مشکل راستے قسط نمبر 53

(farah ejaz, Karachi)

نائلہ اسفند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسنے میرے نام بتانے پر یہ نام دہرایا تھا ۔۔۔۔۔۔

جی ہاں ۔۔۔۔۔ میرا نام نائلہ اسفند ہے ۔۔۔۔۔۔

کہاں سے تعلق ہے بی بی آپ کا ۔۔۔۔۔۔۔ آپ کے والدین ۔۔۔شوہر بھائی بہن ۔۔۔۔۔۔

میرا کوئی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا مطلب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؟

میری بات پر وہ سوالیہ نظروں سے مجھے دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے والدین انتقال کرچکے ہیں ۔۔۔۔۔ رشتہ دار وغیرہ کوئی ہے نہیں ۔۔۔۔۔

چلیں مان لیتا ہوں ۔۔۔۔ مگر آپ اتنی زخمی حالت میں کیوں تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ پھر تفتیشی انداز میں مجھ سے پوچھنے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کچھ بد معاشوں سے مڈبھیڑ ہوگئی تھی ۔۔۔۔

اچھا ! اور انہوں نے آپ کو زخمی کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ کی اس کہانی پر یقین کر لیتا اگر جو کچھ چڑیا گھر کے سامنے نہ دیکھا ہوتا تو ۔۔۔۔ اس لئیے اب جو سچ سچ ہے وہ بھی بتا دیجئے ۔۔۔۔۔۔

میں نے یہ کب کہا ہے کہ انہوں نے میرےساتھ کچھ غلط کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باں انہوں نے مجھے زخمی ضرور کردیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں اس کے ایک کے بعد ایک سوالوں سے پریشان ہونے لگی تھی ۔۔۔۔ غصہ آنے لگا تھا۔۔۔۔۔

ذکی اب تم نے بچی سے ایک بھی سوال کیا نا تو مجھ سے برا کوئی نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چندہ پھو پھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پلیز ۔۔۔۔۔۔۔

ارے کیا پلیز بھئی ۔۔۔ دیکھ نہیں رہے ابھی ہوش آیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو کچھ پوچھنا ہے زرا طبیعت بہتر ہوجائے تب پوچھ لینا ۔۔۔۔

ٹھیک ہے چندہ پھو پھو ۔۔۔ جیسا آپ چاہتی ہیں ویسا ہی ہوگا ۔۔۔۔۔۔

یہ کہہ کر وہ ایک نظر مجھ پر ڈالتا ہوا کمرے سے نکل گیا تھا ۔۔۔۔۔ میں نے دل ہی دل میں ان خاتون کو دعا دی تھی ۔۔۔ انہوں نے مزید مجھے جھوٹ بولنے سے بچا لیا تھا ۔۔۔۔۔۔ مگر اللہ جانے اپنی اصلیت چھپانے کے لئے نا جانے کتنے مزید جھوٹ بولنے تھے ۔۔۔۔۔

نائلہ بیٹی تم فکر مت کرو ۔۔۔۔۔ ذکی کی جاب ہی ایسی ہے جس کی وجہ سے ہر کسی پر شک کرنا اس کی عادت سی
بن گئی ہے ۔۔ اب تم ذرا فریش ہوجاؤ تو یہیں تمہارے لئے ناشتہ بھجوا دیتی ہوں ۔۔۔۔۔

وہ یہ کہہ کر باہر نکل گئیں ۔۔۔۔۔۔ اور میں کچھ دیر تلک یونہی چپ چاپ بیٹھی رہی ۔۔۔۔ سنیعہ کا معصوم چہرا ۔۔۔۔ میرے ذہن کی اسکرین پر نمودار ہورہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے میرے ارادوں سے باز رکھنے کی کوشش کر رہا تھا ۔۔ مگر میں گھر سے باہر قدم رکھ چکی تھی ۔۔۔۔ کبھی نہ لوٹ کر واپس جانے کے لئے ۔۔۔۔۔۔ اگر کیا اماں بی زندہ ہوتیں تو کیا میں ایسا کرتی ۔۔۔۔۔ شاید نہیں ۔۔۔۔۔۔ اور یا پھر شاید ہاں ۔۔۔۔۔۔ میں نے اپنوں کو انہی کی سلامتی انہی کے بھلے کے لئے چھوڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ میں انہیں کسی مشکل کسی خطرے سے دوچار ہوتے نہیں دیکھ سکتی تھی ۔۔۔۔۔ اور میری وجہ سے انہیں کوئی نقصان پہنچے یہ میں کیسے برداشت کر تی ۔۔۔۔ ابھی میں انہیں سوچوں میں کھوئی ہوئی تھی کہ ہلکی سی دستک کی آواز پر چونکی تھی ۔۔۔۔۔۔ اور پھر ہلکی چرچراہٹ کی آواز کے ساتھ دروازہ کھلا تھا ۔۔۔۔۔ اور ایک کم عمر لڑکی یہی کچھ چودہ پندرا سال کی اندر ٹرالی دھکیل تے ہوئے داخل ہوئی ۔۔۔۔۔۔

اسلامُ علیکم باجی جی ۔۔۔۔۔۔

وعلیکم اسلام ۔۔۔۔۔۔۔

مجھے دیکھ کر مسکراتے ہوئے سلام کیا تو میں نے بھی خوشدلی سے اسے سلام کا جواب دیا تھا ۔۔۔۔۔۔

وہ جی چندہ پھو پھو نے ناشتہ بھجوایا ہے جی ۔۔۔اور تاکید کی ہے جی کے آپ کو ناشتہ کروا کر ہی کمرے سے باہر قدم رکھوں ۔۔۔

وہ تیزی سے مگر سلیقے سے ایک پلیٹ ٹرالی سے نکالتے ہوئے اور دیگر لوازمات سے اسے سجاتے ہوئے مجھ سے بولی تھی ۔۔۔۔۔۔ پھر میری طرف پلٹی تھی ۔۔۔۔۔


اوہ ہو ۔۔۔۔ ٹیبل تو لگائی ہی نہیں اور پلیٹ بنادی ۔۔۔۔۔ باجی جی ذرا ٹہریں ۔۔۔۔۔۔ میں فولڈنگ ٹیبل تو نکال لوں ۔۔۔۔۔۔

وہ سائیڈ ٹیبل پر ٹرے رکھتی ہوئی بولی تھی ۔۔۔ بائیں طرف دروازے سے جڑی بڑی سی بلٹن کیبنٹ کو کھولا اور اس میں سے ایک چھوٹی سی فولڈنگ ٹیبل نکالی تھی ۔۔۔۔ پھر جلدی سے بیڈ کے پاس لاکر فولڈنگ ٹیبل کو کھولا اور اس پر ناشتے کی پلیٹ رکھ دی ساتھ میں دو کٹورے ٹائیپ بولز میں بھنا قیمہ اور دہی بھی رکھ دیا تھا ۔۔۔۔۔

بہت شکریہ آپ کا ۔۔۔۔۔ مگر میں اکیلے اتنا سب کچھ نہیں کھا سکتی ۔۔۔۔۔

کھانا توجی آپ کو پڑے گا ۔۔۔۔ ورنہ چندہ پھو پھو نے تو میرا پیچھا نہیں چھوڑنا ہے جی ۔۔۔۔۔

اچھا تو چلو ایک کام کرتے ہیں ۔۔۔۔۔ میرے ساتھ آپ بھی ناشتہ کرلیں ۔۔۔۔۔

میں نے اس کی بات سن کر مسکراتے ہوئے آفر کی تھی ۔۔۔۔ تو پہلے تو وہ جھجکی مگر پھر میرے دوستانہ روئے کو دیکھ کر اپنا سر ہلا دیا ۔۔۔۔۔

××××××××××××××××××××

فاطمہ بی بی میاں جی اور بے بے کے ساتھ اپنی والدہ سے ملنے اس چھوٹے سے بنگلے پر پہنچی جو ملیر کے گنجان آباد علاقے میں واقع تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اس وقت پورا بنگلہ جنات سے بھرا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ جو بھی جن فاطمہ بی بی کو دیکھتا انہیں سلام کرتا ہوا ایک طرف ہوجاتا ۔۔۔ وہ تیزی سے ان کے درمیان سے گزرتی ہوئی بے بے اور میاں جی کی ہمراہی میں اس چھوٹے کمرے کے دروازے کے قریب آکر رک گئیں تھیں ۔۔۔۔۔ کپکپاتے ہاتھوں سے دروازے پر دستک دی تھی ۔۔۔۔۔۔ بند دروازہ کسی نے کھولا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ لرزتے قدموں سے اندر داخل ہوئی تھیں ۔۔۔۔ سامنے ہی وہ ہستی وہ مہربان اور پرخلوص عورت آنکھوں میں نمی لئے ۔۔۔۔۔ اور بانہیں ان کی طرف پھیلائے کھڑی تھی ۔۔۔۔ بہت چھوٹی سی تھیں وہ جب ان کی ماں سے جدا کردیا گیا ۔۔۔۔ اور اب ایک عرصے بعد جب وہ خود ایک جوان بیٹی کی ماں تھیں ۔۔۔۔ ان کی والدہ کو اللہ نے ان کے سامنے لاکھڑا کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔

فاطمہ !

فاطمہ بی بی میاں جی اور بے بے کے ساتھ اپنی والدہ سے ملنے اس چھوٹے سے بنگلے پر پہنچی جو ملیر کے گنجان آباد علاقے میں واقع تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اس وقت پورا بنگلہ جنات سے بھرا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ جو بھی جن فاطمہ بی بی کو دیکھتا انہیں سلام کرتا ہوا ایک طرف ہوجاتا ۔۔۔ وہ تیزی سے ان کے درمیان سے گزرتی ہوئی بے بے اور میاں جی کی ہمراہی میں اس چھوٹے کمرے کے دروازے کے قریب آکر رک گئیں تھیں ۔۔۔۔۔ کپکپاتے ہاتھوں سے دروازے پر دستک دی تھی ۔۔۔۔۔۔ بند دروازہ کسی نے کھولا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ لرزتے قدموں سے اندر داخل ہوئی تھیں ۔۔۔۔ سامنے ہی وہ ہستی وہ مہربان اور پرخلوص عورت آنکھوں میں نمی لئے ۔۔۔۔۔ اور بانہیں ان کی طرف پھیلائے کھڑی تھی ۔۔۔۔ بہت چھوٹی سی تھیں وہ جب ان کی ماں سے جدا کردیا گیا ۔۔۔۔ اور اب ایک عرصے بعد جب وہ خود ایک جوان بیٹی کی ماں تھیں ۔۔۔۔ ان کی والدہ کو اللہ نے ان کے سامنے لاکھڑا کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔

فاطمہ !

بیتابی سے پکارا تھا ان کا نام اس ہستی نے ۔۔۔۔ کتنی تڑپ تھی لہجے میں ۔۔۔۔۔۔۔ کتنا درد اور کرب تھا ان کی پکار میں ۔۔ فاطمہ بی بی سے تو کچھ بولا ہی نہیں گیا ۔۔۔۔۔ پہلے تو آنسو بھری آنکھوں سے کچھ پل انہیں دیکھتی رہیں ۔۔۔۔ پھر تقریباً دوڑتے ہوئے ان سے جا لپٹیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مم مما حور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میری بچی ۔۔۔۔۔ میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ دونوں ایک دوسرے سے لپٹی رو رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عمر اور سردار یوسف بھی پرنم آنکھوں سے دونوں ماں بیٹی کو دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ بے بے فاطمہ بی بی کے پیچھے کھڑی حوریہ کو چپ چاپ دیکھے جارہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ حوریہ میں ان کی جان تھی ۔۔۔۔ وہ ان کی بات کبھی ٹال نہیں سکتی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ حوریہ نےجو کہا انہوں نے مانا تھا ۔۔۔۔ جمال کی حفاظت کے لئے انہیں جمال کے گھر پر ہی رکنے کو کہا تو انہوں نے گھر سے پھر باہر قدم ہی نہیں رکھا ۔۔۔۔ اگر وہ ان سے جان بھی ان کی مانگ تیں تو وہ خوشی خوشی اپنی جان بھی ان پر نچھاور کردیتیں ۔۔۔۔

بے بے ۔۔۔۔۔۔

فاطمہ کو لپٹائے ہوئے فاطمہ کے پیچھے کھڑی بے بے پر نظر پڑی تو پیار سے فاطمہ کو خود سے جدا کرتی ہوئی ان کی طرف بڑھی تھیں ۔۔۔۔۔ اور بے بے نے انہیں پیار سے گلے لگایا تھا ۔۔۔۔۔ وہ رو رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔

اتنا سب کچھ سہا حوریہ بی بی آپ نے اور ہمیں خبر بھی نہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ ابھیمنیو کو غارت کرے ۔۔۔۔۔۔ دنیا اور آخرت دونوں میں رسوا کن عزاب میں مبتلا رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ انہیں گلے لگائے رو رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔ ابھیمنیو کو کوس رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بے بے آپ کی دعائوں کی بدولت ہی تو اب تک اللہ نے بچائے رکھا ۔۔۔۔۔۔ ورنہ کب کی ختم ہوچکی ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مریں آپ کے دشمن بی بی ۔۔۔۔۔۔ اللہ آپ کو سلامت رکھے آمین۔۔۔۔۔۔

پاس کھڑی فاطمہ بی بی بھی دونوں کو پیار بھری نظروں سے دیکھ رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور دل ہی دل میں خدا کا شکر ادا کر رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس نے انہیں ان کی ماں سے ملا دیا تھا ۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ ہی ساتھ اپنی بیٹی عائیشہ کی سلامتی کی دعائیں بھی مانگ رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔

×××××××××××××

جانے انجانے میں جو بھول ہوئی،
اس کی سزا ساری عمر بھگتی
تجھ سے بچھڑ کر زندہ ہوں اب تلک
سانس سے بے روح جسم کارشتہ رہ گیا باقی

وہ کافی دیر تک اپنے کمرے میں ۔۔۔۔اپنی مخصوص راکنگ چئیر پر بیٹھے ماضی کی تلخ و شیریں یادوں میں کھوئے ہوئے تھے ۔۔۔۔ شرمندہ تھے ۔۔۔۔ پچھتا رہے تھے ۔۔۔۔۔بس چلتا اگر تو ماضی میں کی گئی غلطیوں کو مٹا دیتے ۔۔۔۔۔ مگر کیا کبھی میان سے نکلے تیر کی طرح زہر اُگلتی زبان سے نکلتے الفاظ واپس لئے جاسکتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس لئے تو سیانے کہتے ہیں پہلے تولو پھر بولو ۔۔۔۔۔

دروازے پر ہلکی سی دستک کی آواز پر چونک کر دروازے کی طرف دیکھا تھا ۔۔۔۔۔

کون؟

صاحب چائے ۔۔۔۔۔۔۔۔

ہممم ۔۔۔۔۔۔۔

ان کے بڑے سے کمرے کے آہنی دروازے کو کھولتا ہوا ۔۔۔ عباس چائے کی ٹرے اُٹھائے اندر داخل ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ ان پر نظر پڑھتے ہی مگر چونک اُٹھا ۔۔۔۔۔۔ شیو بڑھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ملگجا سا حلیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سگار کی بو پورے کمرے میں پھیلی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ سرخ آنکھیں رت جگے کی گواہی دیتی محسوس ہو رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔

جمال بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔ صاحب کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب خیریت ہے نا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاں ۔۔ سب کچھ ٹھیک ہئ تو ہے کیا ہونا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب ہونے کو رہ بھی کیا گیا ہے باقی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ عباس کی بجائے خود سے ہی ہمکلام تھے ۔۔۔۔۔۔۔ عباس حیرت سے انہیں دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔ فاطمہ بی بی اور بے بے بھی اس وقت موجود نہیں تھیں ۔۔۔۔۔۔

صاحب فاطمی بٹیا کہیں دکھائی نہیں دے رہیں ۔۔۔۔۔۔ اور بے بے بھی غائب ہیں ۔۔۔۔۔

اس کی بات سن کر کچھ پل وہ اسے خالی نظروں سے گھورتے رہے ۔۔۔۔۔ پھر بولے تھے تو انہیں اپنا ہی لہجہ عجیب سا لگا تھا ۔۔۔ ٹوٹا ٹوٹا سا بکھرا بکھرا سا ۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ دونوں تمہاری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (ایک گہری سانس لے کر ) میم صاحب سے ملنے گئی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ان کی راکنگ چئیر کے سائیڈ پر رکھی ٹیبل پر ٹرے رکھتے ہوئے عباس کے ہاتھ کانپ گئے تھے ۔۔۔

حوریہ میم صاحب !

×××××××××××××

باقی آئندہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: farah ejaz

Read More Articles by farah ejaz: 146 Articles with 148755 views »
My name is Farah Ejaz. I love to read and write novels and articles. Basically, I am from Karachi, but I live in the United States. .. View More
16 Oct, 2017 Views: 660

Comments

آپ کی رائے
Nice,,,,,
By: Mini, mandi bhauddin on Oct, 17 2017
Reply Reply
0 Like
shukria Mini
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 17 2017
0 Like
مشکل راستے کے تمام کرداروں کا حقیقی دنیا سے کوئی تعلق نہیں ۔۔۔۔ ہم نے اپنے تخیل کو لفظی پیراہن سے سجا کر آپ کے سامنے پیش کیا ہے ۔۔۔امید ہے کہانی آپ سب کو پسند آئے گی ۔۔۔اور اگر کہانی میں کوئی جھول دیکھیں تو ضرور آگاہ کریں ۔۔ شکریہ
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 16 2017
Reply Reply
1 Like