مائیکروفکشن افسانچے

(Ahmed Naeem, India)

ایندھن
وہ کون تھا۔۔۔۔؟
کیا تھا۔۔؟ مجھے کچھ پتہ نہ تھا۔۔۔!
مجھے تو بس وہ آوازوں کا سوداگرمعلوم ہورہا تھا ۔۔۔۔میرے پاس بیچنے کے لئے کچھ بھی بچا نہیں تھا۔۔۔!
سومیں نے سوچا آوازیں ہی بیچی جائیں۔ مگر ،میری تو آواز بھی نہیں نکل رہی تھی۔۔۔۔پھر۔۔۔۔
میں نے خود کو ’اْس کے‘ پاس رہن کر کے ایندھن لیا۔۔۔۔۔۔اور اْس بھٹّی میں ڈال دیا جو لا شعوری سے ہی میرے پیٹ میں جڑ دی گئی تھی۔۔!!
میری آواز نکلنے لگی۔۔۔۔!!! میں چلّایا۔۔، خوب جم کر نعرے بازی کی۔۔۔۔۔ میرا گلا بیٹھ گیا۔۔۔۔ !
وہ مجھ سے متاثر ہوا۔۔اور کہنے لگا۔۔۔ ’’خوب کل مل لینا‘‘۔
مگر۔۔۔ میرا مقصد پورا نہیں ہو سکا تھا: مجھے آس تھی، آج نہ سہی کل دیوالی۔۔۔
میں گھر کی طرف بڑھنے لگا۔، میری آواز کے ساتھ میرے قدم بھی بوجھل تھے ؛
گھر قریب آنے لگا ؛ اور۔۔۔۔مجھے ڈر محسوس ہونے لگا ؛۔۔، ماں چلائے گی؛بیوی چلائے گی؛۔۔
اتنے میں گھر آگیا۔؛
اندر داخل ہوا تو پبھرے لوگ چِلّانا تو چاہ رہے تھے۔۔۔۔مگر : چِلّا نہیں پا رہے تھے ۔۔۔
شاید اْنھیں بھی ایندھن کی ضرورت تھی۔۔!!!
․․․․․․․․․․․․․․․․․․․․․
گمشدہ انگلیاں
میں نے دیکھا : وہ شہادت والی انگلیاں خرید رہی تھی؛ بہت لوگ تھے قطار میں کھڑے۔۔۔۔سو میں بھی کھڑا ہوگیا۔۔۔!
جلدی جلدی میں میرا نمبر بھی آگیا۔؛ ۔۔۔۔ پھر۔۔۔
میری ’’انگلی‘‘ نکال لی گئی۔؛باہر آیا تو معلوم ہوا ۔۔ابھی اور بھی نمبر لگانا ہے۔۔۔۔
پھر وعدہ ملا۔۔۔۔ میں دل برداشتہ ہوگیا ۔۔ !گھر لوٹا ۔۔۔تو بہت سے سوال ہوئے ۔۔۔وہ لوگ بھی بڑے نروس تھے۔؛
اُن سب کی بھی ایک اک انگلیاں کم تھیں۔،
وہ بھی شاید وعدوں پر ہی لوٹے تھے۔
․․․․
کرچی کرچی وجود
صدیوں سے بہتے دریا کی روانی میں وہ بہہ رہا تھا۔۔ کئی ٹیلوں کو مسمار کرتا ہوا نامعلوم سمت کی طرف رواں دواں تھا۔۔۔ کہ ۔۔
کہ۔۔ اپنے آپ کو جاننے کی کوشش میں وہ۔۔۔ اپنی ہی موجوں سے الگ ہو بیٹھا۔۔؛
ابھی وہ اپنے آپ کو نظر بھر دیکھ بھی نہ سکا تھا کہ اک ٹیلے سے ٹکرا کر پاش پاش ہوگیا ۔۔اب۔۔۔وہ اپنی ہی لہو لہان آنکھوں سے اپنے وجود کو کرچی کرچی ہوتے دیکھ رہا تھا۔
․․․․․․
سلسلے
خالی کینواس۔۔۔۔وعدہ۔۔۔۔خوشامد۔۔۔۔’’چناؤ‘‘۔۔۔۔۔ فراری۔۔۔
بے کاری۔۔۔۔بے حسی۔۔۔۔ بے غیرتی۔۔۔۔ تاراجی۔۔۔
خالی کینوس۔۔؟؟؟ایندھن
وہ کون تھا۔۔۔۔؟
کیا تھا۔۔؟ مجھے کچھ پتہ نہ تھا۔۔۔!
مجھے تو بس وہ آوازوں کا سوداگرمعلوم ہورہا تھا ۔۔۔۔میرے پاس بیچنے کے لئے کچھ بھی بچا نہیں تھا۔۔۔!
سومیں نے سوچا آوازیں ہی بیچی جائیں۔ مگر ،میری تو آواز بھی نہیں نکل رہی تھی۔۔۔۔پھر۔۔۔۔
میں نے خود کو ’اْس کے‘ پاس رہن کر کے ایندھن لیا۔۔۔۔۔۔اور اْس بھٹّی میں ڈال دیا جو لا شعوری سے ہی میرے پیٹ میں جڑ دی گئی تھی۔۔!!
میری آواز نکلنے لگی۔۔۔۔!!! میں چلّایا۔۔، خوب جم کر نعرے بازی کی۔۔۔۔۔ میرا گلا بیٹھ گیا۔۔۔۔ !
وہ مجھ سے متاثر ہوا۔۔اور کہنے لگا۔۔۔ ’’خوب کل مل لینا‘‘۔
مگر۔۔۔ میرا مقصد پورا نہیں ہو سکا تھا: مجھے آس تھی، آج نہ سہی کل دیوالی۔۔۔
میں گھر کی طرف بڑھنے لگا۔، میری آواز کے ساتھ میرے قدم بھی بوجھل تھے ؛
گھر قریب آنے لگا ؛ اور۔۔۔۔مجھے ڈر محسوس ہونے لگا ؛۔۔، ماں چلائے گی؛بیوی چلائے گی؛۔۔
اتنے میں گھر آگیا۔؛
اندر داخل ہوا تو پبھرے لوگ چِلّانا تو چاہ رہے تھے۔۔۔۔مگر : چِلّا نہیں پا رہے تھے ۔۔۔
شاید اْنھیں بھی ایندھن کی ضرورت تھی۔۔!!!
․․․․․․․․․․․․․․․․․․․․․
گمشدہ انگلیاں
میں نے دیکھا : وہ شہادت والی انگلیاں خرید رہی تھی؛ بہت لوگ تھے قطار میں کھڑے۔۔۔۔سو میں بھی کھڑا ہوگیا۔۔۔!
جلدی جلدی میں میرا نمبر بھی آگیا۔؛ ۔۔۔۔ پھر۔۔۔
میری ’’انگلی‘‘ نکال لی گئی۔؛باہر آیا تو معلوم ہوا ۔۔ابھی اور بھی نمبر لگانا ہے۔۔۔۔
پھر وعدہ ملا۔۔۔۔ میں دل برداشتہ ہوگیا ۔۔ !گھر لوٹا ۔۔۔تو بہت سے سوال ہوئے ۔۔۔وہ لوگ بھی بڑے نروس تھے۔؛
اُن سب کی بھی ایک اک انگلیاں کم تھیں۔،
وہ بھی شاید وعدوں پر ہی لوٹے تھے۔
․․․․
کرچی کرچی وجود
صدیوں سے بہتے دریا کی روانی میں وہ بہہ رہا تھا۔۔ کئی ٹیلوں کو مسمار کرتا ہوا نامعلوم سمت کی طرف رواں دواں تھا۔۔۔ کہ ۔۔
کہ۔۔ اپنے آپ کو جاننے کی کوشش میں وہ۔۔۔ اپنی ہی موجوں سے الگ ہو بیٹھا۔۔؛
ابھی وہ اپنے آپ کو نظر بھر دیکھ بھی نہ سکا تھا کہ اک ٹیلے سے ٹکرا کر پاش پاش ہوگیا ۔۔اب۔۔۔وہ اپنی ہی لہو لہان آنکھوں سے اپنے وجود کو کرچی کرچی ہوتے دیکھ رہا تھا۔
․․․․․․
سلسلے
خالی کینواس۔۔۔۔وعدہ۔۔۔۔خوشامد۔۔۔۔’’چناؤ‘‘۔۔۔۔۔ فراری۔۔۔
بے کاری۔۔۔۔بے حسی۔۔۔۔ بے غیرتی۔۔۔۔ تاراجی۔۔۔
خالی کینوس۔۔؟؟؟

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Ahmed Naeem
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
28 Mar, 2017 Views: 407

Comments

آپ کی رائے
needs deep thoughts to write & understand it.... good work... stay blessed!!
By: Faiza Umair, Lahore on Mar, 29 2017
Reply Reply
0 Like
very very nice,,,,,,,, great afsane,,,,,,,,, welldone bhai
By: umama khan, kohat on Mar, 28 2017
Reply Reply
0 Like