اجڑے خواب آخری قسط

(Nadia khan, rawalpindi)
سلسلہ نہ ختم کرو یہ ناطہ توڑ کے دیکھو ۔۔۔۔۔ نظر پھر کچھ نہ آئے گا محبت چھوڑ کے دیکھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اذیت کیا ہے گریہ جاننے کا شوق ہے تم کو ۔۔۔۔۔۔۔ سب حسیں خواب یکجا کرو اور توڑ کے دیکھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اندیشے وسوسے اور وحشتیں بندھ جائیں گی اس میں ۔۔۔۔ جو اس نے توڑا تھا تعلق اسے تم جوڑ کے دیکھو اگر چننا ہو اس کے غم مگر کیسے نہ سمجھے تو ۔۔۔۔۔۔۔کتاب زسیت میں ورق محبت موڑ کے دیکھو ۔۔۔

ماہ رخ مجھے پتا تھا کی تم میرے بغیر نہیں رہ سکتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ وہ اس کے آنکھوں میں آنکھیں ڈالے بہت غرور سے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ماہ رخ کے تصورات میں دو آنسوں سے بھری لرزتی کانپتی آنکھیں زندہ ہو گئیں اس نے سر جھٹک کر ان آنکھوں کی سحر سے بہ مشکل خود کو نکالی اور اس کی طرف متوجہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ساحل مجھے معاف کرنا میں اپنے بچوں کو چھوڑ کر تمہارے ساتھ نہیں جاسکتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ کیوں نہیں جاسکتی تم۔۔۔۔۔۔۔؟ تمہیں میرے ساتھ جانا ہوگا ماہ رخ ہم نے تو بہت کوشش کی کے بچے ہمارے ساتھ جائے لیکن ان کے باپ ان بچوں کو تمہارے ساتھ جانے نہیں دے رہے ہیں تو اس میں ہمارا کیا قصور ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ساحل سمجھنے کی کوشش کروں تمام حالات آپ کے سامنے ہیں آپ جاو یہاں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ لیکن مجھے ادھر ہی پڑا رہنے دیں ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ یہ بچے پہلے کی طرح میری ذمہ داری ہی رہیں ہمیں اپنے لیے اپنی ذات کی خاطر نہیں جینا چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ اپنی ذات سے باہر نکل کر دیکھو ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ اس حد سے آگے بھی بہت کچھ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ساحل میرا تجزیہ ہے ۔۔۔۔۔؟؟مجھے آج اس بات کا احساس ہوا ہے کی اولاد کا دکھ ماں کو انسان نہیں رہنے دیتے ۔۔۔۔۔۔؟؟؟ کچھ اور بنا دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔؟؟؟دراصل کوئی بھی درد انسان سے بڑا نہیں ہوتا درد کتنا بھی بڑا کیوں نہ ہو انسان جس وقت اسے برداشت کرنے کا حوصلہ کرتا ہے وہ درد خود بخود چھوٹا ہوجاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ اور ماں تو بہت ہمت والی مخلوق بنائی ہے اللہ نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ وہ باپ کی نسبت بہت ہمت سے درد برداشت کرتی ہے ۔۔۔۔۔۔؟؟ لیکن اولاد کا بچھڑ جانا درد نہیں دیتا یہ تو نرا کرب ہے کیونکہ جب ہم درد کو برداشت کرنے کی صفت کھودیتے ہیں تو وہ کرب بن جاتا ہے اور کرب انسان کے اندر اوندھے منہ جاکر لیٹ جاتا ہے پھر وہ آسانی سے اپنی جگہ نہیں چھوڑتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ کرب زدہ ماں پھر دعاؤں میں بھی یا اللہ نہیں کہتی بلکہ یا اولاد ۔۔۔۔؟؟ یا اولاد پکارتی رہتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ وہ بات کرتی ہوئی رو نہیں رہی تھی کاش وہ رو لیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ماہ رخ کی زبان سے نکلے انکشاف در انکشاف نے ساحل کے دماغ کو ماوف سا کر ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ وہ آج اس پر منکشف ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔؟؟؟ جانے آج کس کمزور لمحے کی گرفت میں آکر اس نے اپنا آپ عیاں کرڈالا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور میری آپ سے درخواست ہے کہ آپ اپنے زندگی کو میری خاطر خراب مت کرو اور جاو یہاں سے ۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ماہ رخ اب ان سے زیادہ صبر کا مظاہرہ نہیں کرسکتی تھی سو اس کے سامنے سے ہٹ گئی اور دروازہ اندر سے بند کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ساحل باہر کھڑا اس بند دروازے کو حیرت سے تک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ صاب جی ۔۔۔۔۔۔؟؟؟ سکندر کی آواز سن کر وہ اس کی طرف دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ نہیں ۔۔۔۔۔؟ نہیں ۔۔۔۔۔؟ وہ سر پکڑ کر چیخا ۔۔۔۔۔۔۔؟ کھول دو دروازہ کھول دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ماہ رخ دروازہ مت بند کرو ۔۔۔۔۔۔۔؟ تم میرے بغیر نہیں رہ سکتی یہ میں جانتا ہوں ۔۔۔۔۔۔؟ تمہیں میرے ساتھ جانا ہوگا ۔۔۔۔۔۔؟ اپنی ہی آواز کی بازگشت اپنے دماغ میں سنتا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟پھر جیسے اچانک وہ ہوش میں آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟ وہ آہستہ آہستہ چلتا اپنے گاڑی کے پاس آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ بارش کا زور کم ہوگیا تھا اب صرف ہلکی ہلکی بوندا باندی ہورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ کہر بھی چھٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ سامنے ایزل پر لگا کینوس بے حد بد رنگ ہوچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔؟ سارے نقوش بہہ تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔؟ وہ کسی معمول کی طرح چلتا ہوا اس تک پہنچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ماہ رخ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ اس کے لب ہولے سے ہلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ٹپ ۔۔۔۔۔۔ٹپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بوندیں باقی ماندہ رنگوں کو اپنے ساتھ لیے پھسل رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آخری قسط ۔۔۔۔۔۔۔؟ ١٣
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Nadia khan

Read More Articles by Nadia khan: 10 Articles with 5409 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
01 May, 2017 Views: 623

Comments

آپ کی رائے
Nice sis,,,,
By: Mini, mandi bhauddin on May, 03 2017
Reply Reply
0 Like