میں سلمان ہوں(٢٦)

(Hukhan, karachi)
مسکرانا مجبوری ھے لوگ سمجھتے ھمیں کوئی غم نہیں
دل زار زار روتا ھے لوگ دیکھتے آنکھ ھے نم نہیں
اک سے اک کھا یا ھے زخم لوگ سمجھتے ھمیں کوئی درد نہیں
لوگ سا تھ تو چلے تھے مڑ کے جو دیکھاساتھ تھا کوئی نہیں
سہارا تو بہت بنے ھم مگر جب خود ڈھونڈا ساتھ تھا کوئی نہیں
روسن کیا بہت سی مسا فتوں کو جب ہوا اندھیرا پاس تھا چراغ نہیں

میڈم اس سے کیا فرق پڑتا ہے‘‘،،،اگر میرے ہاتھ مزدوروں جیسے نہیں‘‘،،،انسان جب پیدا ہوتا ہے‘‘،،،وہ صرف اک معصوم سا بچہ ہوتا ہے‘‘کل وہ ڈاکٹر‘‘،،،انجینئر‘‘،،،ڈاکو‘‘،،،یا کوئی لٹریچر والا ہو گا‘‘کچھ پتا نہیں ہوتا‘‘،،،بس وہ اپنے بدلتے وقت کے ساتھ ساتھ چلتےاس سے قدم ملا ملا کےاک پہچان بنا لیتا ہے‘‘،،،میں بھی مزدور بن ہی جاؤں گا‘‘،،
دیکھ لینا‘‘ایک دن‘‘ان ہاتھوں میں مزدوری کی لکیر ہو ‘‘نا‘‘ہو چھالے مزدوروں والے ضرور ہوں گے‘‘،،،،اس کے چہرے پر اک زخمی سی مسکراہٹ پیدا ہو گئی‘‘،،،چاچا ماڈل اور روزی خاموشی سے اسے سن رہے تھے‘‘،،،
سلمان واپس اپنے وجود کو اک مصنوئی غلاف میں لپیٹنے لگا‘‘ارے بی بی جی‘‘کن باتوں میں لگا دیا‘‘،،،کریم صاحب
کیا سوچیں گے‘‘کتنے ہڈ حرام مزدور لے آیا ہوں‘‘،،،روزی کچھ نہ بولی‘‘بس خاموشی سے الماری کی جانب بڑھ گئی‘‘،،،
ماڈل چاچا الماری کی اٹھک پٹھک سے خراب ہونے والا قالین ٹھیک کرنے لگا‘‘،،،اسلم کمرے میں داخل ہوا‘‘،،،
سلمان باؤ‘‘سلمان نے شکر ادا کیا‘‘کہ کوئی تو بچاؤ کو آیا‘‘،،،وہ ذرا کنفیوز ہو رہا تھا‘‘اسے اپنے اوپر قابل رحم آنکھوں‘‘اور توجہ سےالجھن ہونے لگتی تھی‘‘،،،
یار آپ لوگ یہاں سے فری ہو جاؤ‘‘،،،تو ذرا میرے پاس ڈرائنگ روم میں آجانا‘‘،،،اسلم نے جلدی جلدی کہا‘
روزی نے اسلم کی بات سنی ان سنی کر دی‘‘،،،اسلم یہاں ابھی ذرا کام باقی ہے‘‘تم چاچا کو لے جاؤ‘‘،،،پھر سلمان کی طرف اشارہ کر کے بولی‘‘،،،بس اسے یہاں چھوڑ جاؤ‘‘اسلم نے کوئی توجہ نہیں دی‘‘،،،بے فکری سے،،،ٹھیک ہے بی بی جی‘‘
چاچا آپ فری ہو کے آ جانا‘‘،،،وہاں کام ذیادہ ہے‘‘کیونکہ جلدی نمٹانا ہے‘‘پھر مہمان آ جائیں گے‘‘اسلم پلٹ کے کمرے سے باہر نکل گیا‘‘،،،روزی نے مہنگی سی چاکلیٹ نکال کر ان دونوں کی طرف بڑھا دی‘‘،،،
اچھی لگے تو شکریہ کہہ دینا ورنہ صرف کھا لینا‘‘ویسے ایک بات بتا دوں چاکلیٹ صرف ذائقے کے لیے ہوتی

ہے‘‘پیٹ بھرنے کے لیے نہیں‘‘اور پیٹ کو ذائقے کا کچھ پتا نہیں ہوتا‘‘نہ حلال حرام کا پتا ہوتا ہے‘‘یہ سب انسان کا دماغ بتاتاہے‘‘سلمان کی طرف دیکھ کر بو لی‘‘تمہارا دماغ بہت چلتا ہے‘‘،،،میری اس بات پر بحث کرو گے
‘‘یا‘‘میں صحیح ہوں؟؟؟اس نے سلمان کو گھورا‘‘سلمان کی حیرت تجسس میں بدل گئی‘‘اس نے سوچ لیا‘‘کہ اب
،،،،،(جاری)
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 1124 Articles with 878486 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
27 May, 2017 Views: 795

Comments

آپ کی رائے
really nice bhai ............
By: umama khan, kohat on May, 27 2017
Reply Reply
0 Like
thx sister
By: hukhan, karachi on May, 28 2017
0 Like
Very nice,,,,welldone
By: Mini, mandi bhauddin on May, 27 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on May, 28 2017
0 Like
nice poetry bhaiiiiiiiiiiiii epi tou best hai e ,,,,,,,,,, :)
By: Zeena, Lahore on May, 27 2017
Reply Reply
0 Like
thx for like
By: hukhan, karachi on May, 28 2017
0 Like
kamal poetry
By: rahi, karachi on May, 27 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on May, 28 2017
0 Like
amazing bhai qalam hay bahta hua far far pani
By: aslam memon, karachi on May, 27 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on May, 28 2017
0 Like