زندہ لاش

(Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi)
زندگی کی تلخیاں انسان کو زندہ لاش بنا دیتی ہیں۔

زندہ لاش

جونہی میں غسل خانے کے آئینے کی طرف مڑا یہ دیکھ کر حیران رہ گیا۔ایک جھریوں دار چہرہ، لمبی گھنی مونچھوں، آدھے سر کے بالوں اور میلے کپڑوں میں میرے سامنے کھڑا ہے۔پیلے دانت کے ساتھ میرا منہ چیڑا رہا تھا۔اچانک اس کےہاتھ میری جانب بڑھے اور میرے منہ پر پھرنے لگے پھر کپکپی سی طاری ہوئی، دھڑکن تیز سی ہوئی،میں نے اس ہاتھ کو تھامنے کی کوشش کی تو وہ غائب ہو گیا۔میرے وجود میں سنسنی سی پیدا ہوئی کہ ماہ سال نے مجھے زندہ لاش بنا کر رکھ دیاہے۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zulfiqar Ali Bukhari

Read More Articles by Zulfiqar Ali Bukhari: 322 Articles with 271375 views »
I'm an original, creative Thinker, Teacher, Writer, Motivator and Human Rights Activist.

I’m only a student of knowledge, NOT a scholar. And I do N
.. View More
14 Oct, 2017 Views: 1335

Comments

آپ کی رائے
sochne walon kay liye iss men bohat sabaq hia, achi tehreer lagi hia.
By: Usman Ahmed Durrani, lahore on Nov, 12 2017
Reply Reply
0 Like
true,,,, :)
By: Zeena, Lahore on Oct, 18 2017
Reply Reply
0 Like
Thanks lot for appreciation.
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Oct, 19 2017
0 Like
waqth insaan ka sara gharoor mitti may mila deta hay .......... us ki jawani us ki khoobsurti ko kha jata hay ............ bohoth khoob janab .......Jazak Allah Hu Khair
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 17 2017
Reply Reply
0 Like
Thanks lot for appreciation.
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Oct, 19 2017
0 Like
talakh haqeeqat bayan ki hai apny.... byshak zindagi thaka denay wali cheez hai.... sochon ka safar insaan ko boorha kr deta hai.... stay blessed!!
By: Faiza Umair, Lahore on Oct, 16 2017
Reply Reply
1 Like
محترمہ فائزہ عمیر صاحبہ۔آپ کی رائے سے متفق ہوں، آپ کا مشکور ہوں کہ آپ نے اس تحریر کو پسندیدگی کا شرف بخشا ہے۔
خوش رہیے۔
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Oct, 16 2017
1 Like
زندگی کی تلخیاں انسان کو زندہ لاش بنا دیتی ہیں۔
By: Javed nisar, sahiwal on Oct, 14 2017
Reply Reply
1 Like
Thanks for views
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Oct, 15 2017
1 Like