ہر وجود کا اپنا ہے مرتبہ
ہرچیز بے مثال ہے اپنے جمال میں ؂۳
صفحہ نمبر۱۱: پر ایک پیراگراف ہے!
’’جاویداحسنؔ خان بڑے شفیق اورمخلص انسان …………………………تا………………ان کی شخصیت اور فن کا اندازہ ان کے نام مختلف اخبارات اورکتب میں چھپنے والے تبصروں سے لگایا جاسکتا ہے‘‘
گرفت:حالانکہ یہ پیرا گراف من وعن صفحہ نمبر آٹھ پر پہلے سے موجود ہے۔ثابت ہوا کہ نگرانِ مقالہ نے مقالے کامطالعہ ہی نہیں کیا۔
صفحہ نمبر۲۰: ’’جاویداحسنؔاپنی تحریروں میں لکھتے ہیں کہ !میں اگرانگریزی زبان میں لکھناچاہوں تولکھ سکتاہوں۔‘‘
گرفت:یہ جملے مقالہ نگاری کی اختراع ہیں۔کیوں کہ جاویداحسنؔ اس مقالہ سے پہلے ہی رحلت فرماچکے تھے۔مقالہ نگار کی اُن سے کوئی ملاقات نہیں ۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کن قومی اخبارات،جرائد یا کتب میں جاویداحسنؔ نے لکھا ہے کہ مجھ میں English Language پردستگاہ اور creativityکی صلاحیت موجود ہے۔ (ساجد)
صفحہ نمبر۳۱: ؂ میں نے صحرا میں کچھ پھول کھلے دیکھے ہیں
صرف گلشن کو ہی اعزاز نہ بخشا جائے
گرفت:شعر کے مصرع ثانی میں الفاظ’’کوہی‘‘ میں تعقید لفظی پیدا کی گئی ہے۔شعر مقالہ نگار کی عدم توجہی سے اپنافنی ترفع کھو چکا ہے ۔ اہلِ فکرونظر جانتے ہیں کہ فاعل کے فوراًبعد ’’ہی ‘‘آنا چاہیے۔درست شعرملاحظہ ہو
؂ میں نے صحرا میں بھی کچھ پھول کھلے دیکھے ہیں
صرف گلشن ہی کو اعزاز نہ بخشا جائے ؂۴
صفحہ نمبر۳۲: ؂ ساون رُتوں میں ابرِ گوہر بار دیکھنا
برسے گا ٹوٹ کر سرِ کُہسار دیکھنا
گرفت:اچھا خاصا شعر بحرِ مضارع میں تخلیق ہوا تھا۔شعرکا مصرع اولیٰ مقالہ نگار کی کارستانی سے خارج ازبحرہوگیا ہے۔ درست شعردیکھیے:

؂ ساون رُتوں میں ابرِ گُہر بار دیکھنا
برسے گا ٹوٹ کر سرِ کُہسار دیکھنا ؂۵

صفحہ نمبر۳۳: ؂ میں نے صحرا میں کچھ پھول کھلے دیکھے ہیں
کون کہتا ہے کہ حسن خرابوں میں نہیں
گرفت: شعرکے مصرع اولیٰ میں ایک سبب خفیف کم ہے اورمصرع ثانی تحریفِ بحرِ کاشکار ہے۔
؂ میں نے صحرا میں بھی کچھ پھول کھلے دیکھے ہیں
کون کہتا ہے کوئی حسن خرابوں میں نہیں ؂۶
صفحہ نمبر۳۴: ؂متاعِ شعر و سخن تخت و تاج ہے میرا
یہی زمیں ہے وہ جس پہ کہ راج ہے میرا
گرفت:شعرکے مصرع ثانی میں لفظ ’’پہ ‘‘ کا اندراج غلط ہے ۔لہذا ’’پر ‘‘لکھاجائے۔دوسرا یہ کہ صفحہ نمبر۳۹پر بھی یہ شعردوبارہ اسی صورت میں ہے ۔اُسے بھی درست کرلیاجائے۔
صفحہ نمبر۳۵: ؂بے صورت میری موت ہے میں چُپ نہ رہوں گا
گرفت:’’بے صورت موت‘‘کی ترکیب پہلی بارپڑھی ہے ۔لغت پریشان ہے کہ ’’بے صورت موت ‘‘کیابلا ہے۔صحیح مصرع ملاحظہ ہو۔
ع:بے صوت مری موت ہے میں چُپ نہ رہوں گا ؂۷
صفحہ نمبر۳۶: ع: امن وانصاف ہیں دنیامیں میری راہِ عمل
گرفت:لفظ ’’میری،مری‘‘کے دوتلفظ ہیں ۔پہلی بروزن دوسبب خفیف جبکہ دوسری بروزن وتدمجموع کے ہے۔شعرأہردو کو توازن کے تحت استعمال کرتے ہیں۔گویا مصرع ہٰذا لفظ ’’میری ‘‘ کی وجہ سے بحرِرمل سے بحرِمتدارک مخبون مقطوع میں تبدیل ہوگیا ہے۔کیوں کہ مصرع کے اس مقام پر لفظ’’مری‘‘کا مقام ہے۔
ع: امن وانصاف ہیں دنیامیں مری راہِ عمل
صفحہ نمبر۳۷: ؂اُڑتا ہوا فضامیں کوئی عکس ہی نہیں
مرمر کے جی رہاہوں تیرے انتظارمیں
گرفت:جیسا کہ میں مندرجہ بالا سطور میں لکھ چکا ہوں کہ بعض الفاظ کے تلفظ دو ہوتے ہیں ۔اسی طرح لفظ’’تیرے‘‘ کے دوتلفظ’’تیرے اورترے‘‘ہیں۔مصرع مذکورمیں لفظ’’ترے ‘‘کامقام ہے۔
؂اُڑتا ہوا فضا میں کوئی عکس ہی نہیں
مرمر کے جی رہا ہوں ترے انتظار میں ؂۸
علاوہ ازیں اسی صفحہ کا آخری شعربھی لفظ ’’تیرے‘‘کی مرقومہ املاسے بے وزن ہوگیا ہے لہذادرست شعر ملاحظہ ہو:
؂ترے سادہ دلوں کی خیرساقی
زمانہ مہرباں ہونے لگا ہے
صفحہ نمبر۳۸: ؂گمراہی پھیلا رہے ہیں آگہی کے نام پر
لوگ اندھے ہوگئے دیدہ دری کے نام پر
گرفت:مصرع اولیٰ میں لفظ’’گمراہی ‘‘ کے اندراج سے شعروزن سطح پر مضروب ہے۔جب کہ مصرع ثانی میں پروف کی غلطی سے ’’دیدہ وری ‘‘ کے بجائے ’’دیدہ دری‘‘غلط املاہے ۔درست شعرملاحظہ ہو:
؂گمرہی پھیلا رہے ہیں آگہی کے نام پر
لوگ اندھے ہوگئے دیدہ وری کے نام پر ؂۹
صفحہ نمبر۴۰: ؂بکھرگیا ہے ہر اک خواب خوشنما اپنا
چمن اُڑا گئی دشت کی ہوا اپنا
گرفت:معلوم ہوا کہ مقالہ نگار اورنگرانِ مقالہ کا اردوادب سے لگاؤ کم ہی ہے ۔ کیونکہ ہوا چمن کو اُڑاتی نہیں بلکہ اُجاڑتی ہے۔شعرکا مصرع ثانی الفاظ کے قطع وبرید سے بری طرح متاثرہوا ہے۔درست شعرملاحظہ ہو:
؂بکھر گیا ہے ہر اک خواب خوشنما اپنا
چمن اُجاڑ گئی دشت کی ہوا اپنا ؂۱۰
صفحہ نمبر۴۴: ؂ جل رہا ہے بدن آلاؤ سے
گرفت:لفظ ’’آلاؤ ‘‘کی املا الف ممدودہ سے غلط ہے ۔مرقومہ املا سے شعربے وزن ہونے سے نہ بچ سکا۔لہذا مذکورہ لفظ الف مقصورہ سے ’’اَلاؤ‘‘لکھاجائے۔
صفحہ نمبر۴۷: ؂ تھل کی ہریالی کا ہے بارانِ رحمت پر مدار
دوپہر کی دھوپ میں ہر نخل ہے محشرِ بجاں
گرفت:ترکیب ’’محشرِبجاں‘‘اضافت کے بے محل استعمال نے شعرکا حلیہ بگاڑ دیا ہے۔درست شعردیکھیے:
؂ تھل کی ہریالی کا ہے بارانِ رحمت پر مدار
دوپہر کی دھوپ میں ہر نخل ہے محشر بجاں ؂۱۱
صفحہ نمبر۴۸: ؂روہی کے ٹیلے ہیں عجب خواب جزیرے
آنکھوں میں ہے اک نیندسی سینے میں سوجھل
گرفت:شعرکے مصرع اولیٰ میں ایک ہجائے کوتاہ کم ہونے سے شعربے وزن ہے۔درست شعردیکھیے:
؂روہی کے یہ ٹیلے ہیں عجب خواب جزیرے
آنکھوں میں ہے اک نیند سی سینے میں ہے سوجھل ؂۱۲
صفحہ نمبر۴۸تا۵۲:’’تخلیق کائنات سے لے کرآج تک حیات وکائنات کے بارے میں بے شمارتنقیدوتحقیق ہوچکی ہے۔جس سے فلسفۂ جبروقدروجود میں آیا ہے…………تا…………جاویداحسن ؔ کے اسلامی نظریۂ حیات میں احسن ؔکاعقیدہ روحِ توحیداورخطۂ ارض کی ہر قوم اُس کی ملت ہے۔‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت: یہ مضمون سرقہ بالجبرکی ذیل میں آتا ہے۔راقم الحروف کا مضمون بعنوان’’جاویداحسنؔکا نظریۂ حیات‘‘سہ ماہی ’’دامان‘‘شمارہ نمبر(۱ ) چوٹی بالا،دیرہ غازیخان ،تاریخ طباعت اکتوبرتادسمبر۲۰۰۶ء میں طباعت شدہ ہے۔جو اَب کے میری کتاب ’’جاویداحسنؔشخصیت وفن‘‘ کا حصہ بھی ہے۔مقالہ نگار کواُس کی چوری اورسینہ زوری کی داد دینی چاہیے کہ انھوں راقم الحروف کامضمون مذکورمن وعن اپنی تحقیق اورتخلیق کا حوالہ بنایااورنگرانِ مقالہ بھی اس ادبی بددیانتی پر خاموش رہے ۔ غالبؔ نے کیا خوب کہا :
؂قطرے میں دجلہ دکھائی نہ دے اورجزومیں کُل
کھیل بچّوں کا ہوا دیدۂ بینا نہ ہوا
راقم الحروف کا مضمون مذکورہ ملاحظہ ہو:
’’ جاویداحسنؔکانظریۂ حیات
تخلیقِ کائنات سے لے کرآج تک حیات وکائنات کے بارے میں بے شمارتنقیدوتحقیق ہوچکی ہے۔جس سے فلسفۂ جبروقدروجودمیں آیا۔شوپنہارؔ نے انسان کوقیدوبند سے تشبیہ دی ہے۔اُس کے نزدیک یہ زندگی دارِ محن ہے۔شوپنہارؔ نے تمام امکانات کوردّکردیا ہے۔لیکن نطشےؔ نے اس کے برعکس حیات وکائنات کو اہمیت دی ہے۔نطشےؔ ترکِ آرزو کوزیست کی توہین سمجھتاہے۔غالبؔ کی زندگی دیکھیں توغالبؔ کا فلسفۂ حیات فعال اورمعروضی ہے۔غالبؔ کاانسان نمودکاخواہاں ہے۔غالبؔ کے نزدیک انسان کی شخصیت لچک دار ہے ۔غالبؔ زندگی کے اخیرتک خوشی کی تلاش میں سرگرداں ر ہے۔غالبؔ اس سے بخوبی واقف ہیں کہ موت سے قبل حزن وملال اور زندگی کے نشیب وفراز سے نجات ممکن نہیں۔چناں چہ کیوں نہ اس حیات پر قہقہوں کی قبا ڈال دی جائے۔ کیوں کہ زندگی اورادب لازم وملزوم ہیں ان کو ایک دوسرے سے جدانہیں کیا جاسکتا ۔اس لیے زندگی آرزو اورادب اس کا سلسلہ ہے۔ مذکورہ فلسفہ غالبؔ سے ہوتاہوا جاویداحسنؔ تک یوں پہنچتا ہے!
؂عمر وقفِ گردشِ ایّام ہو کر رہ گئی
سعیِ لا حاصل مرا انجام ہوکر رہ گئی
جاویداحسنؔ کاشمار عظیم آفاقی شعرأ میں ہوتاہے۔ آپ ’’سرائیکی ثقافت، فی احسنِ تقویم اورجمالِ صحرا‘‘کے خالق ہیں۔’’جمالِ صحرا‘‘ جاویداحسنؔ کاشعری مجموعہ ہے۔دراصل ’’جمالِ صحرا‘‘ میں بھی فلسفۂ حیات ہے۔
؂ قرض کی پیتے تھے مَے لیکن سمجھتے تھے کہ ہاں
رنگ لائے گی ہماری فاقہ مستی ایک دن
جاویداحسنؔ بھی مارکس اورغالبؔ کے فلسفۂ حیات کے قائل ہیں۔غالبؔ کا نظریہ ہے کہ ہماری فاقہ مستی ایک دن رنگ لائے گی ۔لیکن جاویداحسنؔ اس نظریے کو آگے بڑھاتے ہوئے لکھتے ہیں:
؂ وہی مقام کہ کہتے ہیں ’’ آبِ گُم ‘‘جس کو
اسی مقام پہ ملتے ہیں فاصلے سارے
نطشےؔ کی طرح جاویداحسنؔ ترکِ آرزو کو زیست کی توہین سمجھتے ہے اورترکِ آرزو کے برعکس اپنی منزل پر تیربہ ہدف یوں پہنچتے ہیں:
؂آواز کی قوّت کاتمھیں علم نہیں ہے
میں گنبدِ افلاک کو دو نیم کروں گا

گر وقت نے ہاتھوں سے قلم چھین لیا بھی
میں حرفِ جنوں نوکِ زباں کرکے رہوں گا

جاویدؔ مرے شعر ہیں تنویرِ محاسن
میں دامنِ تخلیق کو تاروں سے بھروں گا
جاویداحسنؔ کی شاعری کا لینڈ سکیپ آئیڈیل ورلڈ (مثالی دنیا )ہے ۔غالبؔ کے ہاتھ بے جنبش ،آنکھوں میں دم ہے۔’’رہنے دو‘‘ ساغرو مینا مرے آگے!
لیکن جاویداحسنؔ کے عقل و خرد میں ایک اورجہاں ہے۔سنیئے ! جاویداحسنؔ کی زبانی:
؂ انیسِ جسم و جاں ذاتِ مکرّم ہے جہاں ہم ہیں
بساطِ زندگی مثلِ بریشم ہے ، جہاں ہم ہیں
شاعر کی بلند خیالی قابلِ تحسین ہے۔’’جہاں ہم ہیں‘‘سے مراد کیا ہوگا۔کیا اس کا مفہوم ہے (جس جہاں میں ہم ہیں وہی مکرّم اوربریشم ہے)نہیں ہرگزنہیں، لفظوں کی تطبیق اورقوّتِ متخیّلہ وممیّزہ بھی اس امرکی شہادت دیتی ہیں۔’’جہاں ہم ہیں‘‘ کامطلب مذکورہ بالا نہیں، شاعرکہتا ہے ہمارے ذہن میں جو جہاں ہے ’’وہ ذاتِ مکرّم اور مثلِ بریشم ‘‘ہے۔آگے دیکھیے:
؂ ہماری سلطنت میں مختلف ہے قدرِ انسانی
فقیرِ بے نوا سب سے معظّم ہے ،جہاں ہم ہیں
زندگی کے کسی حصّہ میں جاکے دیکھو کہ کلیدِ کامرانی سعیِ پیہم سے مربوط ہے ۔آئیے دیکھتے ہیں جاویداحسنؔ کس طرح اس مضمون کوقلم بندکرتے ہیں:
؂ کسی انسان کی محنت یہاں ضائع نہیں جاتی
کلیدِ کامرانی سعیِ پیہم ہے ، جہاں ہم ہیں
جاویداحسنؔ کا نظریۂ حیات قابلِ قدر ہے ۔جاویداحسنؔ کے ذہن میں جو جہاں ہے اُس میں سبز پرچم لہرا رہا ہے اورسعیِ پیہم رائگاں نہیں بل کہ کلیدِ کامرانی ہے۔ علامہ اقبالؒ نے کہا!
؂ آدمیّت احترامِ آدمی
با خبر شو از مقامِ آدمی
علامہ اقبالؒ فلسفۂ جبر کے مقابلے میں فلسفۂ قدر کو مقدم سمجھتے ہیں۔ہمارا عظیم مذہب اسلام بھی ہمیں یہی درس دیتا ہے۔علامہ اقبال کے اس تصور سے معلوم ہوتا ہے کہ بات صرف مسلم اورغیرمسلم کی نہیں ’’آدمیّت احترامِ آدمی‘‘اولادِ آدمؐ کے لیے ہے۔جاویداحسنؔ اپنی نظم ’’دستورِ حیات‘‘میں فلسفہٗ قدرمیں اس طرح روح پھونکتا ہے :
؂ امتیازات میں محدود نہیں میری نظر
ہے مرا بھائی ، ہو کافر کہ مسلماں کوئی

میں نے انسان کی عظمت سے محبت کی ہے
میرے اخلاق میں شودر نہیں انساں کوئی
جاویداحسن ؔ زندگی کو فلسفیانہ نگاہ میں دیکھنے کی بجائے زندگی کے مسائل کو آئینۂ دل سے دیکھتے ہیں۔جاویداحسنؔ زندگی کے نامساعد حالات اورناسازگار ماحول میں ہمیں جینے کا درس دیتے ہیں۔کائنات سے کٹ کر جینے کو گناہ سمجھتے ہیں اوراتحادویگانگت کے داعی نظرآتے ہیں۔ کچھ اشعار دیکھیے:
؂میں جی رہا ہوں جینا مرا فریضہ ہے
جہانِ نو کی فضا گرچہ ساز گار نہیں
؂مرا وجود عبارت ہی کائنات سے ہے
میں کائنات سے کٹ کر جیوں تو کیسے جیوں
جاویداحسنؔکے ہاں زندگی کی تمام صورتیں جلوہ گر ہیں۔وہ زندگی اور لوازماتِ زندگی سے بے انت محبت کرتے ہیں۔ان کا یہ انداز فلسفیانہ اورحکیمانہ ہے۔ جوہمیں زندگی کے متعلق سوچنے پرمجبورکرتاہے۔جاویداحسنؔ کے نظریۂ حیات میں ان کااحسن عقیدہ روحِ توحیداورخطۂ ارض کی ہرقوم اس کی ملّت ہے۔
؂ روحِ توحید ہے احسنؔ یہ عقیدہ میرا
خطّۂ ارض کی ہرقوم ہے ملّت میری ‘‘ ؂۱۳
٭٭٭
صفحہ نمبر۵۵: ’’۱۹۲۰ء تا۱۹۸۰ء کے دودہائیوں کازمانہ ہمارے ادب میں کئی ادبی اورفکری تحریکات کازمانہ ہے۔‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت: ۱۹۲۰ء تا۱۹۸۰ ء تک کازمانہ دودہائیاں نہیں بل کہ چھے دہائیوں کومحیط ہے ۔معلوم ہوا مقالہ نگار کا ریاضی بھی کمزور ہے۔ (ساجدؔ)
صفحہ نمبر۵۷: ع:حریم ذا ت میں ہے شورش فغاں تیری
گرفت: لفظ’’حریم ‘‘ اور’’شورش‘‘پراضافت لازمی ہے ۔بغیراضافت شعرکے آہنگ کانظام درہم برہم ہورہاہے۔
ع:حریمِ ذا ت میں ہے شورشِ فغاں تیری ؂۱۴
صفحہ نمبر۵۸: ؂مرے وطن تیری مٹی سے بدن میرا
ہے تُو ہی میرا نشیمن ،تو ہی چمن میرا
تیرے اناج پہ قائم ہے زندگی میری
تیری کپاس سے بنتا ہے پیراہن میرا
گرفت:مصرع اوّل میں لفظ’’تیری‘‘ سوم میں ’’تیرے‘‘اورمصرع چہارم میں ’’تیری ‘‘وزن میں مخل ہیں۔لہذا یہ بہ تخفیف ’’ی‘‘ ہونے چاہئیں ۔دوسرایہ کہ لفظ ’’پیراہن‘‘ سے مصرع خارج از بحرہوگیا ہے۔مقالہ نگار اورنگرانِ مقالہ اس بات سے آگاہ ہیں کہ لفظ’’پیراہن‘‘ کے دوتلفظ ہیں۔ایک تلفظ اشباع کے ساتھ اور دوسرابغیر اشباع کے ہے۔قطعہ ہٰذا کے مصرع چہارم میں بغیر اشباع ’’پیرہن‘‘ ہونا چاہئیے۔
؂مرے وطن تری مٹّی سے ہے بدن میرا
ہے تُو ہی میرا نشیمن ، تُو ہی چمن میرا
ترے اناج پہ قائم ہے زندگی میری
تری کپاس سے بنتا ہے پیرہن میرا ؂۱۵
صفحہ نمبر۶۳: ؂ لوٹے گا نہ زردار شبستان کے اُجالے نادار کے حصے میں شبِ تار نہ آئے گی
گرفت:مصرع اولیٰ لفظ’’شبستان‘‘کے اعلانِ نون سے مصرع خارج ازبحرہوا ہے۔لہذا لفظ ’’شبستاں‘‘ہونا چاہیے۔ (ساجد)
صفحہ نمبر۶۸: ؂ جب کبھی بکتا ہے بازارمیں مزدور کا گوشت
شاہراہوں پر غریبوں کا لہو بکتا ہے
آگ سی سینے میں رہ رہ کے اُبلتی ہے کہ نہ پوچھ
اپنے دل پر مجھے قابو نہیں رہتا ہے۔
گرفت :قطعہ کا مصرع سوم مقالہ نگار کی کارستانی سے بے وزن ہوگیا ہے۔صحیح قطعہ ملاحظہ ہو:
؂ جب کبھی بکتا ہے بازارمیں مزدور کا گوشت
شاہراہوں پر غریبوں کا لہو بکتا ہے
آگ سی سینے میں رہ رہ کے اُبلتی ہے نہ پوچھ
اپنے دل پر مجھے قابو نہیں رہتا ہے ؂۱۶
صفحہ نمبر۷۱: ؂گرمیٔ سوزِ دروں سے مجھ پہ افشاں ہوا
جسم کے زنداں سے باہر کربلا کوئی نہیں
گرفت:مصرع اولیٰ میں ایک سبب خفیف کم ہونے کے باعث مصرع خارج ازوزن ہوگیا ہے۔علاوہ ازیں مصرع ثانی میں لفظ ’’افشاں‘‘ بے محل ہے۔ درست شعر ملاحظہ ہو:
؂گرمیٔ سوزِ دروں سے مجھ پہ یہ افشا ہوا
جسم کے زنداں سے باہر کربلا کوئی نہیں ؂۱۷
صفحہ نمبر۸۱: ’’عربی کے دوسرے شاعر جنہیں نعت گوئی میں خاص شہرت حاصل ہوئی ہے کعب بن ثابت ہیں۔‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت:عربی زبان کے دوسرے نعت گو شاعر جنھیں نعت گوئی میں خاص شہرت حاصل ہے کعب ؓبن زہیرؓہیں ۔کعبؓ بن ثابت غلط تحقیق ہے۔ (ساجدؔ)
صفحہ نمبر۸۳: ’’مندرجہ ذیل قطعہ شاہ عبداللطیف دہلوی کا ہے ‘‘ (مقالہ نگار)
؂ یا صاحب الجمالُ یا سیّدُ البشر
مِنْ وَّ جْہَک المنیر لقد نُور القمر
لا یمکن الثناء کمَ کان حقہ‘
بعداز خدابرزگ توئی قصّہ مختصر
گرفت : شاہ عبداللطیف دہلوی نام کا کوئی شاعر نظر سے نہیں گزرا ۔مقالہ نگار کی تحقیق نادرست ہے ۔البتہ اس قطعہ کے حوالے سے جاویداحسنؔ اپنی کتاب ’’فی احسنِ تقویم ‘‘ میں لکھتے ہیں کہ’’یہ قطعہ شاہ عبدالعزیز محدث دہلوی کا ہے ‘‘؂۱۸۔مگر کلام کی اُٹھان شیخ سعدیؒ کے اسلوب کی نشاندہی کرتی ہے۔حالانکہ اس پر مزیدتحقیق کی ضرورت ہے۔ (ساجدؔ)
صفحہ نمبر۸۸: ؂ ہر نفس شام وسحرم وردِ زباں رکھتے ہیں
ہم کو محبوب ہے اتنا ، ترانام اے ساقی
گرفت:مصرع اولیٰ کی محرّرہ صورتِ خطی شعری لوازمات سے متصادم ہے۔درست شعردیکھیے:

؂ ہر نفس شام و سحر وردِ زباں رکھتے ہیں
ہم کو محبوب ہے اتنا ، ترا نام اے ساقی ؂۱۹
صفحہ نمبر۹۲: ؂ ترے رفیق کامیاب ، ترے غلام با مراد
فاتح و سرخرو ہوئے ، پورا ہوا کہا ترا
گرفت:شعرمذکور مرقومہ املاسے تحریفِ بحر کا شکار ہے۔یوں سمجھیے! شعرتوازن کے لحاظ سے دو لخت ہوگیا ہے۔مصرع اولیٰ بحرِ ہزج مثمن مقبوض مذال میں ہے جب کہ مصرع ثانی بحرِ رجز مثمن مطوی مخبون میں جا گھسا ہے۔یہ مقالہ نگار کی مندرجہ املا اورنگران کی غفلت کا نتیجہ ہے۔شعرمذکورہ سے دیکھا جا سکتا ہے کہ لفظ ’’میرے‘مرے،تیرے،ترے‘‘کے استعمال کے اسباب کیا ہیں۔صحیح شعرملاحظہ ہو:
؂ تیرے رفیق کامیاب ، تیرے غلام با مراد
فاتح و سرخرو ہوئے ، پورا ہوا کہا ترا ؂۲۰
صفحہ نمبر۹۴: ؂ اک مدّت سے تمنا ہے یہی دل میں کریم
نعت کہنے کا مجھے خاص قرینہ دیدے
گرفت:مصرع اولیٰ لفظ ’’اک ‘‘ کے استعمال سے بے وزن ہوگیا ہے۔ درست شعرملاحظہ ہو:
؂ ایک مدّت سے تمنا ہے یہی دل میں کریم
نعت کہنے کا مجھے خاص قرینہ دیدے ؂۲۱
صفحہ نمبر۹۴: ؂ محمدؐ کا صدقہ ہے روزی ہماری ہیں نوری حضوری گدائے محمدؐ
گرفت:شعرہٰذا پہلے صفحہ نمبر۸۹ پر رقم ہوچکا ہے۔ (ساجدؔ)
صفحہ نمبر۹۷: ؂یہ کس نے ہم گناہگاروں پہ لطفِ خاص فرمایا
ہماری خوش نصیبی کہ ستارے جگمگائے ہیں
گرفت:مصرع اولیٰ لفظ ’’گناہگاروں‘‘کی مندرجہ املا سے بے وزن ہے۔مذکورہ لفظ کے تلفظ ہیں’’گناہگاروں‘‘بروزن مفاعلاتن ،یہ بحرمرکّن کا رُکن ہے اور’’گنہگاروں‘‘بروزن مفاعیلن ‘‘بحرہزج کا رُکن ہے۔مصرع ثانی میں لفظ ’’کہ ‘‘ کیوجہ سے معنوی ابہام سے محفوظ نہ رہ سکا۔درست شعردیکھیے:
؂ یہ کس نے ہم گنہگاروں پہ لطفِ خاص فرمایا
ہماری خوش نصیبی کے ستارے جگمگائے ہیں ؂۲۲
صفحہ نمبر۹۸: ؂مرا غم ، مری خوشی ، مرے دل و جاں حضور
دین و دنیا ، مرا قبلہ ، مرا ایماں حضور
گرفت:راقم الحروف مندرجہ بالاسطور میں دلائل سے واضح کر چکا ہے کہ لفظ’’مرا،میرا،میری،مری ‘‘ کا غلط استعمال توازن کے نظام کو درہم بر ہم کردیتا ہے۔شعرہٰذا بھی اسی کارستانی کا شکارہے۔دوسرایہ کہ قوافی میں اعلانِ نون کو حذف کرنے سے شعرنہایت بے وزن ہوا ہے۔درست شعر دیکھیے:
؂میرا غم ، میری خوشی ، میرے دل و جان حضور
دین و دنیا ، مرا قبلہ ، مرا ایمان حضور ؂۲۳
صفحہ نمبر۹۹: ؂ ترے بلاد میں گزرے ہیں وہ عظیم انساں کہ فرد فرد تھا اپنی جگہ ایمانِ زماں
گرفت:شعرکے مصرع ثانی میں لفظ ’’ایمان کااندراج کتابت کی غلطی ہے ۔درست شعردیکھیے:
؂ ترے بلاد میں گزرے ہیں وہ عظیم انساں
کہ فرد فرد تھا اپنی جگہ امامِ زماں ؂۲۴

صفحہ نمبر۱۰۰: ؂ ہنوز وقت ہے اپنی خودی کو پہچانے
عدو کی چال کو سمجھیں ، فریب کو جانیں
گرفت:شعر کے مصرع اولیٰ میں قافیہ غلط رقم کیا گیا ہے۔صحیح قافیہ ’’پہچانیں‘‘ہے۔
صفحہ نمبر۱۰۱: ؂السّلام اے رحمۃ اللعالمین ،خیرالوریٰ
ساقی کوثر ،شہ ،بطحا ،محمد مصطفی
گرفت:لفظ’’رحمت اللعالمین‘‘ کے اعلانِ نون سے مصرع اولیٰ بے وزن ہوااورمصرع ثانی اضافتیں حذف کرنے سے بے بحرہوا۔مصرع ثانی میں ’’ساقیٔ کوثر،شہِ بطحا‘‘کی تراکیب ہونی چاہئیں۔
صفحہ نمبر ۱۰۲: ؂اُن کی انگشت کے اشارے کی قسم
چاندکو چیرکے رکھ دے یہ ہے طاقت اُنؐ کی
گرفت:شعرکا مصرع اولیٰ الفاظ کی قطع و بریدسے بے وزن ہوا۔درست شعرملاحظہ ہو:
؂اُنؐ کی انگشتِ شہادت کے اشارے کی قسم
چاند کو چیر کے رکھ دے یہ ہے طاقت اُنؐ کی ؂۲۵
صفحہ نمبر ۱۰۳: ؂ جیسے خلّاق عالم نے بنایا اُس کی مرضی سے
اُسی محبوب کے جلوے مرے دل میں سمائے ہیں
گرفت:مصرع اولیٰ کے عروض میں لفظ ’’جیسے ‘‘ وزن میں مخل ہے۔درست شعرہے کہ!
؂ جسے خلّاق عالم نے بنایا اُس کی مرضی سے
اُسی محبوب کے جلوے مرے دل میں سمائے ہیں ؂۲۶
صفحہ نمبر۱۰۴: ؂ادب سے گام اے دیوانۂ شوق
ہرایک ذرہ حریمِ کبریا ہے
گرفت:مقالہ نگار نے شعرسے خوب آنکھ مچولی کی ۔اس طرح شعراپنی شعریت کھوچکا ہے۔درست وصحیح شعر دیکھیے:
؂ادب سے گام اے دیوانۂ شوق
ہر اک ذرّہ حریمِ کبریا ہے ؂۲۷
صفحہ نمبر۱۰۵: ؂ دائم آباد رہے ارش معلّیٰ ترا
ہم کومحتاج کسی کا نہ خدایا کرنا
گرفت:مصرع اولیٰ میں لفظ ’’ارش‘‘ کااملا غلط ہے۔صحیح املا ’’عرش‘‘ ہے۔لفظ ’’ترا‘‘وزن میں مخل ہے۔درست شعرملاحظہ ہو:
؂ دائم آباد رہے عرش معلّٰی تیرا
ہم کو محتاج کسی کا نہ خدایا کرنا ؂۲۸
صفحہ نمبر۱۰۶:’’جاویداحسن ؔ خان کی یہ کتاب نعتیہ شاعری کی تنقید پر مبنی ہے لیکن کتاب کانام اس متن (text)سے کسی طور بھی مطابقت نہیں رکھتا …………کتاب کا مافیہ بیشتر تنقید لوازمے پر مشتمل ہے……………………مصنفِ اعلام نے تفہیمی مقدمات کرتے ہوئے کچھ نکات اُجاگرکیے ہیں مثلاً وہ لکھتے ہیں ۔ا۔نعت حدیثِ دلبری نہیں……………………وغیرہ وغیرہ‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت:مقالہ نگار نے پھر سے صفحہ نمبر۱۰۶تا۱۰۷ چوری کیے ہوئے مال سے بھردیا۔راقم الحروف نے کتاب’’فی احسنِ تقویم ‘‘ کو تقویم کی صورت دیکھتے ہوئے اس پر مثبت انداز میں تبصرہ کیا تھا ۔جب کہ مقالہ نگارنے اس پر منفی تاثرات قائم کیے اورالفاظ وتراکیب واسلوب راقم کا لے صرف نافی ہوئے ہیں۔ ایسی چوری کو ادبی لوازمات میں سرقہ سلخ والمام کہتے ہیں ۔راقم الحروف کامضمون ملاحظہ فرمائیے:
’’کتاب کا نام ’’فی احسنِ تقویم‘‘ ایک جامع حیثیت کا حامل ہے ۔اگرکتاب میں موجودموضوعات کو ژرف نگاہی سے دیکھا جائے تو’’فی احسنِ تقویم‘‘ اسم بامسمّیٰ ہے۔قرآن مجیدمیں ’’فی احسنِ تقویم‘‘ کا استعمال مکمل اورمتوازن انسان کے لیے ہے۔فاضل مصنف نے ’’فی احسنِ تقویم‘‘کی اصطلاح نعتیہ شاعری درست اورمبّاح تجویز کی ہے جس میں نعتیہ شاعری کا انتقاد بھی شامل ہے۔
کتاب ہٰذامیں مصنف نے’’عرضِ مصنف‘‘میں اپنے تنقیدی شعور کے تحت چیدہ چیدہ اعلامِ نعت کے نکات اُجاگرکیے ہیں ،ملاحظہ ہوں:
۱۔ نعت حدیثِ دلبری نہیں بل کہ احسن الحدیث اورمعنیٔ احسنِ تقویم ہے۔
۲۔ نعت مدحتِ رسولﷺ یابیانِ سیرت ہی نہیں بل کہ حسن وعمل کی تحریک وتبلیغ بھی ہے۔
۳۔ نعت ایک نخلِ طوبیٰ ہے جس کی جڑیں پاتال تک اورشاخیں مقامِ محمود تک پھیلی ہوئی ہیں۔
۴۔ نعت محض رسمی عقیدت مندی ،مصنوعی شگفتگی،بے روح لفاظی ، خالی قافیہ پیمائی اور بے مقصد سخن طرازی کا نام نہیں بل کہ ایک روحانی، وجدانی اورایمانی داعیہ ہے۔
۵۔ نعت کا بنیادی وصف شانِ نبوّت ﷺاورپیغام رسالتﷺ کا حسنِ ابلاغ ہے۔ حضوراکرمﷺ کی ذاتِ گرامی اپنے جمال میں اتنی مکمل ہے کہ اس کی مدحت میں کے لیے مجازی استعارے لانے کی کوئی ضرورت نہیں۔ آپﷺکا اُسوۂ حسنہ اتنا جامع ہے کہ اس کے لیے حاشیہ آرائی قطعاً درکار نہیں۔‘‘
مصنف کاشعور نعتیہ شعری تاریخ میں رسول اکرمﷺ کے حوالے سے تفہیم کا ایک ہالہ بناتا ہے۔شعرأ کے لیے شعری لوازمات کا ایک اہم اورجامع باب وا کرتا ہے۔لہذا جاویداحسنؔکی کتاب ’’فی احسنِ تقویم‘‘نعتیہ شاعری کا ایک بصیرت افروز تنقیدی مطالعہ ہے۔جس سے نعتیہ ادب کی تخلیق،تنقیدوتحقیق کے میدانوں میں کام کرنے والے اہلِ فکرونظر بھرپوراستفادہ کرسکتے ہیں۔کتاب کی اہمیت وافادیت کا منہ بولتا ثبوت اُس کے ابواب اورمتنوّع موضوعات ہیں ۔‘‘
صفحہ نمبر۱۶۸:’’جناب ہاشم شیر خان راقم ہیں۔جاویداحسن ؔ جیسی شخصیت روز بروزپیدا نہیں ہوتی ۔اس کا فنِ ادب شعرأ کی آبروتھااورڈیرہ غازیخان جیسے بنجرخطے کے لیے سرمایۂ افتخار تھا۔جاویداحسن خان نے اردوشاعری میں اپنی آوازکوگم نہیں ہونے دیا۔بلکہ اس کی آواز پورے عصری شعورکے ساتھ اُبھر ہے۔اس لیے کہ وہ بے وقت موت ہے۔اوریوں اعلیٰ معیاری شاعری کی موت ہے۔جس کی باگ ڈور بلاشبہ جاویداحسن کے ہاتھ میں تھی۔اورموت کے کرخت ہاتھوں نے یہ باگ ڈور اس چھین لی لیکن جو شاعری سرمایہ وہ چھوڑگیا ہے ۔شاعری اس پر نازاں رہے گی‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت:اس تحریر سے صریحاً ثابت ہے کہ یہ تحریرجاویداحسن کی رحلت کے بعد کی ۔ مقالہ نگار نے یہ تحریرہاشم شیرخاں کے حوالے سے مقالے کا حصہ بنائی اوربحوالہ موصوف کی معروف کتاب ’’دیرہ غازیخان کے تہذیبی خدّوخال‘‘رکھا۔کتاب محولہ بالا کا سنِ اشاعت ۱۹۹۷ء ہے ۔جاویداحسن ؔ کاسانحۂ ارتحال۲۰۱۴ء پیش آیا۔لہذا حوالہ درست کیا جائے تاکہ ادبی تاریخ درست وصحیح مدوّن ہو۔ (ساجد)
صفحہ نمبر۱۷۱:’’اس موقع پر ساجدؔ فریدلغاری (جبکہ راقم کاقلمی نام فریدساجدؔ لغاری ہے)جاویداحسن کو ان الفاظ میں خراجِ عقیدت پیش کیاتھا۔’’جاویداحسنؔ عصری اورمعاشرتی تقاضوں نظراندازنہیں کرسکتے ۔وطنِ عزیز میں دنیا کے کسی گوشے میں جہاں بھی کوئی اہم تحریک اُٹھی۔جاویداحسن اس سے ضرورمتاثرہوئے اوراسے اپنی شاعری کاایک حصہ بنایا۔جاویداحسنؔکی نظمیں صرف خیالات ہی کی توانائی کی حامل نہیں بلکہ شاعرانہ اظہار کا حسن بھی اپنے اندررکھتی ہیں۔اوراُن کی خوداعتمادی کی آئینہ دارہیں۔‘‘ (مقالہ نگار)
گرفت:مذکورہ بالا تحریرکو راقم الحروف کے حوالے سے شاملِ مقالہ کیاگیاہے۔جب کہ یہ تحریر راقم الحروف کی نہیں حوالہ غلط ہے حوالہ درست کیا جائے۔‘‘ (ساجدؔ)
صفحہ نمبر۱۷۵:ساجدؔ فریدلغاری کا یہ قطعہ جاوید احسن ؔکے فن کی بھرپورعکاسی کرتاہے۔
؂خوب تھا اسلوب تیرا ،خوب تر طرزِ بیاں
نطق کو سو ناز تجھ پر فکر تیری ہے جواں
تیرے علم و فکر و فن کا معترف تھا اک جہاں
بخش دی اشعار کو تو نے بہارِ جاوداں
(مقالہ نگار)
گرفت:تعجب ہے کہ مقالہ نگار ایم فل اردو کے طالب علم ہیں لیکن موصوف کو اصنافِ سخن پرگرفت نہیں۔راقم الحروف نے جاویداحسنؔ کا مرثیہ ’’مسدس ‘‘شکل میں تحریرکیاہے۔یہ قطعہ نہیں ۔دوسرا یہ مقالہ نگارنے پورے مقالے میں راقم الحروف کانام ساجدفریدلغاری غلط تحریرکیا ہے۔راقم الحروف کا صحیح قلمی وادبی نام فریدساجدؔ لغاری ہے۔لہذمقالہ میں راقم الحروف کانام درست وصحیح لکھا جائے۔مذکورہ بالا مسدس ملاحظہ ہو:
؂خوب تھا اسلوب تیرا ،خوب تر طرزِ بیاں
نطق کو سو ناز تجھ پر فکر تیری ہے جواں
تیرے علم و فکر و فن کا معترف تھا اک جہاں
بخش دی اشعار کو تو نے بہارِ جاوداں
نکہتِ گُل تھا کہ تُو ، بادِ صبا تھا دوستا
نغمۂ اقبال کا تُو ہم نوا تھا دوستا ؂۲۹
جاویداحسنؔ ایک پہلودار اورہمہ جہت شخصیت تھے۔ادبی دنیا میں اُنھیں ناصرف سندکے طورپر لیاجاتاتھا بل کہ موصوف شعرگوئی اورشعرفہمی میں مسلّمہ حیثیت کے حامل تھے۔مقالہ نگارکے جنبشِ قلم اورنگران مقالہ کی عدم دلچسپی سے جاویداحسنؔ کے فکروفن کا نظام درہم برہم ہوا ہے۔اُن کے بطوراستدلال لکھے گئے تین درجن اشعار بری طرح مضروب و مجروح ہوئے ہیں۔اس طرح یہ سب اشعار لوازماتِ شعرسے متصام ہیں۔مقالے کاقاری جاویداحسنؔ کو بے وزن اورمہمل شاعرکہنے میں کوئی تامّل اختیار نہیں کرے گاحالاں کہ جاویداحسنؔ کافکروفن ان سب لغزشوں سے پاک ہے۔
المختصر یہ کہ ! مقالہ مذکورسے جاویداحسنؔ کی شخصیت بری طرح متاثرہوئی ہے۔کیونکہ جاویداحسنؔکی بہت سی ادبی جہات پرتبصرہ نہیں کیاگیاہے۔ وہ ایک شاعرونقاد ہونے کے ساتھ ساتھ ایک اچھے تقریظ نگار اورمکتوب نگار بھی تھے۔جاویداحسن کے ان خصائص کو پردۂ اخفامیں رکھا گیاہے۔علاوہ ازیں جس طرح اُن کاشماراردوزبان کے اُستادشعرأ میں تھا ۔اس طرح وہ سرائیکی زبان کے Legandاُستادشاعرتھے۔افسوس صدافسوس کہ ان حوالوں سے ایک سطرتک بھی مقالہ میں نہیں ملتی۔اس چشم پوشی ،کاہلی اورعدم توجہی کے بارے میں جاوید احسنؔ نے کیا خوب کہا کہ!
؂ثبوتِ علم نہیں ہے نصاب کی تعلیم
یہ ڈگریاں ہیں حقیقت میں پرمٹوں کی طرح

یہ خواندگی کے مراکز ہیں جامعات نہیں
اساتذہ کی بھی حالت ہے جاہلوں کی طرح
بہاؤالدّین زکریایونیورسٹی ،ملتان کے منتظمِ اعلیٰ سے التماس ہے کہ ایم فل کے طالب علم عبدالوحید رولنمبر۱۶ جاویداحسنؔ کی شخصیت وفن کا احاطہ نہیں کرسکے ۔مقالہ میں غلط حوالہ جات کاانبار ہے۔سرقہ بھی خالی ازتبصرہ نہیں۔الفاظ کی قطع وبرید اورکمی وبیشی سے اُن کے تین درجن اشعار اپنافنّی ترفّع کھو چکے ہیں۔لہذایونیورسٹی طالب علم کوحکمِ ثانی صادرفرماکر مقالہ کی نوک پلک درست وصحیح کرائے ۔تاکہ صحیح متن اورحوالہ جات کے ساتھ صحف ادبی تاریخ مدوّن ہوسکے جو کہ یہ امرِ قرینِ انصاف اور یونیورسٹی کے دائرۂ اختیار میں ہے۔
٭٭٭٭٭
﴿حوالہ جات﴾
۱۔’’چشمِ غزال‘‘ طباعت۲۰۱۳ء ،سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازیخان ۔ص۱۷۲ ۲۔’’چشمِ غزال‘‘ طباعت۲۰۱۳ء ،سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازیخان ۔ص۸۴
۳۔’’چشمِ غزال‘‘ طباعت۲۰۱۳ء ،سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازیخان ۔ص۴ ۴۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۷
۵۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۳۱ ۶۔’’چشمِ غزال‘‘ طباعت۲۰۱۳ء ،سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازیخان ۔ص۸۳
۷۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۸۹ ۸۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۳۸
۹۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۷۸ ۱۰۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۹۳
۱۱۔’’چشمِ غزال‘‘ طباعت۲۰۱۳ء ،سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازیخان ۔ص۹۱ ۱۲۔’’چشمِ غزال‘‘ طباعت۲۰۱۳ء ،سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازیخان ۔ص۷۷
۱۳۔سہ ماہی ’’دامان‘‘اکتوبرتادسمبر۲۰۰۶ء شمارہ چوٹی بالا دیرہ غازی خان ص۲۳ ۱۴۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۲۳
۱۵۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۲۶ ۱۶۔’’نسخہ ہائے وفا‘‘سن طباعت لاہور ۔ص۷۲
۱۷۔’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۲۲۰ ۱۸۔’’فی احسنِ تقویم‘‘اشاعت ۱۹۹۷ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۷۳
۱۹۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۹۱ ۲۰۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۶۵
۲۱۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۳۱ ۲۲۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۶۳
۲۳۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۷۳ ۲۴’’جمالِ صحرا‘‘اگست ۱۹۹۱ء سلیمان ادبی اکیڈمی ،دیرہ غازی خان ۔ص۷۷
۲۵۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۷۴ ۲۶۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۶۳
۲۷۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۸۸ ۲۸۔ ’’لوح شفاعت‘‘۲۰۰۹ء سلیمان ادبی اکیڈمی دیرہ غازی خان۔ص۱۰۳
۲۹۔۲۶نومبر۲۰۱۴؁ء روزنامہ ’’نوائے وقت ‘‘ملتان
٭……٭……٭

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Farid Sajid Laghari

Read More Articles by Farid Sajid Laghari: 2 Articles with 1235 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
04 Mar, 2017 Views: 804

Comments

آپ کی رائے