میں سلمان ہوں ( قسط 20)

(hukhan, karachi)

کریم صاحب کی کوٹھی جیسے بنگلا کہنا چایئے بہت وسیع تھی بستی کے کئی گھر اس میں سما سکتے تھے -- اس گھر کے مکین اسلم سے بخوبی واقف تھیں --- کریم صاحب نے اسلم کو کچھ پیسے دیئے اور اسے Driver کے ساتھ گھر سے باہر بھیج دیا--- سلمان اور ساتھ آیا بابا جی جیسے سب Model پکارتے تھے وہ دور سے آنے والے مہمانوں کے لیے روم سیٹ کرنے لگے -- سلمان گھر کے فرنیچر اور کیچن کو دیکھ کر حیران رہ گیا تھا ایسا لگ رہا تھا جیسے کسی بادشاہ کا کوئی Palace ہو--- رومز میں بیڈ اور جہاں بیڈ کی جگہ نہیں تھی وہاں کارپٹ پر میٹرس رکھے --- رومز کے فین آن کر کے کھڑکیاں کھول دی گئیں --- تھوڑی دیر میں ہی ان کے لیے چائے کے ساتھ سینڈوچ آ گئے -- جن کا پتا ہی نہیں چلا کہ کب وہ ان کے پیٹ کے نظر ہوگئے ---
یہ کل شام کو بچ گئے تھے میں نے سوچا زایا کرنے سے بہتر ہے تم دونوں کو ہی کھلا دو شرفو نے ہنستے ہوئے کہا -- اس لیے روزانہ ایسئ امید مت رکھنا --
سلمان نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے مسکرا کر کہا ---
شرفو بھائی ہو تو آپ باورچی مگر دل شہنشاؤں والا ہے تمہارا -- ویسے چائے کی امید تو رکھوں یا وہ بھی نہیں ---
شرفو نے حیرت سے سلمان کو دیکھا --- سلمان نے کندھے سے ہاتھ ہٹا دیا ---
شرفو زور سے ہنسا ---- بھائی شہنشاہ کہا ہے تو پھر چائے وائے سب ملے گا --- ویسے آپ کی تعریف---
سلمان نے ہنس کر کہا شرفو بھائی ہم تو آپ کے رعایا ہے نام ہے --- میں سلمان ہوں اور یہ بابا Model---
بابا ماڈل--- شرفو نے زور سے کہا یار آپ لوگ بھی ہمارے مہمان ہی ہوں بس تین دن تک آپ لوگ میری ہلپر ہوں ورنہ اس گھر والوں نے پچھلے ایک ہفتے سے میری مت مار دی تھی --- میں نے صاف کہہ دیا تھا یا تو مجھے شادی تک چھٹی دے دو یا کچھ بندے میری مدد کو بلا دو---
اچھا ہماری روزی کی وجہ تم ہو -- سلمان نے ہلکے پلکے موڈ میں کہا ---
اوہ بھائی --- آرام سے---- شرفو نے منہ پر انگلی رکھ کے خاموش رہنے کو کہا ---
سلمان اور بابا نے حیرت زدہ انداز میں شرفو کو دیکھا
ارے بھائی بی بی جی جن کی شادی ہو رہی ہے اس کی چھوٹی بہن کا نام روزی ہے بہت بڑی نفسیاتی ہے سب اس کو مس Philospher کہتے ہیں--- بال کی کھال نکالتی ہے تم دور سے بات کرنا جو کہا بس اس حد تک جواب دینا --- شرفو بہت بولنے والا تھا -- Non Stop---------- جاری ہے
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: hukhan

Read More Articles by hukhan: 28 Articles with 26477 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
08 Apr, 2017 Views: 1129

Comments

آپ کی رائے
amazing words
By: khalid, karachi on Apr, 10 2018
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Apr, 17 2018
0 Like
bhai apka novel bohat acha ja raha hai or poetry bhi best thi :)
By: Zeena, Lahore on Apr, 10 2017
Reply Reply
0 Like
thx for like
By: hukhan, karachi on Apr, 11 2017
0 Like
good brother acha kiya sharfo ko barkat kar diya ghreebun sa naam tha
By: aslam memon, karachi on Apr, 10 2017
Reply Reply
0 Like
peoples dsnt like that name so i change it but i got few comments barkat is also so typical servant name ,,,,,i dont know what to do
By: hukhan, karachi on Apr, 11 2017
0 Like
Niceeee episode...poetry great
By: Mini, mandi bhauddin on Apr, 10 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Apr, 11 2017
0 Like