میڈیکل لیں یا انجینئرنگ۔۔۔۔۔۔۔ اپنے کیرئیر کو اچھا بنانے کے لیے کالج اور مضمون کا انتخاب کیسے کریں۔۔؟


میٹرک کا رزلٹ تو آگیا ہے ہنسی خوشی اس مرتبہ تو جناب امتحان دئے بغیر پاس بھی ہوگئے۔ کتنے طلبہ و طالبات خوش اور کتنے ہی ناخوش بھی ہیں کہ ایسے رزلٹ سے مطمئن نہیں ہیں۔ چلیں اب تو آپ لوگوں کا رزلٹ آہی گیا ہے تو پھر آگے کی تیاری پکڑلیں کہ کالج میں کب، کہاں، کیسے جانا ہے؟ کیا پڑھنا ہے کیا دلچسپی ہے کس مضمون کو آپ پڑھ سکتے اور کس میں آپ کمزور ہیں۔
کیا آپ جانتے ہیں کہ آج کے اس بھاگتے ہوئے دور میں ذہنی طور پر خود کو تیار کرکے چلنا کس قدر ضروری ہے؟ کیوںکہ اگر آُپ کو یہی معلوم نہیں ہے کہ آپ کو کیا پڑھنا ہے، مستقبل میں کونسا راستہ اختیار کرنا ہے، کس فیلڈ میں قدم جمانے ہیں تو آپ کے لئے بڑی مشکل ہوجاتی ہے۔
اس لئے اب میٹرک کے بعد زندگی کا ایک اہم مرحلہ شروع ہوتا ہے جہاں آپ کو ذاتی طور پر یہ موقع ملتا ہے کہ مستقبل کو مدِ نظر رکھتے ہوئے کسی ایک مضمون یا فیلڈ کا انتخاب کریں۔

کالج کا انتخاب:

سب سے پہلے تو آپ اپنے میٹرک کے نتیجے کی اوسط سامنے رکھتے ہوئے یہ دیکھیں کہ کونسے کالج کا اوسط میرٹ آپ کے میرٹ سے ملتا ہے اور ان کو ایک جگہ لکھ لیں۔ اس کے بعد آپ یہ دیکھیں سب سے قریبی کونسا ایسا کالج ہے جس میں آپ جاسکتے ہیں اپنے گھر سے کالج تک باآسانی ۔ کیونکہ گھر سے کالج دور ہو تو جانے کا نہ دل چاہتا ہے اور نہ ہی راستے کی خواری آپ پسند کرتے ہیں تو آپ پہلے تو یہ طے کرلیں کہ قریبی کالجز کونسے ہیں۔ اب اکثر ایسا ہوتا ہے کہ آپ کا میرٹ بہت زیادہ اور قریبی کالج کا میرٹ کم ہے، تو اس صورتِحال میں آُپ یہ کریں کہ کالج کا سروے کریں کہ کس کالج کا نام ہے یا کہاں زیادہ پڑھائی اچھی ہوتی ہے۔
جب آپ یہ طے کرلیں تو پھر اس بات پر اطمینان کرلیں کہ میرٹ کالج کا کم بھی ہے مگر وہاں پڑھائی کا تناسب بہتر ہے تو اسی کا انتخاب کریں تاکہ کبھی جلدی میں بھی جانا پڑ جائے تو کالج آپ سے قریب ہی ہو۔

مضمون کا انتخاب:

اب جب آپ کالج کا انتخاب کرچکے ہیں تو پھر آپ یہ بھی دیکھیں کہ آپ کی دلچسپی کس مضمون کی طرف ہے آپ کو مستقبل میں اپنے لئے کونسی فیلڈ کا انتخاب کرنا ہے۔ کیونکہ کیرئر کاؤنسلنگ آُپ کے لئے بہت ضروری ہے۔

انجینئرنگ:

اگر آُپ کی فزکس اچھی ہے اور فارمولاز کی derivationsوغیرہ نکالنا آپ کو آتی ہیں سمجھ خود سے آپ ان کو کرنے میں دلچسپی لیتے ہیں تو پھر آپ انجینئرنگ کو اپنا مضمون رکھیں تاکہ آپ کو مستقبل میں بھی اس کی ٹرکس سمجھ آئیں۔

کمپیوٹر سائنس:

آجکل زیادہ بچوں کا رجحان کمپیوٹر سائنس کی طرف ہے تو آپ یہ دیکھیں کہ اگر نویں جماعت میں آپ کو بنیادی بائنری سسٹم اور فلو چارٹس سمجھ آئے ہیں ان کو بنانے میں آسانی رہی ہے تو پھر ہی آُپ کمپیوٹر کے مضمون کا انتخاب کریں۔

میڈیکل:

اگر آپ کی یادداشت اچھی ہے چیزوں کو جس طرح سے پڑھتے ہیں وہ اسی طرح یاد رہ جاتی ہیں اور جسم سے متعلق جاننے کی جستجو زیادہ ہے، بیماریوں کو پڑھنے اور دور کرنے سے متعلق تمام میڈیکل نصاب پڑھنے میں دلچسپی رکھتے ہیں تو آپ یقیناً میڈیکل کے مضمون کو دل لگا کر پڑھیں۔

کامرس:

اگر آُپ کا دماغ بزنس سائیڈ ہے اور میتھس سے دلچسپی ہے سٹیٹس وغیرہ کا حساب سمجھ آتا ہے تو آپ کامرس کے مضمون میں اپنا دل لگائیں اور اس کو پڑھیں تاکہ مستقبل میں آپ بینکرز یا اکانومسٹ بن سکیں۔

ہوم اکنامکس:

اگر تاریخ سے آپ کی وافقیت زیادہ ہے، جغرافیہ میں دلچسپی ہے یا خود سے تحریریں لکھنے کا شوق ہے تو آپ ہوم اکنومکس بھی پڑھ سکتے ہیں اس میں کوئی برائی ہے۔ لوگ اس مضمون کو بیکار سمجھتے ہیں جبکہ اگر بعد ازاں اس مضمون کی اہمیت دیکھی جائے تو تمام سماجی علوم کا کلیہ ہوم اکنومکس کو سمجھا جاتا ہے۔

تیاری کیسے کریں۔۔۔۔؟

میٹرک تک تو آپ کا جب دل چاہا پڑھا، جب دل چاہا جی چرا لیا، امتحان سے ایک روز پہلے بھی پڑھا تو اچھے نمبر حاصل کرلئے پاس ہوگئے مگر اب میٹرک کے بعد آپ یہ دیکھ لیں کہ انٹر میں آٌپ کو اگر اچھے نمبر چاہیئے اچھی جامعہ میں میرٹ پر داخلہ لینا ہے تو دن رات محنت سے پڑھنا ہے کیونکہ اس میں آپ کا نصاب میٹرک سے دس گناہ زیادہ اور مشکل بھی ہے اس لئے اب سنجیدگی سے پڑھنا شروع کردیں تاکہ مستقبل میں آُپ کو مداوا نہ رہے۔ دن بھر میں کچھ وقت پڑھائی کے لئے نکالیں اور اس میں بھی ہر مضمون کو برابر کا وقت دیں تاکہ کہیں سے بھی نمبر کم ہونے کا کوئی جواز نہ رہے۔

Click here for Online Academic Results

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.

448